تاریخ

Water Dispute

پانی کا تنازعہ

سندھ طاس آبی تنازعہ کی بنیاد پنجاب کی تقسیم میں تھی۔ یہ یکم اپریل 1948 کو ہوا جب ہندوستان میں مشرقی پنجاب نے مغربی پنجاب کو نہروں کے پانی کا بہاؤ بند کر دیا جو مغربی پنجاب میں فصلوں کی کمی اور نقصان کا ایک بہت بڑا خطرہ بن گیا۔ مغربی پنجاب ایک پیداواری زمین ہے لیکن گرم اور خشک آب و ہوا ہے۔

ناکافی بارش اور ناقابل اعتبار ہے۔ پاکستان کی معیشت کا بنیادی وسیلہ زراعت پر مبنی ہے جس کا انحصار دریائے سندھ اور اس کے پانچ معاون دریاؤں سے نکلنے والی نہروں کے ذریعے آبپاشی پر ہے۔ تین مغربی دریا سندھ، جہلم اور چناب ریاست جموں و کشمیر سے پاکستان میں داخل ہوتے ہیں اور تین مشرقی دریا راوی، بیاس اور ستلج بھارت سے پاکستان میں داخل ہوتے ہیں۔ درحقیقت، دریائے سندھ کا نظام مغربی پنجاب میں زندگی کا ذریعہ ہے جو 26 ملین ایکڑ فٹ سے زیادہ پانی فراہم کرتا ہے۔ پاکستان کی زراعت کا انحصار انہی پانیوں پر ہے۔ دوسری طرف، ہندوستان میں بہت سارے دریاؤں کا نظام ہے جو بغیر کسی رکاوٹ کے سمندر میں گرتا ہے اور بارش بھی بغیر آبپاشی کے زراعت کو سہارا دینے کے لیے کافی ہے۔

تقسیم نے برصغیر کے پورے ڈھانچے کو بدل کر رکھ دیا اور سندھ طاس کے پانی کے حوالے سے بہت سے مسائل اور مسائل کو جنم دیا۔ 1947 میں پاکستان وجود میں آیا اور صوبہ پنجاب کو ہندوستان اور پاکستان کے درمیان دو حصوں میں تقسیم کر دیا گیا۔ تقسیم کا فوری نتیجہ سندھ طاس کی تقسیم کی صورت میں نکلا اور دونوں ممالک کے درمیان تنازعہ پیدا ہوا۔ مزید یہ کہ راوی پر مادھو پور اور ستلج پر فیروز پور کے ہیڈ ورکس ہندوستان میں تھے لیکن ان سے نکالی گئی بہت سی نہریں پنجاب کی زرعی زمین کو سیراب کر رہی تھیں۔ پاکستان نے محسوس کیا کہ یہ اس کی معیشت کے لیے انتہائی خطرناک ہے کیونکہ بھارت کسی بھی وقت پانی روک سکتا ہے، اور اس کی زراعت متاثر ہوسکتی ہے۔معاشی مسائل پر قابو پانے کے لیے پاکستان نے بھارت سے پانی خریدا

پنجاب کی تقسیم سے پیدا ہونے والے مسائل سے نمٹنے کے لیے کئی سرکاری کمیٹیاں بنائی گئیں۔ بھارت اور پاکستان کے درمیان پانی کی تقسیم کا سوال کمیٹی بی کو بھیجا گیا۔ کمیٹی نے اتفاق کیا کہ پانی کے مجاز حصص کو تبدیل کرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا جس کی دونوں زونز اور مختلف نہروں کو اجازت ہے۔ اس لیے اس سوال کو ثالثی ٹربیونل کے پاس نہیں بھیجا گیا جو تقسیم ہند سے پیدا ہونے والے پاکستان اور ہندوستان کے درمیان تنازعہ کو حل کرنے کے لیے منتخب کیا گیا تھا۔ ٹربیونل کی زندگی 31 مارچ 1948 کو ختم ہوگئی۔ جب ہندوستان نے ہیڈ ورکس کا کنٹرول سنبھال لیا اور اس نے پاکستان میں داخل ہونے والی ہر نہر میں پانی کو بہنے سے روک دیا۔ اس لیے پاکستان کمیٹی کو شکایت نہیں کر سکتا۔ پاکستان اس صورتحال پر بہت پریشان تھا۔ پاکستانی عوام نے اس ایکٹ پر تنقید کی اور اسے بین الاقوامی توجہ حاصل ہوئی۔ پاکستان کی جانب سے آبی تنازع پر مذاکرات کے لیے ایک وفد نئی دہلی بھیجا گیا۔ مئی 1948 کو نئی دہلی میں ہونے والی انٹر ڈومینین کانفرنس کے ذریعے 4 مئی 1948 کو دہلی معاہدہ کے نام سے ایک نئے معاہدے پر دستخط کیے گئے۔ اس معاہدے کے مطابق مشرقی اور مغربی پنجاب نے حمایت اور اتحاد کے ذریعے مسئلے کو حل کرنے کی اپنی ضرورت کو تسلیم کیا۔ انٹر ڈومینین کانفرنس سے بہت سے مسائل حل ہو گئے اور پاکستان نے منصوبہ بنایا کہ اس معاملے کو بین الاقوامی سطح پر عدالت انصاف یا اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں پیش کیا جائے۔

تنازعات کے تصفیے میں بھارت نے تیسری دنیا کے کسی ملک کو شامل کرنے سے انکار کرتے ہوئے یہ بھی کہا کہ بین الحکومتی معاہدے کو لازوال بنایا جائے۔ اب ٹینیسی ویلی کے سابق چیئرمین ڈیوڈ لیلینتھل نے بیسن کے علاقے کا دورہ کیا، عالمی بینک پر زور دیا کہ وہ پاکستان اور بھارت کے درمیان تنازع میں اپنی دلچسپی کا مظاہرہ کرے۔ اگرچہ بھارت نے ورلڈ بینک کی شمولیت پر تنقید کی لیکن تحفظات کے ساتھ مذاکرات جاری رکھے اور آٹھ ماہ کے بعد 19 ستمبر 1960 کو سندھ طاس پانی کے معاہدے پر دستخط کیے گئے۔ پاکستان کی نمائندگی صدر ایوب خان نے کی جبکہ ہندوستان کی نمائندگی وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو نے کی۔ اس معاہدے کے مطابق پاکستان کو تین مغربی دریاؤں جہلم، چناب اور سندھ پر خصوصی حقوق ملے جب کہ بھارت کو تین مشرقی دریاؤں بیاس، ستلج اور راوی کا حق ملا۔ ان دریاؤں کے پانی کو استعمال میں لانے کے لیے دو ڈیم، پانچ بیراج اور سات نہریں تعمیر کی جائیں گی۔ اخراجات کے علاوہ بھارت نے ادا کرنا تھا اور باقی رقم پاکستان نے پوری کرنی تھی۔ اس معاہدے کو ‘اچھی طرح سے کام کیا گیا’ معاہدہ سمجھا جاتا تھا اور دونوں ممالک نے اس کی مختلف انداز میں تشریح کی تھی۔

نتیجہ یہ نکلتا ہے کہ بھارت کی یہ نیت ہمیشہ پاکستان کے حق میں نہیں تھی اور اس نے ہمیشہ پاکستان کا استحصال کرنے اور اس کی معیشت کو مختلف آلات سے تباہ کرنے کی کوشش کی اور پانی کا تنازعہ بھی اسی کا ایک حصہ تھا۔ یہ بھی پاکستان کی دھمکی کا نتیجہ تھا کہ چونکہ سندھ طاس کے سپلائی دریا بھارت میں تھے۔ اس معاہدے کے ذریعے پاکستان نے اپنے آبپاشی کے مسائل پر کافی حد تک قابو پالیا۔ اس کے علاوہ پاکستان کی خارجہ پالیسی بھی متاثر ہوئی اور ہمیں بھارت کی طرف سے ردعمل کی وجہ سے تیسری دنیا کے ممالک کے ساتھ اپنے تعلقات کو مستحکم کرنا پڑا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!