اسلام

حضرت خدیجہ ؓبنت خویلد

غلط فہمی ساری دنیا میں ہے ، اسی طرح اسلام کے تصورات کے بارے میں بھی۔ بہت سے لوگوں کے نزدیک ، اسلام ایک ڈراؤنا مذہب ہے جس نے مسلم خواتین کو مظلوم اور ناخواندہ چھوڑ دیا ہے۔
مجھے نہیں لگتا کہ ہمیں روایت پسند کو بے بنیاد کرنا چاہئے۔ وہ محض جو کچھ جانتے ہیں اس پر ردعمل دے رہے ہیں۔ مجھے یقین ہے کہ لوگوں میں اسلام میں وقار والی خواتین کے بارے میں جتنا زیادہ صحیح علم ہے ، اتنا ہی وہ اس کی زندگی کے طرز زندگی کی آفاقی خوبصورتی کی وجہ سے متوجہ ہوں گے۔

میری تحریر کے ذریعے ، میں الجھنوں اور گمشدہ لوگوں کو حقیقی اسلام کا صحیح علم لانا چاہتا ہوں۔ اس نے اسلام کو آزادی ، معاشی حقوق ، سیاسی حقوق اور اپنی رائے کے اظہار کا ہر حق دیا ہے۔ اسلام انہیں جائیداد کا مالک بنانے ، کاروبار کرنے اور معاشرے کی خدمت میں رہنا چاہتے ہیں۔ میں خدیجہ بنت خوولید رضی اللہ عنہ نے جو تاریخ کے دائرے کو متاثر کیا اس کے اہم کاموں کا ایک مختصر عکس پیش کر رہا ہوں۔

خدیجہ (رضی اللہ عنہ) واقعتا ایک عظیم ، شائستہ اور عمدہ خاتون تھیں۔ حضرت محمد (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی پہلی اور سب سے پیاری بیوی ، جب جبرئیل (فرشتہ جبریل) کے ذریعہ ان کے نازل ہونے کے بعد پہلی قبول کی گئیں۔ وہ ہمیں مومنوں کی ماں (ام المومنین) کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ خدیجہ (رضی اللہ عنہ) دنیا کی عظیم خواتین میں سے ایک تھیں اور اس کا درجہ حضرت مسیح / عیسی علیہ السلام کی والدہ ، مریم (مریم) کی طرح بلند ہے۔ حضرت محمد (ﷺ) اس کے بارے میں فرماتے ہیں: دنیا کی چار عظیم ترین خواتین ہیں – خدیجہ بنت خوولید ، فیمہ بنت محمد ، مریم بنت عمران اور آسیہ بنت مظہر (فرہ کی اہلیہ)۔

خدیجتہ الکبرا (رضی اللہ عنہ) نے اپنے فرد میں وہ تمام صفات جو کہ کمال میں اضافے کے ساتھ مل گ. ہیں۔ اسلام میں اس بابرکت خاتون کی شراکت ناقابل فراموش ہے۔ انہوں نے اپنے والد خوولید کی موت کے بعد خاندانی کاروبار کا چارج سنبھال لیا۔ اس کی دانشمندی نے تیزی سے کاروبار کو بڑھایا۔ بڑے عورت نے ہمیشہ غریبوں ، بیواؤں ، یتیموں ، بیماروں اور معذور افراد کی مدد کی۔

جب اس کی شادی حضرت محمدؐ سے ہوئی ، تو وہ اپنے ساتھ وہ سب کچھ لے آئی جو اس نے اپنی ذہانت ، تدبر اور دور اندیشی کے ذریعہ تیار کی ہے۔ شادی کے بعد خدیجہ کی (رضي اللہ عنه) بنیادی توجہ اپنے شوہر کی بہترین ساتھی بننا تھی۔ خدیجہ (رضی اللہ عنہ) نے بڑی محبت اور عقیدت کے ساتھ حضرت محمد (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) پر اپنی دولت کا مکمل اختیار حاصل کیا ۔

جب اسلام اپنے دشمنوں کے بہت زیادہ دباؤ میں آیا تو ، خدیجہ (رضي الله عنه) نے اپنی تمام راحتوں کو قربان کردیا۔ وہ ہمیشہ اپنی زندگی کے مشکل لمحات اور اس کے قبیلے کے دوران اپنے شوہر کا موقف تیار کرنے اور زندگی کی مشکلات کو ان کے ساتھ بانٹنے میں ترجیح دیتی ہے۔ وہ عیش و عشرت کے بیچ میں پرورش پائی ، پھر بھی اس نے اسلام کی راہ میں جدوجہد اور قربانیوں کی زندگی کے بارے میں کبھی شکایت نہیں کی۔

وہ اللہ کے آخری رسول کی پہلی بیوی تھیں۔ وہ اسلام کی پہلی خواتین مومن تھیں۔ وہ پہلی بشر تھیں جنہوں نے اعلان کیا کہ خالق صرف ایک ہے اور محمد (ﷺ) اس کی رسول تھے۔

حضرت خدیجہ (رضی اللہ عنہ) کو حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی نظر میں بڑی اہمیت حاصل تھی۔ اعلانِ اسلام کے دسویں سال کی 10 رمضان المبارک کو ان کی وفات رسول اکرمؐ اور ان کے مشن کے لئے ایک بہت بڑا دھچکا تھا۔ اس نے اپنی زندگی کے 28 سال اور وہ تمام چیزیں جو وہ پیغمبر اسلام (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے پاس تھی اسلام کے مقصد میں خرچ کرنے کے لئے دے چکی ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
نوٹ: اگر آپ اپنی پروڈکٹس،سروسز یا آفرزکا مفت اشتہار لگوانا چاہتے ہیں تو نیوزفلیکس ٹیم، عوام تک آپ کا پیغام پہنچانےکا موقع فراہم کر رہی ہے. شکریہ_ اپنا پیغام یہاں لکھیں
error: Content is protected !!

Adblocker Detected

Note: Turn Off the AdBlocker For this Site