تاریخ

SEATO

سیٹو

دوسری جنگ عظیم کے بعد کرہ ارض کی پولرائزیشن ریاستہائے متحدہ کی قیادت میں سرمایہ دارانہ بلاک اور یو ایس ایس آر کی قیادت میں کمیونسٹ بلاک میں ابھری۔ دونوں ہی توسیع پسند طاقتیں تھیں اور معلوم ہوا کہ تقریباً تمام عظیم طاقتوں کے خاتمے کے بعد ان کے پاس یکطرفہ طور پر پوری دنیا پر غلبہ حاصل کرنے کا انوکھا موقع رہ گیا تھا۔ اس تناظر میں ہند چین اور کوریائی جنگ کی پیش رفت نے امریکہ کو باور کرایا کہ خطے میں کمیونزم کی پیش قدمی کو روکنے کے لیے جمہوری ریاستوں پر مشتمل ایک تنظیم ضروری ہے۔ چنانچہ اس کے نتیجے میں آٹھ مغربی اور ایشیائی ممالک نے منیلا میں ایک کانفرنس طلب کی جس کے نتیجے میں ستمبر 9 1954 کو امریکہ، فرانس، برطانیہ، آسٹریلیا، نیوزی لینڈ، پاکستان، فلپائن اور تھائی لینڈ نے ایک اجتماعی دفاعی معاہدے پر دستخط کئے۔ اس معاہدے کو سیٹو کا نام دیا گیا۔

اب امریکہ اور سوویت یونین کے درمیان اس دشمنی نے پاکستان جیسے ممالک کے لیے امداد یا امداد کے حصول کے لیے ایک خاص جگہ پیدا کر دی ہے۔ امریکہ ہندوستان کے ساتھ دوستانہ اتحاد بنانا چاہتا تھا لیکن ہندوستانی سوویت یونین کے خلاف امریکہ کے ساتھ کھل کر اتحاد کرنے کو تیار نہیں تھے۔ اب اس تناظر میں خالصتاً جغرافیائی نقطہ نظر سے پاکستان اس نتیجے کے حصول کے لیے کہیں زیادہ اہم تھا۔ پاکستان کو اپنی آزادی کے بعد سنگین سیکورٹی اور اقتصادی مسائل کا سامنا تھا اور وہ اپنی فوجی صورت حال سے زیادہ پریشان تھا۔ اب پاکستان نے امریکی فوجی امداد اور امداد کے حصول کے لیے اپنی پالیسی میں امریکا کے ساتھ تعاون کرنے کا فیصلہ کیا۔ پاکستان نے 9 مئی 1954 کو امریکہ کے ساتھ اپنے پہلے دفاعی معاہدے پر دستخط کیے تھے۔ اب امریکہ کا پاکستان کا سب سے اتحادی ایشیائی اتحادی بننے کا اگلا مرحلہ سیٹو اور سینٹو میں اس کی شمولیت تھی۔

سیٹو کا تصور امریکہ نے عام طور پر کمیونزم اور خاص طور پر ویتنام کے خلاف رکاوٹ پیدا کرنے کے لیے پیش کیا تھا۔ جنوبی ایشیائی ممالک کو شامل کرنے کا خیال ڈوئلز نے نہیں سوچا تھا۔ یہ انتھونی ایڈن تھا جس نے سوچا تھا کہ صرف تھائی لینڈ اور فلپائن کے داخلے سے ہی یہ معاہدہ مغربی انڈرٹیکنگ بن جائے گا۔ چنانچہ انہوں نے ان ممالک کو بھی کانفرنس میں شامل ہونے اور خطے کے دفاع پر بات کرنے کی دعوت دی لیکن غیر جانبدار ایشیائی ممالک کی طرف سے مخالفت ہوئی جس کی وجہ سے صرف فلپائن، تھائی لینڈ اور پاکستان کو سیٹو میں شمولیت پر آمادہ کیا جا سکا۔

پاکستان کو کانفرنس میں شرکت کی دعوت دی گئی تھی اور کابینہ نے کانفرنس میں شرکت کا فیصلہ کیا تھا اور اجلاس میں اس کی نمائندگی وزیر خارجہ ظفر اللہ خان نے کی۔ اب وزیر اعظم محمد علی بوگرا نے ایڈن پر واضح کر دیا کہ ہماری شرکت کا یہ مطلب نہیں ہے کہ وہ کسی بھی ایسی اسکیم کو قبول کرنے جا رہے ہیں جو بحث سے سامنے آئے۔ پاکستانیوں کو پاکستان کی پوزیشن کے بارے میں بھی تشویش لاحق تھی کہ آیا اسے کسی دور افتادہ علاقے میں کوئی فوجی اتحاد بنانا چاہیے یا نہیں۔ فوجی حکام اور خاص طور پر ایوب خان کو بھی کسی ایشیائی تنظیم میں زیادہ دلچسپی نہیں تھی کیونکہ پاکستانی رہنما اور فوج نہ صرف کمیونسٹ جارحیت کے خلاف بلکہ دیگر جارحیت کے خلاف بھی امریکی مدد چاہتے تھے۔ ڈویل کے مطابق امریکی صلاحیتیں محدود ہیں اور وہ پاکستان کو بڑے پیمانے پر اقتصادی امداد فراہم کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہے۔ اس کا مطلب یہ تھا کہ بھارت کے خلاف اپنی افواج کو برقرار رکھنے کی قیمت خود پاکستان کو برداشت کرنی پڑے گی۔ اس کا مطلب یہ بھی تھا کہ پاکستان کو بھارتی حملے کے خلاف سیٹو سے کوئی تحفظ نہیں ملے گا جو اس کی سب سے فوری تشویش تھی۔

معاہدے میں کسی بھی ریاست کی طرف سے کسی بھی کھڑی افواج کے لیے کوئی بندوبست نہیں تھا۔ اس معاہدے میں جارحیت کی صورت میں کسی مشترکہ کارروائی کی فراہمی نہیں کی گئی تھی بلکہ صرف مشاورت کے لیے تھی۔ سیٹو کے دیگر ارکان نے بھی بھارتی حملے کی صورت میں پاکستان کا دفاع کرنے کا عہد نہیں کیا۔ یو ایس اے نے معاہدے میں ایک ریزرویشن لکھا کہ اس کی ذمہ داری صرف کمیونسٹ جارحیت کی صورت میں لاگو ہوگی۔اب غیر ملکی وفد نے حکومت سے مشورہ نہیں کیا اور ظفر اللہ خان نے ڈویلز کی وجہ سے منیلا معاہدے پر دستخط کر دیئے۔ اب ظفر اللہ خان کے اس قدم نے پاکستانی کابینہ کو حیران کر دیا اور اس کے بعض ارکان نے بھی ان کے اس اقدام پر تنقید کی۔ اس نے بنیادی طور پر اپنے عمل کو درست ثابت کرنے کے لیے دلیل دی کہ معاہدے پر دستخط کرنے سے انکار کو امریکہ نے بہت غلط سمجھا ہوگا اور اس سے پاکستان کی فوجی اور اقتصادی امداد میں اضافے کا امکان خطرے میں پڑ جائے گا۔ اب پاکستان کے پاس کوئی چارہ نہیں تھا اور اس نے امریکہ کی ناراضگی سے بچنے کے لیے جنوری 1955 میں اس معاہدے کی توثیق کر دی۔ اب اس معاہدے پر دستخط کرنے کے بعد یہ امریکہ کا اتحادی اور سیٹو کا رکن بن گیا۔

اسی دوران پاکستان کے اندرونی حالات بھی کافی حد تک بدل گئے۔ اس پورے عرصے میں پاکستان میں فوجی کردار کو اہمیت حاصل رہی۔ چنانچہ 1953 سے پاکستانی فوج ایک سیاسی اداکار تھی اور حکومتی امور میں اپنا کردار ادا کر رہی تھی۔ جو امداد آرہی تھی اس کا رجحان معاشرے کے کسی بھی شعبے سے زیادہ فوج کو مضبوط کرنے کا تھا۔ پاکستان اور امریکہ کے درمیان تعلقات اتنے دو ملکوں کے درمیان نہیں تھے جتنے بڑھتے ہوئے تعلقات امریکی وزارت دفاع اور پاکستانی فوج کے درمیان ہیں۔ سیٹو نے 1965 میں بھارت کے خلاف اپنی کوششوں میں پاکستان کا ساتھ نہیں دیا جس کی وجہ سے سیٹو سے اس کی وابستگی ختم ہو گئی۔ بھٹو کے دور میں پاکستان اور امریکہ کے تعلقات زیادہ اچھے نہیں تھے اور بھٹو نے چین کے ساتھ قریبی تعلقات بنانے کی کوشش کی تو امریکہ بھی مشکوک ہو گیا۔ امریکہ کے ساتھ اس رسمی اتحاد نے پاکستان کو غیر منسلک تحریک سے بھی دور رکھا۔ جب امریکہ نے بھی 1971 میں ہندوستانی حکومت کے ساتھ اس کے تنازعہ میں پاکستان کی مدد نہیں کی تھی، تو پاکستان 1971 میں مشرقی پاکستان کی علیحدگی کے بعد سیٹو سے الگ ہو گیا تھا۔ لہٰذا ہم یہ نتیجہ اخذ کرتے ہیں کہ یہ ایکٹ مختصر مدت کے لیے تھا اور سازگار نتائج فراہم کرنے میں ناکام رہا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!