شوبز

سوشل میڈیا ڈپریشن میں کیا کردار ادا کرتا ہے؟

ڈپریشن، ہم جانتے ہیں کہ کم و بیش ہر شخص نے یہ لفظ ایک بار سنا ہے، لیکن یہ دراصل کیا ہے اور سوشل میڈیا کے ذریعے ہم پر کیسے اثر انداز ہوتا ہے؟ آئیے معلوم کرتے ہیں!

ڈپریشن (افسردگی کی بڑی خرابی) ایک عام اور سنگین طبی بیماری ہے جو منفی طور پر متاثر کرتی ہے کہ آپ کیسا محسوس کرتے ہیں، آپ کے سوچنے کا طریقہ اور آپ کیسے کام کرتے ہیں؟ڈپریشن ایک ذہنی بیماری ہے جس میں دکھ میں مبتلا شخص یہ یقین کرتا ہے کہ وہ ناکامی کی طرف جا رہا ہے اورکامیابی کی طرف کوئی راستہ نہیں ہے۔ ہم بہت سے لوگوں کو اس میں مبتلا دیکھتے ہیں۔ اس کے باوجود ہم اس شخص کو مدد کا ہاتھ دینے میں شرم محسوس کرتے ہیں کیونکہ اس بیماری کے ساتھ سماجی بدنامیاں جڑی ہوئی ہیں۔

کیا سوشل میڈیا واقعی لوگوں میں ڈپریشن کے مسائل میں اپنا حصہ دے رہا ہے؟ ٹھیک ہے، جواب ہے، ہاں!سوشل میڈیا نے واقعی بہت سے مسائل کو حل کرنے میں مدد کی ہے۔ ویسے یہ ایک پرامید نقطہ نظر ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں، لیکن، سوشل میڈیا کے کچھ منفی پہلو بھی ہیں۔

کیا آپ جاننا چاہتے ہیں کہ کیسے؟

ویسے، اس کا جواب اب ایک دن ہے ہم کئی لوگوں کو اپنے مطالعے سے متعلق کامیابیوں، مختلف مواقع اور تقریبات کے بارے میں پوسٹ کرکے اپنی ٹائم لائن میں اضافہ کرتے دیکھ سکتے ہیں۔ اس طرح کی چیزیں بہت زیادہ مسائل میں اضافہ کر سکتی ہیں۔ کیونکہ ہم سب کو ایسی مراعات سے نوازا نہیں جاتا۔ مثال کے طور پر، ہر طالب علم کو گولڈ میڈل نہیں مل سکتا۔ اسی طرح ہر کوئی سالگرہ سے پہلے کی پارٹیوں میں بڑی چربی والی سالگرہ کی پارٹیاں نہیں کر سکتا۔ہم اپنے انسٹاگرام، واٹس ایپ، فیس بک ٹائم لائن پر اس طرح کی پوسٹس دیکھتے ہیں۔

تاہم سالگرہ سے پہلے اور سالگرہ کے بعد کی اس طرح کی تقریبات میں کوئی شک نہیں کہ یہ پیسے کا ضیاع ہے اور یہ بیکار تقریبات ہیں اور ہمیں یقینی طور پر اپنا حلال پیسہ ان پر خرچ نہیں کرنا چاہئے۔ویسے باقی پہلوؤں جیسے کہ کسی شخص کا زیادہ نمبر حاصل کرنا آپ کی ذہنی صلاحیت یا کام کرنے کی صلاحیت میں کام کرنے میں رکاوٹ کا سبب بنتا ہے، اس کا ایک ہی حل ہے کہ محنت کی جائے اور باقی کو اللہ تعالیٰ پر ڈال دیا جائے اور زہریلے لوگوں کو ایک طرف رکھ دیا جائے. ان روابط کو خاموش کرکے تمام زہریلے پن کو نظر انداز کریں جو آپ کو کسی بھی قسم کے خلل کا سبب بن رہے ہیں۔

اپنی ذہنی صحت پر توجہ مرکوز کریں

چاہے آپ وہ نمبر یا اسکور حاصل نہیں کر رہے ہیں جو آپ حاصل کرنا چاہتے تھے۔ کیا یہ ٹھیک ہے؟. صرف ایک بات اہم ہے کہ آپ کوشش کر رہے ہیں اور صرف یہی چیز اہم ہے۔ اور ایک دن آپ ضرور کامیاب ہو جائیں گے.اسی طرح بہت سے لوگ برانڈڈ کپڑے اور لوازمات لگا کر اپنی رقم دکھاتے ہیں جو لوگوں کے تناؤ کی سطح میں بھی اضافہ کرتا ہے۔ اس پہلو میں بھی بہت منفی اثرات ہیں۔ اسلام میں دکھاوی کو بھی حرام سمجھا جاتا ہے۔

ویسے، مذکورہ بالا مسائل کا حل یہ ہے کہ، سوشل میڈیا پر بھی ایک سماجی فاصلہ ہاں برقرار رکھیں۔ اگر کسی شخص کی سوشل میڈیا پوسٹس آپ کو تکلیف اور پریشان کر رہی ہیں۔ صرف خاموش یا اس شخص کو بلاک بھی.ہم زندگی میں کوئی منفی تغیر نہیں چاہتے ہیں۔ زہریلے لوگوں کو نظر انداز کریں۔ براہ کرم اس ایک بات کو ذہن میں رکھیں کہ غلط کمپنی میں ہونے سے بہتر ہے کہ تنہا رہنا بہتر ہے۔

دوسری بات یہ ہے کہ اگر آپ اب بھی افسردہ یا مایوس محسوس کرتے ہیں تو وہاں بہت سے ذہنی علاج موجود ہیں جو یقینا آپ کی مدد کر سکتے ہیں۔

اپنا 'میں' وقت تلاش کریں

جیسے کسی کے پاس ‘میں’ کا وقت ہو سکتا ہے جس میں وہ شخص اپنے مشاغل اور انتخاب کے مطابق وقت گزار سکتا ہے۔ تیسری بات یہ ہے کہ ایک خوش جار پیدا کرتا ہے۔ یہ ایک ایسی ہی حیرت انگیز تھراپی ہے کیونکہ اس کے لئے بہت زیادہ کوشش کی ضرورت نہیں ہے۔ اس تھراپی کا مطلب ہے ایک جار بنانا یا ایک الگ باکس سیٹ کرنا جس میں دن کے وقت اس کے ساتھ ہونے والی تمام اچھی سرگرمیوں کو شامل کرنا چاہئے۔ اگر اسے کچھ بھی سامان نہ ہو تو وہ اللہ ایس ڈبلیو ٹی کی طرف سے اسے دی گئی کوئی نعمت مثلا صاف پانی، گھر، کھانا وغیرہ شامل کر سکتا ہے۔ ایسے شخص میں اس بات کا احساس کیا جا سکتا ہے کہ وہ کتنا بابرکت ہے۔

چوتھی بات یہ ہے کہ سادہ یوگا اور صبح و شام کی چہل قدمی سے بھی مدد مل سکتی ہے۔اس طرح کے تمام علاج کا ذکر صرف اس بات کا اشارہ دینے کے لئے کیا جاتا ہے کہ اگر کوئی سوشل میڈیا کی لت اور اس سے وابستہ ایسے تمام مسائل جیسے ڈپریشن سے نجات حاصل کرنا چاہتا ہے تو مختلف سرگرمیوں کو اپنایا اور اس پر عمل کیا جاسکتا ہے۔اسی طرح نظر بد بھی اس مسئلے کی ایک بڑی وجہ ہے کیونکہ لوگ بھی اس سے متاثر ہو سکتے ہیں۔اس طرح اس میں کہا گیا ہے کہ دونوں فریق متاثر ہو سکتے ہیں۔

حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے فرمایا کہ” نظر بد حقیقی ہے اور کسی شخص کو پہاڑ کی چوٹی سے نیچے اتار سکتی ہے”۔

اس لئے لوگوں کو کسی بھی قسم کا سامان پوسٹ کرنے سے پہلے اور سوشل میڈیا پر لوگوں کی پیروی کرنے سے پہلے تمام پہلوؤں اور نتائج کو ذہن میں رکھنا چاہئے کیونکہ اس سے لوگ واقعی پریشان ہو سکتے ہیں۔

NewzFlex.Official

موجودہ دور میں انگریزی زبان کو بہت پذیرآئی حاصل ہوئی ہے۔ دنیا میں ۹۰ فیصد ویب سائٹس پر انگریزی زبان میں معلومات فراہم کی جاتی ہیں۔ لیکن پاکستان میں ۸۰سے ۹۰ فیصد لوگ ایسے ہیں. جن کو انگریزی زبان نہ تو پڑھنی آتی ہے۔ اور نہ ہی وہ انگریزی زبان کو سمجھ سکتے ہیں۔ لہذا، زیادہ تر صارفین ایسی ویب سائیٹس سے علم حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ اس لیے ہم نے اپنے زائرین کی آسانی کے لیے انگریزی اور اردو دونوں میں مواد شائع کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ جس سے ہمارےپاکستانی لوگ نہ صرف خبریں بآسانی پڑھ سکیں گے۔ بلکہ یہاں پر موجود مختلف کھیلوں اور تفریحوں پر مبنی مواد سے بھی فائدہ اٹھا سکیں گے۔ نیوز فلیکس پر بہترین رائٹرز اپنی سروسز فراہم کرتے ہیں۔ جن کا مقصد اپنے ملک کے نوجوانوں کی صلاحیتوں اور مہارتوں میں اضافہ کرنا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
نوٹ: اگر آپ اپنی پروڈکٹس،سروسز یا آفرزکا مفت اشتہار لگوانا چاہتے ہیں تو نیوزفلیکس ٹیم، عوام تک آپ کا پیغام پہنچانےکا موقع فراہم کر رہی ہے. شکریہ_ اپنا پیغام یہاں لکھیں
error: Content is protected !!

Adblocker Detected

Note: Turn Off the AdBlocker For this Site