TECH

وزیر اعظم نے اسپیشل ٹکنالوجی زونز اتھارٹی کا آغاز کر دیا

وزیر اعظم نے اسپیشل ٹکنالوجی زونز اتھارٹی کا آغاز کر دیا
وزیر اعظم عمران خان نے جمعہ کے روز اسپیشل ٹکنالوجی زونز اتھارٹی کا آغاز کیا جس میں مقامی اور غیر ملکی سرامایہ کاروں کے لئے 10 سال کی مدت کے لئے جامع ڈیوٹی اور ٹیکس مراعات کا تصور دیا گیا ہے۔

عمران خان نے ایک بیان میں کہا ، “خصوصی ٹیکنالوجی زون اتھارٹی غیر ملکی سرمایہ کاروں ، دیسی کمپنیوں اور تعلیمی اور تربیتی اداروں کو پاکستان میں صنعتی انقلاب سے چلنے والی انفارمیشن ٹکنالوجی کے لئے تعاون کرنے کے لئے ایک جگہ پیدا کرنے میں مدد فراہم کرے گی۔”ان ایس ٹی زیڈز کے ذریعے باہمی قومی ترقی کے باہمی تعاون سے متعلق کوششوں اور صحیح نصاب سے پاکستان کے نوجوانوں کی بے پناہ صلاحیتوں کو بروئے کار لایا جائے گا۔”

پاکستان میں قومی جدت کے نظام کو فروغ دینے کے لئے سرکردہ سرکاری ادارہ کو یہ اختیار دیا گیا ہے۔ عامر احمد ہاشمی کو اتھارٹی کا چیئرمین مقرر کیا گیا ہے۔

ہاشمی نے کہا کہ یہ زون مہارتوں کی نشوونما ، روزگار کی تخلیق ، ٹکنالوجی کی منتقلی اور نئی معاشی قدر کو فروغ دینے میں فروغ دیں گے۔

مراعات میں سرمایہ کاری کے لئے فنڈزکی وضاحت سے استثنیٰ بھی شامل ہے۔ اس کے علاوہ 10 سال کے لئے آمدنی اور اثاثوں کے اعلان سے بھی چھوٹ حاصل ہے۔ یہ مراعات 2 دسمبر کو اسپیشل ٹکنالوجی زون اتھارٹی آرڈیننس 2020 کے اجرا کے صدارتی حکم کے ذریعے دی گئیں۔

اس آرڈیننس کا مقصد ہائی ٹیک مداخلتوں کے ذریعہ پیداواری صلاحیت اور پیداوار کی لاگت میں کمی لانے کے لئے ٹکنالوجی کے شعبے کے لئے ادارہ اور قانون سازی تعاون فراہم کرنا ہے۔

اسپیشل ٹکنالوجی زون اتھارٹی آرڈیننس 2020 کے سیکشن 21 اور 22 نے زون ڈویلپرز اور زون کاروباری اداروں کو مراعات دیں۔ آرڈیننس کے سیکشن 22 کے تحت اتھارٹی کے ذریعہ لائسنس کے اجراء کی تاریخ سے 10 سال کی مدت کے لئے تمام انکم ٹیکس (ود ہولڈنگ ٹیکس ، مفروضہ ٹیکس) سے چھوٹ دی گئی ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ اسپیشل ٹکنالوجی زونز کے قیام کا بنیادی مقصد آئی ٹی کے شعبے کو مراعات دینا ہے تاکہ ملک کے مفاد کے لئے اسے ترقی بخش سکے۔
کمپنیوں سے انفارمیشن ٹکنالوجی کا فائدہ اٹھانے کی تاکید کرتا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ دنیا کی دوسری سب سے کم عمر آبادی کے ساتھ پاکستان آئی ٹی کے شعبے کو اپنے نوجوانوں کو روزگار فراہم کرنے میں استعمال کرسکتا ہے۔ نیز دوسرے ممالک میں کام کرنے والے پاکستانی شہری خصوصی ٹیکنالوجی زون سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!