جب بھی میں اکیلی ہو تی ہوں

جب بھی میں اکیلی ہوتی ہوں
نزہت قریشی
جب بھی میں اکیلی ہوتی ہوں
سوچتی ہی رہتی ہوں
کچھ خوابوں کی باتیں
کچھ چہروں کی یادیں
اور جب آہٹ آتی ہے کہیں سے
دیکھ کے میں چونک سی جاتی ہوں
پیچھے یہ کون لپک رہا ہے میرے
ارے یہ تو میرا ہی سایا ہے
اور میں دھیرے سے ہنس دیتی ہوں
جب بھی میں اکیلی ہوتی ہوں
ہر انسان اپنی سوچوں میں گُم اور مگن رہتا ہے ۔ زندگی کے مسائل ہمیں اتنی اجازت نہیں دیتے کہ ہم سوچتے رہیں اپنی خوشگوار یادوں میں کھوئے رہیں یہ ہمیں کھینچ کر واپس ان تلخ حقیقت کی دنیا میں لے آتے ہیں ۔ لیکن یہ سوچیں تو غم کے طوفانوں اور مُصیبتوں کے سمندر میں بھی ایک جزیرے کی طرح نمودار ہوتی ہیں اور بس انسان کو ایک پناہ گاہ مل جاتی ہے۔ ان عذابوں اور حوادث کے تھپیڑوں سے بچنے کے لیے ہم اس جزیرے پر پناہ لیتے ہیں۔
انسان کسی بھی گروہ سے تعلق رکھتا ہو، اسے دکھوں سے الگ نہیں، یہ الگ بات ہے کسی کو کم اور کسی کو زیادہ دکھوں سے واسطہ پڑتا ہے اور زندگی اسے پہاڑ نظر آنے لگتی ہے۔ وہ چاہتا ہے کہ مصائب و آلام سے چھٹکارا حاصل کر ے مگر وہ اس طرح گلے کا ہار بن جاتی ہیں کہ روایتی کمبل کی طرح چھوڑنے کا نام نہیں لیتیں۔ گلے کا ہار بننے والے ان دکھوں کا کوئی سر پیر نہیں ہوتا، کسی بھی پہلو سے وہ زندگی کے لئے عذاب بن سکتی ہیں۔ مسلسل ناکامیاں اور حوصلہ شکن محرومیاں انہیں جنم دیتی ہیں اور غم کے اندھیرے غاروں میں جاگراتی ہیں۔ اقتصادی بدحالی، معاشرتی ناہمواری، عدم مساوات، ظلم و ستم، ناانصافی اور ریاستی جبر بھی اس کے اسباب میں سے ہیں، جس سے انسان کا ذہنی توازن بگڑ جاتا ہے اور جسمانی قوت اس طرح متاثر ہوتی ہے کہ وہ صدیوں کا بیمار نظر آنے لگتا ہے۔ اس دکھ بھری دنیا کے سمندر میں تنکے کی طرح بہنے کے باوجود انسان ہاتھ پاؤں ضرور مارتا ہے اور یہ کوشش کرتا رہتا ہے کہ دکھوں سے نجات پالے اور غموں کے بھنور سے باہر آ جائے۔

دُنیا میں کوئی انسان بھی ایسا نہیں ہے جس کی زندگی میں کوئی دُکھ ، کوئی غم ، کوئی پریشانی یا کوئی فکر نہ ہو ۔ اب تو چھوٹے بچوں سے بھی بات کریں۔ وہ اپنی پریشانی میں ہوتے ہیں اور جب یہ بات اُن سے سُننے کو ملتی ہے کہ اتنی زیادہ ٹینشنز ہیں تو حیرت بھی ہوتی ہے اور ہنسی بھی آتی ہے کہ ان کی بھی ٹینشنز ہیں۔ مگر حقیقت یہی ہے کہ ایسا ہی ہے۔ کیونکہ اس کے ذمہ دار بھی ہم ہی ہیں۔ ابھی ان کی کھیلنے کودنے کی عمر ہوتی ہے اور ہم ان پر کتابوں کا بوجھ لاد کر سکول ( جیل ) بھیج دیتے ہیں ۔ ان کے وزن سے بھاری کتابوں کا وزن جو وہ لاد کر پھرتے ہیں اور پھر ہم سوچتے ہیں کہ بھلا ان کو بھی کوئی ٹینشن ہے؟
ہم دُنیا کی ہر ٹینشن سے نجات حاصل کرنا چاہتے ہیں۔ دن رات اس ٹینشن میں رہتے ہیں کہ آخر ان ٹینشنز کو کیسے دُور کریں ۔ ہے نا یہ ٹینشن کی بات؟
میں بھی یہی سوچتی رہتی ہوں
جب بھی میں اکیلی ہوتی ہوں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *