اسلامک

امام مہدی کی غیبت – ہمارے طرز عمل اور ذمہ داریاں.پوسٹ ١ ۔ ٢.

.. پوسٹ ١ اردو ———————
سلسلہ وار ——————-. —————————————- الوشاء نےعلی ابن الحسن سے ابان بن تغلیب سے روایت کیا ہے : ‘ایک بار ابو عبد اللہ ص نے پوچھا ، جب دو مساجد ایک دوسرے پہ بڑے پیمانے پر حملہ کریں گے تو آپ کو کیسا محسوس ہوگا؟ اس کے بعد ، علم غیر واضح ہوجائے گا سانپ کی طرح جو اپنی پوشیدہ جگہ میں جاتا ہے۔ شیعہ اختلاف کریں گے اور ایک گروہ دوسرے گروہ کو جھوٹا کہے گا۔ ایک گروہ دوسرے کے چہروں پر تھوک دے گا۔ ‘‘ ‘‘ پھر میں نے کہا ، ’’ اللہ عزوجل میری جان کو آپ ص کے مقصد کی خاطر خدمت میں رکھے ، ایسی حالتوں میں کوئی اچھی چیز نہیں ہوگی؟ ’ امام ص نے فرمایا، ‘ساری بھلائی ہوگی۔’ امام ص نے یہ تین بار کہا۔ —————————————-
نوٹ؛ (یہ حدیث پاک کا حصہ نہیں. سمجھانے کے لیے لکھا ہے بس………. امام صادق ص نے مذکورہ بالا حدیث میں ہمیں بتایا ہے کہ علم کو ضائع کرنے کے باوجود بھی مخلص تلاش کرنے والوں کو ساری اچھائی مل جائے گی ، جس کو ڈھونڈنے اور اس پر قائم رہنے کی کوشش کرنی ہوگی۔ مگر شیعوں کو تقسیم کردیا جائے گا اور بار بار آزمایا اور آزمایا جائے گا جب تک کہ بہت ہی کم تعداد الہی ہدایات کے تابع اور تابعدار نہیں رہے گی۔ —————————————

پوسٹ ٢. —————————————- محمد ابن یحیی اور الحسن ابن محمد دونوں نے روایت کیا ہے .انصار ابن محمد الکوفی نے الحسن بن محمد السیرافی سے صالح ابن خالد یمن التمار سے روایت کی عوامی نظروں سے اوجھل ہوجائے گا۔ اس وقت کسی کے مذہب کی پیروی کرنا تھوہر(ایک کانٹے دار صحرائی پودہ) کے پودوں کے کانٹوں کا مسح کرنے کے مترادف ہوگا (کسی کے ننگے ہاتھوں سے)۔ ’امام ص نے ہاتھ کے کچھ اشارے کیے۔ ‘تم میں سے کون اپنے ہاتھ میں تھوہر کا ایک گروہ تھامنے کے لئے تیار ہے؟’ پھر وہ تھوڑی دیر کے لئے پرسکون رہے اور پھر فرمایا ، ‘جس شخص ص کو اس کام کی ذمہ داری دی گئی ہے وہ عوامی نظروں سے اوجھل ہوجائے گا۔ ایک بندہ (اللہ کا) لازم ہے کہ ان ص کے سامنے تقویٰ قائم رکھے اور اپنے دین پر قائم رہے۔ —…………………………… جاری ہے

Related Articles

One Comment

  1. انتہائی معلوماتی سلسلہ ہے ، لکھنے اور عام کرنے پر خوشی ہوئی،جاری رکھیں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!