Personal Growth

Irrigation System In Pakistan

پاکستان میں آبپاشی کا نظام

The irrigation system is to blame for over 90 percent of the country’s agriculture, which accounts for a major portion of the country’s GDP. Agriculture, like in many other nations across the planet, is that the backbone of the Pakistani economy, and also the irrigation system could be a key, and in some cases, the sole, source of food production.

Water is one of the world’s most scarce and valuable resources, and it’s also one every of the foremost easily depleted. Pakistan is an agriculture-based country whose economy is heavily reliant on irrigation. there are no thanks to ignoring the importance of the Indus basin irrigation system of Pakistan, which is big in both its normal and strategic significance. Fortunately, like its gas, oil, and coal resources, Pakistan is additionally rich in fertile land, and its irrigation is regarded to be one of all the world’s greatest, including the Indus, which is one of all Asia’s longest rivers, among others.

Some of the foremost serious irrigation difficulties in Pakistan, additionally as a few potential solutions to those problems, are discussed during this article, likewise because of the possible obstacles and hindrances that prohibit the authorities from establishing an honest, healthy, and long-lasting irrigation system.

The irrigation system of Pakistan:

  • A picture containing grass, outdoor, grassy
  • Description automatically generated

Agriculture activities like crop farming and horticulture in Pakistan are totally keen on irrigation for his or her success. Irrigation is employed to cultivate around 80 percent of the country’s cultivable land. Furthermore, Pakistan’s irrigation system is commonly thought to be one of the most effective within the world, having progressed from traditional lift irrigation to modernized canal systems throughout the centuries.

the canal irrigation system of Pakistan, lift irrigation, dams, and barrages are just some of the ways in which are now being employed within the country. The Indus basin irrigation system of Pakistan is incredibly famous all around the world It goes from Khyber Pakhtunkhwa (KP) through Punjab and Sindh, and there’s a good deal of diversity in meteorological characteristics, like rainfall and temperature, along the way.

Unfortunately, the irrigation infrastructure in Pakistan is in serious trouble. A burgeoning agriculture sector will be found in emerging countries like Pakistan. The water availability has been ensured for several years by the development of the many man-made structures, including a fancy and extensive irrigation system that’s considered to be one of all the most effective developed within the history of humanity up until this time.

The gap between the presence of a network and its effective use is expanding, and therefore the system’s utility and production are being jeopardized as a result. Following is that the image of the Irrigation system of Pakistan map, with provincial boundaries and Indus basin irrigation network.

Brief History of Pakistan’s Irrigation System:
In 1947, when the Indian subcontinent was divided into two independent states, the irrigation system of Pakistan was born, and like many other issues, it gave birth to the water issue also, which was resolved in 1960 through international mediation when both countries signed the “Indus Water Treaty.” The irrigation system of Pakistan is one of the foremost important infrastructure assets within the country, accounting for several billion dollars in investment.

According to the stipulations of the treaty, India was granted full exclusive usage of the Eastern Rivers, which were named Sutlej, Bias, and Ravi, additionally to other benefits. The Jhelum, the Indus, and therefore the Chenab are three rivers in Pakistan’s western region that are under its sovereignty.

Unfortunately, a treaty made within the 1960s stipulated that India could use the water from Pakistani-controlled rivers for agriculture and power-generating purposes, despite the very fact that Pakistan was downstream of the rivers. Because the basin of the most important Pakistani-controlled river is found in India, there’s a prospect that India will have an impression on Pakistan’s irrigation resources, as he did during the wars of 1965 and 1971.

ReSources of Irrigation System in Pakistan:
The two primary sources of water in Pakistan are surface water and water, respectively.

Surface water resources:
The Indus River is a very important supply of water in Pakistan, and it’s subdivided into several branches downstream, including the Jhelum, Chenab, Ravi, Beas, and Sutlej rivers, similarly because of the Kabul River, which flows into Afghanistan.

The Jhelum, Indus, and Chenab rivers provide 165 billion cubic meters of water every year, while the Beas, Ravi, & Sutlej rivers contribute 10 billion cubic meters per annum. Unfortunately, around 12 Bm3 of water is wasted within the system, which can flow from seepage, theft, and other factors.

Approximately 70% of water volume (125/175 Bm3) is employed for irrigation, with the remaining water (approximately 35 Bm3) being ‘wasted’ into the sea.

Ground water resources:
Because of the big selection of rainfall duration, intensity, and timing which will be observed throughout the monsoon season, it’s extremely challenging to plan and manage flood and irrigation operations for both healthy &unhealthy rivers.

Another source of replenishment is that the fast-moving water on Capitol Hill, which is named as ‘torrent’ in English. it’s estimated that there are 14 separate ‘hilly-torrents,’ with a complete volume of 23436.15 Bm3.

Challenges and Issues in the Irrigation System of Pakistan:
Water economy may be a word that’s commonly employed in Pakistani agriculture because the crops are heavily reliant on water. so as to confirm the event and effective functioning of this vast system, it’s imperative that existing infrastructure be maintained, and new infrastructure is constructed.

In Pakistan, the user is answerable for recovering the capital costs associated with the development of irrigation systems. The rates for operation and maintenance are linked to the water costs gathered by the regional governments, however, because of the ineptitude and malpractice of the govt. institutions, these charges are insufficient to fulfill the wants of the population.

Each province contains a shortfall in funds of quite 30 percent of its total funds. The operation and maintenance of the system also are the responsibility of provincial and federal entities. Pakistan could be a densely inhabited agriculture-based country and one of the best irrigation systems within the world, but it nevertheless contains a backward agricultural environment. Most of the population (more than 65 percent) relies on attachments to agricultural fields or industrial enterprises.

Punjab is Pakistan’s most populous province and also the country’s most populous city. Punjab’s irrigation system isn’t o.k. developed. this irrigation system has been in use for nearly a century. The management of this irrigation system has become a major challenge because the population has grown.

The burden on the restricted irrigation system is likewise growing increasingly burdensome, and therefore the situation is becoming increasingly critical. Problems with the administration of Pakistan’s irrigation system include both social and technical issues. The mishandling of the irrigation system has resulted in a significant decrease in agricultural yield.

The following are a number of the foremost substantial cuts within the irrigation system of Pakistan:

Wastage of Water:
Pakistan is squandering plenty of water. Farmers still employ antiquated floodwater irrigation systems, wasting 50-60% of water. The recent floods gave Pakistan an enormous amount of water, but the absence of water reservoirs has wasted it. Many countries have adopted a brand new irrigation method called drip irrigation. This hardly conserves water but also offers plants the water they have. But Pakistan hasn’t heard of it.

Logging and salinity of Water:
Waterlogging and salinity have become more severe with each passing day. No action has been made by the Govt. of Pakistan to repair this example.

Because of the diminishing storage capacity of dams as a result of silt deposition, farmers are installing an increasing number of tube wells to water their crops to compensate. Another factor for the expansion of salinity within the major parts of Punjab & Sindh is thanks to the evaporation of groundwater.

Scarcity of water as a result of India’s Expedition:
India, Pakistan’s arch-enemy since the start of your time, has constructed a series of dams in violation of the Water Act of 1960. Pakistan’s rivers are dried up as a result of India’s actions.

In recent years, the typical yearly flow has plummeted to an alarmingly low level. Whereas the intended crop intensity of Pakistan’s irrigation system ranged from 60 to 70%, today’s cropping intensity has surpassed the amount of 120 percent, indicating a rise within the country’s water consumption.

Insufficient funds:
Provincial governments are accountable for the management of water resources in Pakistan. Although a major portion of the whole budget is ready aside for irrigation & canal construction, this distribution of funds is insufficient to handle all of the problems associated with irrigation.

It is expected that the disparity between required and allocated amounts is larger than 24 percent. As a result of this circumstance, the canal system has begun to deteriorate further.

Province-to-province clashes over the Kalabagh Dam (KBD)
The failure to construct additional water dams in Pakistan has figured prominently in exacerbating the country’s irrigation issues. If Pakistan had constructed the Kalabagh dam, all of the country’s irrigation problems would are alleviated. aside from Punjab, no other province is willing to maneuver through with the KBD project.

Lack of Dams:
More dams on the Indus, Jehlum, and Chenab rivers are required in Pakistan. Not only will this increase the available capacity of water, but it’ll also reduce the per acre pricing of all crops as a result.

Due to the reduced use of well water for irrigation on areas that are projected to become salinized as a result of this legislation, the likelihood of salinity on the fields is reduced likewise.

The Bottom Line:
If water management is to boost, a paradigm shift in government policies, furthermore as changes within the legal and regulatory framework, are required. If these changes are implemented effectively, they will lead to significant increases in agricultural productivity.

Because of the key challenges to the irrigation system, it’s become necessary to create intelligent use of the water resources that are accessible. As a result, the look, construction, and management of land regions and irrigation systems must take into consideration the new difficulties. One of the foremost important objectives in achieving the widely accepted method of integrated water resources management is that the support of the many people and management of irrigation and drainage systems.

پاکستان میں آبپاشی کا نظام

آبپاشی کا نظام ملک کی 90 فیصد سے زیادہ زراعت کے لیے ذمہ دار ہے، جو ملک کی جی ڈی پی کا ایک اہم حصہ ہے۔ زراعت، دنیا بھر کے دیگر ممالک کی طرح، پاکستانی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے، اور آبپاشی کا نظام ایک کلید ہے، اور بعض صورتوں میں، خوراک کی پیداوار کا واحد ذریعہ ہے۔

پانی دنیا کے سب سے نایاب اور قیمتی وسائل میں سے ایک ہے، اور یہ سب سے زیادہ آسانی سے ختم ہونے والے وسائل میں سے ایک ہے۔ پاکستان ایک زراعت پر مبنی ملک ہے جس کی معیشت کا بہت زیادہ انحصار آبپاشی پر ہے۔ پاکستان کے سندھ طاس آبپاشی کے نظام کی اہمیت کو نظر انداز کرنے کا کوئی طریقہ نہیں ہے، جو اپنی عام اور تزویراتی اہمیت دونوں لحاظ سے بہت زیادہ ہے۔

خوش قسمتی سے، اپنے گیس، تیل اور کوئلے کے وسائل کی طرح، پاکستان بھی زرخیز زمینوں سے مالا مال ہے، اور اس کی آبپاشی کو دنیا کی عظیم ترین زمینوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے، جس میں دریائے سندھ بھی شامل ہے، جو ایشیا کے طویل ترین دریاوں میں سے ایک ہے۔پاکستان میں آبپاشی کی چند انتہائی سنگین مشکلات کے ساتھ ساتھ ان مسائل کے ممکنہ حل کے چند ممکنہ حل کے ساتھ ساتھ ان ممکنہ رکاوٹوں اور رکاوٹوں پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا ہے جو حکام کو اچھے، صحت مند اور طویل المدتی نظام کے قیام سے روکتی ہیں۔ دیرپا آبپاشی کا نظام

پاکستان کا آبپاشی کا نظام
پاکستان میں زرعی سرگرمیاں جیسے فصل کاشتکاری اور باغبانی اپنی کامیابی کے لیے مکمل طور پر آبپاشی پر منحصر ہے۔ آبپاشی کا استعمال ملک کی تقریباً 80 فیصد قابل کاشت اراضی کو کاشت کرنے کے لیے کیا جاتا ہے۔ مزید برآں، پاکستان کے آبپاشی کے نظام کو اکثر دنیا کے بہترین نظاموں میں شمار کیا جاتا ہے، جس نے صدیوں کے دوران روایتی لفٹ اریگیشن سے جدید نہری نظام تک ترقی کی ہے۔پاکستان کا نہری آبپاشی کا نظام، لفٹ اریگیشن، ڈیم اور بیراج صرف چند ایسے طریقے ہیں جو اب ملک میں استعمال ہو رہے ہیں۔ پاکستان کا سندھ طاس آبپاشی کا نظام پوری دنیا میں بہت مشہور ہے۔ یہ خیبر پختونخواہ (کے پی) سے پنجاب اور سندھ کے راستے جاتا ہے، اور راستے میں موسمیاتی خصوصیات، جیسے بارش اور درجہ حرارت میں بہت زیادہ تنوع ہے۔

بدقسمتی سے پاکستان میں آبپاشی کا بنیادی ڈھانچہ شدید مشکلات کا شکار ہے۔ پاکستان جیسے ابھرتے ہوئے ممالک میں زرعی شعبے کو فروغ مل سکتا ہے۔ پانی کی دستیابی کو کئی سالوں سے انسانوں کے بنائے ہوئے ڈھانچے کی تعمیر کے ذریعے یقینی بنایا گیا ہے، جس میں ایک پیچیدہ اور وسیع آبپاشی کا نظام بھی شامل ہے جو اس وقت تک انسانیت کی تاریخ میں سب سے بہتر ترقی یافتہ تصور کیا جاتا ہے۔ نیٹ ورک کی موجودگی اور اس کے موثر استعمال کے درمیان فاصلہ بڑھتا جا رہا ہے اور اس کے نتیجے میں سسٹم کی افادیت اور پیداوار خطرے میں پڑ رہی ہے۔ ذیل میں پاکستان کے نظام آبپاشی کی تصویر، صوبائی حدود اور سندھ طاس آبپاشی کے نیٹ ورک کے ساتھ ہے۔

پاکستان کے نظام آبپاشی کی مختصر تاریخ

1947 میں جب برصغیر پاک و ہند دو آزاد ریاستوں میں تقسیم ہوا تو پاکستان کے نظام آبپاشی نے جنم لیا اور دیگر کئی مسائل کی طرح اس نے پانی کے مسئلے کو بھی جنم دیا جو 1960 میں بین الاقوامی ثالثی کے ذریعے حل ہوا جب دونوں ممالک نے دستخط کیے سندھ طاس معاہدہ۔ پاکستان کا آبپاشی کا نظام ملک میں بنیادی ڈھانچے کے سب سے اہم اثاثوں میں سے ایک ہے، جس میں کئی ارب ڈالر کی سرمایہ کاری ہوتی ہے۔

معاہدے کی شرائط کے مطابق، ہندوستان کو دیگر فوائد کے علاوہ مشرقی دریاؤں کے مکمل خصوصی استعمال کی اجازت دی گئی تھی، جن کا نام ستلج، بیاس اور راوی رکھا گیا تھا۔ جہلم، دریائے سندھ اور چناب پاکستان کے مغربی علاقے کے تین دریا ہیں جو اس کی خودمختاری میں ہیں بدقسمتی سے، 1960 کی دہائی میں کیے گئے ایک معاہدے میں یہ شرط عائد کی گئی تھی کہ بھارت پاکستان کے زیر کنٹرول دریاؤں کا پانی زراعت اور بجلی پیدا کرنے کے مقاصد کے لیے استعمال کر سکتا ہے، اس حقیقت کے باوجود کہ پاکستان دریاؤں کے بہاو میں تھا۔ چونکہ پاکستان کے زیر کنٹرول سب سے بڑے دریا کا طاس بھارت میں واقع ہے، اس لیے اس بات کا امکان ہے کہ بھارت پاکستان کے آبپاشی کے وسائل پر اثر انداز ہو گا، جیسا کہ اس نے 1965 اور 1971 کی جنگوں کے دوران کیا تھا۔

پاکستان میں آبپاشی کے نظام کے وسائل
پاکستان میں پانی کے دو بنیادی ذرائع بالترتیب سطحی پانی اور زیر زمین پانی ہیں۔

سطح آبی وسائل
دریائے سندھ پاکستان میں پانی کی ایک اہم سپلائی ہے، اور اسے نیچے کی طرف کئی شاخوں میں تقسیم کیا گیا ہے، جن میں جہلم، چناب، راوی، بیاس اور ستلج ندیوں کے ساتھ ساتھ دریائے کابل بھی شامل ہے، جو افغانستان میں بہتا ہے۔

دریائے جہلم، سندھ اور چناب ہر سال 165 بلین کیوبک میٹر پانی فراہم کرتے ہیں، جب کہ بیاس، راوی اور ستلج دریا 10 بلین کیوبک میٹر سالانہ پانی فراہم کرتے ہیں۔ بدقسمتی سے، نظام میں تقریباً 12 بی ایم 3 پانی ضائع ہو جاتا ہے، جو کہ نکلنے، چوری اور دیگر عوامل کی وجہ سے ہو سکتا ہے۔ پانی کے حجم کا تقریباً 70% (125/175 بی ایم 3) آبپاشی کے لیے استعمال ہوتا ہے، باقی پانی (تقریباً 35 بی ایم 3) بحیرہ عرب میں ‘ضائع’ ہو جاتا ہے۔

زمینی پانی کے وسائل
بارش کے دورانیے، شدت اور وقت کی وسیع رینج کی وجہ سے جو کہ مون سون کے پورے موسم میں دیکھے جا سکتے ہیں، صحت مند اور غیر صحت بخش دونوں دریاؤں کے لیے سیلاب اور آبپاشی کے کاموں کی منصوبہ بندی اور انتظام کرنا انتہائی مشکل ہے۔ دوبارہ بھرنے کا ایک اور ذریعہ پہاڑی پر تیز رفتاری سے چلنے والا پانی ہے جسے انگریزی میں ٹورنٹ کہتے ہیں۔ ایک اندازے کے مطابق 23436.15 بی ایم 3 کے کل حجم کے ساتھ 14 الگ الگ ‘پہاڑی ٹورینٹ’ ہیں۔

پاکستان کے نظام آبپاشی میں چیلنجز اور مسائل
آبی معیشت ایک ایسا لفظ ہے جو پاکستانی زراعت میں عام طور پر استعمال ہوتا ہے کیونکہ فصلوں کا بہت زیادہ انحصار پانی پر ہوتا ہے۔ اس وسیع نظام کی ترقی اور موثر کام کو یقینی بنانے کے لیے، یہ ضروری ہے کہ موجودہ انفراسٹرکچر کو برقرار رکھا جائے، اور نئے انفراسٹرکچر کی تعمیر کی جائے۔

پاکستان میں، صارف آبپاشی کے نظام کی ترقی سے متعلق سرمائے کے اخراجات کی وصولی کا ذمہ دار ہے۔ آپریشن اور دیکھ بھال کے نرخ علاقائی حکومتوں کی طرف سے جمع کیے گئے پانی کے اخراجات سے منسلک ہوتے ہیں، تاہم حکومتی اداروں کی نااہلی اور بددیانتی کی وجہ سے یہ چارجز آبادی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ناکافی ہیں۔ہر صوبے کے پاس اپنے کل فنڈز کے 30 فیصد سے زیادہ فنڈز کی کمی ہے۔ نظام کو چلانے اور اس کی دیکھ بھال بھی صوبائی اور وفاقی اداروں کی ذمہ داری ہے۔ پاکستان ایک گنجان آباد زراعت پر مبنی ملک ہے اور دنیا میں آبپاشی کے بہترین نظاموں میں سے ایک ہے، لیکن اس کے باوجود اس کا زرعی ماحول پسماندہ ہے۔ زیادہ تر آبادی (65 فیصد سے زیادہ) کا انحصار زرعی شعبوں یا صنعتی اداروں سے منسلک ہے۔

پنجاب پاکستان کا سب سے زیادہ آبادی والا صوبہ اور ملک کا سب سے زیادہ آبادی والا شہر ہے۔ پنجاب کا آبپاشی کا نظام زیادہ ترقی یافتہ نہیں ہے۔ موجودہ آبپاشی کا نظام تقریباً ایک صدی سے زیر استعمال ہے۔ آبادی میں اضافہ کے ساتھ آبپاشی کے موجودہ نظام کا انتظام ایک اہم چیلنج بن گیا ہے۔ اسی طرح محدود آبپاشی کے نظام پر بوجھ بھی تیزی سے بوجھل ہوتا جا رہا ہے، اور صورتحال تیزی سے نازک ہوتی جا رہی ہے۔ پاکستان کے نظام آبپاشی کے انتظامی مسائل میں سماجی اور تکنیکی دونوں مسائل شامل ہیں۔ آبپاشی کے نظام کی خرابی کے نتیجے میں زرعی پیداوار میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔

پاکستان کے آبپاشی کے نظام میں سب سے زیادہ نمایاں کٹوتیاں درج ذیل ہیں

پانی کا ضیاع
پاکستان بہت سا پانی ضائع کر رہا ہے۔ کسان اب بھی قدیم سیلاب کے پانی کے آبپاشی کے نظام کو استعمال کرتے ہیں، 50-60% پانی ضائع کرتے ہیں۔ حالیہ سیلاب نے پاکستان کو بہت زیادہ پانی دیا لیکن آبی ذخائر کی عدم موجودگی نے اسے ضائع کر دیا۔

بہت سے ممالک نے آبپاشی کا ایک نیا طریقہ اپنایا ہے جسے ڈرپ اریگیشن کہتے ہیں۔ یہ مشکل سے پانی کو بچاتا ہے لیکن پودوں کو وہ پانی بھی فراہم کرتا ہے جس کی انہیں ضرورت ہے۔ لیکن پاکستان نے اس کی بات نہیں سنی۔

لاگنگ اور پانی کی نمکیات
ہر گزرتے دن کے ساتھ پانی کی بھرائی اور نمکیات مزید شدید ہوتی جا رہی ہیں۔ حکومت پاکستان کی طرف سے اس صورتحال کو ٹھیک کرنے کے لیے کوئی اقدام نہیں کیا گیا۔ گاد جمع ہونے کے نتیجے میں ڈیموں میں ذخیرہ کرنے کی صلاحیت کم ہونے کی وجہ سے، کسان اس کی تلافی کے لیے اپنی فصلوں کو پانی دینے کے لیے ٹیوب ویلوں کی بڑھتی ہوئی تعداد لگا رہے ہیں۔ پنجاب اور سندھ کے بڑے حصوں میں نمکیات کے پھیلاؤ کا ایک اور عنصر زیر زمین پانی کا بخارات بننا ہے۔

ہندوستان کی مہم کے نتیجے میں پانی کی کمی
بھارت جو کہ شروع سے ہی پاکستان کا دشمن ہے، 1960 کے واٹر ایکٹ کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ڈیموں کا ایک سلسلہ بنا رہا ہے۔ بھارت کے اقدامات کے نتیجے میں پاکستان کے دریا خشک ہو چکے ہیں۔

حالیہ برسوں میں، اوسط سالانہ بہاؤ خطرناک حد تک کم سطح پر گر گیا ہے۔ جہاں پاکستان کے نظام آبپاشی میں فصل کی مطلوبہ شدت 60 سے 70 فیصد تک تھی، آج فصل کی شدت 120 فیصد سے تجاوز کر گئی ہے، جو ملک کے پانی کے استعمال میں اضافے کی نشاندہی کرتا ہے۔

ناکافی فنڈز
پاکستان میں آبی وسائل کے انتظام کی ذمہ دار صوبائی حکومتیں ہیں۔ اگرچہ پورے بجٹ کا ایک اہم حصہ آبپاشی اور نہری کی تعمیر کے لیے مختص کیا گیا ہے، لیکن فنڈز کی یہ تقسیم آبپاشی سے متعلق تمام مسائل کو سنبھالنے کے لیے ناکافی ہے۔
یہ توقع کی جاتی ہے کہ مطلوبہ اور مختص رقم کے درمیان تفاوت 24 فیصد سے زیادہ ہے۔ اس صورتحال کے نتیجے میں نہری نظام مزید بگڑنا شروع ہو گیا ہے۔

کالاباغ ڈیم پر صوبے سے صوبہ جھڑپیں
پاکستان میں پانی کے اضافی ڈیموں کی تعمیر میں ناکامی نے ملک کے آبپاشی کے مسائل کو نمایاں طور پر بڑھا دیا ہے۔اگر پاکستان کالاباغ ڈیم بناتا تو ملک کے تمام آبپاشی کے مسائل حل ہو جاتے۔ سوائے پنجاب کے، کوئی دوسرا صوبہ کے بی ڈی منصوبے سے آگے بڑھنے کو تیار نہیں۔

ڈیموں کی کمی
پاکستان میں دریائے سندھ، جہلم اور چناب پر مزید ڈیموں کی ضرورت ہے۔ اس سے نہ صرف پانی کی دستیابی میں اضافہ ہوگا بلکہ اس کے نتیجے میں تمام فصلوں کی فی ایکڑ قیمت میں بھی کمی آئے گی۔ اس قانون سازی کے نتیجے میں ان علاقوں میں آبپاشی کے لیے ٹیوب ویل کے پانی کے کم استعمال کی وجہ سے جن کے کھارے بننے کا امکان ہے، کھیتوں میں نمکین ہونے کا امکان بھی کم ہو جاتا ہے۔

اگر پانی کے انتظام کو بہتر بنانا ہے تو، حکومتی پالیسیوں میں ایک مثالی تبدیلی کے ساتھ ساتھ قانونی اور ریگولیٹری فریم ورک میں تبدیلیوں کی ضرورت ہے۔ اگر ان تبدیلیوں کو مؤثر طریقے سے نافذ کیا جائے تو ان کے نتیجے میں زرعی پیداوار میں نمایاں اضافہ ہو سکتا ہے۔ آبپاشی کے نظام کو درپیش بڑے چیلنجوں کی وجہ سے یہ ضروری ہو گیا ہے کہ قابل رسائی آبی وسائل کا ذہانت سے استعمال کیا جائے۔ نتیجے کے طور پر، زمینی علاقوں اور آبپاشی کے نظام کی منصوبہ بندی، تعمیر، اور انتظام کو نئی مشکلات کو مدنظر رکھنا چاہیے۔مربوط آبی وسائل کے انتظام کے عام طور پر قبول شدہ طریقہ کو حاصل کرنے میں سب سے اہم مقصد بہت سے لوگوں کی مدد اور آبپاشی اور نکاسی کے نظام کا انتظام ہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
error: Content is protected !!