BIOGRAPHY

Hazrat Fatima bint Muhammad (peace be upon him)

حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ بنت محمد صلی اللہ علیہ وسلم

Hazrat Fatima bint Muhammad (peace be upon him)

Hazrat Fatimah R.A(born between 605 and 615 CE, died sometime in 632 CE; the date of death is disputed) was the youngest daughter of the Islamic prophet Muhammad (l. 570-632 CE) and his first wife Khadija (l. 555-619 CE).

Taking on after her father, Hazrat Fatimah R.A became highly spiritual and dedicated to Islam. Hazrat Fatimah R.A was married to Ali ibn Abi Talib (l. 601-661 CE), a cousin of Prophet Hazrat Muhammad PBUH, in 624 CE, and also the marriage lasted until the end of her days. Her sons Hazrat Hassan R.A (l. 624-669/670 CE) and Hazrat Hussayn R.A (l. 626-680 CE) were the sole surviving grandchildren of the Prophet Hazrat Muhammad PBUH and are venerated as imams (spiritual leaders) by the Shia Muslim community, similar to their father; Hazrat Fatimah R.A is termed because the mother of Imams and is revered by both Sunni and Shia Muslims.

Historical Context

Shia Muslims consider only Fatimah to be the biological daughter of the Prophet, while Sunni Muslims maintain that all four daughters were Muhammad’s.

Prophet Hazrat Muhammad P.B.U.H(l. 570-632 CE) faced ridicule, oppression, financial boycotts, and even physical abuse when He P.B.U.H started preaching a completely unique faith – Islam – within the heartland of Arabia: Mecca, from 610 CE onwards. His biggest supporter was his wife Hazrat Khadija R.A, a woman 15 years senior but, in step with Islamic sources, one with the deepest respect for her husband, which the latter reciprocated in a similar way.

The couple had six children, two boys, Hazrat Abdullah R.A and Hazrat Qasim R.A(both of whom died in infancy), and 4 daughters, Hazrat Zainab R.A (l. 599-629 CE), Hazrat Ruqayyah R.A (l. 601-624 CE), Hazrat Umm e Kulthum R.A(l. 603-630 CE), and Hazrat Fatimah R.A (born between 605 and 615 CE). However, Shia Muslims consider only Fatimah to be the biological daughter of the Prophet, and also the rest to be Hazrat Khadija’s R.A children from her previous husbands (she had been married and widowed twice before), while Sunni Muslims maintain that each one of the four daughters was Hazrat Muhammad’s P.B.U.H.

Facing atrocities in Mecca, after the death of Hazrat Khadija R.A and Abu Talib (Hazrat Muhammad’s P.B.U.H uncle and guardian) in 619 CE, the Prophet’s followers turned to Medina for asylum. The hegira (migration) in 622 CE, as it was later called, became a pivotal point within the history of Islam because the  Prophet Hazrat Muhammad P.B.U.H acquired control of the town of Medina as a result. Prophet Hazrat Muhammad P.B.U.H, now a king, initiated a decade-long political and military struggle against his former tormentors and their supporters. This culminated in the fall of Mecca in 629/630 CE and therefore the subjugation of most of Arabia under the sway of Islam by the time of his death in 632 CE.

Early Life & Marriage to Ali

Hazrat Fatimah R.A, the youngest child of Hazrat Khadija R.A and Hazrat Muhammad P.B.U.H, was born in Mecca between 605 CE and 615 CE. The girl lost her mother in 619 CE, a year remembered because of the ‘Year of Sorrow’ within the Islamic tradition. From that time on, Prophet Muhammad P.B.U.H played a very important role in her upbringing and instilled in her the qualities that he admired in his wife, like modesty, humility, spirituality, and generosity. When the Muslims established themselves in Medina, with Prophet Muhammad P.B.U.H because the leader of the city-state, armed conflict broke out. Though the ladies failed to participate in any of the battles that ensued, they did serve auxiliary roles like medics, and Hazrat Fatimah R.A was often found on the battlefield, tending to the injuries of the injured.

In 624 CE, Hazrat Ali ibn Abi Talib R.A (l. 601-661 CE), a cousin of the Prophet Muhammad P.B.U.H, who had also distinguished himself as a heroic and constant supporter of Islam, approached Hazrat Muhammad P.B.U.H to request his permission to marry Hazrat Fatimah R.A, which the latter granted. After the marriage, the couple moved to a house near the Prophet Muhammad P.B.U.H. Hazrat Fatimah R.A and Hazrat Ali R.A had five children; two girls, Zainab bint Ali (l. 626-682 CE) and Umm e Kulthum bint Ali (b. 627 CE), and three boys, Mohsin (probably died in infancy, date disputed), Hassan (l. 624-669/670 CE) and Hussayn (l. 626-680 CE). The latter two would become instrumental in Shia ideology as, like Ali, they’re considered imams, the spiritual descendants of the Prophet in Shiism.

All of Hazrat Fatimah’s R.A sisters predeceased her with no surviving children, and also the grief-stricken Prophet Muhammad P.B.U.H found solace within the sight of his youngest daughter and her children, during his last years, until he passed away in 632 CE because of the unrivaled master of virtually the whole peninsula.

The succession of the Prophet’s Empire

After Hazrat Muhammad’s P.B.U.H death, the Muslim community was pushed into chaos and division. A friend and father-in-law of the Prophet Muhammad P.B.U.H, namely Abu Bakr R.A (l. 573-634 CE) assumed the title of Caliph, however, this move was resisted by some who deemed only Hazrat Ali R.A, Hazrat Fatimah’s R.A husband, because the legitimate heir of Hazrat Muhammad P.B.U.H. Since the Prophet had given no explicit orders about succession, Abu Bakr’s R.A stance was held. Hazrat Ali R.A wasn’t a part of the committee, a number of whom wanted to revert to tribalism and home rule (and would have succeeded if Abu Bakr R.A had not intervened), that decided the community’s fate, which would create problems soon.

Many sources claim that Hazrat Umar ibn al-Khattab R.A(l. 584-644 CE), who would later become the second Caliph of Islam, confronted Hazrat Ali R.A outside his house, while Hazrat Fatimah R.A remained inside (or consistent with some sources, came out), demanding that he pledge fealty to Hazrat Abu Bakr R.A. The altercation became intense and Hazrat Umar R.A, who was known for his fiery temper, threw out threats to coerce Hazrat Ali’s R.A allegiance to Hazrat Abu Bakr R.A. There’s disagreement on what happened later; some maintain that the argument didn’t change into a physical confrontation, and early sources make no mention of it. Later sources, starting from the 10th century CE, state that physical violence was involved, however, these narratives are inconsistent and therefore the chronology is debated. There are many versions of the story (each different from the other); some claim that Hazrat Fatimah R.A was pregnant at the time and therefore the confrontation resulted in her miscarriage, while sources before the 10th century CE state that said child, Mohsin, had died in infancy which Fatimah wasn’t involved in any physical confrontation.

Hazrat Ali R.A reconciled with Hazrat Abu Bakr R.A and even adopted one of his sons, namely, Muhammad ibn Abu Bakr (l. 631-658 CE) after his death, who remained a devout follower of Ali until his death (he was murdered by a general operating under Muawiya, the rival of Hazrat Ali R.A). During Hazrat Umar’s R.A tenure (634-644 CE), Hazrat Ali R.A served as his deputy and advised him on several important decisions just like the development of the Islamic calendar and starting developmental projects within the empire. Hazrat Umar R.A married Hazrat Ali’s R.A daughter Umm e Kulthum bint Ali (though the marriage may not are consummated), to cement his relationship with both Ali and also the Prophet (who had married one of all his daughters), however, some Shia sources reject this historical narrative (while others accept it).

Dispute over the Possession of Fadak

The dust had barely settled over the succession dispute, from which Hazrat Ali R.A seems to possess withdrawn his claim, seeing that the people had accepted Hazrat Abu Bakr R.A as their leader or, according to Shia sources, because of intimidation or lack of support, another quarrel broke out. This was a property dispute and therefore the said land was 1/2 a garden within the Khaybar oasis, named Fadak, which was acquired by the Prophet Muhammad P.B.U.H as a part of a treaty (629 CE), and in line with some, passed into Hazrat Fatimah’s R.A possession during his lifetime. Hazrat Abu Bakr R.A asserted that since the land had been acquired as a part of a treaty, within the time of the Prophet Muhammad P.B.U.H, who was then the ruler of the state, this land thenceforth belonged to the state and to not Hazrat Muhammad P.B.U.H personally.

The most commonly held belief about Hazrat Fatimah’s  R.A death is that she was broken by the sorrow & acquired a disease, probably pulmonary tuberculosis, that proved fatal.

The Caliph backed up his claim by quoting the words of Prophet Muhammad P.B.U.H himself who had mentioned that the land would pass onto the people after his death (claim disputed). However, Hazrat Fatimah R.A, who was attentive to her inheritance rights, claimed that the land had been passed into her possession which she had every right to say as her personal estate. The heated debate that followed did not change anything; Fadak was confiscated by the state.

Hazrat Abu Bakr R.A’s actions in this regard are subject to incessant debate; consistent with some, he regretted his decision on his deathbed. As for Hazrat Fatimah R.A, sources are divided, some say that the woman of Islam refused to talk to the Caliph for the remainder of her days, while others claim that the 2 reconciled eventually and Hazrat Abu Bakr R.A attended her funeral. The reality remains shrouded in mystery.

Death & Ahl al-Bayt (The Household of the Prophet)

Hazrat Fatimah R.A passed away just some months after her father, but the date of her death is disputed. The foremost commonly held belief about her death is that she was broken by the sorrow after her father’s demise and bought a disease, probably pulmonary tuberculosis, that ultimately proved fatal. She was probably buried within the Jannat al-Baqi graveyard (also known simply as Baqi), but her gravesite isn’t known, there’s speculation that this was done at her behest, to indicate her dissatisfaction with the people, but others claim that the knowledge was simply lost to history.

Hazrat Ali R.A took no other wife when she was alive but did marry other women after her death following the customs of the time. He became the fourth Caliph of Islam in 656 CE when Uthman ibn Affan was murdered by rebel soldiers. Though Hazrat Ali R.A spent his entire tenure (656-661 CE) trying to bring order to an empire plunged into tumult, in what was later termed the First Fitna (656-661 CE), his commitment to justice and inclination towards chivalry earned him the admiration of later generations.

Hazrat Ali R.A was murdered by a renegade group called the Kharijites, and Hassan, who succeeded his father, and who is additionally included within the Rashidun Caliphate by some Sunni Muslims, was forced to abdicate in favor of Muawiya (r. 661-680 CE; the founder of the Umayyad Dynasty), his father’s rival. He was later poisoned by one of his wives in 669/670 CE (some say that Muawiya was involved).

Hazrat Hussayn R.A, the younger brother, lived until Muawiya died and his son Yezid (r. 680-683 CE) ascended the throne. Hazrat Hussayn R.A assaulted Kufa, Iraq, which was once his capital. On the way to his destination, Hazrat Hussayn R.A’s feeble force, comprising mostly of his members of the family, numbering no quite 72 fighters, was intercepted by the Umayyad army and massacred at Karbala (680 CE). Hazrat Hussayn R.A’s death created an uprising that lasted for over a decade and ended with a victory for the Umayyads after they attacked Mecca in 692 CE, however, his legacy lives on to the current day. Shia Muslims commemorate the anniversary of the Battle of Karbala (680 CE) within the annual Ashura festival (9th and 10th Muharram of the Islamic calendar). Hazrat Fatimah R.A’s household remains a focus within the Islamic tradition, for both Sunnis and Shias; the latter even display an insignia representing Hazrat Fatimah R.A’s hand, especially during the Ashura but also in routine.

Legacy

Known by several nicknames including al-Zahra (the radiant), al-Siddiqah (the truthful woman), and al-Tahirah (the pure woman), Hazrat Fatimah R.A has been described as a pretty, brave, and extremely modest woman. Those that knew her, likened her to the Prophet of Islam, in both character and personality. To the Muslims, her love for her father perfectly embodies a motto often accredited to the Prophet Muhammad P.B.U.H: “Daughters are a blessing from God” (Some pre-Islamic Arabs considered the birth of a daughter as bad luck).

Hazrat Fatimah R.A’s modesty has also inspired many Muslim women throughout history, the headcovers worn by Muslim women, of which there are several versions, including the hijab, aren’t merely a spiritual symbol and statement but also some way for the Muslimahs (Muslim women) to emulate the instance of girls like Hazrat Fatimah R.A. Hazrat Fatimah R.A’s memory lives on not only through the feats of her family, called the Ahl al-Bayt (the household of the Prophet) but also attributable to the moral and non-secular values that she held importantly.

حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ بنت محمد صلی اللہ علیہ وسلم

حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ (605 اور 615 عیسوی کے درمیان پیدا ہوئیں، 632 عیسوی میں فوت ہوئیں؛ تاریخ وفات میں اختلاف ہے) اسلامی پیغمبرحضرت محمد (صلی اللہ علیہ وسلم 570-632 عیسوی) اور ان کی پہلی بیوی خدیجہ (555-619 عیسوی) کی سب سے چھوٹی بیٹی تھیں۔ )۔ اپنے والد کے بعد، حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ انتہائی روحانیت اور اسلام کے لیے وقف ہوگئیں۔ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ کی شادی 624 عیسوی میں پیغمبر اسلام کے چچا زاد بھائی حضرت علی ابن ابی طالب (l. 601-661 CE) سے ہوئی، اور یہ شادی ان کے ایام کے آخر تک قائم رہی۔ ان کے بیٹے حسن (ل. 624-669/670 عیسوی) اور حسین (ل. 626-680 عیسوی) حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے نواسے تھے اور شیعہ مسلم کمیونٹی کی طرف سے ان کی امام (روحانی رہنما) کے طور پر تعظیم کی جاتی ہے۔ باپ؛ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ کو اماموں کی ماں کہا جاتا ہے اور سنی اور شیعہ دونوں ہی ان کی عزت کرتے ہیں۔

تاریخی سیاق و سباق

شیعہ مسلمان صرف حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ کو پیغمبر کی حیاتیاتی بیٹی مانتے ہیں، جبکہ سنی مسلمان کہتے ہیں کہ چاروں بیٹیاں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی تھیں۔

حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم ( 570-632 عیسوی) کو تضحیک، جبر، مالی بائیکاٹ، اور یہاں تک کہ جسمانی تشدد کا سامنا کرنا پڑا جب انہوں نے عرب کے مرکز مکہ میں، 610 عیسوی کے بعد سے ایک نئے عقیدے ، اسلام کی تبلیغ شروع کی۔ ان کی سب سے بڑی حامی ان کی اہلیہ حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالیٰ تھیں، جو ان سے 15 سال بڑی خاتون تھیں لیکن اسلامی ذرائع کے مطابق، اپنے شوہر کے لیے انتہائی محترم، جس کا بدلہ بعد میں دیا گیا۔ اس جوڑے کے چھ بچے تھے، دو بیٹے، حضرت عبداللہ رضی اللہ تعالیٰ اور حضرت قاسم رضٰ اللہ تعالی عنہ (جو دونوں بچپن میں ہی فوت ہو گئے تھے)، اور چار بیٹیاں، حضرت زینب رضی اللہ تعالیٰ عنہ (ل. 599-629 عیسوی)، حضرت رقیہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ(ل. 601-624 عیسوی)،حضرت ام کلثوم رضی اللہ تعالیٰ عنہ (ل. 603-630 عیسوی)، اورحضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ (605 اور 615 عیسوی کے درمیان پیدا ہوئیں)۔ تاہم، شیعہ مسلمان صرف حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو پیغمبراسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی حیاتیاتی بیٹی مانتے ہیں، اور باقی کو حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالٰی عنہ کی اولاد ان کے سابقہ ​​شوہروں سے مانتے ہیں (وہ اس سے پہلے دو بار شادی شدہ اور بیوہ ہو چکی تھیں)، جبکہ سنی مسلمانوں کا خیال ہے کہ چاروں بیٹیاں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی تھیں۔

مکہ میں مظالم کا سامنا کرتے ہوئے، 619 عیسوی میں حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالٰی عنہ اور ابو طالب (حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے چچا اور سرپرست) کی وفات کے بعد، پیغمبراسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے پیروکاروں نے پناہ کے لیے مدینہ کا رخ کیا۔ 622 عیسوی میں ہجرت (ہجرت)، جیسا کہ بعد میں کہا گیا، تاریخ اسلام کا ایک اہم مقام بن گیا کیونکہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کے نتیجے میں مدینہ شہر کا کنٹرول حاصل کر لیا۔ پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم، جو اب بادشاہ ہیں، نے اپنے سابقہ ​​اذیت دینے والوں اور ان کے حامیوں کے خلاف ایک دہائی طویل سیاسی اور فوجی جدوجہد کا آغاز کیا۔ اس کا اختتام 629/630 عیسوی میں مکہ کے سقوط اور 632 عیسوی میں ان کی وفات تک اسلام کے زیر تسلط عرب کے بیشتر حصے پر ہوا۔

ابتدائی زندگی اور حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ سے شادی

حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ، حضرت خدیجہ رضی اللہ تعالی عنہ اورحضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی سب سے چھوٹی اولاد، مکہ میں 605 عیسوی اور 615 عیسوی کے درمیان پیدا ہوئیں۔ جوانی میں ہی حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ نے 619 عیسوی میں اپنی ماں کو کھو دیا، ایک ایسا سال جسے اسلامی روایت میں ‘غم کا سال’ کے طور پر یاد کیا جاتا ہے۔ اس وقت سے، پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی پرورش میں ایک اہم کردار ادا کیا اور ان میں وہ خصوصیات پیدا کیں جن کی وہ اپنی بیوی میں تعریف کرتے تھے، جیسے شائستگی، عاجزی، روحانیت اور سخاوت۔ جب مسلمانوں نے مدینہ میں اپنے آپ کو قائم کیا، شہر کی ریاست کے رہنما کے طور پرپیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ، مسلح تصادم شروع ہو گیا۔ اگرچہ خواتین نے اس کے نتیجے میں ہونے والی کسی بھی لڑائی میں حصہ نہیں لیا، لیکن انہوں نے معاون کرداروں جیسے کہ طبیبوں کی خدمات انجام دیں، اور حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ اکثر میدان جنگ میں زخمیوں کے زخموں پر مرہم رکھتی تھیں۔

624 عیسوی میں، پیغمبر کے ایک چچازاد بھائی علی ابن ابی طالب (601-661 عیسوی)، جنہوں نے خود کو اسلام کے ایک بہادر اور وفادار حامی کے طور پر بھی متعارف کرایا تھا، نے پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ سے شادی کی اجازت کی درخواست کی، جو بعد میں عطا کی گئی. شادی کے بعد یہ جوڑا نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے گھر کے قریب رہائش پذیر ہو گیا۔حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ اور حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے پانچ بچے تھے۔ دو لڑکیاں، حضرت زینب بنت علی (م 626-682 عیسوی) اور حضرت ام کلثوم بنت علی (پیدائش 627 عیسوی)، اور تین لڑکے، محسن (ممکنہ طور پر بچپن میں ہی فوت ہو گئے، تاریخ میں اختلاف ہے)، حسن (ل 624-669/ 670 عیسوی) اور حسین (ل. 626-680 عیسوی)۔ مؤخر الذکر دو شیعہ نظریہ میں اہم کردار بن گئے کیونکہ حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی طرح، انہیں امام سمجھا جاتا ہے، اورشیعہ مذہب میں پیغمبر کی روحانی اولاد۔.

حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ کی تمام بہنیں بغیر کسی بچے کے ان سے پہلے انتقال کر گئیں، اور غم زدہ پیغمبر حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی سب سے چھوٹی بیٹی اور ان کی اولاد سے اپنے آخری سالوں میں سکون پایا، یہاں تک کہ 632 عیسوی میں ان کا انتقال تقریباً پورے جزیرہ نما عرب ایک بے مثال مالک کے طور پر ہوا۔۔

پیغمبر کی سلطنت کی جانشینی۔

پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات کے بعد مسلم کمیونٹی کو انتشار اور تقسیم میں دھکیل دیا گیا۔ پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے ایک دوست اور سسر نے، یعنی حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ (متوفی 573-634 عیسوی) نے خلیفہ کا لقب اختیار کیا، تاہم، اس اقدام کی بعض لوگوں نے مزاحمت کی جو صرف حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے شوہر حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو ہی ان کا جائز وارث سمجھتے تھے۔ پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نےچونکہ جانشینی کے بارے میں کوئی واضح حکم نہیں دیا تھا، اس لیے حضرت ابوبکررضی اللہ تعالیٰ عنہ کا موقف برقرار رہا۔ حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ اس کمیٹی کا حصہ نہیں تھے، جن میں سے کچھ قبائلیت اور گھریلو حکمرانی کی طرف لوٹنا چاہتے تھے (اور اگر ابوبکر مداخلت نہ کرتے تو کامیاب ہو جاتے)، جنہوں نے کمیونٹی کی قسمت کا فیصلہ کیا، کہ یہ بعد میں مسائل پیدا کرے گا۔

بہت سے ذرائع کا دعویٰ ہے کہ حضرت عمر بن الخطاب رضی اللہ تعالیٰ عنہ (584-644 عیسوی)، جو بعد میں اسلام کے دوسرے خلیفہ بنے، حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا اپنے گھر کے باہر سامنا ہوا، جب کہ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ اندر ہی رہیں (یا بعض ذرائع کے مطابق، باہر آگئیں)، مطالبہ کیا کہ اس نے ابوبکر سے بیعت کی ۔ جھگڑا شدت اختیار کر گیا اور حضرت عمررضی اللہ تعالیٰ عنہ نے، جو اپنے بھڑکتے مزاج کے لیے مشہور تھے، حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے لیے حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی بیعت پر مجبور کرنے کی دھمکیاں دیں۔ بعد میں کیا ہوا اس میں اختلاف ہے۔ کچھ کا خیال ہے کہ یہ دلیل جسمانی تصادم میں تبدیل نہیں ہوئی، اور ابتدائی ذرائع نے اس کا کوئی ذکر نہیں کیا۔ بعد کے ذرائع، 10ویں صدی عیسوی سے شروع ہونے والے، بیان کرتے ہیں کہ جسمانی تشدد شامل تھا، تاہم، یہ روایتیں متضاد ہیں اور تاریخ پر بحث کی جاتی ہے۔ کہانی کے بہت سے ورژن ہیں (ہر ایک دوسرے سے مختلف)؛ بعض کا دعویٰ ہے کہ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ اس وقت حاملہ تھیں اور تصادم کے نتیجے میں ان کا اسقاط حمل ہوا، جب کہ دسویں صدی عیسوی سے پہلے کے ذرائع کے مطابق بچہ محسن بچپن میں ہی فوت ہوگیا تھا اور فاطمہ کسی جسمانی تصادم میں ملوث نہیں تھیں۔

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے صلح کر لی اور یہاں تک کہ ایک بیٹے کو گود لے لیا، جو ان کی موت تک حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا ایک عقیدت مند پیروکار رہا (اسے ایک جنرل نے قتل کر دیا تھا۔ معاویہ، علی کا حریف)۔ حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے دور میں (634-644 عیسوی)، حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے ان کے نائب کے طور پر خدمات انجام دیں اور اسلامی کیلنڈر کی ترقی اور سلطنت میں ترقیاتی منصوبے شروع کرنے جیسے کئی اہم فیصلوں میں انہیں مشورہ دیا۔ حضرت عمررضی اللہ تعالیٰ عنہ نےحضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی بیٹی ام کلثوم بنت علی سے شادی کی (حالانکہ یہ شادی مکمل نہیں ہوئی تھی)، تاکہ علی اور پیغمبر دونوں کے ساتھ اپنے تعلقات کو مضبوط کیے جا سکیں ، تاہم بعض شیعہ ذرائع اس تاریخی روایت کو مسترد کرتے ہیں ( جبکہ دوسرے اسے قبول کرتے ہیں)۔

فدک کے قبضے پر تنازعہ

جانشینی کے تنازعہ پر دھول بمشکل ختم ہوئی تھی، جس سے لگتا ہے کہ حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اپنا دعویٰ واپس لے لیا ہے، یہ دیکھ کر کہ لوگوں نے حضرت ابوبکررضی اللہ تعالیٰ عنہ کو اپنا لیڈر مان لیا تھا یا شیعہ ذرائع کے مطابق دھمکی یا حمایت نہ ملنے کی وجہ سے ایک اور جھگڑا شروع ہو گیا. یہ جائیداد کا تنازعہ تھا اور مذکورہ زمین خیبر نخلستان کے ایک باغ کا نصف تھا جس کا نام فدک تھا، جسے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک معاہدے (629 عیسوی) کے تحت حاصل کیا تھا، اور بعض کے مطابق، آپ کے دور میں حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ کے قبضے میں چلا گیا تھا۔ حضرت ابوبکر رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے زور دے کر کہا کہ چونکہ یہ زمین ایک معاہدے کے تحت حاصل کی گئی تھی، اس لیے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں، جو اس وقت ریاست کے حکمران تھے، اس کے بعد سے یہ زمین ریاست کی تھی، ذاتی طور پر پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی نہیں۔

نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات کے بعد حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ غم سے ٹوٹ گئی تھیں اور انہیں ایک بیماری ہو گئی تھی، غالباً پلمونری تپ دق، جو جان لیوا ثابت ہوئی۔

خلیفہ نے اپنے دعوے کی تائید خود حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے الفاظ کا حوالہ دے کر کی جنہوں نے ذکر کیا تھا کہ ان کی وفات کے بعد زمین لوگوں کے پاس جائے گی (دعویٰ متنازعہ)۔ تاہم، حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ، جو اپنے وراثت کے حقوق کے بارے میں باشعور تھیں، نے دعویٰ کیا کہ یہ زمین اس کے قبضے میں چلی گئی ہے اور اسے اپنی ذاتی ملکیت کے طور پر اس کا دعویٰ کرنے کا پورا حق ہے۔ اس کے بعد ہونے والی بحث کچھ بھی بدلنے میں ناکام رہی۔ فدک کو ریاست نے ضبط کر لیا۔

اس سلسلے میں ابوبکر کے اقدامات مسلسل بحث کا شکار رہے ہیں۔ کچھ کے مطابق، اسے بستر مرگ پر اپنے فیصلے پر افسوس ہوا۔ جہاں تک حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ کا تعلق ہے، ذرائع منقسم ہیں، بعض کہتے ہیں کہ اسلام کی خاتون نے اپنے باقی دنوں میں خلیفہ سے بات کرنے سے انکار کر دیا، جب کہ بعض کا دعویٰ ہے کہ آخرکار دونوں میں صلح ہوگئی اور ابوبکر نے ان کے جنازے میں شرکت کی۔ حقیقت اسرار میں ڈوبی رہی ہے۔

وفات اور اہل بیت (خاندان رسول)

حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ کا انتقال اپنے والد کے چند ماہ بعد ہی ہوا لیکن ان کی وفات کی تاریخ میں اختلاف ہے۔ ان کی موت کے بارے میں سب سے عام خیال یہ ہے کہ وہ اپنے والد کے انتقال کے بعد غم سے ٹوٹ گئی تھی اور ایک بیماری ہو گئی تھی، غالباً پلمونری تپ دق، جو بالآخر مہلک ثابت ہوئی۔ اسے غالباً جنت البقیع کے قبرستان میں دفن کیا گیا تھا (جسے محض بقی کے نام سے بھی جانا جاتا ہے)، لیکن ان کی قبر کا پتہ نہیں چل سکا، قیاس آرائیاں کی جاتی ہیں کہ یہ اس کے کہنے پر کیا گیا، تاکہ لوگوں میں اس کا عدم اطمینان ظاہر ہو، لیکن دوسروں کا دعویٰ ہے کہ معلومات کو صرف تاریخ میں کھو دیا گیا تھا۔

حضرت علی نے حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے زندہ رہتے ہوئے کوئی دوسری بیوی نہیں کی لیکن ان کی وفات کے بعد اس وقت کے رسم و رواج کے مطابق دوسری عورتوں سے شادی کی۔ وہ 656 عیسوی میں اسلام کے چوتھے خلیفہ بنے جب عثمان بن عفان کو باغی سپاہیوں نے قتل کر دیا۔ اگرچہ حضرت علی نے اپنا پورا دور (656-661 عیسوی) ہنگامہ آرائی میں ڈوبی ہوئی سلطنت میں نظم و نسق لانے کی کوشش میں صرف کیا، جسے بعد میں پہلا فتنہ (656-661 عیسوی) کہا گیا، لیکن انصاف کے ساتھ اس کی وابستگی اور بہادری کی طرف جھکاؤ نے اسے حاصل کیا۔

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو خارجیوں کہلانے والے ایک متعصب گروہ نے قتل کر دیا تھا، اور امام حسن، جو اپنے والد کے جانشین ہوئے، اور جسے بعض سنی مسلمانوں نے خلافت راشدین میں بھی شامل کیا ہے، کو معاویہ (ر. 661-680 عیسوی) کے حق میں دستبردار ہونے پر مجبور کیا گیا۔ اموی خاندان کا بانی)، اوران کے والد کا حریف۔ بعد میں انہیں 669/670 عیسوی میں ان کی ایک بیوی نے زہر دے دیا (کچھ کہتے ہیں کہ معاویہ اس میں ملوث تھا)۔

امام حسین، چھوٹے بھائی ، معاویہ کے انتقال تک زندہ رہے اور اس کا بیٹا یزید (ر. 680-683 عیسوی) تخت پر بیٹھا۔ امام حسین عراق کے شہر کوفہ کے لیے روانہ ہوئے جو کبھی اس کا دارالحکومت تھا۔ اپنی منزل کی طرف جاتے ہوئے، امام حسین کی کمزور قوت، جس میں زیادہ تر ان کے خاندان کے افراد شامل تھے، جن کی تعداد 72 سے زیادہ نہیں تھی، کو اموی فوج نے روک لیا اور کربلا (680 عیسوی) میں قتل عام کیا۔ امام حسین کی شہادت نے ایک بغاوت کو جنم دیا جو ایک دہائی سے زائد عرصے تک جاری رہا اور امویوں کی فتح کے ساتھ ختم ہوئی جب انہوں نے 692 عیسوی میں مکہ پر حملہ کیا، تاہم، اس کی میراث آج تک زندہ ہے۔ شیعہ مسلمان عاشورہ کے سالانہ تہوار (اسلامی کیلنڈر کی 9ویں اور 10ویں محرم) میں کربلا کی جنگ (680 عیسوی) کی یاد مناتے ہیں۔ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ کا گھرانہ اسلامی روایت میں سنیوں اور شیعوں دونوں کے لیے ایک مرکزی نقطہ ہے۔ مؤخر الذکر یہاں تک کہ فاطمہ کے ہاتھ کی نمائندگی کرنے والا نشان بھی دکھاتے ہیں، خاص طور پر عاشورہ کے دوران بلکہ معمول کے مطابق بھی۔

میراث

الزہرہ (روشن)، الصدیقہ (سچی عورت) اور الطاہرہ (پاکیزہ عورت) سمیت متعدد عرفی ناموں سے جانی جاتی ہیں، فاطمہ کو ایک خوبصورت، بہادر اور انتہائی غیرمعمولی خاتون کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ ان کو جاننے والوں نے انہیں سیرت اور شخصیت دونوں لحاظ سے پیغمبر اسلام سے تشبیہ دی۔ مسلمانوں کے لیے، ان کے والد کے لیے ان کی محبت اس قول کو مکمل طور پر مجسم کرتی ہے جسے اکثر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے تسلیم کیا جاتا ہے: ‘بیٹیاں خدا کی طرف سے ایک نعمت ہیں’ (کچھ قبل از اسلام بیٹی کی پیدائش کو بدقسمتی سمجھتے تھے)۔

حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی شائستگی نے پوری تاریخ میں بہت سی مسلم خواتین کو بھی متاثر کیا ہے، مسلم خواتین کے سر کے غلاف، جن میں حجاب سمیت کئی ورژن ہیں، نہ صرف ایک مذہبی علامت اور بیان ہے بلکہ یہ مسلمانوں (مسلم خواتین) کے لیے تقلید کا ایک طریقہ بھی ہے۔ حضرت فاطمہ رضی اللہ تعالیٰ عنہ جیسی عورتوں کی مثال نہ صرف اپنے خاندان کے کارناموں کے ذریعے زندہ رہتی ہے، جسے اہل بیت (پیغمبر کا گھرانہ) کہا جاتا ہے بلکہ ان اخلاقی اور مذہبی اقدار کی وجہ سے بھی جو ان میں بدرجہ اتم پائی جاتی تھیں.

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button