اسلامک

The Rate of Zakat and Deduction At Source

زکوٰۃ کی شرح اورکٹوتی

رمضان کے عین قریب آتے ہی، آپ کو زکوٰۃ کیسے اور کب ادا کرنی ہے اس بارے میں بہت سے سوالات سننے کو ملیں گے، کیونکہ زیادہ تر مسلمان مقدس مہینے کے دوران فرض صدقہ کی ادائیگی کو ترجیح دیتے ہیں۔ زکوٰۃ سے نہ صرف غریبوں اور ان لوگوں کی مدد کرنا ہے جو اپنی بنیادی ضروریات پوری کرنے کی استطاعت نہیں رکھتے۔ بلکہ اس کا مقصد اپنے مال کو صاف اور پاک کرنا بھی ہے۔ درحقیقت زکوٰۃ کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ اسے اسلام کے پانچ ستونوں میں سے ایک قرار دیا گیا ہے۔

چونکہ یہ تمام بالغ مسلمانوں پر لازمی ہے جو ایک خاص حد سے زیادہ کماتے ہیں، اس لیے پاکستان بھر کے بینک زکوٰۃ کو براہ راست ذریعہ پر کاٹ کر جمع کرتے ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ اگر آپ کے پاس سال کے لیے مقررہ حد سے زیادہ رقم ہے، جسے نصاب کہا جاتا ہے، تو بینک قانونی طور پر اس سے زائد رقم کا 2.5% کٹوتی کرنے کے ذمہ دار ہیں۔ پاکستانی بینکوں میں زکوٰۃ کی کٹوتی یکم رمضان کو خود بخود ہو جاتی ہے۔زکوٰۃ کی شرح کی مزید وضاحت کرنے کے لیے، سالانہ کٹوتی کرنے کے لیے واجب الادا بینک کھاتوں کی اقسام اور وہ اثاثے جن پر زکوٰۃ واجب ہے

نصاب کیا ہے؟
نصاب کا مطلب ہے وہ کم از کم دولت یا اثاثے جو آپ کے پاس ہوں اس سے پہلے کہ آپ زکوٰۃ ادا کرنے کے اہل ہوں۔ اس کم از کم اعداد کو نصاب کی حد کہا جاتا ہے اور آپ اس کو عبور کرنے کے بعد ہی زکوٰۃ ادا کرتے ہیں۔ مسلمانوں کو اس دن سے ایک قمری سال زکوٰۃ ادا کرنی چاہیے جس دن ان کی دولت حد سے تجاوز کر جائے۔

زکوٰۃ کی شرح

The Rate of Zakat and Deduction At Source
The Rate of Zakat and Deduction At Source

آپ کی زکوٰۃ کی رقم 2.5% یا نصاب سے زیادہ آپ کے پاس موجود نقدی اور قابل تجارت اثاثوں کا 40 واں حصہ ہونا چاہیے۔ حصول کے بعد پورا اسلامی سال گزر جانے کے بعد اس کی ادائیگی کی جائے گی۔ تاہم، اگر آپ کے پاس نصاب کے برابر یا اس سے زیادہ دولت ہے تو آپ اسے پیشگی ادائیگی بھی کر سکتے ہیں۔ پاکستانی حکومت عام طور پر ہر سال کے نصاب کا اعلان رمضان سے کچھ دیر پہلے کرتی ہے۔ یہ عام طور پر 3 اونس (87.48 گرام) سونا یا 21 اونس (612.36 گرام) چاندی کی نقد قیمت کے مطابق مقرر کیا جاتا ہے۔

مزید معلومات کے لیے آپ زکوٰۃ کے حساب سے متعلق ہمارے گائیڈ پر بھی ایک نظر ڈال سکتے ہیں۔

زکوٰۃ کن اثاثوں پر ادا کی جائے؟
زکوٰۃ کے اہل اثاثوں کی فہرست میں نقد رقم، سونا اور چاندی، تجارتی اسٹاک، کاروباری آمدنی، مویشی، پیداوار اور زمین شامل ہیں۔تاہم، کچھ شرائط کو پورا کرنا ضروری ہے. شروع کرنے والوں کے لیے، ادا کنندہ کے پاس اثاثوں کی مکمل ملکیت ہونی چاہیے۔ اگر آپ کے پاس صرف کوئی چیز ہے لیکن آپ اس کے مالک نہیں ہیں تو آپ پر اس کی زکوٰۃ واجب نہیں ہے۔ مزید یہ کہ اثاثے آپ کی بنیادی ضروریات سے زیادہ ہونے چاہئیں۔ مثال کے طور پر، گھریلو اشیاء جیسے فرنیچر، برتن وغیرہ کو زکوٰۃ کے قابل اثاثے نہیں سمجھا جاتا – جب تک کہ آپ نے انہیں سرمایہ کاری یا فروخت کی نیت سے نہ خریدا ہو۔

اگر آپ زراعت سے وابستہ نہیں ہیں، تو آپ پر اس رقم کی زکوٰۃ ادا کرنے کے پابند ہیں جو آپ کے پاس ہے یا آپ کے سیونگ اکاؤنٹ میں ہے، سونے یا چاندی کے زیورات کی قیمت مذکورہ حد سے اوپر ہے اور مقررہ وقت پر تجارتی اسٹاک کی قیمت۔ . اگر آپ نے اپنی جائیداد کرائے پر دی ہے تو آپ کو کرایہ کی آمدنی پر بھی 2.5% زکوٰۃ ادا کرنی ہوگی اگر یہ نصاب تک پہنچ جائے اور حصول کے بعد پورا قمری سال گزر جائے۔ تنخواہ دار لوگوں کے لیے، اگر آپ کا آجر پروویڈنٹ فنڈ منبع پر کاٹتا ہے، تو آپ اس رقم پر زکوٰۃ ادا کرنے کے ذمہ دار نہیں ہیں جب تک کہ یہ آپ کو جاری نہیں کر دی جاتی۔مزید برآں، اگر آپ پر دوسروں کا قرض واجب الادا ہے، تو اس رقم کو ان کل اثاثوں سے نکالیں جن پر آپ پر زکوٰۃ واجب ہے۔ یہ واجبات کہلاتے ہیں۔

بینک کھاتوں سے زکوٰۃ کی کٹوتی
حکومت رمضان سے کچھ دیر پہلے بینک کھاتوں پر زکوٰۃ کی کٹوتی کا نصاب مقرر کرتی ہے۔ اس کے بعد بینک ان تمام کھاتوں سے 2.5% زکوٰۃ وصول کرتے ہیں جو اس مخصوص بیلنس سے زیادہ ہیں۔

The Rate of Zakat and Deduction At Source
The Rate of Zakat and Deduction At Source

تاہم، تمام قسم کے بینک اکاؤنٹس زکوٰۃ کی کٹوتیوں کے لیے ذمہ دار نہیں ہیں۔ درحقیقت، بینک صرف بچت اور نفع و نقصان کے شیئرنگ اکاؤنٹس سے زکوٰۃ کاٹ سکتے ہیں۔ دریں اثنا، کرنٹ اور فارن کرنسی اکاؤنٹس کو اس سے مستثنیٰ قرار دیا گیا ہے۔اب، کچھ ڈپازٹرز اپنی زکوٰۃ خود کسی ایسے شخص کو ادا کرنا چاہیں گے جنہیں وہ ذاتی طور پر جانتے ہیں۔ اس صورت میں، ان کے پاس استثنیٰ کا دعوی کرنے اور بینک کو رقم کی کٹوتی کی اجازت دینے کا اختیار ہے۔

تاہم، آپ کو ہر سال 15 شعبان تک اسٹامپ پیپر پر استثنیٰ کے لیے فائل کرنے کی ضرورت ہے۔

زکوٰۃ کی کٹوتی سے استثنیٰ
بینکوں کو زکوٰۃ کی لازمی کٹوتی کرنے کی اجازت نہیں ہے اگر

نمبر 1: اکاؤنٹ ہولڈر غیر مسلم ہے اور برانچ کے پاس دعوے کی تصدیق کے لیے تحریری تصدیق ہے۔
نمبر 2: اکاؤنٹ ہولڈر پاکستانی شہری نہیں ہے اور اس نے اپنے پاسپورٹ کی فوٹو کاپی یا اس کے مساوی دستاویز فراہم کی ہے جو ان کی قومیت کو ثابت کرتی ہے۔
نمبر 3: اکاؤنٹ ایک کمپنی کا ہے جہاں 50% سے کم شیئرز غیر مسلموں یا غیر پاکستانیوں کے نہیں ہیں۔ کمپنی کو حقیقت کو ثابت کرنے کے لیے مطلوبہ تصدیق شدہ دستاویزات جمع کرانی ہوں گی۔
نمبر 4: اکاؤنٹ ایک ایسے فرد کا ہے جس نے عقیدے کی بنیاد پر استثنیٰ کا دعویٰ کیا ہے۔ اس صورت میں، انہیں ایک اعلامیہ یا اس کی تصدیق شدہ فوٹو کاپی فائل کرنی ہوگی۔ یہ تشخیص کی تاریخ سے کم از کم 30 دن پہلے کرنا ضروری ہے۔
اکاؤنٹ کو ایک قائم شدہ اتھارٹی نے منجمد کر دیا ہے۔
نمبر 5: اکاؤنٹ ہولڈر کے پاس پورے سال کے لیے نصاب کی حد سے زیادہ بیلنس نہیں تھا۔ وہ زکوٰۃ کی کٹوتی کی تاریخ سے کم از کم 15 دن پہلے مقامی زکوٰۃ کمیٹی کے ذریعے استثنیٰ کے لیے فائل کر سکتے ہیں۔
نمبر 6: زکوٰۃ کی کٹوتیوں سے استثنیٰ کے بارے میں مزید تفصیلات کے لیے، جمع کنندگان کو اپنے متعلقہ بینکوں سے رابطہ کرنا چاہیے۔

زکوٰۃ وصول کرنے کا اہل کون ہیں؟
زکوٰۃ وصول کرنے والوں کے پاس نصاب کی حد سے زیادہ رقم یا جائیداد نہیں ہونی چاہیے۔ اگرچہ آپ اپنے رشتہ داروں کو زکوٰۃ دے سکتے ہیں، لیکن آپ اسے اپنے قریبی خاندان کے افراد بشمول اپنے والدین، دادا دادی، شریک حیات اور بچوں کو نہیں دے سکتے۔ مزید یہ کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی اولاد بھی زکوٰۃ لینے کی اہل نہیں ہے۔یہ زکوٰۃ وصول کرنے والوں کی آٹھ قسمیں ہیں جن کا ذکر قرآن پاک میں ہے۔

نمبر 1: فقراء: وہ غریب اور مساکین جن کے پاس بنیادی ضروریات سے زیادہ کوئی اثاثہ نہ ہو۔

نمبر 2: مسکین: انتہائی غریب لوگ جن کے پاس اپنی بنیادی ضروریات پوری کرنے کے لیے بھی اتنا مال نہیں ہے۔

نمبر 3: عاملین: زکوٰۃ کی وصولی اور تقسیم کے ذمہ دار اہلکار۔

نمبر 4: مفعول القلوب: اس سے مراد پسماندہ مسلمان ہیں۔ آپ انہیں اسلام کی طرف زیادہ مائل کرنے کے واضح مقصد کے لیے زکوٰۃ دے سکتے ہیں۔

نمبر 5: فی الرقاب: اس اصطلاح کا مطلب ’’غلاموں کی آزادی‘‘ ہے۔ آپ زکوٰۃ ادا کر سکتے ہیں کسی ایسے شخص کو آزاد کرنے کے لیے جو کسی آقا کے ساتھ معاہدہ میں پھنسے ہوئے ہیں جو انہیں صرف ایک مقررہ رقم کے عوض رہا کرے گا۔

نمبر 6: الغارمین: وہ مسلمان جو مقروض ہیں۔

نمبر 7: فی سبیل اللہ: ہر وہ نیک کام جس سے اللہ راضی ہو۔

نمبر 8: ابن السبیل: اگر مسافر کو سفر کے دوران رقم کی ضرورت ہو تو وہ زکوٰۃ لینے کے حقدار ہیں۔

The Rate of Zakat and Deduction At Source

With Ramadan right around the corner, you’re absolute to hear plenty of questions revolving around how and when to pay Zakat, as most Muslims prefer paying the obligatory charity during the holy month.

Zakat isn’t only presupposed to help the underprivileged and people who can’t afford to fulfill their basic needs. it’s also meant to cleanse and purify one’s wealth. In fact, the importance of Zakat may be determined by the very fact that it’s been deemed one of all the five pillars of Islam. Since it’s mandatory for all adult Muslims who earn over a specific threshold, banks across Pakistan collect Zakat by deducting it directly at the source. It means if you’ve got more cash than the set threshold for the year, called Nisab, the banks are legally responsible to deduct 2.5% of the exceeding amount.

Zakat deduction in Pakistani banks is automatically disbursed on the first of Ramadan. In order to further explain the speed of Zakat, the kinds of bank accounts prone to perform the yearly deduction, and also the assets on which Zakat is compulsory, here could be a breakdown that may facilitate your out.

WHAT IS NISAB?
The word Nisab means the minimum wealth or assets you need to own before you’re eligible to start out paying Zakat. This minimum figure is named the Nisab threshold and you simply pay Zakat once you cross it. Muslims are presupposed to pay Zakat one year from the day their wealth exceeded the brink.

RATE OF ZAKAT
Your Zakat should amount to 2.5% or the 40th portion of the cash and tradable assets you possess above the Nisab. it’s to be paid after a complete Islamic year has passed since the acquisition. However, you’ll be able to also pay it before if you’ve got wealth adequate or above Nisab readily available.

The government of Pakistani usually announces the Nisab every year shortly before Ramadan. It’s generally set per the cash value of three ounces (87.48 grams) of gold or 21 ounces (612.36 grams) of silver.

ON WHAT ASSETS SHOULD ZAKAT BE PAID?
The list of Zakat-eligible assets includes cash, gold, and silver, trading stocks, business income, livestock, produce and land.

However, certain conditions must be met. For starters, the payer should have the entire ownership of the assets. If you simply possess something but don’t own it, you’re not vulnerable to pay Zakat on that. Moreover, the assets must be in far more than your basic necessities. for example, home goods like furniture, dishware, etc. don’t seem to be considered Zakat-eligible assets – unless you purchased them with the intention of investment or sale.

If you’re not involved in agriculture, you’re obliged to pay Zakat on the quantity of money you own or have in your bank account, the worth of gold or silver jewelry above the mentioned threshold, and therefore the value of trading stocks at the given time. If you’ve got rented out your property, you furthermore might have to pay 2.5% Zakat on income if it reaches the Nisaab and a complete year has passed since the acquisition.

For salaried people, if your employer deducts provident fund at source, you’re not prone to pay Zakat thereon amount until it’s released to you. Furthermore, if you owe a debt to others, calculate and deduct that quantity from the full assets on which you’re obliged to pay Zakat. These are called liabilities.

ZAKAT DEDUCTION FROM BANK ACCOUNTS

The government sets the Nisab for Zakat deduction on bank accounts shortly before Ramadan. Banks then collect 2.5% Zakat from all the accounts that exceed this particular balance.

However, not all kinds of bank accounts are susceptible to Zakat deductions. In fact, banks can only deduct Zakat from the savings and profit and loss sharing accounts. Meanwhile, current and foreign currency accounts are exempted from this. Now, some depositors might want to pay their Zakat themselves to someone they know personally. in this case, they need a choice to claim exemption and disallow the bank from deducting the quantity.

However, you would like to file for the exemption on a stamp paper by the 15th of Shabaan annually.

EXEMPTION FROM ZAKAT DEDUCTION
Banks aren’t allowed to hold out compulsory Zakat deductions if:

  • The account-holder is non-Muslim and also the branch encompasses a written affirmation to verify the claim.
  • The account holder isn’t a Pakistani citizen and has provided a photocopy of their passport or a similar document proving their nationality.
  • The account belongs to an organization where no but 50% of the shares belong to non-Muslims or non-Pakistanis. the corporate would file the specified attested documentation to prove the actual fact.
  • The account belongs to a person who has claimed an exemption on the grounds of religion. therein case, they might file a declaration or its attested photocopy. This must be done a minimum of 30 days before the Valuation Date.
  • The account has been frozen by a longtime authority.
  • The account holder didn’t have a balance exceeding the Nisab threshold for the complete year. they’ll file for exemption through the Local Zakat Committee a minimum of 15 days before the Zakat Deduction date. For further details about exemption from Zakat deductions, depositors must contact their respective banks.

WHO IS ELIGIBLE TO RECEIVE ZAKAT?

WHO IS ELIGIBLE TO RECEIVE ZAKAT?
WHO IS ELIGIBLE TO RECEIVE ZAKAT?

The recipients of Zakat must not have cash or property above the Nisab threshold. While you’ll be able to pay Zakat to your relatives, you can not provide it to your immediate members of the family, including your parents, grandparents, spouse, and kids. Moreover, the descendants of the Prophet (Peace Be Upon Him) also are not eligible to receive Zakat.

These are the eight categories of Zakat recipients mentioned within the Holy Quran.

  1. Fuqara: The poor and needy who don’t own any assets in far more than basic necessities.
  2. Miskins: The extremely poor are those that don’t even own enough to fulfill their basic necessities.
  3. Aamileen: The officials are liable for the gathering and distribution of Zakat.
  4. Muallafat-ul-Qulub: This refers to underprivileged Muslims. you’ll give them Zakat for the express purpose of creating them more inclined towards Islam.
  5. Fir-riqab: This term stands for ’emancipation of slaves.’ you’ll be able to pay Zakat to free an individual stuck in an exceedingly contract with a master who would only release them for a set sum of cash.
  6. Al-Gharimeen: The Muslims who are in debt.
  7. Fi Sabeelillah: For any good deeds that may please Allah.
  8. Ibn-us-Sabil: If a traveler needs money while traveling, they’re entitled to receive Zakat.

If you’ve got any queries or suggestions, be at liberty to drop us a message on newzflex.com

 

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
error: Content is protected !!