کاروبار

Fish Farming Business in Pakistan-Everything You need to know

پاکستان میں فش فارمنگ کا کاروبار - ہر وہ چیز جو آپ کو جاننے کی ضرورت ہے۔

ماہی گیری دنیا کے قدیم ترین اور قدیم طرز زندگی میں سے ایک ہے۔ دنیا بھر میں ماہی گیروں کے ذریعہ ہر روز لاکھوں مچھلیاں پکڑی جاتی ہیں جس میں ماہی گیری ممکنہ طور پر دستیاب خوراک کی پیداوار کا سب سے سستا نظام ہے۔ بہر حال، جیسے جیسے ماہی گیری بہت زیادہ ہوتی جارہی ہے اور مچھلی کے فارموں کو مارکیٹنگ کی جگہ مل رہی ہے،ویسے ہی فش فارمز ہمارےشہروں میں ایک قسم کی عفریت بن گئے ہیں۔

ارتھ فش فارمنگ ایک فش فارمنگ انڈسٹری ہے جس کے تحت پانی کے ٹینکوں میں مچھلی کی پرورش کی جاتی ہے۔ یہ فارم اٹلانٹک فش فارمنگ فارموں سے کم کاربن ڈائی آکسائیڈ پیدا کرتے ہیں۔ اگر کوئی شخص سمندر یا ندی کے قریب رہتا ہو یا اسے اس کا شوق ہو تو گھر میں مچھلی کی فارمنگ کی جا سکتی ہے۔پاکستان میں فش فارمنگ کے لیے کم سرمایہ کاری اور لاگت درکار ہے پوری ٹریننگ کے دوران یہ پتہ چلا کہ گرمبل فش فارم کے لیے فی ایکڑ ایک بار درکار وینچر 1,24,000 روپے درکار ہیں، جب کہ ریگولر فی یونٹ فنکشننگ چارج 38,000/ روپے درکار ہیں۔ سمندری فرش اقتصادی طور پر ناقابل رسائی ہے۔ تاہم، ساحل مچھلی کاشتکاری کے لیے مثالی ہیں۔ پاکستان میں فش فارمنگ کی فزیبلٹی اتنی زیادہ نہیں ہے۔مچھلی کے فارمز ٹھنڈ سے سب سے زیادہ متاثر ہوتے ہیں۔ مچھلی کاشتکار کرنے والے مچھلی کی حفاظت کو یقینی بنا سکتے ہیں جب وہی موسمی حالات اپنے عروج پر ہوں، اگر انہوں نے مچھلی کے لیے پناہ گاہ تیار کی ہو۔ کیڑے مچھلی کے فارموں کے لیے ایک اہم خطرہ ہیں۔ کچھ بیج کیڑے مکوڑوں کو زہریلے مادوں کو اپنے میزبان پودوں تک لے جانے کا سبب بنتے ہیں۔ اس سے بہت سی مچھلیاں مر سکتی ہیں۔ اس خطرے سے نمٹنے کا واحد طریقہ مچھلی کو حفاظتی ٹیکہ لگانا ہے ماحولیاتی عوامل مچھلی کی افزائش کو متاثر کرتے ہیں۔ ان میں فضائی آلودگی، پانی کی کمی اور بارشوں کی تبدیلی،نیز رہائش کے عوامل شامل ہیں۔

Fish Farming Business in Pakistan-Everything You need to know
Fish Farming Business in Pakistan-Everything You need to know

پانی کی کمی کی وجہ سے مچھلی کاشتکاری میں کامیابی کے امکانات کم ہیں۔ نیز، سمندری پانیوں میں محدود مقدار میں غذائی اجزاء ہوتے ہیں۔بہر حال، سمندری مچھلیوں کی فارمنگ کے لیے پانی کو نائٹروجن اور فاسفورس کے مچھلی کے ذرات سے بایو فورٹیفائیڈ کیا جا سکتا ہے۔ نائٹروجن اور فاسفورس جیسے غذائی اجزاء کاربن ڈائی آکسائیڈ کو کم کرکے اور آبی پودوں کی نشوونما کو بہتر بنا کر مچھلی کو تیزی سے بڑھنے میں مدد دیتے ہیں۔ مچھلی کاشتکاری آبی زراعت کی ایک شکل ہے۔غذائی اجزاء کی کمی، غیر نامیاتی آلودگیوں اور کیڑوں کی وجہ سے سمندری مچھلی کاشت کاری محدود ہے۔ جب مچھلی بائیو ڈیگریڈیبل ہوتی ہے تو ان کی مصنوعات کا معیار بڑھ جاتا ہے۔ آخر میں، بہت سی چیزیں مچھلی کی کھیتی کو متاثر کرتی ہیں، لیکن آج کل، آبی زراعت تیزی سے ترقی کرنے والی عالمی صنعتوں میں سے ایک ہے۔

پاکستان میں فش فارمنگ کیسے شروع کی جائے۔
مچھلی کے زرعی کاروبار کو شروع کرنے کے لیے بہت ساری معلومات، صلاحیت کے ساتھ ساتھ وینچر کیپیٹلسٹ کے طور پر تیاری کی ضرورت ہوتی ہے، پیشہ کو امید افزا بنانے کے لیے بہت زیادہ لاگت پر غور کرنا پڑے گا۔ اسی طرح، فش فارمنگ کامرس شروع کرنے میں مچھلی کی تخلیق کے دونوں مخصوص طریقوں کی مرتکز تعلیم شامل ہو گی، اس کے علاوہ فرد کو سامان کے لیے جو خرچ کرنا پڑتا ہے، فش فارمنگ کمرشل ایک بہت ہی پیسہ کمانے کی کوشش کا مظاہرہ کر سکتا ہے۔ پاکستان کی فزیبلٹی میں فش فارمنگ اتنی اچھی نہیں ہے۔بنیادی چیز جو کسی بھی ممکنہ مچھلی کاشت کرنے والے تجارتی مالک کو کرنی ہے وہ یہ ہے کہ وہ مچھلی کے فلسفے کے بارے میں جتنا ممکن ہو اتنا علم حاصل کرے۔ یہ انتہائی قابل قدر ہے کہ افراد کو کچھ اسکولوں میں پیشرفت کرنی چاہیے .اگر مچھلی کاشت کرنے والے تجارتی مالک کے پاس کوئی علم نہیں ہے تو یہ اچھا ہے کہ فرد پہلے کوشش کرے پھر مچھلی کاشت کرنے کے کاموں اور نہ کرنے کے بارے میں جاننے کے لیے ماہر فش فارمنگ کے لیے محنت کرے۔ اگر کسی فرد کے پاس معلومات ہیں تو وہ فش فارمنگ پر تحقیقی کام کرے۔

Fish Farming Business in Pakistan-Everything You need to know
Fish Farming Business in Pakistan-Everything You need to know

جو شخص فش فارمنگ کا کاروبار کرنا چاہتا ہے اسے ان حالات کو سیکھنے کی ضرورت ہے جو فش فارم پر اس کی منصوبہ بند پوزیشن کو کنارے لگاتے ہیں۔ کچھ مچھلیاں گرم پانی میں دوسروں کے مقابلے میں زیادہ تیزی سے صحت مند ہوتی ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ اس شخص کو فارم میں جگہ جگہ تعمیرات کے علاوہ ماحول کی سازگاری کو بھی دیکھنا چاہیے۔ ماحول کے حالات کا مشاہدہ کرنے کے بعد کاروباری شخص کو مچھلی کے قابل فہم بازار کا بھی جائزہ لینا ہوگا۔ بغیر خریدار کے مچھلیاں پکڑنے کا بوجھ لاد لینا منافع بخش نہیں ہے۔اگر اس بحث کے بعد بھی مچھلی کا زرعی کاروبار قابل فہم نظر آتا ہے تو پھر یہ پیشہ کے متوقع اور غیر متوقع اخراجات کو تشکیل دے کر مالیاتی خصوصیت کی منصوبہ بندی کرنے کی مدت باقی رہ جاتی ہے۔ وسائل کی بنیادیں کیا ہوں گی؟ اس کے علاوہ پوری چیز کی قیمت کتنی ہے۔ اس مانیٹری امتحان کے ذریعے، کاروباری شخص کو طویل مدت میں یہ معلوم ہو جائے گا کہ وہ کس طریقے سے متغیر قیمت کو واپس کرنے کے لیے کتنا ریونیو حاصل کرنا چاہتا ہے، اس کے علاوہ گو ماہی گیری کاشتکاری شروع کرنا پیسہ کمانا ہے یا نہیں۔

مچھلی کاشت کرنے کی تکنیک
فش فارمنگ ایک ایسا عمل ہے جس میں مچھلی گھر کے اندر پالی جاتی ہے۔ اسے کھانے کے طور پر اعلیٰ اداروں کو مچھلی بیچ کر آسانی سے فروخت کیا جاتا ہے۔ یا انہیں بازار میں بیچنا بھی ممکن ہے۔ مچھلی کاشتکاری کو دو اہم نظاموں کے استعمال سے منظم کیا جا سکتا ہے،

نمبر1: اٹلانٹک فش فارمنگ
نمبر2: ارتھ فش فارمنگ

مچھلی کاشت کرنے کے کئی مقاصد ہیں۔

Fish Farming Business in Pakistan-Everything You need to know
Fish Farming Business in Pakistan-Everything You need to know

سب سے پہلے، یہ انفرادی مچھلیوں کے ساتھ مسابقت کے دباؤ کے ذریعے آبادی کو بڑھاتا ہے (یعنی مچھلی کی ایک نسل کی آبادی میں اضافہ)۔
دوسرا، مچھلی کی کھیتی سالمن کو اگانے کے لیے بہتر حالات کی اجازت دیتی ہے (یعنی زیادہ مقدار میں ہیچری خوراک، روشنی، آکسیجن اور اس طرح کی چیزیں)۔
تیسرا، مچھلی کاشتکاری کھانے کی لاگت کو بھی کم کرتی ہے – مثال کے طور پر، چلی میں مچھلی کی فارمنگ میں فی میٹرک ٹن مچھلی کی قیمت 10000 روپے سے زیادہ ہے، اس کے مقابلے میں فی میٹرک ٹن گائے کے گوشت کی قیمت 13000 روپے سے زیادہ ہے۔
دوسری طرف، مچھلی کاشتکاری میں سمندر سے تمام سمندری رہائش گاہوں کو ہٹانا بھی شامل ہے۔ آبی زندگی کے لحاظ سے، سمندر میں سالمن کا گھر ایک ‘سرمایہ دار جزیرہ’ ہے – مچھلی کے فارم سالمن سمندر کے قریب پروان چڑھتے ہیں۔وہ سمندر کے پانی کے ساتھ براہ راست تعامل کرتے ہیں اور غذائی اجزا فراہم کرتے ہیں، پانی میں فوٹو کیمیکل رد عمل کرتے ہیں، اور آلودگی کو جمع کرتے ہیں۔ بدلے میں، یہ کچھ رہائش گاہوں کی کمی کا باعث بنتا ہے۔ ہم مچھلی کاشتکاری کو محض ایک ماحولیاتی مسئلہ کیوں کہیں گے؟ کیا مچھلی کاشت کرنا ایک ماحولیاتی مسئلہ ہے۔

اگر اخلاقی طور پر درست طریقے سے اور فطرت کے مطابق کیا جائے فش فارمز کی عام طور پر منفی ساکھ ہوتی ہے۔ تاہم، سالمن فارمز کو احترام اور تعاون کے ساتھ پایہ تکمیل تک پہنچایا جا سکتا ہے۔ ایسے فش فارمز ہیں جو بہت اچھی طرح سے کام کرتے ہیں اور سالمن کو وافر مقدار میں رکھتے ہیں، مچھلی کے فارم ہیں جو مچھلی کے تاجروں اور مچھلیوں کے ذخیرے کے پروسیسرز کے طور پر کام کرتے ہیں .فش فارمز کو قریبی نگرانی اور ضابطے میں ہونا چاہیے، ایک ایسا نظام جس کے تحت تجارتی پیمانے پر مچھلی کی فارمنگ کی نگرانی کی جائے۔ یہی وجہ ہے کہ 50 سے زیادہ ممالک میں ابھی تک مچھلی کے فارموں کو قانونی یا ریگولیٹ نہیں کیا گیا ہے، اور اب یہ پہلے سے کہیں زیادہ اہم ہے کہ مچھلی کے گوشت کے بدترین فارموں پر پابندی لگائی جائے کیونکہ خراب سالمن فارمنگ والی صنعت تمام مچھلیوں کی فارمنگ کو خطرے میں ڈال دے گی۔ فش فارمنگ اخلاقی طور پر اور فطرت کے مطابق کی جانی چاہیے.

Fish Farming Business in Pakistan-Everything You need to know

Fishing is one of the oldest and oldest lifestyles in the world. on a daily basis, immeasurable fish are caught by fishermen worldwide with fishing likely being the most affordable food production system available. Nevertheless, as a fishery gets more overabundant and fish farms find a marketing niche, fish farms became the type of monstrosities on our planet’s surface.

The fish swimming around in farms create a really different strain of marine ecosystems than those that were originally formed for fish to measure on, and these ecosystems eventually hit the fish they serve. Even our ideas of work aesthetics have evolved in response to the companies promoting fish farms, to not mention the onslaught of enormous farms founded in all cities of Pakistan. Earth fish farming is a fish farming industry whereby fish is raised in water tanks in dry areas using cattle and fish power. These farms produce less carbon dioxide than Atlantic fish farming farms. Fish farming reception is done if an individual lives near a sea or a river or if he features a passion for it.

The investment and cost required for working in Pakistan are throughout the entire training it had been detected that Per acre one-time venture required for grumble fish farm remains Rs, 1, 24,000, whereas regular per unit functioning charge remains Rs. 38,000/.The ocean bottom is unreachable economically. However, the beaches are ideal for fish farming. fish farming in Pakistan’s feasibility isn’t that much. Fish farms are most laid low with frost. Fish farmers can harvest fish when the identical climatic conditions are at their peak if they need to prepare a shelter for the fish. Insects are a significant parasite for fish farms. Some seeds cause insects to hold toxins to their host plants. this may cause many fish to die. the sole thanks to deal with this parasite is by inoculating the fish with a treatment.

Ecological factors affect fish farming. These include pollution, water scarcity and shift of rainfall, habitat factors, among others. Oceans are saline, but it occurs mainly in oceans near lands. As a result, fish farming has less of an opportunity for success due to water scarcity. Also, ocean waters have limited amounts of nutrients. Nonetheless, water for marine fish farming is often bio-fortified with fish particles of nitrogen and phosphorous. Nutrients like nitrogen and phosphorous help fish grow more quickly by reducing carbon dioxide and by improving the expansion of aquatic plants. Fish farming could be a type of aquaculture.

Marine fish farming is proscribed due to a scarcity of nutrients, inorganic pollutants, and pests. the standard of their products increases when fish is biodegradable. lastly, many things affect fish farming, but nowadays, aquaculture is one of the fastest-growing global industries.

How to Start Fish Farming in Pakistan

Starting a fish agribusiness business calls for plenty of knowledge, ability, still as preparation because the plunger would look at a good deal of cost to form the occupational promising. All the identical, starting a fish farming commerce would involve concentrated education of both the definite method in fish creation additionally to the expenditures individual has got to capitalize for paraphernalia, the fish farming commercial can demonstrate to be a very moneymaking endeavor. Fish farming in Pakistan’s feasibility isn’t that good.

The principal thing that any potential fish farming commercial proprietor must do is to stay an immerse knowledge upon most in fish philosophy as likely. It remains highly worthwhile that individuals should take certain school progressions as an alternative to certain platforms that are connected to fish farming. If the fish farming commercial possessor has no knowledge it stands good that the individual should first attempt then labor for a recognized fish farming skilled to grasp the dos and don’ts in fish farming. If a private has the data then they must do the research work on fish farming. The one that wants to try and do a working business has to learn the circumstances that edging his planned position on the fish farm. He has to take into explanation the idea of water within the area additionally to what proportion stands fluid from it, what amount added to the temperature of the marine. He must likewise explore additional as you’d expect obtainable possessions everywhere the zone for instance geothermal water from springs.

Certain fishes rise earlier healthier in warm water than others. moreover, the person should cross-check the conduciveness of the constructions additionally to constructions from place to position within the farm. Once observing the circumstances of the atmosphere the businessperson similarly needs to check out the conceivable marketplace of the fish. It remains not lucrative to yield many catching fish with no purchaser.

If after this discussion the fish agribusiness still appears conceivable then it remains a period to plan the monetary characteristic by shaping the anticipated furthermore as unanticipated expenditures of the occupational. Exactly what proportion the entire thing cost additionally to what would be the foundations of the resources. Through this monetary examination, the businessperson will know within the long term just what quantity he desires to revenue for by what method pay back the variable price besides if it’s moneymaking to start out the go fishing farming or not.

Fish Farming Techniques

Fish farming is a practice during which fish is raised indoors. it’s easily sold by selling fish to institutions of upper learning as food. Or selling them to a market. Fish farming is managed by the utilization of two main systems, Atlantic fish farming and Earth-fish farming Atlantic fish farming are fish raised directly in water due to the warmth available. Moreover, they need easier access to water than plants. They also don’t produce toxins or large amounts of greenhouse gas.

The fish swimming around in farms create an awfully different strain of marine ecosystems than those that were originally formed for fish to measure on, and these ecosystems eventually impinge on the fish they serve. Even our ideas of work aesthetics have evolved in response to the companies promoting fish farms, to not mention the onslaught of enormous farms founded all told cities of Pakistan. When something horrible seems to be happening within the sea, few people would hesitate to accuse fish farming of the identical variety of misconduct. But what exactly goes on within the workplace salmon aquaculture industry and why does it matter? The meat of fish available at Karachi port stands the Pakistan/Indian Salmon, also called Rawas.

Fish Farming Has Several Objectives.

First, it increases harvests (i.e. increase the population of a species of fish) through the pressure of competition with individual fish.
Second, fish farming allows better conditions for spawning salmon (i.e. greater quantities of hatchery food, light, oxygen, and therefore the like).
Third, fish farming also reduces the value of food — for example, fish farming in Chile features a price of quite 10000 rupees per MT of fish, versus just above 13000 per metric weight unit of beef.

On the flip side, fish farming also includes removing all the marine habitats from the ocean. In terms of aquatic life, salmon’s home stumped could be a “capital island” — work salmon age near the ocean. They interact directly with the ocean water and seep for nutrients, perform photochemical reactions within the water, and accumulate pollutants. In return, this results in the reduction of some habitats, with a vicious circle being created. Why would we call fish farming simply an ecological problem? Fish farming is an ecological problem.

Fish farms have a generally negative reputation. If wiped out in an ethically sound manner and in accordance with nature, however, salmon farms are often met with respect and cooperation. There are fish farms that job alright and keep salmon plentiful, but fish farms with quarantined sheep on the underside are often detrimental to animal welfare. There are fish farms that act as fish traders and processors of fish stocks with reduced numbers, mixing fish stock, creating fish farms that take seed fish from marshes and warp their natural patterns, growing wild fish, and so on. If the workplace that produces salmon isn’t up to plain, and no data comes from the fish that lives on the farm itself, then these farms shouldn’t be allowed to exist.

Instead, they ought to be in closer supervision and regulation, a system whereby fish farming is being monitored on an advert scale. this is often the explanation fish farms haven’t yet been legalized or regulated by law in additional than 50 countries, and it’s now more important than ever to ban the worst fish meat farms because an industry with bad salmon farming would jeopardize all fish farming. Fish farms may be as cruel to fish meat communities as Meat plants are to people. Fish farming should be done ethically and naturally, but at the identical time, only the fish that live under stress will still reproduce and breed, and it’s important to travel bent fish so humans will still fish with fewer negative impacts on salmon people.

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
error: Content is protected !!