ادب

محبت بھرا تحفہ

احمد اور مہک کی شادی کو صرف ایک سال ہوا تھا ۔ ان کے پاس بہت کم پیسہ تھا اور ان کے پاس جگہ بھی ناقص تھی۔ لیکن جن چیزوں کی ان کو کمی تھی وہ محبت میں ان دونوں کے ساتھ مکمل ہوگی۔
اگلے ہی دن کرسمس تھا۔
مہک نے اپنے پیارے شوہر کے لئے ایک تحفہ خریدنے کے لئے جو رقم جمح کی تھی وہ صرف $ 1.87 تھی۔ “میں اس رقم کے ساتھ کیا خرید سکتی ہوں؟” اس نے سوچا۔

مڑ کر دیکھا تو اسے آئینے میں عکاسی نظر آئی۔ آئینے کی طرف بڑھتے ہوئے ، اس نے اپنی عکاسی کو دیکھا۔ اس نے گھومتے ہوئے کہا ، احمد میرے لمبے خوبصورت بالوں سے محبت کرتا ہے۔” “وہ مجھے اپنی ملکہ کہتے ہیں!” “اس نے سوچا ،” احمد کا تحفہ خیردینے کے لیے مجھے صرف$ 1.87 کی ضرورت ہے پھر ایک ساتھ مہک ، کو خیال آیا کہ اسے کیا کرنا چاہئے۔ بہت تیزی سے ، اس نے اپنی چادر اوڑھ لی اور اپارٹمنٹ سے باہر نکل کر ایک دکان پر گی جہاں پر لکھا ہوا تھا کہ “ہم بال خریدتے ہیں

مہک نے دکان کی خاتون سے پوچھا۔ “آپ مجھے میرے بالوں کا کتنا معاوضہ دیں گے؟”
دکان کی ایک خاتون نے کہا ، “اندر آؤ ، اور مجھے یہ دیکھنے دو۔
مہک نے دکان میں قدم رکھا اور اپنی چادر اتار دی۔ نیچے اس کے لمبے لمبے ، گھنے بال گرے۔۔۔
“میں ، میں!” دکان والی عورت نے کہا ، “میں تمہارے خوبصورت ، لمبے لمبے بالوں کے لئے بیس ڈالر دوگی

آخر کار ، اس کے پاس بیس ڈالر اورجمح ہوگے جس کی وجہ وہ آسانی سے گھڑی خرید سکتی تھی احمد کو پوری دنیا میں ایک چیز سب سے زیادہ پسند تھی وہ اس کی سنہری گھڑی تھی۔ جو اس کے والد اور اپنے والد کے والد کی طرف سے اس کے پاس آئی تھی۔ کبھی کبھی ، جب احمد اس گھڑی کودیکھتا تھا۔تو بہت دکھی ہو جاتا تھا، کیونکہ اَس کی وجہ مہک کو معلوم تھی، اور پھر مہک نے کامل تحفہ دیکھا- جیب کی گھڑی کے لئے سونے کی زنجیر۔۔
21 ڈالرکے عوض اس نے سونے کی گھڑی چین خریدی۔ اس زنجیر کو جب گھڑی کے ساتھ ملا دی جا ئے گی تو یہ ، گھڑی اس سے بھی زیادہ پیاری ہو جا گی اور جب احمد اس کو د یکھا گا تو بہت خوش ہوگا۔ مہک نے زنجیر کو بند کرتے ہوئے سوچا۔
رات کو جب احمد گھر آیا تو مہک اس کو تحفہ دینے کے لئے اس کے پاس گی۔
تو احمد دنک رئے گا
جب اس نے اپنی بیوی کے سر پر چھوٹے چھوٹے بالوں کو دیکھا ۔ “اوہ ، فکر نہ کرو ، احمد!”میرے بال تیزی سے واپس آجاتے ہیں۔
مہک نے احمد کے پرشیان و حیران چہرے کو دیکھتے ہوئے کہا
پھر ، اس سے پہلے کہ وہ احمد کو اپنا تحفہ دے دتیی ، اس سے پہلےاحمد نے مہک کو ایک چھوٹا سا ڈبہ دیا۔ جب مہک نے ربن کھول کر اسے دیکھا۔ تواندروہی دو خوبصورت کنگھی تھی۔ جو انھوں نے اسٹور پر دیکھی تھی ، لیکن ان کی قیمت بہت زیادہ تھی۔
اب وہ تحفہ تھا جو اس کے پیارے شوہر نے اسے دیا تھا۔ پھر ، مہک نے احمد کو اپنا باکس دیا۔

جب احمد نے اسے کھولا اور سونے کی گھڑی کی زنجیر دیکھی تو اسے بیٹھنا پڑا۔ “کیا آپ کو یہ پسند نہیں ہے؟” اس کی بیوی نے کہا۔ “بالکل ، میں پسند کرتا ہوں!” احمد نے کہا۔ “لیکن میں نے اپنی گھڑی بیچ دی ہے، تاکہ میں آپ کے بالوں کے لئے کنگھی خرید سکوں۔
اور میں نے آپ کی گھڑی کے لیے اپنے بال فروخت کر دیے ہیں
“میری ملکہ ،” احمد نے اپنی بیوی کے ہاتھ خود لے کر اس کی آنکھوں میں دیکھا۔

احمد اور مہک دونوں نے ایک دوسرے کی خاطر سب سے زیادہ عزیز رکھنے والی ایک چیز ترک کردی تھی۔ اور اب ان کے پاس دکھانے کے لئے کچھ نہیں تھا۔

Memoona yaqoob

میرا نام میمونہ یعقوب اورمیں نے پنجاب یونیورسٹی سے اردو ادب میں ماسٹر، B.Ed. اور Virtual University سے creative writing کا کورس کیا ہوا ہے تخلیقی تحریر میں مھجے تین سال ہو گے ہے

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!