تعلیم

کیا پاکستان کا تعلیمی بحران معاشی بحران کے لئے ذمہ دار ہے؟

جدیدیت نے کسی ملک کی تعلیمی حیثیت کو معاشی نمو کا سب سے بڑا عامل قرار دیا ہے۔ انٹرنیشنل بیورو آف ایجوکیشن کے مطابق ، کسی ملک کے تعلیم کے شعبے کو طلباء میں مثالی طور پر کچھ زندگی بھر کی قابلیتوں کا تقاضا کرنا چاہئے تاکہ تعلیم کی معاشی اور معاشرتی صلاحیتیں قوم کی معاشی ترقی میں مزید اضافہ کرسکیں۔ اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ تعلیم کے لئے معاشی منافع انتہائی مثبت ہے ، اس کے باوجود ، مزدوری کی ملازمت اور پیداواری صلاحیت کے حساب سے معمولی واپسی – پوری دنیا میں مختلف ہوتی ہے۔ دوسری طرف تعلیم کی طرف معاشرتی واپسی میں غربت کے واقعات میں کمی ، شہری سلوک میں بہتری ، صحت میں بہتری اور سیاسی مذاہب کو کم کرنا شامل ہیں۔

جب بھی نظام تعلیم سے وابستہ امور اٹھائے جاتے ہیں تو تعلیمی بجٹ میں اضافہ کو مجوزہ تدارک کے طور پر سمجھا جاتا ہے۔ 2009 کے بعد سے پاکستان کا تعلیمی بجٹ 304 ارب روپے سے بڑھ کر 980 ارب روپے ہوچکا ہے ، لیکن تعلیم کے شعبے کے لئے مختص جی ڈی پی کا فیصد حصہ 2 فیصد سے 3 فیصد کے درمیان رہ گیا ہے ، جو کہ بین الاقوامی معیار سے کہیں کم ہے

پریشانی میں مزید اضافہ یہ ہے کہ ، اس سال کے 2 فیصد سے 3 فیصد تعلیمی بجٹ کا ایک نمایاں تناسب باقی نہیں ہے۔ مثال کے طور پر ، 2017-2018 کے دوران ، پنجاب کے تعلیمی بجٹ کا ٪45 ، سندھ کا تعلیمی بجٹ کا ٪35 ، خیبرپختونخوا (K-P) کے تعلیمی بجٹ کا٪ 43 اور بلوچستان کے تعلیمی بجٹ کا٪ 41 غیر یقینی رہا۔ یہ بات اہم ہے کہ تعلیمی نظام سے وابستہ مسائل کو حل کرنے کے لئے تعلیمی بجٹ میں اضافہ ایک اہم ذریعہ ہے ، لیکن یہ صرف طلبہ کے مسائل کو حل کرسکتا ہے ، جن سے تعلیم کی طلب پر اثر انداز ہوتا ہے (جیسے تعلیم اور تعلیم کے معیار تک رسائی)
جب تک ہم ایسی پالیسیاں مرتب نہیں کرتے جو ہماری اپنی ترجیحات کو مدنظر رکھتے ہوئے ھدف بنائے گئے نتائج کو نہیں دے سکتے۔

ہمیں اس ملک میں پہلے سے موجود وسائل کے موثر استعمال کی ضرورت ہے۔معیشت کو اپنی مزدوروں کو کچھ مہارتیں دے کر نتیجہ خیز استعمال کرنا چاہئے تاکہ مزدوری پیداوار کے شعبے میں اور بالآخر جی ڈی پی میں قدر و قیمت لائے۔ ہمیں صدیوں سے برصغیر پر حکمرانی کرنے اور معیشت کو اتنا منافع بخش بنانے والے مسلم شہنشاہوں کی مثال سے سبق سیکھنا چاہئے۔ دنیا کی جی ڈی پی کا ٪ 23 برصغیر سے آیا۔ یہ تعلیم کا نہیں بلکہ مہارت کی ترقی کا نتیجہ تھا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button