شوبز

خواتین کی حفاظت: آج کے دور میں ایک شک

اکیسویں صدی میں۔ بہت ساری ٹیکنالوجیز دن بدن تیار ہورہی ہیں اور بہت ساری چیزیں ہمارے سائنس دانوں کیذریعہ ایجاد ہو رہی ہیں۔ یہاں تک کہ ایک فیلڈ بھی باقی نہیں ہے جہاں ہم کامیاب نہیں ہوسکتے ہیں۔ کھیلوں میں ، خلا میں اور بہت کچھ۔ اور زیادہ دلچسپ بات یہ ہے کہ خواتین ہر شعبے میں پیچھے نہیں ہیں۔ وہ مقابلہ مرد دیتے ہیں۔

ساکشی ملک ، پی وی سندھو ، ثانیہ مرزا ، جھولن دیوی کھیلوں میں خواتین کی شبیہہ ہیں۔ تسور چاولا ، سنیتا ولیمز اور ایسی بہت سی خواتین اپنے خلائی مشنوں میں اپنے اپنے شعبوں میں عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کررہی ہیں۔ لیکن یہ شرم کی بات ہے کہ ہم انہیں مناسب سکیورٹی نہیں دے رہے ہیں۔

جرائم جو آج بڑھ رہے ہیں خصوصا خواتین کے خلاف۔ نیشنل کرائم ریکارڈ بیورو کے تازہ ترین اعداد و شمار میں پچھلے کچھ سالوں کے دوران عصمت دری کے واقعات میں 12-15 فیصد کا اضافہ ہوا ہے جبکہ دیگر جرائم میں 3-5 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ اگر ہم صرف شہر کے لحاظ سے فیصد لیں۔ بنگلور اور پونے میں خواتین کے خلاف جرائم میں اضافہ ہورہا ہے۔ سب سے زیادہ عصمت دری والی ریاستوں میں مدھیہ پردیش (4،882) ، اتر پردیش (4،816) اور مہاراشٹرا (4،189) تھے۔

حکومت بہت سے قوانین نافذ کرتی ہے اور اب ان کو نافذ کرتی ہے۔ لیکن خواتین کے خلاف جرائم میں کمی کیوں نہیں؟ کیونکہ حکومت کی جانب سے مناسب سہولیات فراہم نہیں کی جارہی ہیں۔ 1090 خواتین کے لئے ایک ہیلپ لائن موجود ہے لیکن یہ کبھی بھی قابل رسائی یا مصروف نہیں رہتی ہے۔ اور حکومت کی طرف سے مجرموں کو سخت سے سخت سزا نہ دیں۔ جیسا کہ ہم دوسرے ممالک کے بارے میں بات کرتے ہیں۔ ملائشیا میں ، عصمت دری کے مجرم نے سعودی عرب میں موت کی تعریف کی ہے ، اس نے جرائم پیشہ افراد کے ساتھ ساتھ بہت سارے دوسرے ممالک کو بھیانک سزاؤں کی سزا دے کر اس کے تناسب کاٹ ڈالے ہیں۔ لیکن یہ بہت ہی حیرت کی بات ہے کہ ہمارے ملک کا رواج یہ ہے کہ جیلیں ، عدالتیں ، تاریخ ، احتجاج ، فسادات اور آخر کار رہائی ملتی ہے۔

ہم خواتین کے خلاف جرائم کب ختم کریں گے؟ اب ہم امید سے محروم ہیں کہ ہماری خواتین کو بھی اپنے روزمرہ کے معمولات میں بہت سی مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ تشدد ، عصمت دری ، مار پیٹ ، عصمت دری ، چھیڑ چھاڑ۔ یہ بہت خطرناک ہے کہ ہماری حکومت کچھ نہیں کررہی ہے جس کی وجہ سے وہ روزانہ کی بنیاد پر ایکشن لیتے ہیں۔ آئے دن عصمت دری کی تعداد میں اضافہ ہوتا جارہا ہے۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ عصمت دری کے الزام میں ان کے نجی حصے منقطع کردیئے جاتے ہیں۔ یہ ان کے لئے بہترین سزا ہے۔

کوئی انصاف نہیں تازہ ترین جرم کٹوا ، انauو میں ہوا جہاں ایک لڑکی کے ساتھ زیادتی کی گئی تھی اور جب اس کے والد شکایت درج کروانے پولیس اسٹیشن گئے تھے تو اسے سیاہ اور نیلے رنگ سے پیٹا گیا تھا اور اس کی موت ہوگئی تھی۔ یہ ہمارا ملک ہے۔ فحاشی بھی خواتین کے بارے میں برے ارادوں کو مجبور کرتی ہے۔ تو ، پھر بھی یہ سوال اٹھائیں کہ کیا خواتین محفوظ ہیں یا نہیں؟ جواب نہیں ہے!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
نوٹ: اگر آپ اپنی پروڈکٹس،سروسز یا آفرزکا مفت اشتہار لگوانا چاہتے ہیں تو نیوزفلیکس ٹیم، عوام تک آپ کا پیغام پہنچانےکا موقع فراہم کر رہی ہے. شکریہ_ اپنا پیغام یہاں لکھیں
error: Content is protected !!

Adblocker Detected

Note: Turn Off the AdBlocker For this Site