بریکنگ نیوز

Pakistani court hands death sentence to woman school principal claiming to be prophet

پاکستانی عدالت نے نبی ہونے کا دعویٰ کرنے والی خاتون سکول کی پرنسپل کو سزائے موت سنائی۔

لاہور – پنجاب کے دارالحکومت کی ایک عدالت نے ایک خاتون کو توہین رسالت کے الزام میں سزائے موت سنائی ہے۔ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج منصور قریشی نے اس فیصلے کا اعلان اس وقت کیا جب ملزمان یہ ثابت کرنے میں ناکام رہے کہ سلمان تنویر جو کہ ایک نجی سکول چلا رہی تھی ، جب اس نے جرم کیا تو ذہنی طور پر فٹ نہیں تھی۔

فیصلے میں کہا گیا ہے کہ ‘اس کی موت تک اسے لٹکایا جائے گا’۔ عدالت نے ان پر 50 ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کیا ہے۔جج نے ریمارکس دیے کہ تحقیقاتی ریکارڈ کے مطابق خاتون اس کیس میں اپنی گرفتاری تک سکول چلا رہی تھی ، انہوں نے مزید کہا کہ تنویر کی ‘اسامانیتا … قانونی پاگل پن سے کم ہے۔’ 2013 میں ، مجرم نے لاہور میں اپنی رہائش گاہ کے قریب لوگوں میں ایک پمفلٹ تقسیم کیا جس میں اس نے ختم نبوت کی تردید کی اور دعویٰ کیا کہ وہ ‘اللہ کی حقیقی نبی’ ہے۔

پمفلٹ میں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے مقدس نام کی تضحیک آمیز تحریریں بھی تھیں۔بعد ازاں علاقہ مکینوں نے ملزم کے خلاف ایف آئی آر درج کرائی جس کے بعد نشتر کالونی پولیس نے اسے گرفتار کیا اور تفتیش میں اسے مجرم قرار دیا ۔

Pakistani court hands death sentence to woman school principal claiming to be prophet

LAHORE – A court within the Punjab capital has awarded death to a lady on charges of committing blasphemy.

Additional District and Sessions Judge Mansoor Qureshi announced the ruling after the defendants did not prove that Salman Tanveer, who ran a personal school, wasn’t mentally fit when she committed the offense.

“She shall be hanged by her neck till her death,” the decision stated. The court has also imposed a fine of Rs50,000 on her. The judge remarked that the lady, as per the investigation record, was running the varsity till her arrest within the case, adding that Tanveer’s ‘abnormality … falls in need of legal insanity.’

In 2013, the convict distributed a pamphlet to people near her residence in Lahore during which she denied the Finality of Prophethood and claimed that she was “Allah’s true prophet”.

The pamphlet also carried derogatory remarks towards the sacred name of Holy Prophet Mohammad (PBUH). Later, the world residents lodged an FIR against the accused after which Nishtar Colony police arrested her and located her guilty in the investigation.

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
error: Content is protected !!