Personal Growth

New Employment opportunities, a key requirement of time

روزگار کے نئے مواقع ، وقت کی اہم ضرورت

The employment sector around the world has also been hit hard in the wake of the epidemic and problems such as rising unemployment have emerged. Both the world’s developed and developing countries are struggling with unemployment because of the provision of employment opportunities and New Job creation is extremely helpful in keeping the economic and social cycle afloat.

In this regard, every country is trying to introduce the right policies for sustainable employment to move towards socio-economic recovery while dealing with the epidemic. For China, a country with a population of 1.4 billion, there should be more problems than the rest of the world. But good and timely policy-making in China is creating new employment opportunities and addressing the issue of unemployment is being dealt with. Most recently, the Chinese State Council approved the 14th Five-Year Plan (2021-2025) During this time a plan has been issued to increase employment. According to this plan, not only will more employment opportunities be brought to the fore but efforts will be made to provide quality employment to the people. The employment policy-making system for this purpose will be improved, training services for quality employment will be strengthened and comprehensive prosperity will be promoted.

The project demonstrates the commitment that the general employment situation in the country will stabilize by 2025 and employment standards. I will continue to improve. The plan states that effective measures will also effectively address structural issues, create more jobs for business startups, and significantly increase risk management capacity. Important of this project are the goals include continuing to expand employment capacity and promote the development of a resource-based market system. It is noteworthy that more than 55 million new civic jobs will be created across the country during this period. And Technical training will also be provided to those seeking employment under modern business models. The plan states that the country will subsidize vocational training sessions. It aims to improve the public employment service system, the people Increase income, and better protection of their rights and interests.

Companies will also fulfill their social obligations related to motherhood in the light of better employment policies. Employers are encouraged under ongoing efforts in this regard that they develop flexible rules for parental holidays or employment matters. China has always sought to take concrete steps to make sure stable employment. China is also adopting macro policies this year to promote employment, with a target of creating more than 11 million new civic jobs has been fixed. Sectors such as the financial sector, foreign trade, foreign investment, and domestic investment play a key role in this regard. The Chinese government seeks to protect jobs for its citizens, provide basic necessities of life, protect food and energy, and stabilize industrialization. And make sure effective governance at the supply chain and at the grassroots level, as they are directly related to the livelihood.

Meanwhile, China’s growing population is pointing to new market requirements for employment, which means that international businesses will have more opportunities to offer their services and products in China’s open market. Hello, It is also important that China maintains generally stable employment in the face of epidemics, thanks to economic recovery and support policies, and online and offline recruitment programs have become more popular. A total of 6.98 million new civic jobs in the first half of 2021 Companies are also recruiting more, with 63.5% of the country’s annual target. As business activity continues to gain momentum from the betterment of the anti-epidemic. Statistics also show that urban unemployment in the country the rate dropped from 5.5 percent in February to 5 percent in June, down 0.7 percentage points from June last year and the pre-epidemic level in June 2019.

To give job seekers greater access to job opportunities, China has also launched a special online recruitment campaign focusing on micro, small and medium enterprises, new infrastructure, e-sports, and agriculture. In this regard, more vocational education and guidance for young people are being provided to help college graduates. China strives to increase employment opportunities with the help of innovation and startups and sees other countries facing unemployment. From what can a large country as China learn from policy-making to deal with?

روزگار کے نئے مواقع ، وقت کی اہم ضرورت

دنیا بھر میں روزگار کا شعبہ بھی کرونا جیسی وبا کے تناظر میں شدید متاثر ہوا ہے- اور بڑھتی ہوئی بے روزگاری جیسے مسائل سامنے آئے ہیں۔ دنیا کے ترقی یافتہ اور ترقی پذیر دونوں ممالک روزگار کے مواقع کی فراہمی کی وجہ سے بے روزگاری کے ساتھ جدوجہد کر رہے ہیں اور نئی ملازمت کی تخلیق معاشی اور سماجی چکر کو جاری رکھنے میں انتہائی مددگار ہے۔اس سلسلے میں ، ہر ملک وبا سے نمٹنے کے دوران سماجی اور معاشی بحالی کی طرف بڑھنے کے لیے پائیدار روزگار کے لیے صحیح پالیسیاں متعارف کرانے کی کوشش کر رہا ہے۔ 1.4 ارب کی آبادی والے ملک چین کے لیے باقی دنیا سے زیادہ مسائل ہونے چاہئیں۔

لیکن چین میں اچھی اور بروقت پالیسی سازی روزگار کے نئے مواقع پیدا کر رہی ہے اور بے روزگاری کے مسئلے سے نمٹا جا رہا ہے۔ حال ہی میں ، چینی ریاستی کونسل نے 14 ویں پانچ سالہ منصوبہ (2021-2025) کی منظوری دی اس دوران روزگار بڑھانے کے لیے ایک منصوبہ جاری کیا گیا ہے۔ اس منصوبے کے مطابق نہ صرف روزگار کے زیادہ مواقع سامنے لائے جائیں گے بلکہ لوگوں کو معیاری روزگار فراہم کرنے کی کوشش کی جائے گی۔ اس مقصد کے لیے روزگار پالیسی بنانے کے نظام کو بہتر بنایا جائے گا ، معیاری روزگار کے لیے تربیتی خدمات کو تقویت دی جائے گی اور جامع خوشحالی کو فروغ دیا جائے گا۔یہ منصوبہ اس عزم کو ظاہر کرتا ہے کہ 2025 تک ملک میں روزگار کی عمومی صورتحال اور روزگار کے معیارات مستحکم ہوں گے۔ میں بہتر بناتا رہوں گا۔ منصوبے میں کہا گیا ہے کہ مؤثر اقدامات مؤثر طریقے سے ساختی مسائل کو حل کریں گے ، کاروباری آغاز کے لیے مزید ملازمتیں پیدا کریں گے اور رسک مینجمنٹ کی صلاحیت میں نمایاں اضافہ کریں گے۔ اس منصوبے کے اہم اہداف میں روزگار کی گنجائش بڑھانا اور وسائل پر مبنی مارکیٹ سسٹم کی ترقی کو فروغ دینا شامل ہے۔ قابل ذکر ہے کہ اس عرصے کے دوران ملک بھر میں 55 ملین سے زائد نئی شہری ملازمتیں پیدا کی جائیں گی۔ اور جدید کاروباری ماڈلز کے تحت روزگار کے خواہاں افراد کو تکنیکی تربیت بھی فراہم کی جائے گی۔

منصوبے میں کہا گیا ہے کہ ملک ووکیشنل ٹریننگ سیشن کو سبسڈی دے گا۔ اس کا مقصد پبلک ایمپلائمنٹ سروس سسٹم کو بہتر بنانا ، لوگوں کی آمدنی میں اضافہ اور ان کے حقوق اور مفادات کا بہتر تحفظ ہے۔کمپنیاں روزگار کی بہتر پالیسیوں کی روشنی میں زچگی سے متعلق اپنی سماجی ذمہ داریوں کو بھی پورا کریں گی۔ اس سلسلے میں جاری کوششوں کے تحت آجروں کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے کہ وہ والدین کی چھٹیوں یا ملازمت کے معاملات کے لیے لچکدار قوانین تیار کریں۔ چین نے ہمیشہ مستحکم روزگار کو یقینی بنانے کے لیے ٹھوس اقدامات کرنے کی کوشش کی ہے۔ چین اس سال روزگار کو فروغ دینے کے لیے میکرو پالیسیاں بھی اپنائے ہوئے ہے ، 11 ملین سے زائد نئی شہری ملازمتیں پیدا کرنے کا ہدف مقرر کیا گیا ہے۔ مالی شعبے ، غیر ملکی تجارت ، غیر ملکی سرمایہ کاری اور ملکی سرمایہ کاری جیسے شعبے اس سلسلے میں کلیدی کردار ادا کرتے ہیں۔ چینی حکومت اپنے شہریوں کے لیے ملازمتوں کا تحفظ ، بنیادی ضروریات زندگی کی فراہمی ، خوراک اور توانائی کی حفاظت اور صنعتی کاری کو مستحکم کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ اور سپلائی چین اور نچلی سطح پر موثر گورننس کو یقینی بنائیں ، کیونکہ ان کا براہ راست تعلق معاش سے ہے۔

Also Read:

8 Personal Growth Points to Keep Motivated and Encouraging

دریں اثنا ، چین کی بڑھتی ہوئی آبادی روزگار کے لیے نئی مارکیٹ کی ضروریات کی طرف اشارہ کر رہی ہے ، جس کا مطلب ہے کہ بین الاقوامی کاروباری اداروں کو چین کی اوپن مارکیٹ میں اپنی خدمات اور مصنوعات پیش کرنے کے زیادہ مواقع میسر ہوں گے۔ ہیلو ، یہ بھی ضروری ہے کہ چین عام طور پر وباؤں کے باوجود مستحکم روزگار کو برقرار رکھے ، معاشی بحالی اور معاون پالیسیوں کی بدولت ، اور آن لائن اور آف لائن بھرتی پروگرام زیادہ مقبول ہو گئے ہیں۔ 2021 کی پہلی ششماہی میں مجموعی طور پر 6.98 ملین نئی شہری ملازمتیں ملک بھر کے 63.5 فیصد سالانہ ہدف کے ساتھ زیادہ بھرتیاں کر رہی ہیں۔ چونکہ کاروباری سرگرمیاں اینٹی وبا کی بہتری سے رفتار حاصل کر رہی ہیں۔ اعداد و شمار سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ ملک میں شہری بے روزگاری کی شرح فروری میں 5.5 فیصد سے کم ہو کر جون میں 5 فیصد رہ گئی ، جو کہ گزشتہ سال جون کے مقابلے میں 0.7 فیصد پوائنٹس اور جون 2019 میں وبا سے پہلے کی سطح سے کم ہے۔ملازمت کے متلاشیوں کو روزگار کے مواقع تک زیادہ رسائی دینے کے لیے ، چین نے ایک خصوصی آن لائن بھرتی مہم بھی شروع کی ہے جس میں مائیکرو ، چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں ، نئے انفراسٹرکچر ، ای اسپورٹس اور زراعت پر توجہ دی گئی ہے۔ اس سلسلے میں کالج سے فارغ التحصیل افراد کی مدد کے لیے نوجوانوں کے لیے زیادہ پیشہ ورانہ تعلیم اور رہنمائی فراہم کی جا رہی ہے۔ چین جدت اور اسٹارٹ اپس کی مدد سے روزگار کے مواقع بڑھانے کی کوشش کرتا ہے اور دوسرے ممالک کو بے روزگاری کا سامنا کرتا دیکھتا ہے۔ چین جیسا بڑا ملک پالیسی سازی سے نمٹنے کے لیے کیا سیکھ سکتا ہے؟

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
info@newzflex.com-اگر آپ اپنے پسندیدہ موضوع کو ویڈیو کی صورت میں دیکھنا چاہتے ہیں تو ہمیں اپنی پسند سے آگاہ کرنے کیلیے اس ایڈریس پر ای میل کیجیےLike & Subscribe the Newz_Flex Channel
error: Content is protected !!