اسلامک

آپ ﷺ کے سردی سے متعلق عظیم معجزات

نمازیوں میں سردی دور ہو گئی:

حضرت سیدنا جابر فرماتے ہیں کہ حضرت بلال نے مجھے بتایا کہ میں نے بہت سرد رات میں فجر کا مطالبہ کیا لیکن کوئی بھی مسجد نہیں آیا۔ تھوڑی دیر بعد ، میں نے پھر اذان دی لیکن اس بار کوئی نہیں آیا۔
جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ دیکھا تو پوچھا: لوگوں کو کیا ہوا؟ میں نے جواب دیا: شدید سردی نے لوگوں کو مسجد میں آنے سے روک دیا ہے۔
یہ سن کر آپ نے دعا کی: “اے اللہ لوگوں سے سردی کو دور فرما۔” حضرت بلال فرماتے ہیں: میں گواہی دیتا ہوں کہ سردی اتنی شدید تھی کہ میں نے گرمی کی وجہ سے لوگوں کو صبح کے وقت پنکھا جھلتے دیکھا۔

سردی میں گرمی

عبد الرحمٰن ابن ابو لیلی روایت کرتے ہیں: حضرت ابو لیلی رات گئے حضرت علی کے ساتھ بیٹھ کر گفتگو کرتے تھے۔ حضرت علی گرمیوں میں گرم کپڑے اور سردیوں میں ٹھنڈے کپڑے پہنتے تھے۔ اس نے حضرت علی سے اس بارے میں پوچھا۔ انہوں نے کہا: جنگ خیبر کے دن نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے ایک پیغام بھیجا۔ میں پریشان تھا۔ مجھے آشوبِ چشم تھا میں نے بارگاہِ ررسالت میں حاضر ہو کر عرض کیا: یا رسول اللہ !ﷺ مجھے آشوبِ چشم ہے حضور نے میری آنکھوں میں اپنا لعاب مبارک ڈالا پھردعا کی اے اللہ علی سے سردی اور تپش کو دور فرما! حضرت علی نے فرمایا: مجھے اس دن سے اب تک کوئی سردی یا گرمی محسوس نہیں ہوئی ہے۔
(سنن ابن ماجہ ، نمبر 2 ، جلد 1 ، صفحہ 2)
اللہ ہمیں اپنے پیارے نبی کی سچی محبت سے نوازے ، مجھ پر یقین کریں! جس طرح نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اللہ تعالی کے تحفہ سے لوگوں سے سردی کی شدت کو معجزانہ طور پر ہٹا دیا ، اگر ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی اطاعت اور فرمانبرداری کے بندھن کو مضبوط کریں۔ اس سے ، ہمارے گناہوں کی عادت سے بھی نجات مل جائے گی ، جیسا کہ مسند امام احمد کی روایت میں ہے: حضرت ابو امام سے روایت ہے کہ ایک نوجوان حضور کی خدمت میں حاضر ہوا اور کہا: یا رسول اللہ! اسے زنا کرنے کی اجازت دیں۔ لوگوں نے اس کی طرف رجوع کیا اور اسے سرزنش کی اور اسے پیچھے دھکیل دیا ، لیکن حضور نے اس سے کہا: میرے قریب آو! وہ جاکر حضور کے قریب بیٹھ گیا۔ اس نے پوچھا: کیا آپ اپنی ماں کے لئے بدکاری پسند کریں گے؟ اس نے کہا: خدا کی قسم! کبھی نہیں
میں آپ پر قربان جاوں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: لوگ اسے اپنی ماں کے لیے بھی پسند نہیں کرتے ہیں۔ پھر آپ نے اس سے اس کی بیٹی ، بہن ، خالہ اور چچا کے بارے میں پوچھا۔ اس نے ہر بارکہا ، “اللہ کی قسم ، کبھی بھی نہیں۔ تب حضور نے اپنا مبارک ہاتھ اپنے جسم پر رکھا اور دعا کی: اے اللہ! اس کے گناہوں کو بخش ، اس کے دل کو پاک اور اس کے شرمگاہ کی حفاظت کرو! لوگوں کا کہتا ہے کہ اس کے بعد اس نوجوان نے کبھی کسی (گناہ) پر توجہ نہیں دی۔null

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button