Leadership

Karakoram Highway – The 8th Wonder of the World

شاہراہ قراقرم - دنیا کا آٹھواں عجوبہ

Karakoram Highway – The 8th Wonder of the World

Traveling along the Karakoram Highway (KKH), locally referred to as Shahrah e Karakoram, is taken into account as one of the most effective road trip experiences in Pakistan. And, if you think that we are exaggerating, we invite you to go to the highway and prove otherwise! Rightfully dubbed because the eighth wonder of the planet, the Karakoram Highway is undoubtedly a marvel of engineering. The highway was completed in 1979 and was opened for the general public in 1985.

EXPLORING THE KARAKORAM HIGHWAY
If you’re one of the adventure-seekers and planning a journey via the KKH, then below are some important things in grips in mind about this wondrous stretch of road in Pakistan that goes all the thanks to China.

HISTORY
Silk Road, which connected China to the Indian Subcontinent, was one of every of the foremost important trade routes some centuries ago. The road was then transformed into a mega-highway, which was initially called the Pak China Friendship Highway. Experts call the Karakoram Highway an architectonic masterpiece and it’s often said because of the ‘Eighth Wonder of the Wonder’.

It took the foremost brilliant minds in Pakistan and China a complete of over 20 years to complete the highway, which stretches many miles over gorges, valleys, hills, and rivers. Around 15,000 men from the Pakistan Army and thousands of Chinese workers joined forces to create KKH, which is built over one in every of the foremost dangerous terrains within the world.

WHERE IT STARTS AND ENDS
Karakoram Highway, which has many twists and turns, stretches across miles of valleys and barren land with an unparalleled view of the encircling mountains. The Pakistani section of the highway officially starts at Hasan Abdal in Punjab, 50 km northwest of Rawalpindi. On the opposite hand, the town of Kashgar is that the starting line of the Karakoram Highway in China.

Khunjerab Pass, on the Karakoram Highway, is that the point where the borders of Pakistan and China meet. Nevertheless, if you propose to enter China from Pakistan, or the other way around, then you ought to know that Khunjarab Pass is closed from November to March because of heavy snowfall. The KKH has also been included within the China-Pakistan Economic Corridor, thanks to which various sections of the highway have already been or are being repaired to supply an improved traveling experience.

RECONSTRUCTION AS a part of THE CPEC ROUTE
The China-Pakistan Economic Corridor could be a result of the friendly ties between Pakistan and China and China’s Belt and Road Initiative (BRI). As a component of the CPEC route, reconstruction of the Karakoram Highway’s different sections has been planned and initiated. A 54-kilometer section of the KKH from Hasan Abdal to Havelian, which is currently a two-way road with one lane for every direction, is going to be transformed into a four-lane expressway.

Similarly, other parts of the Karakoram Pass (N-35) in Pakistan additionally as National Highway (N-5) are being expanded or reconstructed. These infrastructure improvements on the Karakoram Highway will make it easier for heavy traffic to flow smoothly and also the transportation of products from the port city of Gwadar in Pakistan to China — and therefore the other way around — will be significantly improved.

HOW LONG is that the KARAKORAM HIGHWAY?
Shahrah e Karakoram could be a whopping 1,300-kilometre stretch of road, passing through many beautiful spots within the northern areas of Pakistan. it’s a two-way road that’s accessible all year round aside from the Khunjerab Pass part because it remains closed for some months per annum because of heavy snowfall.

The Pakistani section of the Karakoram Pass is 806-kilometer long, ranging from Hasan Abdal, a city within the Attock district of Punjab, and ending at the Pak-China border.

THE HIGHEST POINT OF KKH
One of the explanations why the KKH is dubbed the Eighth Wonder of the planet is because the altitude of the Karakoram Highway near Khunjerab Pass hits a high of 4,800-metre above water level, making it one of the best roads within the world. However, travelers are going to be glad to understand that the ascent is extremely gradual so that they won’t feel any travel sickness, but it’s still recommended to consume different fluids.

MODES OF TRANSPORTATION
Different modes of transportation are often wont to travel on the Karakoram Highway. ranging from Hasan Abdal, it’ll take you approximately 10 days with over 4 to five-night stays at multiple points to succeed at the top of the highway.

Apart from cars and buses, adventure-seekers have also been spotted on bicycles and motorbikes on the KKH. aged a van, which is widely utilized by the locals, is another very affordable and convenient thanks to reaching multiple points on the Karakoram Highway. At certain times during the year, mostly in harsh climates, traveling by the KKH becomes extremely tough and challenging at some places. Land sliding is one in every of the largest threats, because of which some sections, especially those passing through the mountains, sometimes allow only 1 vehicle to pass at a time.

SIGHT-SEEING AND FOOD SPOTS ALONG THE KARAKORAM HIGHWAY
The Karakoram Highway is one of the key attractions for tourists in Pakistan due to the spectacular views of the very best mountain ranges within the world, The Himalayas, and therefore the Karakoram.

The historical city of Hasan Abdal greets you at the place to begin on the Karakoram Highway. As you retain traveling on this highway, you’re delighted with the more natural fantastic thing about upper Punjab. You will encounter many breath-taking natural sights as you go further abreast of the highway. The 300-kilometer stretch of the KKH between Islamabad and China has some hidden gems that require to be explored by every tourist visiting Pakistan.

Moreover, the natural great thing about Mansehra, Abbottabad, Thakot, Pattan Besham, Sazin, Chils, and Gilgit Baltistan is absolute to leave you in awe. Also, don’t miss out on some mesmerizing views of the Hunza River at some places as you locomote the Karakoram Highway.

Since you’ll be at a high altitude, you may feel hungry more frequently. In fact, the Karakoram Highway is employed by many truckers, tourists in Pakistan, and traders a day, preferring to decay the local restaurants built on the highway.

WHERE TO REMAIN IN ISLAMABAD?
As the Karakoram Pass is in proximity to Islamabad, it’s fairly common for travelers to remain within the capital city for an evening or two before they start their journey. So, if you furthermore might have similar plans, then you’ll be able to easily book your lodge in one out of the many rest houses and hotels in Islamabad.

ABOUT ISLAMABAD?
Islamabad is one of the foremost beautiful, planned cities within the world with greenery to match. If sightseeing is one of all your travel goals, then the executive capital of Pakistan is where you must be since there are many places that you simply can visit to spend a pleasant day in Islamabad.

شاہراہ قراقرم – دنیا کا آٹھواں عجوبہ

قراقرم ہائی وے پر سفر کرنا، جسے مقامی طور پر شاہراہ قراقرم کے نام سے جانا جاتا ہے، پاکستان میں سڑک کے سفر کے بہترین تجربات میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ اور، اگر آپ کو لگتا ہے کہ ہم مبالغہ آرائی کر رہے ہیں، تو ہم آپ کو ہائی وے پر جانے کی دعوت دیتے ہیں اور دوسری صورت میں ثابت کریں! قراقرم ہائی وے بلاشبہ انجینئرنگ کا کمال ہے۔ ہائی وے 1979 میں مکمل ہوئی اور 1985 میں عوام کے لیے کھول دی گئی۔

قراقرم ہائی وے کی تلاش
اگر آپ ایڈونچر کے متلاشیوں میں سے ہیں اور کے کے ایچ کے ذریعے سفر کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں، تو ذیل میں پاکستان میں اس حیرت انگیز سڑک کے بارے میں ذہن میں رکھنے کے لیے کچھ اہم باتیں ہیں جو چین تک جاتی ہے۔

تاریخ

Karakoram Highway – The 8th Wonder of the World
Karakoram Highway – The 8th Wonder of the World

شاہراہ ریشم، جو چین کو برصغیر پاک و ہند سے جوڑتی تھی، کچھ صدیوں پہلے سب سے اہم تجارتی راستوں میں سے ایک تھی۔ اس کے بعد یہ سڑک ایک میگا ہائی وے میں تبدیل ہو گئی جسے شروع میں پاک چائنا فرینڈ شپ ہائی وے کہا جاتا تھا۔ ماہرین شاہراہ قراقرم کو تعمیراتی شاہکار قرار دیتے ہیں اور اسے اکثر ’عجوبہ کا آٹھواں عجوبہ‘ کہا جاتا ہے۔

پاکستان اور چین کے سب سے ذہین ذہنوں کو اس ہائی وے کو مکمل کرنے میں 20 سال سے زیادہ کا عرصہ لگا، جو گھاٹیوں، وادیوں، پہاڑیوں اور دریاؤں پر سینکڑوں میل تک پھیلی ہوئی ہے۔ پاکستانی فوج کے تقریباً 15,000 جوانوں اور ہزاروں چینی کارکنوں نے کے کے ایچ کی تعمیر کے لیے افواج میں شمولیت اختیار کی، جو دنیا کے خطرناک ترین خطوں میں سے ایک پر تعمیر کیا گیا ہے۔

یہ کہاں سے شروع ہوتا ہے اور کہاں ختم ہوتا ہے۔
قراقرم ہائی وے، جس میں بہت سے موڑ اور موڑ ہیں، میلوں تک پھیلی ہوئی وادیوں اور بنجر زمین پر آس پاس کے پہاڑوں کا بے مثال نظارہ ہے۔ ہائی وے کا پاکستانی حصہ باضابطہ طور پر پنجاب میں حسن ابدال سے شروع ہوتا ہے، جو راولپنڈی سے 50 کلومیٹر شمال مغرب میں ہے۔ دوسری جانب کاشغر شہر چین میں شاہراہ قراقرم کا نقطہ آغاز ہے۔

قراقرم ہائی وے پر واقع درہ خنجراب وہ مقام ہے جہاں پاکستان اور چین کی سرحدیں ملتی ہیں۔ اس کے باوجود، اگر آپ پاکستان سے چین میں داخل ہونے کا ارادہ رکھتے ہیں، یا اس کے برعکس، تو آپ کو معلوم ہونا چاہیے کہ درہ خنجراب شدید برف باری کی وجہ سے نومبر سے مارچ تک بند رہتا ہے۔ کے کے ایچ کو بھی چائنا پاکستان اکنامک کوریڈور میں شامل کیا گیا ہے، جس کی وجہ سے ہائی وے کے مختلف حصوں کو پہلے سے ہی بہتر سفری تجربہ پیش کرنے کے لیے مرمت کیا جا چکا ہے یا کیا جا رہا ہے۔

سی پیک روٹ کے حصے کے طور پر تعمیر نو

Karakoram Highway – The 8th Wonder of the World
Karakoram Highway – The 8th Wonder of the World

چین پاکستان اقتصادی راہداری پاکستان اور چین کے درمیان دوستانہ تعلقات اور چین کے بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹو کا نتیجہ ہے۔ سی پی ای سی روٹ کے ایک حصے کے طور پر، قراقرم ہائی وے کے مختلف حصوں کی تعمیر نو کی منصوبہ بندی اور آغاز کیا گیا ہے۔ حسن ابدال سے حویلیاں تک کے کے ایچ کا 54 کلومیٹر کا حصہ، جو اس وقت دو طرفہ سڑک ہے جس میں ہر سمت کے لیے ایک لین ہے، اسے چار لین ایکسپریس وے میں تبدیل کیا جائے گا۔

اسی طرح پاکستان میں قراقرم پاس (این-35) کے دیگر حصوں کے ساتھ ساتھ نیشنل ہائی وے (این-5) کو بھی توسیع یا تعمیر نو کی جا رہی ہے۔ قراقرم ہائی وے پر انفراسٹرکچر کی یہ بہتری ہیوی ٹریفک کے لیے آسانی سے بہاؤ میں آسانی پیدا کرے گی اور پاکستان کے بندرگاہی شہر گوادر سے چین تک سامان کی نقل و حمل اور دوسری طرف بھی نمایاں طور پر بہتر ہو جائے گی۔

قراقرم ہائی وے کتنی لمبی ہے؟
شاہراہ قراقرم 1,300 کلومیٹر طویل سڑک ہے جو پاکستان کے شمالی علاقوں میں بہت سے خوبصورت مقامات سے گزرتی ہے۔ یہ ایک دو طرفہ سڑک ہے جو خنجراب پاس کے حصے کے علاوہ سارا سال قابل رسائی رہتی ہے کیونکہ یہ ہر سال شدید برف باری کی وجہ سے چند ماہ بند رہتی ہے۔قراقرم پاس کا پاکستانی حصہ 806 کلومیٹر طویل ہے، جو پنجاب کے ضلع اٹک کے شہر حسن ابدال سے شروع ہو کر پاک چین سرحد پر ختم ہوتا ہے۔

کے کے ایچ کا سب سے اونچا پوائنٹ
کے کے ایچ کو دنیا کا آٹھواں عجوبہ قرار دینے کی ایک وجہ یہ ہے کہ درہ خنجراب کے قریب قراقرم ہائی وے کی اونچائی سطح سمندر سے 4,800 میٹر کی بلندی سے ٹکرا جاتی ہے، جو اسے دنیا کی بلند ترین سڑکوں میں سے ایک بناتی ہے۔ تاہم، مسافروں کو یہ جان کر خوشی ہو گی کہ چڑھائی بہت بتدریج ہے، اس لیے ہو سکتا ہے کہ وہ سفری بیماری محسوس نہ کریں، لیکن پھر بھی یہ تجویز کی جاتی ہے کہ زیادہ مقدار میں مائعات کا استعمال کریں۔

نقل و حمل کے طریقے
قراقرم ہائی وے پر سفر کرنے کے لیے نقل و حمل کے مختلف طریقے استعمال کیے جا سکتے ہیں۔ حسن ابدال سے شروع ہو کر، شاہراہ کے اختتام تک پہنچنے میں آپ کو تقریباً 10 دن لگیں گے اور متعدد مقامات پر 4 سے 5 راتوں کے قیام کے ساتھ۔

کاروں اور بسوں کے علاوہ، مہم جوئی کے متلاشی افراد کو کے کے ایچ پر سائیکلوں اور موٹر سائیکلوں پر بھی دیکھا گیا ہے۔ ایک وین پر سوار ہونا، جسے مقامی لوگ بڑے پیمانے پر استعمال کرتے ہیں، قراقرم ہائی وے پر متعدد مقامات تک پہنچنے کا ایک اور انتہائی سستا اور آسان طریقہ ہے۔

سال کے بعض اوقات میں، زیادہ تر سخت موسمی حالات میں، کے کے ایچ کے ذریعے سفر کرنا بعض جگہوں پر انتہائی مشکل اور مشکل ہو جاتا ہے۔ لینڈ سلائیڈنگ سب سے بڑے خطرات میں سے ایک ہے، جس کی وجہ سے بعض طبقے، خاص طور پر پہاڑوں سے گزرنے والے، بعض اوقات ایک وقت میں صرف ایک گاڑی کو گزرنے دیتے ہیں۔

قراقرم ہائی وے کے ساتھ ساتھ دیکھنے اور کھانے کے مقامات
شاہراہ قراقرم پاکستان میں سیاحوں کے لیے پرکشش مقامات میں سے ایک ہے کیونکہ دنیا کے بلند ترین پہاڑی سلسلوں، ہمالیہ اور قراقرم کے شاندار نظارے ہیں۔ حسن ابدال کا تاریخی شہر قراقرم ہائی وے کے نقطہ آغاز پر آپ کا استقبال کرتا ہے۔ جب آپ اس شاہراہ پر سفر کرتے رہتے ہیں تو آپ بالائی پنجاب کے مزید قدرتی حسن سے خوش ہوتے ہیں۔

جب آپ ہائی وے پر مزید اوپر جائیں گے تو آپ کو بہت سے سانس لینے والے قدرتی نظارے ملیں گے۔ اسلام آباد اور چین کے درمیان کے کے ایچ کے 300 کلومیٹر طویل حصے میں کچھ پوشیدہ جواہرات ہیں جنہیں پاکستان آنے والے ہر سیاح کو تلاش کرنے کی ضرورت ہے۔ اس کے علاوہ مانسہرہ، ایبٹ آباد، تھاکوٹ، پتن بیشام، سازن، چلس اور گلگت بلتستان کی قدرتی خوبصورتی آپ کو حیرت میں ڈالے گی۔ اس کے علاوہ، قراقرم ہائی وے کے ساتھ سفر کرتے ہوئے بعض مقامات پر دریائے ہنزہ کے کچھ دلکش نظاروں سے محروم نہ ہوں۔چونکہ آپ اونچائی پر ہوں گے، اس لیے آپ کو زیادہ کثرت سے بھوک لگ سکتی ہے۔ درحقیقت، قراقرم ہائی وے کو پاکستان میں روزانہ سینکڑوں ٹرک، سیاح اور تاجر استعمال کرتے ہیں، جو ہائی وے پر بنائے گئے مقامی ریستورانوں میں کھانا کھانے کو ترجیح دیتے ہیں۔

اسلام آباد میں کہاں رہنا ہے؟
چونکہ قراقرم پاس اسلام آباد کے قریب ہے، اس لیے مسافروں کا سفر شروع کرنے سے پہلے ایک یا دو راتیں دارالحکومت میں ٹھہرنا کافی عام ہے۔ لہذا، اگر آپ کے بھی ایسے ہی منصوبے ہیں، تو آپ اسلام آباد کے بہت سے ریسٹ ہاؤسز اور ہوٹلوں میں سے کسی ایک میں اپنے قیام کو آسانی سے بک کر سکتے ہیں۔

اسلام آباد کے بارے میں؟
اسلام آباد دنیا کے سب سے خوبصورت، منصوبہ بند شہروں میں سے ایک ہے جہاں سبزہ زار ہے۔ اگر دیکھنے کا نظارہ آپ کے سفری مقاصد میں سے ایک ہے، تو پاکستان کا انتظامی دارالحکومت وہ جگہ ہے جہاں آپ کو ہونا چاہیے کیونکہ اسلام آباد میں بہت سے ایسے مقامات ہیں جہاں آپ ایک خوشگوار دن گزارنے کے لیے جا سکتے ہیں۔

 

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
error: Content is protected !!