تاریخ

6th September Defence Day – The Pride Of Our Nation

چھ ستمبر یوم دفاع - ہماری قوم کا فخر

Every year, Defence Day is widely known in memory of the sacrifices the Pakistani soldiers made during the war of 1965. 6 September (Defence Day) is one of the foremost significant events within the history of Pakistan.

On 6 September 1965, without a proper declaration of war, the Indian army crossed Pakistan’s international frontiers. it had been a time when not only our brave soldiers but the whole nation was thrown into the mold of a cohesive unit to defend our homeland, defeating the Indian Army and pulling them back on every front.

The Detailed Background Behind 6th September
On September 6, 1965, the enemy invaded our borders with a view to breaching the assaulted areas. It’s been a response to stopping Pakistani military advance in India Occupied Kashmir. They were mostly targeting the Lahore, Sialkot, and Sindh desert areas. The war continued until 22 September 1965, when each side agreed to a ceasefire supervised by the United Nations.

The War in Kashmir
Events in Kashmir came to a climax, too. Indian Prime Minister Lal Bahadur Shastri added more fuel to the hearth by taking measures to further integrate Kashmir into India’s political body and claiming that the Kashmir question occupied a secondary position in effective India-Pakistan relations.

The application to the Kashmir State of Articles 356 and 357 of the Indian Constitution, which allowed the President of India to make and legislate the Presidential rule out Kashmir, made an effort to amalgamate Kashmir into the Indian Union altogether.

The Lahore Offensive
At 3:00 AM on September 6, 1965, Indians crossed the international frontier of Pakistan without a proper declaration of war and launched a three-pronged offensive against Lahore, Sialkot, and Rajasthan. On the Punjab plains, there has been a fierce tank battle. The Indo-Pak dispute reception became a world war and raised questions on Super Strength. Under the auspices of the United Nations, the most diplomatic plan to stop the fighting was administered and a truce came into effect on 23 September 1965.

The Inevitable Defence By Our Military
Our military managed to guard not only the areas targeted but also the lives of 6th September Defence Day – The Pride Of Our Nation of thousands of civilians and their homes. As such, we owe an obligation to honor and support all of our country’s military personnel who sacrificed their lives in order that we, our families, and our fellow countrymen may sleep in peace. It should also extend this appreciation and gratitude to all or any of the military personnel who helped our martyrs, sacrificed their lives, and lived to inform the story.

Martyrs Of The Defence Day
Many of our national martyred heroes won decorations for his or her gallantry and courage. Major Raja Aziz Bhatti was awarded the very best Nishan-i-Haider military award for his extraordinary role in defending the Lahore Bedian region in 1965. he’s among a couple of other gallants and courageous military personnel who are martyred and in other battles and wars have given an equivalent honor. In Pakistan’s defense, they gave the best sacrifice of their lives.

Defense Day—A Pledge Of Strong And Proud Nation
Defense Day is added each day to renew our pledge that we are a strong, proud country, which no foreign power, regardless of how strong it’s, can bully us. Our troops are a symbol of all that and far more. It represents the Pakistani great nation’s fighting spirit, courage, and tactical acumen. And Defence Day is that the day for celebrating and remembering all that so we will be strong and send the proper message to the country’s youth and youngsters.

How Defence Day is widely known Today
Throughout the state, a variety of military parades and activities are arranged on Defence Day. the newest innovations and advancements in modern tactics are seen in military parades also. Often today, test launches of newly designed weapons occur also. the apparent purpose of those activities is to celebrate our veterans and to spotlight our military capability. Our TV channels and social media also are playing their part therein goal.

Parades

Pakistan’s Army shows its latest missiles, tanks, guns, army aircraft helicopters, and equipment employed by Engineers, Electrical and Mechanical Corps, Army Air Defence, Signals, Army Service Corps, and Medical Corps of the military.

By getting too specific places everybody is in a position to observe such functions live. These shows are seen on national television channels too. National songs, special documentaries about 6 September 1965, and therefore the stories of those who were martyred that day are seen on television. the small print is told about how people sacrificed their lives for the country’s safety and what the burden lies with the younger generation, the youngsters who are Pakistan’s futureThe change of guard ceremony takes place at Mazar-e-Quaid, Karachi, where Pakistan Air Force Academy cadets present and take command of the Guard of Honor.

The Role Of Military In Our Country
We should all be pleased with our powerful soldiers and their constitutional role in protecting our country’s physical frontiers and defense. We may face economic challenges but we are secured from external threats by what many around the world concede to be one of Asia’s strongest military powers. We pay homage to their sacrifices, as we honor our former war heroes.

But our military not only engages in warfare but also contributes in peacetime to the country. In disaster-hit countries, the powers most often perform humanitarian operations and supply national relief services in situations like floods, earthquakes, etc. Many of the institutions of the soldiers, like their schools, universities, hospitals, etc., which operate under occupation, often provide vital services to civilians.

Pakistan Emerged As A More Powerful Nation After The War Of 1965
As of the September 1965 war with India, Pakistan emerged as a strong and self-confident country, pleased with itself and its military forces. it had been a nation united within the face of India’s threat. For war success, national unity and complete support for the soldiers within the field are necessary. With the assistance of the govt, Pakistan’s soldiers repelled India’s naked aggression across the international border and making it pay a price by taking fourfold more territory than India and forcing it to simply accept a truce, return to the negotiating table and vacate each other’s territory. it had been definitely their finest hour of glory, and each day for future generations to recall the soldiers and civilians of that point.

Each and each Pakistani has this spirit of brotherhood in their hearts, if you dare to harm one among us, we’ll all stand together country, for we’ve no predicament of caste, no color of religion among us, we are brothers and sisters standing together, under one flag, and once we stand together we will teach you a lesson that you simply will surely always remember.

How we will Make The Events Of 1965 Memorable
Honoring and saluting our national heroes isn’t tardy. At any time, any school or community event is often arranged to acknowledge all those uniformed men and ladies who have served to guard our country. We, too, should raise awareness of their significance and activities on social media. Our discussions and talks with family and friends can also include the topic of the military’s significance and constitutional position.

If that provides children motivated to hitch the military and serve the country selflessly, it’ll be an honest outcome.

چھ ستمبر یوم دفاع – ہماری قوم کا فخر

ہر سال ، یوم دفاع 1965 کی جنگ کے دوران پاکستانی فوجیوں کی قربانیوں کی یاد میں بڑے پیمانے پر جانا جاتا ہے۔ 6 ستمبر (یوم دفاع) پاکستان کی تاریخ کے اہم ترین واقعات میں سے ایک ہے۔

6 ستمبر 1965 کو ، جنگ کے مناسب اعلان کے بغیر ، بھارتی فوج نے پاکستان کی بین الاقوامی سرحدیں عبور کیں۔ یہ وہ وقت تھا جب نہ صرف ہمارے بہادر سپاہی بلکہ پوری قوم کو اپنے وطن کے دفاع کے لیے ایک مربوط یونٹ کے سانچے میں ڈال دیا گیا تھا ، بھارتی فوج کو شکست دی اور انہیں ہر محاذ پر پیچھے کھینچ لیا۔

چھ ستمبر کے پیچھے تفصیلی پس منظر۔
6 ستمبر 1965 کو دشمن نے حملہ شدہ علاقوں کی خلاف ورزی کے لیے ہماری سرحدوں پر حملہ کیا۔ یہ بھارت کے مقبوضہ کشمیر میں پاکستانی فوجی پیش قدمی کو روکنے کا ردعمل رہا ہے۔ وہ زیادہ تر لاہور ، سیالکوٹ اور سندھ کے صحرائی علاقوں کو نشانہ بنا رہے تھے۔ جنگ 22 ستمبر 1965 تک جاری رہی ، جب ہر فریق نے اقوام متحدہ کی زیر نگرانی جنگ بندی پر اتفاق کیا۔

کشمیر کی جنگ
کشمیر میں واقعات بھی عروج پر پہنچ گئے۔ بھارتی وزیر اعظم لال بہادر شاستری نے کشمیر کو بھارت کے سیاسی ادارے میں مزید ضم کرنے کے لیے اقدامات کرتے ہوئے چاند میں مزید ایندھن کا اضافہ کیا اور یہ دعویٰ کیا کہ مسئلہ کشمیر پاک بھارت تعلقات میں ثانوی حیثیت رکھتا ہے۔

بھارتی آئین کے آرٹیکل 356 اور 357 کی کشمیر اسٹیٹ کو درخواست ، جس نے صدر جمہوریہ کو کشمیر سے صدارتی راج بنانے اور قانون سازی کی اجازت دی ، نے کشمیر کو مکمل طور پر انڈین یونین میں ضم کرنے کی کوشش کی۔

لاہور جارحانہ
چھ ستمبر 1965 کو صبح 3:00 بجے ، ہندوستانیوں نے جنگ کے مناسب اعلان کے بغیر پاکستان کی بین الاقوامی سرحد عبور کی اور لاہور ، سیالکوٹ اور راجستھان کے خلاف تین جہتی حملہ شروع کیا۔ پنجاب کے میدانی علاقوں میں ٹینکوں کی شدید لڑائی ہوئی ہے۔ پاک بھارت تنازعہ کا استقبال عالمی جنگ بن گیا اور سپر طاقت پر سوال اٹھائے۔ اقوام متحدہ کے زیراہتمام ، لڑائی کو روکنے کا انتہائی سفارتی منصوبہ ترتیب دیا گیا اور 23 ستمبر 1965 کو جنگ بندی عمل میں آئی۔

ہماری فوج کا ناگزیر دفاع۔
ہماری فوج نے نہ صرف نشانہ بنائے گئے علاقوں کی بلکہ 6 ستمبر یوم دفاع کی زندگیوں کی حفاظت کی – ہزاروں شہریوں اور ان کے گھروں کا فخر ہماری قوم ہے- اس طرح ، ہم اپنے ملک کے تمام فوجی جوانوں کی عزت اور ان کی حمایت کرنے کے ذمہ دار ہیں جنہوں نے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا تاکہ ہم ، ہمارے خاندان اور ہمارے ہم وطن سکون کی نیند سو سکیں۔ یہ ان تمام یا کسی بھی فوجی جوان کی تعریف اور شکریہ ادا کرنا چاہیے جنہوں نے ہمارے شہدا کی مدد کی ، اپنی جانیں قربان کیں ، اور کہانی سے آگاہ کیا۔

یوم دفاع کے شہداء
ہمارے بہت سے قومی شہید ہیروز نے اپنی بہادری اور جرات کے لیے سجاوٹ جیتی۔ میجر راجہ عزیز بھٹی کو 1965 میں لاہور بیدیاں کے علاقے کے دفاع میں ان کے غیر معمولی کردار کے لیے بہترین نشان حیدر ملٹری ایوارڈ سے نوازا گیا۔ مساوی اعزاز دیا. پاکستان کے دفاع میں انہوں نے اپنی جانوں کی بہترین قربانی دی۔

یوم دفاع – مضبوط اور قابل فخر قوم کا عہد۔
یوم دفاع ہر دن ہمارے عہد کی تجدید کے لیے شامل کیا جاتا ہے کہ ہم ایک مضبوط ، قابل فخر ملک ہیں ، جسے کوئی بھی غیر ملکی طاقت چاہے کتنی ہی مضبوط کیوں نہ ہو ، ہمیں ڈرا سکتی ہے۔ ہماری فوجیں ان سب کی علامت ہیں اور بہت کچھ۔ یہ پاکستانی عظیم قوم کی لڑائی کے جذبے ، جرات اور حکمت عملی کی عکاسی کرتا ہے۔ اور یوم دفاع وہ دن ہے جسے منانے اور ان سب کو یاد رکھنے کا دن ہے تاکہ ہم مضبوط ہوں اور ملک کے نوجوانوں اور نوجوانوں کو مناسب پیغام دیں۔

آج یوم دفاع کس طرح وسیع پیمانے پر جانا جاتا ہے۔
ریاست بھر میں ، یوم دفاع کے موقع پر مختلف قسم کی فوجی پریڈز اور سرگرمیوں کا اہتمام کیا جاتا ہے۔ جدید حربوں میں جدید ایجادات اور پیش رفت فوجی پریڈوں میں بھی دیکھی جاتی ہیں۔ اکثر آج کل ، نئے ڈیزائن کردہ ہتھیاروں کے ٹیسٹ لانچ بھی ہوتے ہیں۔ ان سرگرمیوں کا ظاہری مقصد ہمارے سابق فوجیوں کو منانا اور ہماری عسکری صلاحیت کو نمایاں کرنا ہے۔ ہمارے ٹی وی چینلز اور سوشل میڈیا بھی اس میں اپنا کردار ادا کر رہے ہیں۔

پریڈز

پاکستان کی فوج اپنے جدید میزائل ، ٹینک ، بندوقیں ، آرمی ایئر کرافٹ ہیلی کاپٹر ، اور انجینئرز ، الیکٹریکل اور مکینیکل کور ، آرمی ایئر ڈیفنس ، سگنلز ، آرمی سروس کور ، اور فوج کی میڈیکل کورز کا استعمال کردہ سامان دکھاتی ہے۔بہت مخصوص جگہیں حاصل کرکے ہر کوئی اس طرح کے افعال کو براہ راست دیکھنے کی پوزیشن میں ہے۔ یہ شو قومی ٹیلی ویژن چینلز پر بھی دیکھے جاتے ہیں۔ قومی گانے ، 6 ستمبر 1965 کے بارے میں خصوصی دستاویزی فلمیں ، اور اس وجہ سے ان لوگوں کی کہانیاں جو اس دن شہید ہوئیں ، ٹیلی ویژن پر دیکھی جاتی ہیں۔ چھوٹے پرنٹ کے بارے میں بتایا جاتا ہے کہ کس طرح لوگوں نے ملک کی حفاظت کے لیے اپنی جانیں قربان کیں اور جو بوجھ نوجوان نسل پر ہے ، وہ نوجوان جو پاکستان کا مستقبل ہیں

گارڈ کی تبدیلی کی تقریب مزار قائد ، کراچی میں ہوتی ہے ، جہاں پاک فضائیہ اکیڈمی کے کیڈٹس موجود ہوتے ہیں اور گارڈ آف آنر کی کمان سنبھالتے ہیں۔

ہمارے ملک میں فوج کا کردار
ہم سب کو اپنے طاقتور فوجیوں اور اپنے ملک کی جسمانی سرحدوں اور دفاع کی حفاظت میں ان کے آئینی کردار سے خوش ہونا چاہیے۔ ہمیں معاشی چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے لیکن ہم بیرونی خطرات سے محفوظ ہیں جو دنیا بھر میں ایشیا کی مضبوط ترین فوجی طاقتوں میں سے ایک ہے۔ ہم ان کی قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں ، جیسا کہ ہم اپنے سابقہ ​​جنگی ہیروز کا احترام کرتے ہیں۔

لیکن ہماری فوج نہ صرف جنگ میں مصروف ہے بلکہ ملک میں امن کے وقت بھی حصہ ڈالتی ہے۔ آفات سے متاثرہ ممالک میں ، طاقتیں اکثر انسانی امداد انجام دیتی ہیں اور سیلاب ، زلزلے وغیرہ جیسے حالات میں قومی امدادی خدمات فراہم کرتی ہیں ، فوجیوں کے بہت سے ادارے ، جیسے ان کے اسکول ، یونیورسٹی ، ہسپتال وغیرہ ، اکثر شہریوں کو اہم خدمات فراہم کرتے ہیں۔

پاکستان 1965 کی جنگ کے بعد ایک طاقتور قوم بن کر ابھرا۔
ستمبر 1965 کی بھارت کے ساتھ جنگ ​​کے طور پر ، پاکستان ایک مضبوط اور خود اعتماد ملک بن کر ابھرا ، جو اپنے آپ اور اپنی فوجی قوتوں سے خوش تھا۔ یہ ہندوستان کی دھمکیوں کے باوجود متحد قوم تھی۔ جنگی کامیابی کے لیے قومی اتحاد اور میدان میں موجود فوجیوں کی مکمل حمایت ضروری ہے۔ حکومت کی مدد سے ، پاکستانی فوجیوں نے بین الاقوامی سرحد پر ہندوستان کی ننگی جارحیت کو پسپا کیا اور اسے بھارت سے چار گنا زیادہ علاقہ لے کر اس کی قیمت چکانی پڑی اور اسے محض جنگ بندی قبول کرنے ، مذاکرات کی میز پر واپس آنے اور ایک دوسرے کا علاقہ خالی کرنے پر مجبور کیا۔ یہ یقینی طور پر ان کی شان و شوکت کا بہترین وقت تھا ، اور ہر روز آنے والی نسلوں کے لیے اس مقام کے فوجیوں اور شہریوں کو یاد کرنا۔

ہر پاکستانی کے دل میں بھائی چارے کا جذبہ ہے ، اگر آپ ہم میں سے کسی کو نقصان پہنچانے کی ہمت کرتے ہیں تو ہم سب مل کر کھڑے ہوں گے ، کیونکہ ہمارے ہاں ذات پات کی کوئی دیوار نہیں ، ہمارے درمیان مذہب کا کوئی رنگ نہیں ، ہم بھائی اور بہنیں ایک ساتھ ہیں، ایک جھنڈے کے نیچے کھڑے ہیں ، اور ایک بار جب ہم اکٹھے کھڑے ہوں تو ہمدشمن کو سبق سکھادیتے ہیں جو اسے ہمیشہ یاد رہتا ہے۔

ہم 1965 کے واقعات کو کیسے یادگار بنائیں گے۔
ہمارے قومی ہیروز کا احترام اور سلام کرنا دیر نہیں ہے۔ کسی بھی وقت ، کوئی بھی اسکول یا کمیونٹی تقریب اکثر ان تمام وردی پوش مردوں اور عورتوں کو تسلیم کرنے کا اہتمام کرتی ہے جنہوں نے ہمارے ملک کی حفاظت کے لیے خدمات انجام دی ہیں۔ ہمیں بھی سوشل میڈیا پر ان کی اہمیت اور سرگرمیوں کے بارے میں شعور اجاگر کرنا چاہیے۔ خاندان اور دوستوں کے ساتھ ہماری بات چیت اور بات چیت میں فوج کی اہمیت اور آئینی پوزیشن کا موضوع بھی شامل ہو سکتا ہے۔

اگر اس سے بچوں کو فوج میں شامل ہونے اور ملک کی بے لوث خدمت کرنے کی ترغیب ملتی ہے تو یہ ایک ایماندار نتیجہ ہوگا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
error: Content is protected !!