BUSINESS

Unemployment and Recession—What’s the Relation?

بے روزگاری اور کساد بازاری - کیا تعلق ہے؟

Unemployment and Recession—What’s the Relation?

Unemployment tends to rise quickly and sometimes remain elevated, during a recession. With the onset of the recession as companies face increased costs, stagnant or falling revenue, and increased pressure to service their debts they start to put off workers so as to decrease costs.

The number of unemployed workers across many industries spikes simultaneously, the newly unemployed workers find it difficult to search out new jobs during the recession, and therefore the average length of unemployment for workers increases. Here, we examine this connection between recession and unemployment.

KEY POINTS

  1. A recession could be a period of economic contraction, where businesses see less demand and start to lose money.
  2. To cut costs and stem losses, companies begin peeling off workers, generating higher levels of unemployment.
  3. Re-employing workers in new jobs is a process that takes time and adaptability, and faces some unique challenges because of the character of labor markets and therefore the conditions of a recession.

Recession & Unemployment
A recession occurs when there are two or more consecutive quarters of the negative economic process, as measured by gross domestic product (GDP) or other indicators of macroeconomic performance including unemployment.

In part, the connection between recession and unemployment is only a matter of semantics; the official dates of recessions include an increase in unemployment as a part of the definition of what constitutes a recession. For example, these charts illustrate the change in unemployment rates and GDP growth rates during the good Recession of 2008 and 2009.
In 2008 and 2009, unemployment rose sharply and GDP contracted, and therefore the National Bureau of Economic Research declared that the U.S. economy was in recession from December 2007 to June 2009 supported these and other trends.

Why Does Unemployment Rise During a Recession?
During a recession, a rash of business failures occurs. Why these business failures happen is explained by various economic theories as a result of negative economic shocks, real resource or credit crunches brought about by previously over-expansionary monetary policy, the collapse of debt-based asset price bubbles, or a negative shift in consumer or business mood. Irrespective of the cause, because the recession spreads, more and more businesses curtail their activities or fail altogether and as a result, lay off their workers.

When businesses fail, under the conventional operation of markets the assets of the business are sold off to other businesses and therefore the former employees are rehired by other competing businesses. During a recession, because many businesses across many alternative industries and markets are failing all directly, the quantity of unemployed workers searching for new jobs goes up rapidly. The available supply of labor available for immediate hire goes up, but the demand to rent new workers by businesses goes down. In an exceedingly perfect, frictionlessly functioning market, economists would expect such a rise in supply and reduction in demand to end in a lower cost but not necessarily a lower total number of jobs once the worth adjusts.

However, this doesn’t necessarily happen during recessions. The unemployed workers face difficulty finding new jobs, and also the result’s a surplus of labor of the many kinds which will persist for several months. The number of unemployment that may be attributed to the task losses and delay in unemployed workers finding new jobs thanks to the recession is known as cyclical unemployment.

Several factors particular to labor markets and to the conditions of a recession can interfere with the traditional process of adjusting jobs, wages, employment levels:

Different Types of Labor (and Capital)
For simplicity’s sake, economists and statisticians routinely ignore the differences between various inputs to productive business processes so as to supply aggregate macroeconomic statistics that help measure overall economic performance, like the aforementioned GDP and unemployment rates. While these broad, abstract numbers may have some use, they obscure the actual fact that there are many various varieties of workers, with various combinations of skills, experience, and know-how, that creates their labor more-or-less useful to different types of employers engaged in several styles of business, in several locations, with differing types of tools and capital equipment. This key aspect of labor (and capital) markets explains much of cyclical unemployment.

Some industries and businesses are harder hit than others in any given recession. For instance, during the nice Recession, construction, manufacturing, and also the finance, insurance, and realty sectors saw the best increases in unemployment.

In order for the labor markets for every one of the various sorts of labor to clear the surplus of unemployed workers requires getting the correct workers matched up to the proper jobs, instead of simply balancing generic aggregate workers with generic aggregate jobs from a macro perspective. Workers (and capital goods) across different jobs and industries aren’t interchangeable blocks that may simply be plugged into the primarily available opening. Tab A has to fit into Slot B or the machine of the economy simply won’t return together.

This process of sorting the proper workers into the correct jobs takes time and requires simultaneously sorting the proper tools, equipment, buildings, and other capital to enhance those workers’ skills and skills into the hands of companies which will use these resources together in legitimately productive activities.

Moreover, both of those sorting processes require flexibility on the part of workers and employers. Flexibility is not just in terms of the costs, wages, and quantities supplied and demanded around which classroom economic models revolve, but in terms of the flexibility to move and combine different types of workers and capital goods between firms and markets. If the markets for labor and capital goods were sufficiently flexible in these ways, then the pain of the recession might be short-lived after the initial shock.

Market Rigidities
However, the bad news is that many additional complications can mean that labor and capital goods markets won’t be flexible enough to avoid some persistent unemployment during a recession.

One reason people who are newly unemployed have difficulty finding new jobs during a recession is that labor markets function a touch differently from the right markets presented during a basic economy class. A method during which labor markets are different from many other goods is that wages could also be “sticky”. In other words, employers and workers are also reluctant to comply with lower wages even within the face of decreased demand and increased supply for labor.

A business generally employs a pool of workers of varying skill and skill levels, with the intent of finding and keeping the foremost productive workers but also including marginally less productive workers as required. When businesses face pressure on the bottom line and need to decrease payroll costs, they’re often more contented by laying-off their marginally productive workers than by cutting the wages or hours of all employees.

Cutting wages tend to decrease worker productivity and may even lead the foremost productive workers to depart voluntarily for higher-paying jobs elsewhere while cutting marginal workers tends to motivate the remaining workers to extend productivity. Cutting employees rather than wages are often a significant source of sticky wages. Contractually guaranteed wages talks agreements and salary laws can further contribute to wage stickiness.

Unemployed workers may find that the roles and professions, or perhaps entire industries, within which they were employed disappear during a recession. This may ensure technological change and obsolescence or a structural change within the economy associated with an economic shock that will have triggered the recession itself.

Even absent these factors, usually, the build-up to a recession involves heavy overinvestment in certain industries and business activities, and their associated human capital, which then sees concentrated losses when the recession hits. Typically these are businesses and activities that are sensitive to or smitten by having abundantly available credit at low-interest rates, which isn’t the case during a recession, especially early within the recession. The human capital that workers may have invested in certain jobs in these businesses might not transfer o.k. or the least bit to new jobs.

Government Policy
One of the nice tragedies of recessions is that the adjustment of labor markets is usually further hampered by government policies, which may increase and prolong unemployment. Technically this is often not purely cyclical unemployment, but such policy responses are a regular enough feature of recessions that they’re relevant and necessary to debate. There are several ways this will happen, but the most significant are fiscal and monetary policies that interfere with the adjustment of the structure of the industry. To some extent, direct government interference with labor market incentives also plays a task.

The normal policy response to recessions, over a minimum of the past century, has been some combination of expansionary monetary and financial policy. Much or most of this effort tends to be directed toward subsidizing, stimulating, or bailing out distressed industries, particularly the financial sector and huge business concerns in manufacturing and construction, but others still in some cases. Unfortunately, but often designedly so as to supply help where it appears to be needed, this prevents the liquidation and recombination of real capital goods across the economy under new business ownership.

In order for productive new jobs to be created for the unemployed, the tools, equipment, and physical plant required for those jobs must be made available by new employers for them to use in their new jobs. Some capital goods are actually fixed in situ within the kind of building and other fixed capital. Some capital goods are bound up within the style of tools and equipment with very specific uses that are difficult to transfer to other uses except by scrapping them entirely. How specific capital goods are to a given user and the way quickly they will be retooled, repurposed, or recycled into other uses varies considerably, but this is often a necessary process to literally put the economy, and also the job market, back together again.

Anything that slows or stops the method of liquidating failed businesses and reallocating their assets among new owners and entrepreneurs who can put them to new uses also delays or prevents the corresponding process of adjustment parturient markets that bring new jobs for the unemployed. For better or for worse government policy during recessions is essentially geared toward doing exactly that.

In addition to interfering with capital market adjustments, governments also frequently extend various benefits to workers and consumers within the variety of unemployment insurance, stimulus rebate checks, or other benefits. While these provide temporary relief to those that are jobless and economically distressed during the recession, they are doing not fix the matter of providing sustainable, productive employment. Despite unfounded criticism that unemployment aid incentivizes people to stay jobless, there’s no evidence to support this claim.

The Bottom Line
Recession and unemployment go hand in hand—a spike in unemployment and persistence of joblessness is one among the hallmarks of recession. Businesses lay off workers in the face of losses and potential bankruptcies as a recession spreads, and re-employing those workers may be a challenging process that takes time and faces several economic and policy-driven obstacles.

بے روزگاری اور کساد بازاری – کیا تعلق ہے؟

کساد بازاری کے دوران بے روزگاری تیزی سے بڑھتی ہے، اور اکثر بلند رہتی ہے۔ کساد بازاری کے آغاز کے ساتھ ہی کمپنیوں کو بڑھتے ہوئے اخراجات، جمود کا شکار یا گرتی ہوئی آمدنی، اور اپنے قرضوں کی ادائیگی کے لیے بڑھتے ہوئے دباؤ کا سامنا کرنا پڑتا ہے تاکہ وہ اخراجات میں کمی کے لیے کارکنوں کو فارغ کرنا شروع کر دیں۔ کئی صنعتوں میں بے روزگار کارکنوں کی تعداد میں بیک وقت اضافہ ہوتا ہے، نئے بے روزگار کارکنوں کو کساد بازاری کے دوران نئی ملازمتیں تلاش کرنا مشکل ہوتا ہے، اور کارکنوں کے لیے بے روزگاری کی اوسط لمبائی میں اضافہ ہوتا ہے۔ یہاں، ہم کساد بازاری اور بے روزگاری کے اس تعلق کا جائزہ لیتے ہیں۔

اہم نکات

نمبر1:کساد بازاری معاشی سکڑاؤ کا دور ہے، جہاں کاروبار کم مانگ دیکھتے ہیں اور پیسے کھونے لگتے ہیں۔
نمبر2:لاگت اور نقصانات کو کم کرنے کے لیے، کمپنیاں کارکنوں کو فارغ کرنا شروع کر دیتی ہیں، جس سے بے روزگاری کی بلند سطح پیدا ہوتی ہے۔
نمبر3:نئی ملازمتوں میں کارکنوں کو دوبارہ ملازمت دینا ایک معاشی عمل ہے جس میں وقت اور لچک درکار ہوتی ہے، اور مزدور منڈیوں کی نوعیت اور کساد بازاری کے حالات کی وجہ سے کچھ منفرد چیلنجز کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

کساد بازاری اور بے روزگاری۔
کساد بازاری اس وقت ہوتی ہے جب منفی معاشی نمو کی مسلسل دو یا زیادہ سہ ماہی ہوں، جیسا کہ مجموعی گھریلو پیداوار (جی ڈی پی) یا معاشی کارکردگی کے دیگر اشارے بشمول بے روزگاری سے ماپا جاتا ہے۔ جزوی طور پر، کساد بازاری اور بے روزگاری کے درمیان تعلق خالصتاً سیمنٹکس کا معاملہ ہے۔ کساد بازاری کی سرکاری تاریخوں میں اس تعریف کے حصے کے طور پر بے روزگاری میں اضافہ شامل ہے جو کساد بازاری کی تشکیل کرتی ہے۔

مثال کے طور پر، یہ چارٹ 2008 اور 2009 کی عظیم کساد بازاری کے دوران بے روزگاری کی شرح اور جی ڈی پی کی شرح نمو میں تبدیلی کو واضح کرتے ہیں۔سال 2008 اور 2009 میں، بے روزگاری تیزی سے اور جی ڈی پی نے معاہدہ کیا، اور اقتصادی تحقیق کے نیشنل بیورو نے اعلان کیا کہ امریکی معیشت دسمبر 2007 سے جون 2009 سے ان اور دیگر رجحانات پر مبنی ہے.

کساد بازاری کے دوران بے روزگاری کیوں بڑھتی ہے؟
کساد بازاری کے دوران کاروباری ناکامیوں کا ایک دھبہ ہوتا ہے۔ یہ کاروباری ناکامیاں کیوں ہوتی ہیں اس کی وضاحت مختلف معاشی نظریات کے ذریعے منفی اقتصادی جھٹکوں، حقیقی وسائل یا کریڈٹ کی کمی کے نتیجے میں کی گئی ہے جو پہلے سے زیادہ توسیعی مانیٹری پالیسی، قرض پر مبنی اثاثوں کی قیمت کے بلبلوں کے خاتمے، یا صارفین میں منفی تبدیلی کے نتیجے میں لایا گیا تھا۔ یا کاروباری مزاج؟ وجہ سے قطع نظر، جیسے جیسے کساد بازاری پھیلتی ہے، زیادہ سے زیادہ کاروبار اپنی سرگرمیوں کو کم کرتے ہیں یا مکمل طور پر ناکام ہو جاتے ہیں اور نتیجتاً اپنے کارکنوں کو فارغ کر دیتے ہیں۔

جب کاروبار ناکام ہوجائے تو، مارکیٹوں کے عام آپریشن کے تحت کاروبار کے اثاثے دیگر کاروباری اداروں کو فروخت کیا جاتا ہے اور سابق ملازمین دوسرے مقابلہ کے کاروبار سے دوبارہ بحال ہوتے ہیں. ایک مشن میں، کیونکہ بہت سے مختلف صنعتوں اور مارکیٹوں میں بہت سے کاروباری اداروں کو ایک ہی وقت میں ناکام رہا ہے، نئی ملازمتوں کی تلاش میں بے روزگاری کارکنوں کی تعداد تیزی سے بڑھ گئی ہے. فوری طور پر کرایہ پر دستیاب لیبر کی دستیاب فراہمی تک پہنچ گئی ہے، لیکن کاروباری اداروں کی طرف سے نئے کارکنوں کو ملازمت کرنے کا مطالبہ نیچے جاتا ہے. ایک کامل، بے ترتیب طور پر کام کرنے والی مارکیٹ میں، معیشت پسندوں کو کم قیمت (اس صورت میں اوسط تنخواہ میں) کے نتیجے میں فراہمی میں اس طرح کے اضافے کی توقع کی جائے گی.

تاہم، یہ ضروری طور پر ریفریجریشن کے دوران نہیں ہوتا. بے روزگار کارکنوں کو نئی ملازمتوں کو تلاش کرنے میں مشکل کا سامنا کرنا پڑتا ہے، اور نتیجہ بہت سے مہینوں کے مزدوروں کی ایک اضافی اضافی ہے جو کئی مہینے تک جاری رہ سکتی ہے. بے روزگاری کی مقدار جو ملازمت کے نقصانات اور بے روزگاری کارکنوں میں تاخیر کی وجہ سے نئی ملازمتیں تلاش کرنے میں تاخیر کی جا سکتی ہیں (آج آج لیبر مارکیٹ کے تبادلے سے منسلک ہونے والی عام بے روزگاری سے باہر) سائیکل سائیکل بے روزگاری کے طور پر جانا جاتا ہے.

بہت سے عوامل خاص طور پر لیبر مارکیٹوں اور مشن کے حالات کو ملازمتوں، اجرت، روزگار کی سطح کو ایڈجسٹ کرنے کے عام عمل کے ساتھ مداخلت کرسکتے ہیں:

مختلف قسم کے لیبر
سادگی کی خاطر، معیشت پسندوں اور اعداد و شمار کے لئے مجموعی طور پر مختلف آدانوں کے درمیان اختلافات کو نظر انداز کرنے کے لئے پیداواری کاروباری عملوں کے درمیان اختلافات کو نظر انداز نظر انداز کرنے کے لئے مجموعی اقتصادی کارکردگی کی پیمائش کرنے میں مدد ملتی ہے، جیسے کہ مجموعی طور پر اقتصادی کارکردگی کی پیمائش کرنے میں مدد ملے گی، جیسے کہ جی ڈی پی اور بے روزگاری کی شرح. جبکہ یہ وسیع، خلاصہ نمبروں میں کچھ استعمال ہوسکتے ہیں، وہ اس حقیقت کو بے نقاب کرتے ہیں کہ بہت سے مختلف قسم کے کارکنوں، مہارت، تجربے اور جاننے کے مختلف مجموعوں کے ساتھ، یہ مختلف قسم کے مختلف قسم کے لئے زیادہ سے کم مفید بناتا ہے. مختلف قسم کے اوزار اور دارالحکومت آلات کے ساتھ مختلف قسم کے کاروبار میں، مختلف قسم کے کاروبار میں، مختلف قسم کے کاروبار میں مصروف ہیں. لیبر (اور دارالحکومت) مارکیٹوں کے اس اہم پہلو کو سائیکل سائیکل بے روزگاری کی وضاحت کرتا ہے.

کچھ صنعتوں اور کاروباری اداروں (اور ان کے کارکنوں) کسی بھی مشن میں دوسروں کے مقابلے میں سخت ہٹ جاتے ہیں. مثال کے طور پر عظیم مشن، تعمیر، مینوفیکچرنگ، اور فنانس، انشورنس، اور ریل اسٹیٹ (آگ) کے شعبوں کے دوران بے روزگاری میں سب سے بڑی اضافہ ہوا.

بہت سے قسم کے مزدوروں کے لئے لیبر مارکیٹوں میں سے ہر ایک کے لئے بے روزگار کارکنوں کے اضافے کو صاف کرنے کے لئے صحیح ملازمین کو صحیح ملازمتوں سے ملنے کی ضرورت ہوتی ہے، بلکہ عام مجموعی کارکنوں کو میکرو نقطہ نظر سے عام مجموعی ملازمتوں کے ساتھ بیلنس بنانے کے بجائے. مختلف ملازمتوں اور صنعتوں میں کارکنوں (اور دارالحکومت سامان) متغیر بلاکس نہیں ہیں جو صرف پہلے دستیاب افتتاحی میں پلگ ان کرسکتے ہیں. ٹیب ایک سلاٹ بی میں فٹ ہونے کی ضرورت ہے یا معیشت کی مشین آسانی سے ایک دوسرے کے ساتھ واپس نہیں جائیں گے.

صحیح ملازمتوں میں صحیح کارکنوں کو چھانٹنے کا یہ عمل وقت لگتا ہے، اور کاروباری اداروں کے ہاتھوں میں ان تمام وسائل کو ایک دوسرے کے ساتھ مل کر ان تمام وسائل کو استعمال کر سکتے ہیں جو ان تمام وسائل کو استعمال کرسکتے ہیں. پیداواری (اور منافع بخش) سرگرمیوں.اس کے علاوہ، ان دونوں چھانٹ کے عمل میں کارکنوں اور آجروں کے حصے پر لچک کی ضرورت ہوتی ہے. قیمتوں، اجرت، اور مقدار کی فراہمی کے لحاظ سے نہ صرف لچکدار اور اس سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ کلاس روم اقتصادی ماڈلوں کو گھومنے کے ارد گرد، لیکن مختلف قسم کے کارکنوں اور سرمایہ کاری اور مارکیٹوں کے درمیان دارالحکومتوں کو منتقل کرنے اور جمع کرنے کی صلاحیت کے لحاظ سے. اگر لیبر اور دارالحکومت کے سامان کے لئے مارکیٹوں کو ان طریقوں میں کافی لچکدار تھا، تو ابتدائی جھٹکا کے بعد مبتلا ہونے کا درد مختصر ہو سکتا ہے.

مارکیٹ کی رگوں
تاہم، بری خبر یہ ہے کہ بہت سی اضافی پیچیدگیوں کا یہ مطلب یہ ہے کہ مزدور اور دارالحکومت مارکیٹوں میں کچھ مسلسل بے روزگاری سے بچنے کے لئے ہمیشہ لچکدار نہیں ہوسکتی ہے.

ایک وجہ یہ ہے کہ جو لوگ نئے بے روزگار ہیں وہ مشن کے دوران نئی ملازمتوں کو تلاش کرنے میں دشواری رکھتے ہیں یہ ہے کہ لیبر مارکیٹوں کو بنیادی اقتصادی طبقے میں پیش کردہ بہترین مارکیٹوں سے تھوڑا سا مختلف طور پر کام کرنا ہے. ایک ہی طریقہ جس میں لیبر مارکیٹس بہت سے دوسرے سامان سے مختلف ہیں یہ ہے کہ اجرت “چپچپا” ہوسکتی ہے. دوسرے الفاظ میں، آجروں اور کارکنوں کو کم سے کم اجرت کے سامنا اور مزدور کے لئے سپلائی میں اضافے میں کم اجرت سے اتفاق کرنے سے اتفاق کیا جا سکتا ہے.

ایک کاروبار عام طور پر مختلف مہارت اور صلاحیتوں کی سطحوں کے کارکنوں کے ایک پول کو ملازمت کرتا ہے، سب سے زیادہ پیداواری کارکنوں کو تلاش کرنے اور رکھنے کے ارادے کے ساتھ بلکہ ضرورت کے مطابق حد سے کم پیداواری کارکنوں سمیت بھی شامل ہیں. جب کاروباری اداروں کو نچلے حصے پر دباؤ کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور تنخواہ کے اخراجات کو کم کرنا چاہتے ہیں تو، وہ اکثر اپنے مریضوں کے اجرت یا گھنٹوں (سب سے زیادہ پیداواری سمیت) کاٹنے کے بجائے ان کے حاشیہ پیداواری کارکنوں کو لے کر اکثر بہتر ہوتے ہیں.

مزدوروں کا کاٹنا کارکن پیداوری کا خاتمہ کرتا ہے اور سب سے زیادہ پیداواری کارکنوں کو کہیں بھی زیادہ ادائیگی کی ملازمتوں کے لئے رضاکارانہ طور پر چھوڑنے کے لئے بھی قیادت کر سکتا ہے، جبکہ حاشیہ کارکنوں کو کاٹنے کے باقی کارکنوں کو پیداوری میں اضافہ کرنے کے لئے حوصلہ افزائی کی جاتی ہے. اجرت کے بجائے ملازمین کاٹنے چپچپا اجرت کا ایک بڑا ذریعہ بن سکتا ہے. معاہدہ طور پر ضمانت شدہ اجرت، اجتماعی سوداگر معاہدے، اور کم از کم اجرت کے قوانین کو مزید استحکام کے استحکام میں شراکت مل سکتی ہے.

بے روزگاری کارکنوں کو یہ معلوم ہوسکتا ہے کہ ملازمتوں اور کاروباری اداروں، یا اس سے بھی پوری صنعتیں، جس میں وہ ایک مشن کے دوران غائب ہو گئے تھے. یہ تکنیکی تبدیلی اور غیر جانبداری یا معیشت میں ایک ساختی تبدیلی کی وجہ سے ہوسکتا ہے جو اقتصادی جھٹکا سے متعلق معیشت میں خود مختار ہوسکتا ہے.

یہاں تک کہ ان عوامل کو بھی غیر حاضر، عام طور پر ایک مشن میں تعمیر کچھ صنعتوں اور کاروباری سرگرمیوں اور ان کے منسلک انسانی دارالحکومت میں بھاری اضافے میں شامل ہے، اس کے بعد جب شدت سے ہٹ جاتا ہے تو اس کے نتیجے میں توجہ مرکوز ہوتی ہے. عام طور پر یہ کاروباری اور سرگرمیاں ہیں جو کم سود کی شرح پر بہت زیادہ دستیاب کریڈٹ رکھنے کے لئے انتہائی حساس ہیں یا انحصار کرتے ہیں، جو ایک مشن کے دوران، خاص طور پر مشن میں ابتدائی طور پر نہیں ہے. انسانی دارالحکومت کہ کارکنوں نے ان کاروباری اداروں میں ملازمتوں کے لئے سرمایہ کاری کی سرمایہ کاری کی ہے شاید بہت اچھی طرح سے یا نئی ملازمتوں میں منتقل نہیں ہوسکتی ہے.

حکومتی پالیسی
رییکیشنز کے عظیم سانحوں میں سے ایک یہ ہے کہ لیبر مارکیٹوں کی ایڈجسٹمنٹ اکثر سرکاری پالیسیوں کی طرف سے مزید محنت کی جاتی ہے، جو بے روزگاری میں اضافہ اور بڑھا سکتا ہے. تکنیکی طور پر یہ خالص طور پر سائیکل سائیکل بے روزگاری نہیں ہے، لیکن اس طرح کی پالیسی کے ردعملوں کی بحالی کی کافی کافی خصوصیت ہے کہ وہ متعلقہ اور بحث کرنے کے لئے ضروری ہیں. یہ بہت سے طریقے ہیں کہ یہ ہو سکتا ہے، لیکن سب سے زیادہ اہم مالیاتی اور مالیاتی پالیسیوں ہیں جو صنعت کی ساخت کی ایڈجسٹمنٹ کے ساتھ مداخلت کرتے ہیں. کچھ حد تک، لیبر مارکیٹ کے مواقع کے ساتھ براہ راست حکومت کی مداخلت بھی ایک کردار ادا کرتی ہے.

کم از کم گزشتہ صدی کے دوران، رییکیشنز کے عام پالیسی کا جواب، توسیع کی مالیاتی اور مالیاتی پالیسی کا کچھ مجموعہ ہے. اس کوشش میں سے زیادہ تر کوششوں کو سبسکرائب کرنے، حوصلہ افزائی، یا پریشان کن صنعتوں، خاص طور پر مالیاتی شعبے اور مینوفیکچررز اور تعمیر میں بڑے کاروباری خدشات کی طرف اشارہ کیا جاتا ہے، لیکن دوسروں کے ساتھ ساتھ کچھ معاملات میں بھی. بدقسمتی سے، لیکن اکثر ڈیزائن کی پیشکش کرنے کے لئے ڈیزائن کی طرف سے، یہ ضروری ہے کہ یہ ضروری ہے کہ یہ نئی کاروباری ملکیت کے تحت معیشت میں حقیقی دارالحکومت کے سامان کی مائع اور بحالی کو روکتا ہے.

بے روزگاروں کے لیے پیداواری نئی ملازمتیں پیدا کرنے کے لیے، ان ملازمتوں کے لیے درکار اوزار، سازوسامان اور فزیکل پلانٹ نئے آجروں کے ذریعے دستیاب کرانا ہوں گے تاکہ وہ اپنی نئی ملازمتوں میں استعمال کر سکیں۔ کچھ کیپٹل گڈز لفظی طور پر بلڈنگ اور دیگر فکسڈ سرمائے کی شکل میں جگہ جگہ مقرر ہیں۔ کچھ کیپٹل گڈز ٹولز اور آلات کی شکل میں بہت مخصوص استعمال کے ساتھ جکڑے ہوتے ہیں جنہیں مکمل طور پر ختم کرنے کے علاوہ دوسرے استعمال میں منتقل کرنا مشکل ہوتا ہے۔ دیے گئے استعمال کے لیے مخصوص کیپیٹل گڈز کتنی ہیں اور کتنی جلدی انہیں دوبارہ استعمال کیا جا سکتا ہے، دوبارہ تیار کیا جا سکتا ہے یا دوسرے استعمال میں ری سائیکل کیا جا سکتا ہے، یہ کافی حد تک مختلف ہوتا ہے، لیکن یہ ایک ضروری عمل ہے کہ معیشت اور جاب مارکیٹ کو لفظی طور پر دوبارہ ایک ساتھ رکھا جائے۔

کوئی بھی چیز جو ناکام کاروباروں کو ختم کرنے اور ان کے اثاثوں کو نئے مالکان اور کاروباری افراد کے درمیان دوبارہ تقسیم کرنے کے عمل کو سست یا روکتی ہے جو انہیں نئے استعمال میں لا سکتے ہیں، وہ لیبر مارکیٹوں میں ایڈجسٹمنٹ کے متعلقہ عمل کو بھی تاخیر یا روکتا ہے جو بے روزگاروں کے لیے نئی ملازمتیں لاتا ہے۔ کساد بازاری کے دوران بہتر یا بدتر (زیادہ تر بدتر) حکومتی پالیسی بڑی حد تک بالکل وہی کرنے کی طرف تیار ہے۔

کیپٹل مارکیٹ کی ایڈجسٹمنٹ میں مداخلت کرنے کے علاوہ، حکومتیں اکثر کارکنوں اور صارفین کو بے روزگاری انشورنس، محرک چھوٹ کے چیک، یا دیگر فوائد کی شکل میں مختلف فوائد فراہم کرتی ہیں۔ اگرچہ یہ ان لوگوں کو عارضی ریلیف فراہم کرتے ہیں جو کساد بازاری کے دوران بے روزگار اور معاشی طور پر پریشان ہیں، وہ پائیدار، پیداواری روزگار فراہم کرنے کا مسئلہ حل نہیں کرتے۔ بے بنیاد تنقید کے باوجود کہ بے روزگاری کی امداد لوگوں کو بے روزگار رہنے کی ترغیب دیتی ہے، اس دعوے کی حمایت کرنے کا کوئی ثبوت نہیں ہے۔ درحقیقت، ییل یونیورسٹی کے ایک حالیہ مطالعہ نے انکشاف کیا ہے کہ کئیر ایکٹ سے اضافی بے روزگاری کے فوائد حاصل کرنے کا اس شرح پر کوئی اثر نہیں پڑا جس پر لوگ اپنی ملازمتوں پر واپس آئے۔

نتیجہ
کساد بازاری اور بے روزگاری ساتھ ساتھ چلتے ہیں — بے روزگاری میں اضافہ اور بے روزگاری کا برقرار رہنا کساد بازاری کی خصوصیات میں سے ایک ہے۔ کساد بازاری پھیلتے ہی کاروبار نقصانات اور ممکنہ دیوالیہ پن کے پیش نظر کارکنوں کو فارغ کر دیتے ہیں، اور ان کارکنوں کو دوبارہ ملازمت دینا ایک مشکل عمل ہے جس میں وقت لگتا ہے اور اس میں کئی اقتصادی اور پالیسی پر مبنی رکاوٹوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Check Also
Close
Back to top button