TECH

Why is the National Database Registration System now more effective than ever?

نیشنل ڈیٹا بیس رجسٹریشن سسٹم پہلے سے زیادہ موثر کیوں ہے؟

نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی ، جو کہ نادرا کے لیے مختص ہے ، ایک آزاد ایجنسی کے طور پر کام کرتی ہے جو براہ راست وزارت داخلہ کے تحت آتی ہے۔ یہ اتھارٹی، پاکستانی شہریوں کے ڈیٹا بیس کی رجسٹریشن اور ترمیم سے متعلق معاملات کو مؤثر طریقے سے کنٹرول کرنے کے لیے سال 2000 میں تشکیل دی گئی تھی ۔

دس ہزار سے زائد ملازمین، سینکڑوں گھریلو اور چند بین الاقوامی دفاتر میں خدمات انجام دے رہے ہیں ، نادرا نے مؤثر طریقے سے اپنا نیٹ ورک متعدد سمتوں میں پھیلایا ہے۔ آئیے نادرا کے نظام میں تازہ ترین اپ ڈیٹس کے بارے میں مزید معلومات حاصل کریں۔جب سے نادرا تشکیل پایا ہے ، اس کے نظام میں مسلسل بہتری لائی گئی ہے تاکہ ڈیٹا کی بڑھتی ہوئی مقدار کی حفاظت کویقینی بنایا جاسکے- اور قومی ڈیٹا بیس میں حساس معلومات کی دیکھ بھال کے عمل کو بہتر بنایا جا سکے ، جو وقتا فوقتا اپ ڈیٹ ہوتا رہتا ہے۔ آئیے موجودہ نیشنل ڈیٹا بیس رجسٹریشن سسٹم کی بہتری کے لیے حکام کی طرف سے کئے گئے نادرا کے نظام میں تازہ ترین اپ ڈیٹس کو چیک کرتے ہیں۔

نیا لانچ کیا گیا ‘کنٹیکٹ لیس’ بائیو میٹرک تصدیق کا نظام

THE NEWLY LAUNCHED ‘CONTACTLESS’ BIOMETRIC VERIFICATION SYSTEM
THE NEWLY LAUNCHED ‘CONTACTLESS’ BIOMETRIC VERIFICATION SYSTEM

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) کی درخواست پر ، نادرا نے ایک جدید ڈیجیٹل سروس متعارف کرائی ہے ، جو اب ملک کے بینکنگ سیکٹر کو ’کنٹیکٹ لیس‘ بائیو میٹرک تصدیق کے نظام کو استعمال کرنے کے قابل بناتی ہے۔پاکستان اب قومی سطح پر ریموٹ بائیو میٹرک تصدیق ٹیکنالوجی کو نافذ کرنے والے دنیا کے پہلے ممالک میں شامل ہو گیا ہے۔ ملک کے تمام کمرشل بینک اب اپنے موبائل ایپس میں ایک خاص فیچر شامل کریں گے ، جس کی مدد سے وہ اپنے موجودہ اور ممکنہ اکاؤنٹ ہولڈرز کے بائیو میٹرکس کی کہیں سے بھی تصدیق کر سکے گا۔

نادرا کے چیئرمین طارق ملک نے ایک بیان دیتے ہوئے کہا ، ‘یہ نئی ٹیکنالوجی ایک سمارٹ موبائل فون کے ذریعے رابطے کے بغیر فنگر پرنٹ کے حصول اور مماثلت کو ممکن بناتی ہے ، جو ڈیجیٹل مالیاتی لین دین کے روایتی طریقوں کا متبادل فراہم کرتی ہے جس کے لیے مخصوص آلات یا بینک برانچوں کےوزٹ کی ضرورت پڑسکتی ہے۔

پاک آئی ڈی موبائل ایپ۔

نادرا نے اپنے مکمل طور پر مربوط ویب پورٹل کے لیے ایک موبائل ایپلی کیشن بھی لانچ کی ہے جسے پاک شناخت کے نام سے جانا جاتا ہے۔ پاک آئی ڈی موبائل ایپ نادرا یوزر بیس کی سہولت میں مزید اضافہ کرتی ہے۔ یہ مقامی لوگوں کے ساتھ ساتھ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں (بشمول ملک میں مقیم غیر ملکیوں) کو تصاویر سمیت مطلوبہ دستاویزات کو آسانی سے اسکین اور اپ لوڈ کرنے کی اجازت دیتا ہے۔اس ایپ کی انقلابی خصوصیت یہ ہے کہ یہ صارفین کو نادرا ڈیٹا بیس کو اپ ڈیٹ کرنے کے لیے اپنے موبائل فون کیمروں کا استعمال کرتے ہوئے اپنے فنگر پرنٹس کو ریکارڈ اور اپ لوڈ کرنے کے قابل بناتا ہے۔

کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ۔

کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ کا تعارف ایک مکمل پیش رفت تھی جو نادرا نے اپنی تشکیل کے پہلے ہی سال میں حاصل کی تھی۔ اس سے قبل ، پرانا ڈیٹا بیس سسٹم ، جو تقریبا چار دہائیاں پہلے 1970 کی دہائی میں متعارف کرایا گیا تھا ، استعمال کیا جا رہا تھا۔ یہ جدید اور ڈیجیٹل نظام کے مقابلے میں غیر موثر اور کم محفوظ تھا جس کا اعلان گزشتہ دو سالوں میں کیا گیا ہے۔ کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ ، جسے” سی این آئی سی” کے طور پر مختصر کیا گیا ہے ، نے 18 سال سے زیادہ عمر کے پاکستانی شہریوں کے بارے میں تمام اہم معلومات کو جمع کرنے اور تصدیق کرنے کا ایک مؤثر راستہ ہموار کیا۔

چپ بیسڈ قومی شناختی کارڈ کا اجراء-انقلاب سے کم نہیں

ISSUANCE OF CHIP-BASED CNICS – NO but A REVOLUTION
ISSUANCE OF CHIP-BASED CNICS – NO but A REVOLUTION

نادرا کے نظام میں انتہائی ناقابل یقین تازہ ترین اپ ڈیٹس میں سے ایک قومی شناختی کارڈ میں جدید ترین چپس کو شامل کرنا ہے۔ اس چپ میں آپ کی تمام حساس معلومات کا خفیہ کردہ ڈیجیٹل ریکارڈ موجود ہے جو آپ کے قومی شناختی کارڈ پر ظاہر ہوتا ہے اور نیشنل ڈیٹا بیس میں ریکارڈ کیا گیا ہے۔ بائیو میٹرک تصدیق کے جدید رجحان کو بھی اس ڈیجیٹلائزڈ نیشنل ڈیٹا بیس رجسٹریشن سسٹم کا حصہ بنایا گیا ہے کیونکہ پاکستان کے شہریوں کے تمام دستیاب ڈیٹا کو اس سسٹم کے ساتھ ہم آہنگ کیا گیا ہے۔بایومیٹرک تصدیق ایک مخصوص نظام کے تحت ہر جگہ اپنا شناختی کارڈ لے جائے بغیر آپ کو اس ملک کا شہری تسلیم کرنے کی اجازت دیتی ہے- قومی ڈیٹا بیس کی ڈیجیٹل تبدیلی کا عمل اس طرح جاری رہے گا جب تک کہ تمام پاکستانی شہری اپنی حساس معلومات ڈیجیٹل طور پر رجسٹرڈ اور بائیو میٹرک طور پر تصدیق نہیں کر لیتے۔

نادرا میگا سینٹر

حالیہ برسوں میں نادرا کے نظام میں ایک اور بڑی تازہ ترین تازہ کاری کراچی میں نہ صرف ایک بلکہ دو میگا سینٹرز کا قیام ہے۔ عام دفتری اوقات کے کنونشنوں کو توڑتے ہوئے نادرا دفاتر ، جو ہفتے کے دنوں میں صبح 9 بجے سے شام 5 بجے تک ہوتے ہیں ، یہ میگا سنٹر 24/7 کھلے رہتے ہیں۔ چوبیس گھنٹے کام کرنے کی وجہ سے کراچی میں نادرا کے میگا سینٹرز کا وجود ایک نعمت ہے ، خاص طور پر محنت کش طبقے سے تعلق رکھنے والے لوگوں کے لیے۔ چاہے وہ ہفتہ ہو یا اتوار صبح سویرے یا رات دیر تک ، آپ کراچی میں نادرا کے میگا سینٹرز پر آسانی سے جا سکتے ہیں تاکہ اپنی درخواست جمع کروا سکیں اور ان کے ملازمین کی مدد سے تین شفٹوں میں خدمات انجام دے سکیں۔

کراچی اور لاہور میں نادرا دفاتر کے بارے میں تفصیلات

پتے سے لے کر رابطہ نمبر اور اوقات تک ، نادرا کے قریبی دفتر کے بارے میں تمام متعلقہ معلومات حاصل کریں اور کراچی اور لاہور میں نادرا کے دفاتر پر ہمارے تفصیلی گائیڈز پڑھیں۔

موبائل رجسٹریشن وہیکل (ایس)

نادرا کے نظام میں ایک اہم ترین تازہ ترین اپ ڈیٹ موبائل رجسٹریشن گاڑیوں کا تعارف ہے۔ یہ ان لوگوں کی مدد کے لیے بنایا گیا ہے جو ملک کے دور دراز علاقوں میں رہتے ہیں یا مختلف قسم کے طبی حالات کی وجہ سے سفر کرنے سے قاصر ہیں۔ نادرا موبائل رجسٹریشن گاڑیاں ، وین اور کاروں کے بیڑے پر مبنی ہیں ، گزشتہ سال پاکستان کی وزارت اطلاعات نے متعارف کروائی تھیں۔ تاہم ، نادرا موبائل رجسٹریشن کاریں صرف ان علاقوں میں استعمال کی جائیں گی جہاں سے وین کا گزرنا ناممکن ہو جاتا ہے۔یہ تمام نادرا گاڑیاں ایسی خصوصیات سے آراستہ ہیں جو قومی ڈیٹا بیس میں حساس معلومات کی رجسٹریشن اور ترمیم کے عمل میں درکار ہیں۔ نادرا موبائل رجسٹریشن گاڑیاں لوگوں تک پہنچتی ہیں اور ان کی مفید معلومات حاصل کرتی ہیں کیونکہ پاکستان کے شہری مؤثر طریقے سے رجسٹرڈ ہوتے ہیں۔

آن لائن کمپلینٹ سسٹم کی دستیابی

AVAILABILITY OF ONLINE COMPLAINT SYSTEM
AVAILABILITY OF ONLINE COMPLAINT SYSTEM

ڈیجیٹل سسٹم کے شامل ہونے کی بدولت ، اب پورے پاکستان میں لوگ تاخیر اور دیگر مسائل کے بارے میں آن لائن شکایات درج کروا سکتے ہیں جن کا انہیں اپنے سمارٹ قومی شناختی کارڈ کے اجرا میں سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ یہ مشاہدہ کیا گیا ہے کہ یہ آن لائن عمل نہ صرف ہموار ہیں بلکہ تیز بھی ہیں۔ شکایت کی حیثیت آن لائن نادرا کی سرکاری ویب سائٹ پر لاگ ان کرکے ٹریک کی جا سکتی ہے۔ان بہتریوں نے پاکستانیوں کو کافی حد تک مطلوبہ سہولت فراہم کی ہے ، جنہیں پہلے اپنی حساس معلومات کو رجسٹرڈ کرنے یا نیشنل ڈیٹا بیس رجسٹریشن سسٹم کے ذریعے اپ ڈیٹ کرنے کے لیے لمبی قطاروں میں کھڑا ہونا پڑتا تھا۔

ہم نے نادرا کی جانب سے حال ہی میں متعارف کروائی گئی بہت سی نئی خدمات اور فیچرز کے حوالے سے بہت سی مختلف گائیڈز اور جائزہ کا احاطہ کیا ہے۔

Why is the National Database Registration System now more effective than ever?

The National Database and Registration Authority, which is brief for NADRA, acts as an agency that comes directly under the Ministry of Interior. it had been formed in the year 2000 to effectively regulate matters associated with the registration and modification of the database of Pakistani citizens. With over 10,000 employees serving in many domestic and a couple of international offices, NADRA has effectively spread its network in multiple directions. Let’s explore more about the latest updates within the system of NADRA.

Ever since NADRA was formed, constant improvements are made in its system so as to supply increased data security and to improvise the method of maintenance of sensitive information in the National Database, which gets updated from time to time. Let’s inspect the newest updates within the system of NADRA administered by the authorities for the development of the prevailing National Database Registration System.

THE NEWLY LAUNCHED ‘CONTACTLESS’ BIOMETRIC VERIFICATION SYSTEM
At the request of the depository financial institution of Pakistan (SBP), NADRA has introduced a cutting-edge digital service, which now enables the country’s banking sector to form use the ‘contactless’ biometric verification system.

Pakistan has now become one of the primary countries in the world to implement remote biometric verification technology at the national level. All the commercial banks within the country will now include a special feature in their mobile apps, which can allow them to remotely capture also as verify the biometrics of their existing and potential account holders from anywhere.

“This new technology makes contactless fingerprint acquisition and matching possible by employing a smart mobile, providing an alternative to standard methods of conducting digital financial transactions which will require specialized equipment or visits to bank branches,” said NADRA Chairman Tariq Malik while making a press release about the newly launched contactless biometric verification system.

PAK-ID MOBILE APP
NADRA has also launched a mobile application for its fully integrated web portal known by the name of Pak-Identity. The Pak-ID mobile app further adds to the convenience of the NADRA user base. It allows locals, also as overseas Pakistanis (including expatriates within the country), to simply scan and upload the specified documents including photographs.

The revolutionary feature of this app is that it also enables users to capture and upload their fingerprints using their mobile cameras to update the NADRA database. to find out more about the Pak-ID mobile application, read our detailed guide.

COMPUTERISED NATIONAL card
The introduction of Computerised National Identity Cards (CNICs) was an absolute breakthrough that was achieved by NADRA within the very first year of its formation. Previously, the age-old database system, which was introduced almost four decades ago in the 1970s, was getting used. it had been ineffective and less secure as compared to the fashionable and digitized system that has been announced within the past few years. The computerized National card, shortened as CNIC, effectively paved how to accumulate and verify most of the important information regarding the citizens of Pakistan over 18 years aged.

ISSUANCE OF CHIP-BASED CNICS – NO but A REVOLUTION

One of the foremost incredible latest updates within the system of NADRA is the inclusion of state-of-the-art chips within the National card. This chip has an encrypted digital record of all of your sensitive information that appears on your CNIC and has been recorded within the National Database. The cutting-edge phenomenon of biometric verification has also been made a neighborhood of this digitized National Database Registration System as all the available data of the citizens of Pakistan has been synchronized with this technique.

Biometric verification allows a specific system to acknowledge you as a citizen of this country without having the necessity of carrying your CNIC everywhere. the method of digital transformation of the National Database will continue like this until all Pakistani citizens have their sensitive information digitally registered and biometrically verified.

NADRA MEGA CENTRE
Another major latest update within the system of NADRA in recent years is the fixing of not just one but two mega centers in Karachi. Breaking the conventions of normal office timings followed by NADRA offices, which are from 9 am to 5 pm during weekdays, these Mega Centres remain open 24/7. thanks to round-the-clock operations, the existence of NADRA Mega Centres in Karachi may be a blessing, especially for people belonging to the labor. Whether it’s a Saturday or a Sunday; early in the morning or late in the dark, you’ll easily visit NADRA Mega Centres in Karachi to urge your application submitted and processed with the help of their employees serving in three shifts.

DETAILS ABOUT NADRA OFFICES IN KARACHI AND LAHORE
From addresses to contact numbers and timings, get all the relevant information about the closest NADRA office to your home by reading our detailed guides on NADRA offices in Karachi and Lahore.

MOBILE REGISTRATION VEHICLE(S)
One of the foremost significant latest updates within the system of NADRA is the introduction of mobile registration vehicles. it’s purposed for the help of individuals who sleep in remote areas of the country or are unable to travel thanks to different sorts of medical conditions. NADRA Mobile Registration vehicles, supported by a fleet of vans and cars, were introduced last year by the knowledge Ministry of Pakistan. However, NADRA Mobile Registration Cars are only to be utilized in those areas where it becomes impossible for vans to urge through.

All these NADRA vehicles are equipped with features that are needed within the process of registration and modification of sensitive information within the National Database. NADRA mobile registration vehicles reach bent people and obtain their useful information as citizens of Pakistan effectively registered.

AVAILABILITY OF AN ONLINE COMPLAINT SYSTEM
Thanks to the incorporation of a digital system, now people all across Pakistan can lodge online complaints regarding the delays and other issues they could face with the issuance of their Smart CNICs. It’s been observed that these online processes aren’t only smooth but also swift. The status of a complaint also can be tracked online by logging on to the official NADRA website.

These improvements have considerably provided much-needed convenience to Pakistanis, who previously had to face long queues to either get their sensitive information registered or updated through the National Database Registration System. 

Shagufta Naz

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
نوٹ: اگر آپ اپنی پروڈکٹس،سروسز یا آفرزکا مفت اشتہار لگوانا چاہتے ہیں تو نیوزفلیکس ٹیم، عوام تک آپ کا پیغام پہنچانےکا موقع فراہم کر رہی ہے. شکریہ_ اپنا پیغام یہاں لکھیں
error: Content is protected !!

Adblocker Detected

Note: Turn Off the AdBlocker For this Site