عوام کی آواز

رضاکارانہ ، بلا معاوضہ خون کے عطیہ دہندگان کا عالمی دن (World Blood Donor Day)

عالمی بلڈ ڈونر ڈے (WBDD) ہر سال 14 جون کو دنیا بھر میں منایا جاتا ہے۔ یہ پروگرام 2005 میں پہلی مرتبہ، عالمی ادارہ صحت، ریڈ کراس اور انٹرنیشنل فیڈریشن آف ریڈ کریسنٹ سوسائٹی کے مشترکہ اقدام کے ذریعہ منعقد کیا گیا تھا۔عالمی بلڈ ڈونر ڈے عالمی سطح پر صحت عامہ کی 11 سرکاری مہموں میں سے ایک ہے۔  یہ دن منانے کا مقصد  خون اور خون کی مصنوعات کی ضرورت کے بارے میں عالمی سطح پرلوگوں میں شعور اجاگر کرنا اور قومی صحت کے نظام میں رضاکارانہ ، بلا معاوضہ خون کے عطیہ دہندگان  کا شکریہ ادا کرنا ہے۔ یہ دن حکومتوں اور قومی صحت کے حکام کو ایک مناسب موقع فراہم کرتا ہے تاکہ وہ مناسب وسائل مہیا کریں اور رضاکارانہ ، غیر معاوضہ خون عطیہ دہندگان سے خون کے عطیات جمع کرنے میں اضافے کے لئے  نظام اور انفراسٹرکچرس قائم کریں
 یہ دن کارل لینڈ اسٹائنر کی سالگرہ 14 جون ، 1868 کی مناسبت سے منایا جاتا ہے۔  لینڈ اسٹائنر کو اے بی او بلڈ گروپ کے نظام کی دریافت کرنے پر نوبل انعام دیا  گیا۔ جب کسی شخص کا حادثے یا بیماری کی وجہ سے آپریشن کے دوران خون ضائع ہوتا ہے تو اسے خون کی سخت ضرورت ہوتی ہے۔ ماضی میں اشد ضرورت کے وقت جب ایک شخص سے دوسرے میں خون منتقل کرنے کی کوشش کی جاتی تو اس کا نتیجہ اکثر خطرناک نکلتا۔ کارل لینڈ سٹائنر نے دریافت کیا کہ ایسا کیوں ہوتا ہے کہ جب مختلف لوگوں  کا خون ایک سے دوسرے کو منتقل کیا جاتا ہے توبعض اوقات خون کے خلیے جم جاتے ہیں۔ کارل لینڈ سٹائنر نے 1901 میں اس کی وضاحت کیلیے اپنا نظریہ پیش کیا کی کہ لوگوں کے خون کے خلیوں کی مختلف اقسام ہیں ، یعنی خون کے مختلف گروپس ہیں۔ اس دریافت کے نتیجے میں بلڈ گروپس کی مطابقت رکھنے والے لوگوں کے درمیان خون کی منتقلی ممکن ہو سکی۔
عالمی ادارہ صحت کے مطابق،محفوظ  اور صحت مند خون کی بروقت منتقلی ممکنہ طور پر کئی زندگیاں بچاسکتی ہے، لیکن بعض اوقات خطرناک امراض، زچگی اور دوران آپریشن کے وقت ضرورت مند مریضوں کو بروقت خون ملنا مشکل ہو جاتا ہے ایسے وقت میں خون کے عطیہ سے ان ضرورت مندوں کی زندگیوں کو بچایا جا سکتا ہے ۔ اس بات کو یقینی بنانے کے لئے کہ ہر ایک جس کو محفوظ خون کی ضرورت ہے وہ اس تک رسائی حاصل کرسکتا ہے ، تمام ممالک کو رضاکارانہ، بغیر معاوضہ عطیہ دہندگان کی ضرورت ہے جو باقاعدگی سے خون دیتے ہیں۔ کوویڈ 19 میں وبائی مرض کے دوران ، محدود نقل و حرکت اور دیگر چیلنجوں کے باوجود ، بہت سارے ممالک میں خون کے عطیہ دہندگان نے ایسے مریضوں کو خون اور پلازما کا عطیہ دینا جاری رکھا ہے جنہیں اشد ضرورت تھی۔ غیر معمولی بحران کے وقت کی یہ غیر معمولی کوشش عام اور ہنگامی اوقات میں خون کی محفوظ فراہمی کو یقینی بنانے میں منظم ، پرعزم رضاکارانہ ، غیر معاوضہ خون عطیہ دہندگان کے اہم کردار کو اجاگر کرتی ہے۔ لیکن یہ بھی جاننا ضروری ہے کہ خون کا عطیہ نہ صرف زندگیاں بچانے میں مدد دیتا ہے ، بلکہ اس سے عطیہ دہندگان کو صحت سے متعلق کچھ فوائد بھی حاصل ہوتے ہیں،
خون کے عطیہ سے وزن میں کمی
بروقت خون کا عطیہ وزن کم کرنے میں مدد کرتا ہے اور صحت مند افراد کی فٹنس کو بہتر بناتا ہے۔ کیلیفورنیا یونیورسٹی کے محققین کے مطابق ، ایک پنٹ خون یعنی 450 ملی لیٹر کا عطیہ آپ کے جسم کی تقریبا  650 کیلوری جلانے میں مدد کرتا ہے۔ لیکن صرف وزن کم کرنے کےلیے ہی خون دینے کی حوصلہ افزائی نہیں کی جانی چاہیے۔ صحت سے متعلق کسی بھی مسئلے سے بچنے کے لئے، خون کا عطیہ کرنے سے پہلے ڈاکٹر سے مشورہ بہت ضروری ہے۔
خون لونیت (hemochromatosis) کے مرض کو روکتا ہے
خون کا عطیہ کرنے سے خون لونیت کا خطرہ کم ہوسکتا ہے یا  اس کی نشوونما کو روکا جاسکتا ہے ، خون لونیت (hemochromatosis) ایسی حالت جس میں بافتوں میں فولاد کے اجزاء کا بڑھ جانا اور جمع ہو جانا جس کے نتیجہ میں جگر میں سختی اور ذیابیطس شکری ہو جاتی ہے۔ باقاعدگی سے خون کا عطیہ کرنے سے آئرن کا زیادہ بوجھ کم ہوسکتا ہے، لہذا یہ ھموچرومتوسس کو روکنے میں فائدہ مند ثابت ہوتا ہے۔ تاہم ، یہ یقینی بنانا ضروری ہے کہ خون عطیہ کرنے کی اہلیت کے لازمی معیارپر ڈونر ھموچرومتوسس  پورا اترتا ہو۔
دل کی بیماری کے خطرے میں کمی
باقاعدگی سے خون کا عطیہ کرنے سے آئرن کی سطح کو ملحوظ رکھا جاتا ہے، جو دل کی بیماری کا خطرہ کم کرنے کا ذریعہ ہے۔ خون کا عطیہ ، دل کے دورے ، فالج وغیرہ کے خطرات کو کم کرنے میں مدد گار ہوتا ہے۔
کینسر کے خطرے میں کمی
جسم میں آئرن کی ذیادتی کینسر کیوجہ بن سکتی ہے۔ خون کا عطیہ دے کر، آئرن کی مناسب مقدار کو برقرار رکھا جا سکتا ہے، اس طرح کینسر کے خطرے کو کم کیا جا سکتا ہے۔
خون کے نئے خلیوں کا پیدا ہونا
خون کا عطیہ نئے خون کے خلیوں کی تیاری کو تیز کرتا ہے۔ خون کا عطیہ کرنے کے بعد،  جسم کا نظام بون میرو کی مدد سے عطیہ کرنے کے 48 گھنٹوں کے اندر کام کرتا ہے۔ جس سے نئے خون کے خلیے تیار ہونا شروع ہو جاتے ہیں ۔ یہ نظام تمام گمشدہ سرخ خلیوں کی جگہ نئے خلیوں کو 30 سے ​​60 دن کی مدت میں تبدیل کردیتا ہے۔ لہذا ، خون کا عطیہ کرنا صحت کو برقرار رکھنے میں ثابت ہوتا ہے۔
ذہنی سکون میسر ہوتا ہے
 خون عطیہ کرنے سے نا صرف جسمانی فوائد حاصل ہوتے ہیں،بلکہ اس کا سب بڑا فائدہ  نفسیاتی پہلو سے بھی ہے۔ کسی ضرورت مند کے کام آنے کیلیے اپنے روزمرہ معمول سے نکل کر مدد کرنا نفسیاتی صحت  کیلیے بہت اچھا ہے ایسا کرنے سے انسان کو ذہنی سکون ملتا ہے۔ خون عطیہ کرنے کا مطلب یہ ہے کہ کسی کو کسی کی مدد کی اشد ضرورت ہوگی جس کی انہیں ضرورت ہے اور آپ ضرورت کے وقت کسی کی زندگی بچا رہے ہیں۔ اس طرح کے رضاکارانہ کام آپ کی نفسیاتی صحت کو مثبت انداز میں بہت متاثر کرتے ہیں۔

KASHIF ALI

“Don’t search for what you’re passionate about, serve others to make yourself passionate.”

2 Comments

  1. خون کی اہمیت صرف وہی لوگ سمجھ سکتے ہیں جنہیں اشد ضرورت پڑی ہو۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
نوٹ: اگر آپ اپنی پروڈکٹس،سروسز یا آفرزکا مفت اشتہار لگوانا چاہتے ہیں تو نیوزفلیکس ٹیم، عوام تک آپ کا پیغام پہنچانےکا موقع فراہم کر رہی ہے. شکریہ_ اپنا پیغام یہاں لکھیں
error: Content is protected !!

Adblocker Detected

Note: Turn Off the AdBlocker For this Site