ANDROID & IOS

Report Corruption – Pakistan’s First Anti-Graft Mobile App

رپورٹ کرپشن - پاکستان کی پہلی اینٹی گرافٹ موبائل ایپ

Report Corruption – Pakistan’s First Anti-Graft Mobile App

In a bid to digitize its fight against corrupt elements within the country, the govt. of Pakistan recently launched an anti-corruption app that may allow citizens to report dishonest and fraudulent activities conducted by those in power. Prime Minister Imran Khan launched the aptly named ‘Report Corruption’ mobile app on the International Anti-Corruption Day, urging the youth to participate in the process and expose people who are involved in such activities.

“A country cannot prosper where the rulers are involved in corrupt practices,” Khan said during the launching ceremony. “A corrupt person is an enemy of the state,” he added. The graft-fighting app was introduced by the Anti-Corruption Establishment (ACE) Punjab, a sub-department of the Services and General Administration Department (S&GAD) functioning under the govt. of Punjab. The Report Corruption mobile app, which aims to rework Pakistan into a contemporary and transparent nation, will allow users to lodge complaints anonymously.

As per the report published in a very local English daily, Special Assistant to the Prime Minister on Accountability Shahzad Akbar suggested the digitization of the whole anti-corruption department is currently on the cards. Moreover, in step with the director of the Anti-Corruption Establishment Punjab, their department had received over 31,000 complaints of corruption during the past 16 months alone. He further told the newspaper that 6,883 inquiries were also held while approximately PKR 179.88 crore had up to now been recovered. They also reportedly retrieved land worth PKR 1273.89 crore from illegal occupation.

Now, with the introduction of the Report Corruption mobile app, these figures can potentially increase since reporting such incidents will become way more convenient. Let’s take a glance at how this new anti-corruption app in Pakistan works and what are its features.

FEATURES OF THE REPORT CORRUPTION APP
The Report Corruption mobile app, which is offered for download on Google Play Store, provides its users with a chance to report cases of corruption falling within the Punjab jurisdiction from the security of their homes. In fact, they’ll even lodge a complaint anonymously, avoiding any risk of potential backlash. However, one will have to present evidence to proceed with their complaint. Once you’ve installed and opened the new mobile app to stem corruption in Pakistan on your device, you’ll be presented with four options:

  • Report Corruption
  • Lodge Complaint
  • Trap Raids
  • Track Complaints

While features like ‘report corruption,’ ‘lodge complaints’ and ‘track complaints’ are pretty self-explanatory, the term ‘trap raids’ could be new for a few. To put it simply, conducting a trap raid essentially means catching the accused red-handedly. Such raids are often conducted to catch any public servant taking a bribe or committing an identical crime under the anti-corruption laws of Pakistan. However, the presence of an ACE officer in the middle of a special judicial magistrate is mandatory for such operations.

HOW TO REPORT GRAFT THROUGH THE APP
The Report Corruption mobile app boasts a user-friendly interface, making it easy to use even for those that aren’t much tech-savvy. Moreover, it also offers the power to upload evidence within the kind of documents, photos, and videos. Here are the four things you can do via this smart application:

  • Reporting cases of corruption
  • Filing a complaint with ACE
  • Requesting a trap raid
  • Tracking the status of your complaint

Let’s take a glance at how you’ll approach reporting corruption in Pakistan to the relevant authorities through this app to fight graft.

REPORTING CORRUPTION
After you open the app on your phone and click on the window that claims ‘Report Corruption,’ you’ll be directed towards a web form soliciting the subsequent details.

  • Your district
  • National identity card (NIC) number
  • Phone number
  • Full name
  • Additional details (500 words). This step is optional.

A red button on top will ask you to connect evidence within the variety of photos, documents, and/or videos. you’ll attach up to 10 files at a time. Once you’ve added all the specified details within the mandatory fields and attached the evidence of corruption, you just have to press the submit button to proceed along with your report.

LODGING A COMPLAINT
In order to lodge a complaint, the user must click on the relevant window and enter the subsequent details into their app.

  • The name of your district
  • NIC number
  • Phone number
  • Full name
  • Additional details (optional)

This window also requires you to connect evidence within the kind of images, videos, and documents. However, the foremost noteworthy feature of this window is that it allows users to file their complaints anonymously by checking the ‘Hide My Identity’ box at the bottom of the page. Then, simply press the yellow submit button to proceed.

CONDUCTING TRAP RAIDS
This window on the Report Corruption mobile app also asks users to enter similar details. But, unlike others, it doesn’t require any evidence. All you wish to try and do is select your district, enter your NIC number together with your sign and full name. you’ll be able to also provide additional details if you wish to. Once you press the submit button on the app, your application goes into the method.

As per the information available on the official website of Anti-Corruption Establishment Punjab, following the submission of an application, an ACE officer is appointed by the Regional Director to conduct the raid. The said officer then requests for the appointment of a special judicial magistrate, who acts as a supervisor of the trap raid. After the raid proceedings are completed, the judicial submits a close report back to the designated ACE officer for further action.

TRACKING COMPLAINTS
You can keep track of your reports and complaints through this feature of the anti-corruption app. All that you simply must do is enter the tracking ID that’s sent to your transportable into the desired field and press the ‘Track Complaint’ button to be told about the status of your application.

OTHER WAYS TO LODGE A COMPLAINT WITH ANTI-CORRUPTION ESTABLISHMENT PUNJAB
Apart from reporting a corruption case through the graft-fighting app, you’ll be able to also lodge a complaint with the Anti-Corruption Establishment either in person or by post.

WHERE and how TO LODGE A COMPLAINT?
As per the official ACE website, an individual can file a written complaint at any of its offices, including at the Directorate, Regional Offices, and Deputy Directors of Districts. It is important to say the plaintiff must support their application with an affidavit detailing the contents of their complaint. A photocopy of the complainant’s NIC card is additionally required.

HOW LONG DOES IT fancy PROCESS A COMPLAINT?
ACE Punjab responds to such a complaint within a week’s time, after which they initiate an inquiry granted the complainant provided sufficient evidence to support their claim. This inquiry is conducted to determine if the complaint is genuine. Meanwhile, this preliminary inquiry isn’t required for Trap Raid cases.

WHEN is the CASE REGISTERED?
A case against the accused is just registered if the ACE officer who conducted the initial inquiry proposes the complaint as valid. However, case registration widely depends on the case scenario. On the opposite hand, if the allegations mentioned within the complaint don’t seem to be established by the concerned authorities, the case is dropped off following legal scrutiny.

HOW TO CONTACT ACE PUNJAB?
For more details about corruption inquiries and investigations, you’ll be able to contact the headquarters or one amongst the regional offices of Anti-Corruption Establishment Punjab.

Here are the details:

Anti-Corruption Establishment Punjab Headquarter
Address: 2-Farid Kot House, Lahore

Phone: 042-99211380/4

Email: dgacepunjab@gmail.com

Regional Offices of Anti-Corruption Establishment Punjab

CityAddressPhone Number
Lahore8-G Upper Mall Scheme, Lahore042-99205987
RawalpindiH. No. 162/2 Adam Jee Road Rawalpindi Cantt.051-9271961
MultanMohalla Ameer Abad Chungi no.7, Rijwana Road Multan061-9200464
GujranwalaOld DHO Office, Session Court Road Gujranwala055-9200899
FaisalabadCommissioner Complex-111 New Civil Line, Near Commissioner Office, Faisalabad041-9200650
SargodhaMela Mandi Road near Anti-Corruption Court, Sargodha048-9230800
BahawalpurNearby Commissioner Office, Bahawalpur062-9250316
D.G. KhanOpposite Center of Excellence Govt. Girls Central Model High School D.G. Khan064-9260519
SahiwalTehsil Road near district Courts Sahiwal040-9200361

DIGITIZATION of presidency SERVICES
The launch of the Report Corruption app was definitely a much-needed step for the eradication of corruption from Pakistan. But it’s not the sole mobile app introduced by the govt of Pakistan to facilitate the citizens.

Since modern technology has made our lives much easier (you can book a cab and have food delivered to your home with just some finger strokes on your smartphone), having the power to file one’s grievances with the govt. and report grafts through our phones will make these processes more convenient and time-effective. Here are a number of the other digitization campaigns and mobile apps that have made life lots easier for Pakistanis:

  • Digital Pakistan Campaign
  • Pakistan Citizen Portal
  • Device Verification System (DVS) – DIRBS Pakistan
  • FBR Tax Asaan App
  • E-Court Portal

Let’s further discuss each of those initiatives.

DIGITAL PAKISTAN CAMPAIGN
Prime Minister Imran Khan launched the ‘Digital Pakistan Campaign’ earlier this month with an aim to transform Pakistan into a ‘digitally empowered society’ introducing the newest technologies for public welfare. Former Google executive Tania Aidrus was chosen to spearhead the digitization campaign.

The Digital Pakistan initiatives include:

  • Internet access for every Pakistani
  • Enabling the youth to use smartphones for constructive purposes.
  • Introducing e-governance by digitizing intra-government communications moreover as government services
  • Imparting emerging tech and digital skills among the young generation.
  • Promoting innovation and entrepreneurship by providing an enabling environment

The news about the launch of the Digital Pakistan Campaign came shortly after Moody’s Corporation, a world credit rating agency, upgraded Pakistan’s Credit Rating Outlook to stable.

PAKISTAN CITIZEN PORTAL
Pakistan Citizen Portal is one of the top government-owned apps every Pakistani should have on their smartphone. Launched in October 2018, this mobile app was one of every of the first digital initiatives undertaken by this government. It even secured a second-place within the list of ‘best government mobile applications’ during the planet Government Summit 2019.

As the name suggests, Pakistan Citizen Portal allows users to register their complaints online through their smartphones no matter the country they’re currently based in. It also allows people to enter their queries, seek information, and provide suggestions. Moreover, the portal features a number of categories meant for various government departments on both provincial and federal levels. The categories include Government Service Matters, Registration, Law and Order, Energy and Power, Education, Healthcare, Revenue, Municipal Services, and Human Rights to call. You can download Pakistan Citizen’s Portal for free through Google Play Store.

DEVICE VERIFICATION SYSTEM (DVS) – DIRBS PAKISTAN

Launched by Pakistan Telecommunications Authority (PTA) in 2018, the Device Identification, Registration and Blocking System (DIRBS) could be a server-based software platform that identifies smuggled, counterfeit, and stolen mobile phones within the country. This digital system was implemented for a pair of reasons. First of all, it aimed to make sure only registered and approved mobile devices are operational in Pakistan. Secondly, it is intended to discourage phone theft and smuggling, because it keeps a check on all the phones being imported within the country. Thirdly, and most significantly, DIRBS brings all the mobile devices being employed across Pakistan into a net.

It is now mandatory in Pakistan to register your phone with PTA, especially if you’re importing or bringing it from abroad. Otherwise, your device can get blocked. You can find out more about the topic in our detailed guide on PTA mobile registration.

FBR TAX ASAAN APP
Paying taxes in Pakistan has never been easier, all due to the Tax Asaan App. it had been launched by the Federal Board of Revenue (FBR) with an aim to revolutionize the tax system in Pakistan, which it successfully did. The Tax Assan app allows users to pay their taxes online through its E-Payment feature. It also lets taxpayers make their payments using Alternate Delivery Channels while enabling them to make payment slips for income and sales tax.

Another important feature of this app is that it allows users to test their taxpayer status via its Online Verification System. Furthermore, you’ll be able to also register your business for sales tax with the FBR’s Tax Asaan mobile app. The app will be downloaded through the Google Play Store.

THE E-COURT PORTAL
Following the popularity of e-court systems around the world, which employ the emerging digital possibilities and therefore the latest hardware to create things more convenient for both the judges and justice seekers, chief justice of Pakistan Justice Asif Saeed Khan Khosa also inaugurated the first-ever e-court portal system.

The Supreme Court’s litigant-friendly e-court portal aimed to digitize the judiciary in Pakistan by making the system more responsive and time-efficient. The portal was launched alongside a brand new and improved website featuring a variety of smart tools. As per the official announcement, the Supreme Court IT committee worked with the National Database and Registration Authority (NADRA) to launch the system. The main features of the Supreme Court’s e-portal include a video link facility, an online case search tool, a judgment search window, and a cause list search.

These apps and portals are just some of the steps taken by the govt to digitize its services for the welfare of the general public. While initiatives like FBR’s Tax Asaan App and also the Pakistan Citizen Portal are being widely used, innovative apps just like the recently-launched Report Corruption are gaining popularity.

رپورٹ کرپشن – پاکستان کی پہلی اینٹی گرافٹ موبائل ایپ

ملک میں کرپٹ عناصر کے خلاف اپنی لڑائی کو ڈیجیٹلائز کرنے کے لیے حکومت پاکستان نے حال ہی میں ایک اینٹی کرپشن ایپ لانچ کی ہے جو شہریوں کو اقتدار میں رہنے والوں کی جانب سے کی جانے والی بے ایمانی اور دھوکہ دہی کی سرگرمیوں کی اطلاع دینے کی اجازت دے گی۔ وزیراعظم عمران خان نے اینٹی کرپشن کے عالمی دن کے موقع پر ’رپورٹ کرپشن‘ نامی موبائل ایپ لانچ کی ، نوجوانوں پر زور دیا کہ وہ اس عمل میں حصہ لیں اور جو لوگ اس طرح کی سرگرمیوں میں ملوث ہیں انہیں بے نقاب کریں۔

افتتاحی تقریب کے دوران عمران خان نے کہا کہ ایک ملک ترقی نہیں کر سکتا جہاں حکمران کرپٹ طرز عمل میں ملوث ہوں۔ انہوں نے مزید کہا کہ کرپٹ شخص قوم کا دشمن ہے۔اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ (اے سی ای) پنجاب ، حکومت پنجاب کے تحت کام کرنے والے سروسز اور جنرل ایڈمنسٹریشن ڈیپارٹمنٹ (ایس اینڈ جی اے ڈی) کے ذیلی شعبے کی جانب سے کرپشن سے لڑنے والی ایپ متعارف کرائی گئی۔ رپورٹ کرپشن موبائل ایپ ، جس کا مقصد پاکستان کو ایک جدید اور شفاف قوم میں تبدیل کرنا ہے ، صارفین کو گمنامی میں شکایات درج کرنے کی اجازت دے گی۔

ایک مقامی انگریزی روزنامے میں شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے احتساب شہزاد اکبر نے تجویز دی کہ اس وقت اینٹی کرپشن کے پورے شعبے کی ڈیجیٹلائزیشن ہو رہی ہے۔ مزید برآں ، اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ پنجاب کے ڈائریکٹر کے مطابق ، صرف 16 ماہ کے دوران ان کے محکمہ کو کرپشن کی 31 ہزار سے زائد شکایات موصول ہوئیں۔ انہوں نے اخبار کو مزید بتایا کہ 6،883 پوچھ گچھ بھی ہوئی جبکہ تقریبا 179.88 کروڑ روپے اب تک برآمد ہو چکے ہیں۔ انہوں نے مبینہ طور پر غیر قانونی قبضے سے 1273.89 کروڑ روپے کی زمین بھی حاصل کی۔اب ، رپورٹ کرپشن موبائل ایپ کے متعارف ہونے سے ، یہ اعداد و شمار ممکنہ طور پر بڑھ سکتے ہیں کیونکہ اس طرح کے واقعات کی رپورٹنگ زیادہ آسان ہو جائے گی۔آئیے ایک نظر ڈالتے ہیں کہ پاکستان میں اینٹی کرپشن کی یہ نئی ایپ کیسے کام کرتی ہے اور اس کی خصوصیات کیا ہیں۔

رپورٹ کرپشن اے پی پی کی خصوصیات۔

https://www.facebook.com/watch/?v=454417965258175&t=17

رپورٹ کرپشن موبائل ایپ ، جو کہ گوگل پلے سٹور پر ڈاؤن لوڈ کے لیے دستیاب ہے ، اپنے صارفین کو اپنے گھروں کی حفاظت سے پنجاب کے دائرہ اختیار میں آنے والے بدعنوانی کے معاملات کی رپورٹنگ کا موقع فراہم کرتی ہے۔ در حقیقت ، وہ ممکنہ ردعمل کے کسی بھی خطرے سے بچتے ہوئے ، گمنامی میں شکایت درج کروا سکتے ہیں۔ تاہم ، کسی کو اپنی شکایت کو آگے بڑھانے کے لیے ثبوت پیش کرنے کی ضرورت ہوگی۔ایک بار جب آپ نے اپنے آلے پر پاکستان میں بدعنوانی کو روکنے کے لیے نئی موبائل ایپ انسٹال اور کھول دی تو آپ کو چار آپشنز پیش کیے جائیں گے:

نمبر1:کرپشن کی اطلاع دیں۔
نمبر2: شکایت درج کرائیں
نمبر3:ٹریپ چھاپے۔
نمبر4:شکایات کو ٹریک کریں۔

اگرچہ ‘رپورٹ کرپشن’ ، ‘شکایات درج کروانا’ اور ‘شکایات کا سراغ لگانا’ جیسی خصوصیات کافی وضاحت طلب ہیں ، لیکن ‘ٹریپ چھاپے’ کی اصطلاح کچھ لوگوں کے لیے نئی ہو سکتی ہے۔آسان الفاظ میں ، ٹریپ چھاپہ مارنے کا بنیادی مطلب ملزم کو رنگے ہاتھوں پکڑنا ہے۔ پاکستان کے اینٹی کرپشن قوانین کے تحت کسی بھی سرکاری ملازم کو رشوت لیتے ہوئے یا اسی طرح کا جرم کرنے پر پکڑنے کے لیے اس طرح کے چھاپے مارے جا سکتے ہیں۔ تاہم ، اس طرح کے آپریشنز کے لیے خصوصی جوڈیشل مجسٹریٹ کے ساتھ اے سی ای افسر کی موجودگی لازمی ہے۔

اے پی پی کے ذریعے گرافٹ کی رپورٹ کیسے کریں۔
رپورٹ کرپشن موبائل ایپ ایک صارف دوست انٹرفیس کی حامل ہے ، جو اسے استعمال میں آسان بناتی ہے یہاں تک کہ ان لوگوں کے لیے بھی جو زیادہ تکنیکی نہیں ہیں۔ مزید یہ کہ یہ دستاویزات ، تصاویر اور ویڈیوز کی شکل میں ثبوت اپ لوڈ کرنے کی سہولت بھی فراہم کرتا ہے۔یہ چار چیزیں ہیں جو آپ اس سمارٹ ایپلی کیشن کے ذریعے کر سکتے ہیں۔

نمبر1:کرپشن کے مقدمات کی رپورٹنگ۔
نمبر2:اے سی ای کے ساتھ شکایت درج کرنا۔
نمر3:ٹریپ چھاپے کی درخواست۔
نمبر4:اپنی شکایت کی حیثیت کا سراغ لگانا۔

آئیے اس پر ایک نظر ڈالتے ہیں کہ آپ کرپشن سے لڑنے کے لیے اس ایپ کے ذریعے متعلقہ حکام کو پاکستان میں بدعنوانی کی اطلاع کیسے دے سکتے ہیں۔

رپورٹنگ کرپشن۔

رپورٹنگ کرپشن۔
رپورٹنگ کرپشن۔

جب آپ اپنے فون پر ایپ کھولیں اور ونڈو پر کلک کریں جس میں کہا گیا ہے کہ ‘کرپشن کی اطلاع دیں’ ، آپ کو ایک آن لائن فارم کی طرف رہنمائی کی جائے گی جس میں درج ذیل تفصیلات طلب کی جائیں گی۔

نمبر1:آپ کا ضلع۔
نمبر2:قومی شناختی کارڈ (این آئی سی) نمبر۔
نمبر3:فون نمبر
نمبر4:پورا نام
نمبر5:اضافی تفصیلات (500 الفاظ) یہ مرحلہ اختیاری ہے۔

اوپر ایک سرخ بٹن آپ سے تصاویر ، دستاویزات اور/یا ویڈیوز کی شکل میں ثبوت منسلک کرنے کے لیے بھی کہے گا۔ آپ ایک وقت میں 10 فائلیں منسلک کرسکتے ہیں۔ایک بار جب آپ نے لازمی شعبوں میں تمام مطلوبہ تفصیلات شامل کر لیں اور بدعنوانی کے ثبوت منسلک کر لیں ، آپ کو اپنی رپورٹ کو آگے بڑھانے کے لیے صرف جمع کرانے کا بٹن دبانا ہوگا۔

شکایت لوڈنگ

شکایت لوڈنگ
شکایت لوڈنگ

شکایت درج کروانے کے لیے ، صارف کو لازمی طور پر متعلقہ ونڈو پر کلک کرنا چاہیے اور اپنی ایپ میں درج ذیل تفصیلات درج کرنی چاہیے۔

نمبر1:آپ کے ضلع کا نام۔
نمبر2:این آئی سی نمبر
نمبر3:فون نمبر
نمبر4:پورا نام
نمبر5:اضافی تفصیلات (اختیاری)

اس ونڈو میں آپ کو تصاویر ، ویڈیوز اور دستاویزات کی شکل میں ثبوت بھی شامل کرنے کی ضرورت ہے۔تاہم ، اس ونڈو کی سب سے قابل ذکر خصوصیت یہ ہے کہ یہ صارفین کو صفحے کے نیچے ‘میری شناخت چھپائیں’ باکس کو چیک کرکے گمنامی میں اپنی شکایت درج کرانے کی اجازت دیتا ہے۔ پھر ، آگے بڑھنے کے لیے صرف زرد رنگ کا جمع کرانے کا بٹن دبائیں۔

ٹریپ چھاپوں کا انعقاد۔

ٹریپ چھاپوں کا انعقاد۔
ٹریپ چھاپوں کا انعقاد۔

رپورٹ کرپشن موبائل ایپ پر یہ ونڈو صارفین سے بھی اسی طرح کی تفصیلات درج کرنے کو کہتی ہے۔ لیکن ، دوسروں کے برعکس ، اسے کسی ثبوت کی ضرورت نہیں ہے۔آپ کو صرف اپنا ضلع منتخب کرنے کی ضرورت ہے ، اپنا این آئی سی نمبر اپنے فون نمبر اور پورے نام کے ساتھ درج کریں۔ اگر آپ چاہیں تو آپ اضافی تفصیلات بھی دے سکتے ہیں۔ ایک بار جب آپ ایپ پر جمع کرانے کا بٹن دبائیں گے ، آپ کی درخواست عمل میں آجائے گی۔اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ پنجاب کی آفیشل ویب سائٹ پر دستیاب معلومات کے مطابق ، ایک درخواست جمع کرانے کے بعد ، ریجنل ڈائریکٹر کی جانب سے چھاپہ مارنے کے لیے ایک “اے سی ای” افسر مقرر کیا جاتا ہے۔ مذکورہ افسر پھر خصوصی جوڈیشل مجسٹریٹ کی تقرری کی درخواست کرتا ہے ، جو ٹریپ چھاپے کے نگران کے طور پر کام کرتا ہے۔چھاپے کی کارروائی مکمل ہونے کے بعد ، عدالتی مزید کارروائی کے لیے نامزد “اے سی ای” افسر کو ایک تفصیلی رپورٹ پیش کرتا ہے۔

ٹریکنگ شکایات

ٹریکنگ شکایات
ٹریکنگ شکایات

آپ اینٹی کرپشن ایپ کے اس فیچر کے ذریعے اپنی رپورٹس اور شکایات پر نظر رکھ سکتے ہیں۔ آپ کو جو کچھ کرنے کی ضرورت ہے وہ ٹریکنگ آئی ڈی درج کریں جو آپ کے موبائل فون کو مطلوبہ فیلڈ میں بھیجی گئی ہے اور اپنی درخواست کی حیثیت کے بارے میں جاننے کے لیے ‘ٹریک شکایت’ کا بٹن دبائیں۔

اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ پنجاب کے ساتھ شکایت درج کرنے کے دیگر طریقے
کرپشن سے لڑنے والی ایپ کے ذریعے بدعنوانی کے کیس کی اطلاع دینے کے علاوہ ، آپ انسداد بدعنوانی اسٹیبلشمنٹ میں ذاتی طور پر یا ڈاک کے ذریعے بھی شکایت درج کروا سکتے ہیں۔

ایک شکایت کا جواب کہاں اور کیسے دیا جائے؟
اے سی ای کی سرکاری ویب سائٹ کے مطابق ، ایک فرد اپنے کسی بھی دفتر میں تحریری شکایت درج کر سکتا ہے ، بشمول ڈائریکٹوریٹ ، علاقائی دفاتر اور اضلاع کے ڈپٹی ڈائریکٹرز۔یہ بتانا ضروری ہے کہ مدعی کو اپنی درخواست کے حلف نامے کے ساتھ اپنی شکایت کے مندرجات کی تفصیل کے ساتھ مدد کرنی چاہیے۔ شکایت کنندہ کے این آئی سی کارڈ کی فوٹو کاپی بھی ضروری ہے۔

کسی شکایت کی کارروائی میں کتنا وقت لگتا ہے؟
اے سی ای پنجاب اس طرح کی شکایت کا ایک ہفتے کے اندر جواب دیتا ہے ، جس کے بعد انہوں نے انکوائری شروع کی جب کہ شکایت کنندہ نے اپنے دعوے کی تائید کے لیے کافی ثبوت فراہم کیے۔ یہ انکوائری اس لیے کی گئی ہے تاکہ یہ معلوم کیا جا سکے کہ شکایت حقیقی ہے یا نہیں۔دریں اثنا ، یہ ابتدائی انکوائری ٹریپ چھاپہ مار مقدمات کے لیے ضروری نہیں ہے۔

کیس کب رجسٹرڈ ہے؟
ملزم کے خلاف مقدمہ صرف اس صورت میں درج کیا جاتا ہے جب “اے سی ای” افسر جس نے ابتدائی انکوائری کی تھی شکایت کو درست قرار دے۔ تاہم ، کیس کا اندراج وسیع پیمانے پر کیس کے منظر نامے پر منحصر ہے۔دوسری طرف ، اگر شکایت میں مذکورہ الزامات متعلقہ حکام کی جانب سے قائم نہیں کیے جاتے ہیں تو قانونی جانچ پڑتال کے بعد کیس کو خارج کر دیا جاتا ہے۔

پنجاب سے کیسے رابطہ کریں؟
کرپشن کی انکوائریوں اور تحقیقات کے بارے میں مزید تفصیلات کے لیے آپ ہیڈ کوارٹر یا اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ پنجاب کے علاقائی دفاتر میں سے کسی ایک سے رابطہ کر سکتے ہیں۔

یہاں تفصیلات ہیں

اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ پنجاب ہیڈ کوارٹر
پتہ: 2-فرید کوٹ ہاؤس ، لاہور۔

فون: 042-99211380/4۔

ای میل: dgacepunjab@gmail.com

اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ پنجاب کے علاقائی دفاتر

CityAddressPhone Number
Lahore8-G Upper Mall Scheme, Lahore042-99205987
RawalpindiH. No. 162/2 Adam Jee Road Rawalpindi Cantt.051-9271961
MultanMohalla Ameer Abad Chungi no.7, Rijwana Road Multan061-9200464
GujranwalaOld DHO Office, Session Court Road Gujranwala055-9200899
FaisalabadCommissioner Complex-111 New Civil Line, Near Commissioner Office, Faisalabad041-9200650
SargodhaMela Mandi Road near Anti-Corruption Court, Sargodha048-9230800
BahawalpurNearby Commissioner Office, Bahawalpur062-9250316
D.G. KhanOpposite Center of Excellence Govt. Girls Central Model High School D.G. Khan064-9260519
SahiwalTehsil Road near district Courts Sahiwal040-9200361

گورنمنٹ سروسز کی ڈیجیٹائزیشن
رپورٹ کرپشن ایپ کا اجرا یقینی طور پر پاکستان سے بدعنوانی کے خاتمے کے لیے انتہائی ضروری قدم تھا۔ لیکن یہ حکومت پاکستان کی جانب سے شہریوں کی سہولت کے لیے متعارف کرائی جانے والی واحد موبائل ایپ نہیں ہے۔چونکہ جدید ٹکنالوجی نے ہماری زندگی کو بہت آسان بنا دیا ہے (آپ ٹیکسی بک کر سکتے ہیں اور اپنے گھر میں کھانا صرف چند انگلیوں کے اسٹروک کے ساتھ پہنچا سکتے ہیں) ، حکومت کے ساتھ اپنی شکایت درج کروانے اور ہمارے فون کے ذریعے گرافٹس کی اطلاع دینے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ ان عملوں کو زیادہ آسان اور وقتی بنائیں۔یہاں کچھ دیگر ڈیجیٹلائزیشن مہمات اور موبائل ایپس ہیں جنہوں نے پاکستانیوں کے لیے زندگی کو بہت آسان بنا دیا ہے۔

نمبر1:ڈیجیٹل پاکستان مہم
نمبر2:پاکستان سٹیزن پورٹل
نمبر3:ڈیوائس ویریفیکیشن سسٹم (ڈی وی ایس) – ڈی آئی آر بی ایس پاکستان۔
نمبر4:ایف بی آر ٹیکس آسن ایپ۔
نمبر5:ای کورٹ پورٹل۔

ڈیجیٹل پاکستانی کیمپین۔
وزیراعظم عمران خان نے اس مہینے کے شروع میں ‘ڈیجیٹل پاکستان مہم’ کا آغاز کیا تھا جس کا مقصد پاکستان کو ایک ‘ڈیجیٹل بااختیار معاشرے’ میں تبدیل کرنا ہے جس میں عوامی فلاح و بہبود کے لیے جدید ٹیکنالوجی متعارف کرائی گئی ہے۔ گوگل کی سابقہ ​​ایگزیکٹو تانیہ ایڈروس کو ڈیجیٹلائزیشن مہم کی سربراہی کے لیے منتخب کیا گیا۔ڈیجیٹل پاکستان کے اقدامات میں شامل ہیں:

نمبر1:ہر پاکستانی کے لیے انٹرنیٹ کی سہولت
نمبر2:نوجوانوں کو تعمیری مقاصد کے لیے اسمارٹ فون استعمال کرنے کے قابل بنانا۔
نمبر3:انٹرا گورنمنٹ مواصلات کے ساتھ ساتھ سرکاری خدمات کو ڈیجیٹل بناتے ہوئے ای گورننس متعارف
نمبر4:نوجوان نسل میں ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجی اور ڈیجیٹل مہارت کی فراہمی۔
نمبر5:قابل ماحول فراہم کرکے جدت اور کاروباری صلاحیت کو فروغ دینا۔

پاکستانی شہری پورٹل

پاکستانی شہری پورٹل
پاکستانی شہری پورٹل

پاکستان سٹیزن پورٹل ایک اعلیٰ سرکاری ملکیتی ایپس میں سے ایک ہے جو ہر پاکستانی کو اپنے اسمارٹ فون پر ہونا چاہیے۔ اکتوبر 2018 میں لانچ کی گئی ، یہ موبائل ایپ موجودہ حکومت کی جانب سے شروع کیے گئے پہلے ڈیجیٹل اقدامات میں سے ایک تھی۔ یہاں تک کہ اس نے ورلڈ گورنمنٹ سمٹ 2019 کے دوران ‘بہترین سرکاری موبائل ایپلی کیشنز’ کی فہرست میں دوسرا مقام حاصل کیا۔جیسا کہ نام سے پتہ چلتا ہے ، پاکستان سٹیزن پورٹل صارفین کو اپنے سمارٹ فون کے ذریعے اپنی شکایات آن لائن رجسٹر کرنے کی اجازت دیتا ہے چاہے وہ اس ملک میں ہی کیوں نہ ہوں۔مزید یہ کہ ، پورٹل صوبائی اور وفاقی دونوں سطحوں پر مختلف سرکاری محکموں کے لیے متعدد زمروں کی خصوصیات پیش کرتا ہے۔ زمرہ جات میں سرکاری سروس کے معاملات ، رجسٹریشن ، امن و امان ، توانائی اور بجلی ، تعلیم ، صحت کی دیکھ بھال ، ریونیو ، میونسپل سروسز اور انسانی حقوق شامل ہیں۔آپ پاکستان سٹیزن پورٹل گوگل پلے سٹور کے ذریعے مفت ڈاؤن لوڈ کر سکتے ہیں۔

ڈیوائس کی تصدیق کا نظام (ڈی وی ایس) – ڈربس پاکستان۔

ڈیوائس کی تصدیق کا نظام (ڈی وی ایس) - ڈربس پاکستان۔
ڈیوائس کی تصدیق کا نظام (ڈی وی ایس) – ڈربس پاکستان۔

پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) کی جانب سے 2018 میں شروع کیا گیا ، آلہ کی شناخت ، رجسٹریشن اور بلاکنگ سسٹم (ڈی آئی آر بی ایس) ایک سرور پر مبنی سافٹ ویئر پلیٹ فارم ہے جو ملک میں اسمگل شدہ ، جعلی اور چوری شدہ موبائل فونز کی شناخت کرتا ہے۔ یہ ڈیجیٹل نظام چند وجوہات کی بنا پر نافذ کیا گیا تھا۔ سب سے پہلے ، اس کا مقصد یہ یقینی بنانا ہے کہ پاکستان میں صرف رجسٹرڈ اور منظور شدہ موبائل آلات کام کر رہے ہیں۔ دوم ، اس کا مقصد فون چوری اور اسمگلنگ کی حوصلہ شکنی کرنا ہے ، کیونکہ یہ ملک میں درآمد ہونے والے تمام فونز پر چیک رکھتا ہے۔ تیسری اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ ڈی آئی آر بی ایس پاکستان میں استعمال ہونے والے تمام موبائل آلات کو نیٹ میں لاتا ہے۔

اب پاکستان میں یہ لازمی ہو گیا ہے کہ آپ اپنا فون پی ٹی اے کے ساتھ رجسٹر کریں ، خاص طور پر اگر آپ اسے بیرون ملک سے درآمد یا لا رہے ہیں۔ بصورت دیگر ، آپ کا آلہ بلاک ہو سکتا ہے۔آپ پی ٹی اے موبائل رجسٹریشن پر ہماری تفصیلی گائیڈ میں اس موضوع کے بارے میں مزید معلومات حاصل کرسکتے ہیں۔

ایف بی آر ٹیکس آسان ایپ۔

ایف بی آر ٹیکس آسان ایپ۔
ایف بی آر ٹیکس آسان ایپ۔

پاکستان میں ٹیکس کی ادائیگی کبھی بھی آسان نہیں تھی ، ٹیکس آسن ایپ کی بدولت۔ اس کا آغاز فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) نے پاکستان میں ٹیکس کے نظام میں انقلاب لانے کے مقصد سے کیا تھا ، جو اس نے کامیابی سے انجام دیا۔ٹیکس آسن ایپ صارفین کو اپنے ٹیکس ادائیگی کی خصوصیت کے ذریعے آن لائن ادا کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ یہ ٹیکس دہندگان کو متبادل ڈیلیوری چینلز کا استعمال کرتے ہوئے اپنی ادائیگی کرنے دیتا ہے جبکہ انکم اور سیلز ٹیکس کے لیے ادائیگی کی پرچی بنانے کے قابل بناتا ہے۔

اس ایپ کی ایک اور اہم خصوصیت یہ ہے کہ یہ صارفین کو اپنے آن لائن ویریفیکیشن سسٹم کے ذریعے اپنے ٹیکس دہندگان کی حیثیت چیک کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ مزید یہ کہ آپ اپنے کاروبار کو سیلز ٹیکس کے لیے ایف بی آر کے ٹیکس آسن موبائل ایپ کے ذریعے بھی رجسٹر کروا سکتے ہیں۔ایپ کو گوگل پلے سٹور کے ذریعے ڈاؤن لوڈ کیا جا سکتا ہے۔

ای کورٹ پورٹل۔

ای کورٹ پورٹل۔
ای کورٹ پورٹل۔

دنیا بھر میں ای کورٹ سسٹم کی مقبولیت کے بعد ، جو ابھرتے ہوئے ڈیجیٹل امکانات اور جدید ہارڈ ویئر کو استعمال کرتے ہیں تاکہ ججوں اور انصاف کے متلاشی دونوں کے لیے چیزوں کو زیادہ آسان بنایا جا سکے ، چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس آصف سعید خان کھوسہ نے بھی پہلی بار ای کورٹ پورٹل سسٹم کا افتتاح کیا.سپریم کورٹ کے قانونی دوست ای کورٹ پورٹل کا مقصد پاکستان میں عدلیہ کو ڈیجیٹل بنانا ہے تاکہ قانونی نظام کو زیادہ جوابدہ اور وقت کے مطابق بنایا جا سکے۔ یہ پورٹل ایک نئی اور بہتر ویب سائٹ کے ساتھ لانچ کیا گیا جس میں متعدد سمارٹ ٹولز شامل ہیں۔

سرکاری پریس ریلیز کے مطابق ، سپریم کورٹ آئی ٹی کمیٹی نے سسٹم کو شروع کرنے کے لیے نیشنل ڈیٹا بیس اینڈ رجسٹریشن اتھارٹی (نادرا) کے ساتھ مل کر کام کیا۔سپریم کورٹ کے ای پورٹل کی اہم خصوصیات میں ایک ویڈیو لنک کی سہولت ، ایک آن لائن کیس سرچ ٹول ، ایک فیصلہ تلاش کی کھڑکی اور ایک کاز لسٹ تلاش شامل ہیں۔یہ ایپس اور پورٹل حکومت کی جانب سے عوام کی فلاح و بہبود کے لیے اپنی خدمات کو ڈیجیٹل بنانے کے لیے اٹھائے گئے اقدامات میں سے صرف چند ایک ہیں۔ جب کہ ایف بی آر کی ٹیکس آسن ایپ اور پاکستان سٹیزن پورٹل جیسے اقدامات کو بڑے پیمانے پر استعمال کیا جا رہا ہے ، حال ہی میں شروع ہونے والی رپورٹ کرپشن جیسی جدید ایپس بھی مقبولیت حاصل کر رہی ہیں۔

 

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!