PROPERTY

Things you need to know about Property Tax Implementation in Sindh

وہ چیزیں جو آپ کو سندھ میں پراپرٹی ٹیکس کے نفاذ کے بارے میں جاننے کی ضرورت ہے۔

Things you need to know about Property Tax Implementation in Sindh

Tax is undoubtedly one of the foremost important sources of revenue for each country within the world. Divided into four provinces, Pakistan has authorized each province to plan its own mechanism regarding assembling for movable and immovable properties. However, tax rates applied on immovable properties are approved by the upper officials of the centralized and are in accordance with the Sindh Immovable Property Act 1958. The speed of tax imposed is predicated on the kind of the property and its estimated annual rent.

DETERMINATION OF THE ANNUAL VALUE OF PROPERTY UNDER SECTION 5-A
As certainly the annual value of property in Sindh may not be as easy as it sounds. However, so as to decrease the extent of complexity during this concern, the govt of Sindh has devised an easy and simply understandable method. Per the job work, the valuation table for properties found in numerous localities across Sindh is issued in keeping with section 5-A of the Sindh Urban Immovable land tax Act, 1958, as cited by the official website of Excise. To induce through with the property valuation in a very much simpler manner, all of the cities within the province of Sindh are classified into five groups and these are further divided into four zones reckoning on the socio-economic conditions of the localities within them.

CALCULATION OF TAX BASED ON THE ANNUAL VALUE OF A PROPERTY
Properties found in numerous regions/zones of Sindh have different rates. additionally, plenty of other factors are taken into consideration while determining the annual value of a property and therefore the amount of tax that’s levied by the legal authorities. As per the law, the capital levy in Sindh charged on a selected land or building is resembling 25% of its annual value. so as to calculate the annual value of the property, the concerned authorities have derived the subsequent formula.

  1. Plot Size x Rate (defined by zone/area) x 12 (months during a year)
  2. Covered Area x Rate (defined by zone/area) x 12 (months during a year)
  3. Annual Value of Property = (A) + (B) – 10% Allowance for Maintenance & Repair

FILING APPEAL/PETITION AGAINST ANY PARTICULAR PROPERTY REGULATION IMPOSED

Disagreement and reservations a few particular regulations regarding the taxation department could be a common cause. During this concern, there’s a correct channel for people through which they’ll file an appeal or a revision petition addressed to the Director or the Director-General of the Department of Excise and Taxation in Sindh. Consistent with the law, the appeal should be filed within 30 days, and also the revision petition must be filed within a year’s time.

DUTIES PERFORMED BY PRESCRIBED AUTHORITIES

Property taxation in Sindh, similar to the other place within the world, requires precision and care. The department governing all matters associated with the implementation, imposition, and exemption from capital levy and its related principles comprises several layers of authorities. Per the official website of the Excise and Taxation Department in Sindh, below are the three most vital authorities that exercise several powers and duties.

Assessing Authority: Supported the world it’s been prescribed to figure upon, every Assessing Authority is sometimes authorized to create use of its duty and power for the assessment and collection of the tax as prescribed by the Act.

Director: This position is liable for the gathering of tax and also has the authority for the insertion or omission of entries within the valuation list per any particular matter that comes under Section 10(1-A) of the land tax Act.

Director-General: It’s one of all the foremost authoritative positions within the Department of Property Taxation and is responsible to listen to the revision petition. It also has the correct to require action with no prior notice regarding the appeal made against the order or regulation imposed by an authority subordinate to that.

THE PHENOMENON OF STATE DUES RECOVERY
According to Section 16 of the Act, the Sindh government reserves the proper to recover outstanding dues/penalties against a specific property from the owner. However, in keeping with Section 14 of the capital levy Act, the dues may also be recovered from the tenant by the owner, consistent with the annual value of the unit that both the parties have undergone tenancy agreement. All the unpaid taxes against properties in any area of Sindh are recoverable in line with the land revenue act.

WHICH PROPERTIES ARE EXEMPTED FROM land tax IN SINDH?
According to Section 4 of the Sindh land tax Act, there are some forms of properties in Sindh that are exempted from assembling. Most of those properties are usually government buildings and state-owned offices that are used for public services. Below are the categories of properties that don’t entail a property tax:

  1. Any property either a building or land that’s owned by any institution belonging to Local, Provincial or central, specified for the general public purpose.
  2. A building that’s built on a plot that’s less than 120 sq yds in size and is getting used for residential purposes. Any building, land, or a selected portion of a property that’s being employed exclusively for the facilities like public parks, playgrounds, and libraries.
  3. Places of worship and charity organization, orphanages, burial grounds, and other places specified for the disposal of human corpses are exempted from imposition of land tax in Sindh.
  4. An apartment/flat that’s in domestic use and doesn’t exceed the covered area of 600 area unit located in a very residential building
  5. Any building or land, the annual value of which doesn’t in any way exceed the quantity of eight hundred and sixty-four rupees
  6. A property having the annual value less than forty-eight thousand rupees that’s in possession of widow, orphans that are under eighteen years old, and folks who are permanently disabled
  7. The condition of exemption from capital levy in Sindh is additionally applied to buildings and sites that are declared historically significant in keeping with the Sindh Cultural Heritage (Preservation) Act 1994

It is the duty of each citizen living in this country to pay taxes against the properties in Sindh they own as it’s vital for the soundness of Pakistan’s economic prosperity.

وہ چیزیں جو آپ کو سندھ میں پراپرٹی ٹیکس کے نفاذ کے بارے میں جاننے کی ضرورت ہے۔

ٹیکس بلاشبہ دنیا کے ہر ملک کے لیے آمدنی کا سب سے اہم ذریعہ ہے۔ چار صوبوں میں تقسیم، پاکستان نے ہر صوبے کو یہ اختیار دیا ہے کہ وہ منقولہ اور غیر منقولہ جائیدادوں کے لیے ٹیکس وصولی کے حوالے سے اپنا طریقہ کار وضع کرے۔ تاہم، غیر منقولہ جائیدادوں پر لاگو ٹیکس کی شرحیں وفاقی حکومت کے اعلیٰ حکام سے منظور شدہ ہیں اور یہ سندھ غیر منقولہ جائیداد ایکٹ 1958 کے مطابق ہیں۔ عائد ٹیکس کی شرح جائیداد کی قسم اور اس کے تخمینہ سالانہ کرایہ پر مبنی ہے۔

سیکشن 5-اے کے تحت جائیداد کی سالانہ قیمت کا تعین
سندھ میں جائیداد کی سالانہ قیمت کا اندازہ لگانا اتنا آسان نہیں جتنا لگتا ہے۔ تاہم اس تشویش میں پیچیدگی کی سطح کو کم کرنے کے لیے حکومت سندھ نے ایک آسان اور آسانی سے سمجھ میں آنے والا طریقہ وضع کیا ہے۔ سرکاری طریقہ کار کے مطابق، سندھ بھر کے مختلف علاقوں میں پائی جانے والی جائیدادوں کے لیے ویلیوایشن ٹیبل سندھ اربن امو ایبل پراپرٹی ٹیکس ایکٹ 1958 کے سیکشن 5-اے کے مطابق جاری کیا جاتا ہے، جیسا کہ ایکسائز کی آفیشل ویب سائٹ نے حوالہ دیا ہے۔ زیادہ آسان طریقے سے جائیداد کی قیمت کا تعین کرنے کے لیے، صوبہ سندھ کے تمام شہروں کو پانچ گروپوں میں تقسیم کیا گیا ہے اور ان کو مزید چار زونز میں تقسیم کیا گیا ہے جو ان کے اندر موجود علاقوں کے سماجی و اقتصادی حالات کے لحاظ سے ہیں۔

جائیداد کی سالانہ قیمت کی بنیاد پر ٹیکس کا حساب کتاب
سندھ کے مختلف علاقوں/زون میں پائی جانے والی پراپرٹیز کی قیمتیں مختلف ہیں۔ اس کے علاوہ، جائیداد کی سالانہ قیمت اور قانونی حکام کی طرف سے لگائے جانے والے ٹیکس کی رقم کا تعین کرتے وقت بہت سے دوسرے عوامل کو بھی مدنظر رکھا جاتا ہے۔ قانون کے مطابق سندھ میں کسی مخصوص زمین یا عمارت پر لگنے والا پراپرٹی ٹیکس اس کی سالانہ مالیت کے 25 فیصد کے برابر ہے۔ جائیداد کی سالانہ قیمت کا حساب لگانے کے لیے متعلقہ حکام نے درج ذیل فارمولہ اخذ کیا ہے۔

نمبر 1: پلاٹ کا سائز ایکس شرح (زون/علاقے کے لحاظ سے بیان کردہ)  1ایکس (ایک سال میں مہینے)
نمبر 2: احاطہ شدہ رقبہ ایکس شرح (زون/علاقے کے لحاظ سے بیان کردہ) ایکس (ایک سال میں مہینے)
جائیداد کی سالانہ قیمت = (A) + (B) – دیکھ بھال اور مرمت کے لیے 10% الاؤنس

کسی بھی مخصوص پراپرٹی ریگولیشن کے خلاف اپیل / پٹیشن دائر کرنا

Things you need to know about Property Tax Implementation in Sindh
Things you need to know about Property Tax Implementation in Sindh

ٹیکسیشن ڈیپارٹمنٹ سے متعلق کسی خاص ضابطے کے بارے میں اختلاف اور تحفظات ایک عام معاملہ ہے۔ اس تشویش میں، افراد کے لیے ایک مناسب چینل موجود ہے جس کے ذریعے وہ سندھ میں محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن کے ڈائریکٹر یا ڈائریکٹر جنرل کو اپیل یا نظرثانی کی درخواست دائر کر سکتے ہیں۔ قانون کے مطابق اپیل 30 دن کے اندر دائر کی جانی چاہیے اور نظرثانی کی درخواست ایک سال کے اندر دائر کی جانی چاہیے۔

مقررہ حکام کے ذریعہ انجام دیے گئے فرائض
دنیا کے کسی بھی دوسرے مقام کی طرح سندھ میں بھی پراپرٹی ٹیکس لگانے میں درستگی اور احتیاط کی ضرورت ہے۔ پراپرٹی ٹیکس کے نفاذ، نفاذ اور اس سے مستثنیٰ اور اس سے متعلقہ اصولوں سے متعلق تمام معاملات کو چلانے والا محکمہ حکام کی کئی پرتوں پر مشتمل ہے۔ سندھ میں محکمہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن کی آفیشل ویب سائٹ کے مطابق، ذیل میں تین اہم ترین اتھارٹیز ہیں جو متعدد اختیارات اور فرائض کا استعمال کرتی ہیں۔

اسیسنگ اتھارٹی: اس علاقے کی بنیاد پر جس پر اسے کام کرنے کا حکم دیا گیا ہے، ہر اسیسنگ اتھارٹی کو عام طور پر ایکٹ کے مطابق ٹیکس کی تشخیص اور وصولی کے لیے اپنی ذمہ داری اور طاقت کا استعمال کرنے کا اختیار حاصل ہے۔

ڈائریکٹر: یہ عہدہ ٹیکس کی وصولی کے لیے ذمہ دار ہے اور اس کے پاس پراپرٹی ٹیکس ایکٹ کے سیکشن 10(1-اے) کے تحت آنے والے کسی خاص معاملے سے متعلق ویلیو ایشن لسٹ میں اندراجات کو داخل کرنے یا چھوڑنے کا اختیار بھی ہے۔

ڈائریکٹر جنرل: یہ پراپرٹی ٹیکسیشن کے محکمے میں سب سے زیادہ مستند عہدوں میں سے ایک ہے اور نظرثانی کی درخواست سننے کا ذمہ دار ہے۔ اسے یہ حق بھی حاصل ہے کہ وہ اس کے ماتحت کسی اتھارٹی کی طرف سے لگائے گئے حکم یا ضابطے کے خلاف کی گئی اپیل کے بارے میں کسی پیشگی اطلاع کے بغیر کارروائی کرے۔

حکومتی واجبات کی وصولی کا رجحان
ایکٹ کے سیکشن 16 کے مطابق، سندھ حکومت مالک مکان سے کسی خاص جائیداد کے خلاف بقایا واجبات/جرمانے کی وصولی کا حق محفوظ رکھتی ہے۔ تاہم، پراپرٹی ٹیکس ایکٹ کے سیکشن 14 کے مطابق، جائیداد کے مالک کی طرف سے کرایہ دار سے واجبات بھی وصول کیے جا سکتے ہیں، اس یونٹ کی سالانہ قیمت کے مطابق جس کے لیے دونوں فریقین نے کرایہ داری کا معاہدہ کیا ہے۔ لینڈ ریونیو ایکٹ کے مطابق سندھ کے کسی بھی علاقے میں جائیدادوں کے خلاف تمام غیر ادا شدہ ٹیکس وصولی کے قابل ہیں۔

سندھ میں کونسی جائیدادیں پراپرٹی ٹیکس سے مستثنیٰ ہیں؟
سندھ پراپرٹی ٹیکس ایکٹ کے سیکشن 4 کے مطابق سندھ میں چند قسم کی جائیدادیں ہیں جنہیں ٹیکس وصولی سے استثنیٰ حاصل ہے۔ ان میں سے زیادہ تر جائیدادیں عام طور پر سرکاری عمارتیں اور سرکاری دفاتر ہیں جو عوامی خدمات کے لیے استعمال ہوتی ہیں۔ ذیل میں جائیدادوں کی وہ اقسام ہیں جن پر پراپرٹی ٹیکس نہیں لگتا

نمبر 1: کوئی بھی جائیداد یا تو وہ عمارت یا زمین جو مقامی، صوبائی یا وفاقی حکومت سے تعلق رکھنے والے کسی ادارے کی ملکیت ہو، جو عوامی مقصد کے لیے مخصوص کی گئی ہو۔
نمبر 2: ایسی عمارت جو ایک پلاٹ پر بنائی گئی ہو جس کا سائز 120 مربع گز سے زیادہ نہ ہو اور رہائشی مقاصد کے لیے استعمال ہو رہا ہو۔
نمبر 3: کوئی بھی عمارت، زمین یا کسی پراپرٹی کا کوئی خاص حصہ جو صرف پبلک پارکس، کھیل کے میدانوں اور لائبریریوں جیسی سہولیات کے لیے استعمال ہو رہا ہو۔ سندھ میں عبادت گاہوں اور فلاحی تنظیموں، یتیم خانوں، قبرستانوں اور انسانی لاشوں کو ٹھکانے لگانے کے لیے مخصوص کردہ دیگر مقامات کو پراپرٹی ٹیکس کے نفاذ سے استثنیٰ حاصل ہے۔
نمبر 4: ایک اپارٹمنٹ/فلیٹ جو گھریلو استعمال میں ہو اور رہائشی عمارت میں واقع 600 مربع فٹ کے رقبے سے زیادہ نہ ہو۔
نمبر 5: کوئی عمارت یا زمین جس کی سالانہ قیمت کسی بھی طرح آٹھ سو چونسٹھ روپے سے زیادہ نہ ہو۔
نمبر 6: ایسی جائیداد جس کی سالانہ مالیت اڑتالیس ہزار روپے سے زیادہ نہ ہو جو بیوہ، اٹھارہ سال سے کم عمر کے یتیم اور مستقل طور پر معذور افراد کے قبضے میں ہو۔
نمبر 7: سندھ میں پراپرٹی ٹیکس سے استثنیٰ کی شرط کا اطلاق ان عمارتوں اور مقامات پر بھی ہوتا ہے جنہیں سندھ ثقافتی ورثہ (تحفظ) ایکٹ 1994 کے مطابق تاریخی طور پر اہم قرار دیا گیا ہے۔اس ملک میں رہنے والے ہر شہری کا فرض ہے کہ وہ سندھ میں اپنی ملکیتی جائیدادوں پر ٹیکس ادا کرے کیونکہ یہ پاکستان کی معاشی خوشحالی کے استحکام کے لیے ضروری ہے۔

 

 

 

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button