خواتین

عورت کا اصلی ٹھکانہ کونسا ہے ؟

اللّٰه تعالٰی نے مردوں کو عورتوں کے جملہ معاملات کا زمہ دار بنایا ہے وہ ان کی معاشی اور معاشرتی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے سعی اور کوشش کرنے کے پابند ہیں

ارشاد ربانی ہے
مرد عورتوں کی زندگی کے بندوبست کرنے والے ہیں اس لیے کہ اللّٰه تعالٰی نے ایک کو دوسرے پر فضیلت دی ہے اس لیے کہ مرد اپنا مال خرچ کرتے ہیں

کسی چیز کی دیکھ بال کرنے والا اس کی حفاظت کرنے والا اور اس سے یہ استدلال کیا گیا ہے کہ عورت امامت عظمیٰ کی طرح منصب قضا بھی نہیں سنبھال سکتی کیونکہ اللّٰه تعالٰی نے مردوں کو ان کے جملہ معاملات سر انجام دینے کا ذمہ دار بنایا ہے اس لیے یہ جائز نہیں کہ وہ مردوں کے معاملات سر انجام دیں

اسی طرح عورت کو بازار میں منصب احتساب پر فائز کرنا بھی درست نہیں کیونکہ اس میں مردوں عورتوں اور تمام کائنات کے خالق کی تقسیم کار کو یکسر الٹ دینا ہے اور بہترین تقسیم کار تو اللّٰه خالق ہی کی تقسیم کار ہے

کوئی یہ خیال نہ کرے کہ آیت کریمہ میں تو صرف خاوند کی بیوی پر سر براہی اور سر پرستی کا زکر ہے حقیقت یہ ہے کہ اس میں جنس ذکور کی عورتوں کی صنف پر نگہبانی اور سر پرستی کا ذکر ہے

بعض معاملات میں عورتوں کا کلی اختیار نہ رکھنا

شریعت اسلامیہ میں یہ بات واضح کی گئی ہے کہ خواتین اپنے بعض معاملات میں مکمل طور پر خود مختار نہیں ایسے ہی معاملات میں سے ایک یہ ہے کہ کوئی مسلمان عورت اپنے نکاح کا فیصلہ تنہا کرنے کی مجاز نہیں اس فیصلے میں اس کے سرپرست کی شرکت اور موافقت ضروری ہے اس کے بغیر نکاح نہ ہو گا

اس طرح کوئی عورت کسی دوسری عورت کے نکاح کا فیصلہ نہیں کر سکتی

عورت کا اصلی ٹھکانہ اس کا گھر

مردوں کے مقابلے میں عورتیں طبعی طور پر نازک اور کمزور ہیں رحمٰن ورحیم رب نے عورت پر شفقت وعنایت فرماتے ہوئے ان کی سعی اور کوشش کا میدان ان کے گھروں کو بنایا اور ایک عام قاعدہ اور ضابطہ بیان فرما دیا کہ عورتوں کا اصلی مستقر اور ٹھکانہ ان کے گھر ہیں

گھروں کا عورتوں کے لئے اصل ٹھکانہ ہونے پر یہ بات بھی دلالت کناں ہے کہ مردوں پر پانچوں نمازیں باجماعت ادا کرنے خطبہ جمعہ سننے اور نماز جمعہ ادا کرنے کی خاطر مسجد میں آنا فرض ہے

لیکن عورتیں اس حکم سے متسثنیٰ ہیں صرف یہی نہیں بلکہ آنحضرتؐ نے واضح انانداز میں بیان فرمایا کہ عورت کی گھر میں نماز مسجد میں اس کی باجماعت نماز سے اعلٰی و افضل ہے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button