اسلام

اسلام میں خواتین کی عزت افزائی اور سوشل میڈیا پر ہراساں کرنے کے درمیان رابطہ

نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم کی ولادت کے وقت عرب میں خواتین کو بہت کم مراعات اور حقوق حاصل تھے۔ چونکہ محرومیوں کے اوقات میں شیرخوار بچیوں کو زندہ دفن کرنا غیر معمولی بات نہیں تھی یہاں تک کہ جاہل معاشرے کو بچیوں کو سانس لینے کےحق سے بھی شکوہ تھا۔ پیغمبر اسلام کے انقلاب کا ایک حصہ بچوں کی ہلاکت کے خاتمے اور خواتین کے مخصوص حقوق کو بھی اُجاگر کرنا تھا اسلام سکھاتا ہے کہ خدا کے سامنے مرد اور عورت برابر ہیں۔ خواتین کو خدا کی طرف سے منظور شدہ وراثت ، معاشرتی اور شادی کے حقوق ملتے ہیں بشمول کسی پیش کش کو مسترد کرنے اور طلاق دینے کا حق بھی۔
پیغمر اسلام نے اپنی زندگی میں معاشرے میں خواتین کی پوزیشن کو مقام , وقار اور احترام کے ساتھ بہتر بنایا ہے۔جب بھی جنابِ فاطمہ ع تشریف لائیں آپ تعظیما کھڑے ہو جاتے بہت سارے جدید مسلمان آپکی اس مثال کا حوالہ دیتے ہوئے خواتین کے حقوق کے لئے دباؤ ڈالتے ہیں۔
جنسی تشدد کا اطلاق تقریبا ہر معاشرے میں ہوتا ہے سوشل میڈیا پر خواتین کو تبصرے اور مختلف حربوں سے بلیک میل اور ہراساں کیا جاتاہے۔ زیادہ تر مرد حضرات خواتین کی ایک خطرناک عسکریت پسند کی طرح فیس بک انسٹاگرام وغیرہ پر توہین اور تضحیک کرتے نظر آتے ہیں۔خواتین کے خلاف آن لائن “تشدد” فیس بک پر سب سے عام ہے- ایک حالیہ تحقیق میں دنیا کے 20 سے زیادہ ممالک میں لڑکیوں اور خواتین کے خلاف بڑھتے ہوئے آن لائن تشدد کے چونکانے والے اکاؤنٹس کا انکشاف ہوا ہے جس میں واضح رپورٹنگ ، فحش نگاری ، سائبر ہراساں کرنا اور انٹرنیٹ کے غلط استعمال کی دیگر اقسام شامل ہیں۔
فیس بُک کے ذریعے دوستی اور جنسی تشدد کا تناسب دُنیا میں 39 ٪ انسٹاگرام23 ٪ واٹس ایپ 14 ٪ اسنیپ چیٹ 10 ٪ ٹویٹویٹر 9 ٪- واٹس ایپ ، فیس بک اور انسٹاگرام انسانی مواصلات کے لئے غیر معمولی چیزیں ہیں ان کو مثبت مقاصد کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے لیکن ساتھ ہی وہ سنگین خطرات کا اصل ذریعہ ہیں جو بعد میں دوسری خطرناک بیماریوں کا سبب بنتے ہیں۔
بدقسمتی سے ، اصل شکار یا زیادتی کرنے والا مرد ہے ، لہذا لڑکیوں اور عورتوں کو مردوں کی تعریف پوشیدہ مقصد کو سمجھنے کے لئے فہم ہونا چاہئے –
یقینا ہر چیز کا اپنا مثبت اور منفی اثر ہوتا ہے لیکن سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اس سلوک سے کیسے بچا جائے؟ اگر مرد اور خواتین کے مابین اعتدال پسندی اور تعلقات کے اسلامی قوانین کا احترام کیا جاتا ہے تو جنسی استحصال یا ہراساں نہیں ہوگا۔اسلام میں عورت کے مقام کے بارے میں مروجہ نظریہ یہ ہے کہ خواتین آزادی اور مساوات سے محروم ہیں۔ یہ یا تو اسلام سے لاعلمی یا اسلام مخالف نظریہ اور متعصبانہ میڈیا کے متعصبانہ پروپیگنڈے کا نتیجہ ہے۔ حقیقت اس کے بالکل برعکس ہے
یہاں کچھ نام نہاد شاندار تہذیبوں میں اسلام سے قبل خواتین کو دیئے گئے کردار کے بارے میں بات کرنا ضروری ہے ۔ مثال کے طور پر ایک عورت “پنڈورا” کو یونانی داستانوں میں تمام برائیوں کی جڑ سمجھا جاتا تھا۔ یونانیوں نے فن کے نام پر خواتین کو اس انداز میں پیش کیا کہ بے لگام جنسی تعلقات کی حوصلہ افزائی کی گئی۔جب بات عیسائیت کی ہوئی تو کرسوسٹوم کا کہنا ہے کہ “عورت ایک ناگزیر برائی ، ایک لذت آفت اور ایک پرکشش مصیبت ہے۔”
” ارسطو نے کہا “خواتین کی حالت بدصورت ہے۔”
عربوں کا بچیوں کو زندہ دفن کر کے قتل کرنے کا عجیب ربط آج بھی سوشل میڈیا جیسے واٹس ایپ ، انسٹاگرام اور فیس بک کےذریعے ہراساں کرکے قتل کرنے سے ملتا جلتا ہے يا پھر عصمتوں کو پامال کرنا ۔ بس قتل و غارت گری وہی ہے جو جاہل عربوں اور آج کی جدید دنیا میں ہے مگر صرف قتل کے حربوں اور طریقوں میں فرق ہے۔
اسلام میں عورتوں کو عزت ، خواتین کی سربلندی ، ان کی عظمت ، ان کو ہر چیز پر مکمل حقوق دینے ان کے دکھ کو مٹانے اور مصیبت ، عدم استحکام ، زحمت ، تعصب ، دھمکی اور تمام خوفناک چیزوں سے بچانے کے لئے کیا گیا تھا۔حوا کی بیٹیوں کی عظمت کو ختم کرنے کے لئے مسلمان ہونے کے ناطے سوشل میڈیا پر کوئی اذیت آمیز ایندھن بننے سے اجتناب کریں – اگر اسلام خواتین کی حفاظت کرتا ہے تو پھر کچھ نام نہاد مسلمان اور لوگ خواتین کو اپنے تعصبات سے دوچار کرتے ہیں اور یہ تعصبات اور ناپاک عزائم انسانیت کے انتشار میں بدل جاتے ہیں۔ ہم اس طرح کی مہمات سے گریز کرکے اس شیطانی دائرے کو توڑ سکتے ہیں۔
چنانچہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم نے خواتین کے لئے احترام اور عقیدت کا اظہار کیا ۔ دوسری طرف فیس بک ، واٹس ایپ اور انسٹاگرام کے ذریعہ ، لوگ خواتین کو دھونس دھمکیاں دے کر عزت چھیننا چاہتے ہیں۔ محض پیغمبر اکرم کی تعلیمات سے پرہیز کرنا بہت خطرناک ہوسکتا ہے۔ اگر ہم اسلامی تعلیمات کو مضبوطی سے برقرار رکھتے ہیں تو خواتین کو ہراساں کرنے کے لئے اس سوشل میڈیا مہم کو روکنا ممکن ہے۔

One Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
نوٹ: اگر آپ اپنی پروڈکٹس،سروسز یا آفرزکا مفت اشتہار لگوانا چاہتے ہیں تو نیوزفلیکس ٹیم، عوام تک آپ کا پیغام پہنچانےکا موقع فراہم کر رہی ہے. شکریہ_ اپنا پیغام یہاں لکھیں
error: Content is protected !!

Adblocker Detected

Note: Turn Off the AdBlocker For this Site