حضرت عزیرعلیہ السلام

حضرت عزیرعلیہ السلام ۔(عربی: عزیر ، اوزیر) قرآن مجید ، سورہ توبہ آیت 9:30 میں مذکور ایک ایسی شخصیت ہیں جس میں کہا گیا ہے۔ کہ وہ یہودیوں کے ذریعہ ‘خدا کا بیٹا’ تصور کیےجاتے تھےاور اسی بنا پر اُن کی تعظیم کرتے تھے۔

اکثر اوقات حضرت عزیرعلیہ السلام کی شناخت بائبل کے عذرا سے کی جاتی ہے۔ جدید مورخین نے اس حوالہ کو ‘خفیہ’ قرار دیا ہے ۔ کیونکہ یہودیوں کے ذرائع میں اس طرح کے نظریات نہیں پائے جاتے ہیں۔ اسلامی اسکالرز نے مختلف طریقوں سے قرآنی حوالہ کی ترجمانی کی ہے ۔ کچھ کی وضاحت کے ساتھ کہ یہودیوں کے ایک مخصوص گروہ کی طرف اشارہ کیا گیا ہے۔

ابن کثیر کے مطابق

حضرت عزیرعلیہ السلام بادشاہ سلیمان کے وقت اور بپتسمہ دینے والے جان کے والد زکریا کے زمانے میں رہے۔ بعض قرآنی مفسرین حضرت عزیرعلیہ السلام کو ایک عالم دین کی حیثیت سے دیکھتے تھے۔ جو لوگوں کو خدا کے بھولےہوئے قوانین کی تعلیم دینے کی کوشش کرتے تھے۔ حضرت عزیرعلیہ السلام کو اس شخص کی قرآنی کہانی کے مرکزی کردار کے طور پر پہچان لیا جاتا ہے۔ جو سو سال سوئے (2: 259)۔

سال 1906کے یہودی انسائیکلوپیڈیا

سال 1906کے یہودی انسائیکلوپیڈیا کے مصنفین ۔یہودیت میں حضرت عزیرعلیہ السلام کی تعظیم کے لئے قرآنی حوالہ کو ایک ‘ناروا استعارہ’ کے طور پر دیکھتے ہیں۔ کچھ جدید مورخین نے اس نظریہ کی حمایت کی ہے۔ کہ عرب کے ایک یہودی فرقے نے حضرت عزیرعلیہ السلام کی تعظیم کرنے کی حد تک اس کی پوجا کی۔ گورڈن ڈارنیل نیوبی نے مشورہ دیا ہے ۔کہ قرآنی اظہار نے حجرا کے یہودیوں کے ذریعہ بیز ایلوم (خدا کے بیٹے) میں سے ایک کے طور پر حضرت عزیرعلیہ السلام کے ممکنہ عہد کی عکاسی کی ہے۔

قرآنی سیاق و سباق

قرآن مجید میں یہ بیان کیا گیا ہے کہ یہودیوں نے حضرت عزیرعلیہ السلام کو خدا کا بیٹا قرار دیا۔

یہودی حضرت عزیرعلیہ السلام کو اللہ کا بیٹا کہتے ہیں ، اور عیسائی مسیح کو اللہ کا بیٹا کہتے ہیں۔ یہ ان کے منہ سے کہاوت ہے۔

اللہ ان کو ختم کردے: وہ حق سے کیسے بھٹکے ہوئے ہیں! (قرآن 9:30)

یہ آیت مدینہ کی یہودی جماعت کے ساتھ مذہبی تنازعات کے تناظر میں واقع ہے۔ قرآن مجید خدا کی مطلق الوہیت پر زور دیتا ہے ۔اور کسی بھی شخص کو اپنے ساتھ شرک کرنے کے خلاف انتباہ کرتا ہے۔ یہ اس وقت کے یہودی اور عیسائی رہنماؤں کی مزید مذمت کرتا ہے ۔کہ وہ عوام کو ‘ان کے پجاریوں اور ان کے لنگروں کو خدا کی تضحیک کرنے میں ان کا مالک سمجھنے میں دھوکہ دیتے ہیں۔

اسلامی روایت اور ادب

کچھ اسلامی نصوص میں ۔ حضرت عزیرعلیہ السلام کی شناخت اس شخص کے طور پر کی گئی ہے۔ جس کا ذکر قرآن 2: 259 میں کیا گیا ہے
جن کی مثال ایسے ہے جو ایک بستی سے گزرتے ہیں۔ اور دیکھتےہیں۔ کہ سب اس کی چھتوں تک کھنڈر ہوچکا ہے

انہوں نے کہا: ‘اوہ! خدا اس کی موت کے بعد اسے (ہمیشہ کے لئے) کس طرح زندہ کرے گا؟ لیکن خدا نے انہیں سو سال مردہ کیا ، پھر زندہ کیا۔ آپ نے فرمایا: ‘تو کب تک ٹھہرتا رہا؟’ اس نے کہا: (شاید) ایک دن یا دن کا کچھ حصہ۔ ‘ انہوں نے کہا: نہیں ، آپ نے اس طرح سو سال گزارے۔ لیکن اپنے کھانے پینے کو دیکھو۔ وہ عمر کی کوئی علامت نہیں دکھاتے۔

اور اپنے گدھے کو دیکھو: اور ہم لوگوں سے آپ کے لئے نشانیاں بنائیں ۔کہ ، ہڈیوں کو اور دیکھیں کہ ہم ان کو کس طرح اکٹھا کرتے ہیں۔ اور انہیں گوشت سے ملبوس کرتے ہیں۔ جب اسے واضح طور پر ظاہر کیا گیا تو

اس نے کہا: ‘میں جانتا ہوں کہ خدا ہر چیز پر قادر ہے۔’ (قرآن 2: 259)

سن 1583 میں عثمانی سلطان مراد سوم کے لئے وقف کردہ تاریخ کے متن۔ زبد التوریخ ، یروشلم کی تباہی پر حضرت عزیرعلیہ السلام کے غم کی ایک داستان بیان کرتا ہے۔ کہا جاتا ہے۔ کہ ان کا غم اتنا بڑا تھا کہ خدا نے یروشلم کی تعمیر نو کے بعد ان کی جان لے لی اور انہیں دوبارہ زندہ کیا۔

کلاسیکی قرآنی اصول کے مطابق

ابن کثیر ، جب حضرت عزیرعلیہ السلام نے سوال کیا۔ کہ قیامت کے دن قیامت کیسے ہوگی ، خدا نے انہیں مرنے کے بہت سال بعد اسے زندہ کیا۔ وہ اپنے زندہ گدھے پر سوار ہوئےاور اپنے آبائی مقام میں داخل ہوئے۔ لیکن لوگوں نے انہیں نہ پہچانا۔ اور نہ ہی ان کے گھر والوں نے ، سوائے اس نوکرانی کے ، جو اب بوڑھی اندھی عورت تھی۔ اس نے خدا سے دعا کی کہ وہ اس کے اندھے پن کا علاج کرے اور وہ پھر دیکھ سکے۔

وہ اپنے بیٹے سے ملتے ہیں ۔جس نے انہیں کندھوں کے درمیان تل سے پہچان لیا تھا اور وہ حضرت عزیرعلیہ السلام سےعمر میں بڑا تھا۔ اس کے بعد حضرت عزیرعلیہ السلام تورات کی زندہ بچ جانے والی کاپی تلاش کرنے کے لئے لے گئے کیونکہ باقیوں کو نبو کد نضر نے جلایا تھا۔ لہذا حضرت عزیرعلیہ السلام کے پاس تورات کی ایک نئی کاپی تھی جو انہوں نے پہل سے ہی حفظ کی تھی۔ اس طرح انہوں نے بنی اسرائیل میں تورات کی تزئین و آرائش کی۔

ابن کثیر نے ذکر کیا ہے کہ

ابن کثیر نے ذکر کیا ہے کہ “اور ہم لوگوں کو آپ کے لئے ایک نشان بنا سکتے ہیں” کے فقرے میں یہ علامت تھی کہ وہ اپنے بچوں سے چھوٹے تھے۔ اس معجزہ کے بعد ، ابن کثیر لکھتے ہیں کہ یہودیوں نے یہ دعوی کرنا شروع کیا کہ حضرت عزیرعلیہ السلام’خدا کا بیٹا’ تھا۔

یہودی ان کو نہایت عقیدت و احترام کے ساتھ اپنے صحیفوں کا احیاء قرار دیتے تھے جو حضرت سلیمان کی وفات کے بعد بابل میں ان کی قید کے دوران ضائع ہوئے تھے۔ اتنا کہ انہوں نے اپنی قانون ، اپنی روایات اور عبرانی زبان ، اپنی قومی زبان کا سارا علم کھو دیا تھا۔ پھر یہ حضرت عزیرعلیہ السلام ہی تھے جنہوں نے پرانے عہد نامے کو دوبارہ لکھا اور قانون کو زندہ کیا۔ اسی لئے انہوں نے اس کی تعظیم میں بہت ہی مبالغہ آمیز زبان کا استعمال کیا جس نے کچھ یہودی فرقوں کو گمراہ کرکے انہیں ‘خدا کا بیٹا’ بنایا

تاریخی تجزیہ

قرآنی دعویٰ ہے کہ یہودی عذرا کو ‘خدا کا بیٹا’ مانتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں