تاریخ

Gilgit-Baltistan

گلگت بلتستان

گلگت پاکستان کے شمال مشرقی حصے میں شمالی علاقہ جات میں واقع ہے جسے پاکستان میں خود مختار حیثیت حاصل ہے۔ آج کل یہ خطہ گلگت بلتستان کے نام سے جانا جاتا ہے، اس خطے کا دارالحکومت گلگت ہے۔ بھارت اس خطے کو پاکستان کا حصہ تسلیم نہیں کرتا اور اسے بھارتی صوبے کشمیر کا حصہ قرار دیتا ہے۔ اس نے ان دونوں ممالک کے درمیان سب سے بڑے تنازعات کو جنم دیا ہے۔ گلگت ایک پرانا شہر ہے جو شاہراہ ریشم کی صورت حال کی وجہ سے صدیوں سے ایک اہم تجارتی مرکز رہا ہے۔

آج کل اس شہر کی آبادی 200,000 سے زیادہ ہے۔ گلگت کو اکثر ایسے مسافروں کے لیے اسٹاپ اوور کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے جو ہمالیہ یا قراقرم پہاڑی سلسلے کی طرف جاتے ہیں۔ کیونکہ گلگت چین کے ساتھ سرحد کے قرب و جوار میں واقع ہے اس شہر میں چینی ثقافت نے اپنی چھاپ چھوڑی ہے۔

آب و ہوا

گلگت کی آب و ہوا خطے کے لحاظ سے مختلف ہوتی ہے۔ آس پاس کے پہاڑی سلسلے موسم میں شدید تغیرات پیدا کرتے ہیں۔ مشرقی حصے میں مغربی ہمالیہ کا نم علاقہ ہے، لیکن قراقرم اور ہندوکش کی طرف جانے سے آب و ہوا کافی حد تک خشک ہو جاتی ہے۔ گلگت گرمیوں میں دن کے وقت گرم ہوتا ہے لیکن رات کو ٹھنڈا ہوتا ہے اور استور، خالصو، یاسین، ہنزہ اور نگر جیسی وادیاں جہاں گرمیوں میں بھی درجہ حرارت سرد ہوتا ہے۔ 1,500 میٹر کی بلندی پر گلگت میں گرم گرمیاں اور سرد سردیوں کے ساتھ صحرائی آب و ہوا ہے۔ گرمیوں کے دوران 30 ڈگری سیلسیس سے زیادہ درجہ حرارت غیر معمولی بات ہے۔ سردیاں طویل عرصے تک سرد ہوتی ہیں اور زیرو درجہ حرارت غیر معمولی نہیں ہوتا۔ بارش کے اعداد و شمار سارا سال کم ہوتے ہیں۔ سردیوں کے دوران بارش اکثر برف یا اولے کی شکل میں گرتی ہے۔

ثقافت اور ورثہ

گلگت متعدد متنوع ثقافتوں، نسلی گروہوں، زبانوں اور مختلف پس منظروں کا گھر ہے۔ یہ گلگت کے تمام علاقوں کے ساتھ ساتھ پاکستان کے دیگر شہروں اور جہازوں سے تعلق رکھنے والے لوگوں کا گھر ہے۔ ثقافتوں کی یہ کثیر تعداد گلگت کے اسٹریٹجک محل وقوع کی وجہ سے ہے۔ گلگت بلتستان کا صدر مقام ہونے کی وجہ سے تقریباً اہم دفاتر گلگت میں ہی ہیں۔

زبان

اردو اور انگریزی بولی جانے والی سرکاری زبانیں ہیں جبکہ دیگر زبانوں میں پشتو اور پنجابی شامل ہیں۔ شینا بنیادی زبان ہے جو زیادہ تر اصل آباد کاروں کے ذریعہ بولی جاتی ہے لیکن نئے آنے والوں کی زبانوں اور ثقافتوں کے مختلف پس منظر ہیں۔ گلگت میں بولی جانے والی دیگر اہم زبانیں یہ ہیں

بروشاسکی
وخی
کھوار/ چترالی
بلتی

لوگ

چونکہ گلگت ایک کثیر الثقافتی شہر ہے اور گلگت میں بہت سی مختلف زبانیں بولی جاتی ہیں جس کا اثر لوگوں کے رویوں پر بھی پڑتا ہے۔ بہت سے شہری پرانی روایات اور رسم و رواج کی پیروی کر رہے ہیں جبکہ دیگر جدید طرز زندگی سے لطف اندوز ہو رہے ہیں جو دوسری ثقافتوں، میڈیا اور تعلیم سے متاثر ہے۔

مذہب
یہاں کے باشندوں کی اکثریت مسلمانوں کی ہے جن کا تعلق دو مختلف فرقوں سے ہے یعنی سنی، شیعہ اور اسماعیلی۔ گلگت میں عیسائیوں کی ایک قلیل تعداد بھی آباد ہے۔

مذہبی تہوار

عید غدیر
عید الاضحی
عید میلاد النبی
عید الفطر۔

ثقافتی تہوار

جشنِ بہاراں
شندور پولو فیسٹیول
بابوسر پولو فیسٹیول
فصل کے وقت کا تہوار۔

موسیقی

پاکستان کے گلگت بلتستان میں عام طور پر استعمال ہونے والے آلات دادنگ (ڈھول)، دمال اور سورنائی ہیں جبکہ ستار، گبی (بانسری) رباب اور ڈف مختلف علاقوں کی نمائندگی کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ بلتستان کے علاقے میں کھلنگ بو چانگ، پورگھو ٹو وغیرہ آلات استعمال ہوتے ہیں۔

موسیقی کی اقسام

الغنی: گلگت کے لوگ غذر یاسین، پنیال اور گوپی اس تال کو الغنی کہتے ہیں۔
اجولی: دلہا اور دلہن کی گھر سے روانگی کے وقت یہ تال گلگت کے مختلف علاقوں میں استعمال ہوتا ہے۔
سوس: ایک مارشل تال اور اس میں تیز تال ہے اور اسے تلوار کے رقص میں خاص طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔
دانی: دانی ہنزہ میں استعمال ہونے والی ایک روایتی موسیقی کا نام ہے جو تبت، بلتستان اور لداخ سے منسلک ہے۔

رقص
مشہور تینوں بینڈ میوزک اس خطے میں دوسرے خطوں کی طرح چلایا جاتا ہے۔ اس تیز موسیقی کی تال پر مرد اپنے مخصوص انداز میں رقص کرنا پسند کرتے ہیں۔ خطے کے لحاظ سے دھن میں کچھ تغیرات ہیں۔ گلگت کے لوگوں کے مختلف حصوں میں کچھ منفرد اور بہت خوبصورت رقص ہیں۔ تہواروں، روایتی تقریبات اور تقریبات کے دوران درج ذیل رقص عام ہیں۔

چند مشہور رقص درج ذیل ہیں

اولڈ مین ڈانس: اس رقص میں ایک سے زیادہ آدمی کچھ پرانے طرز کے کپڑے پہن کر رقص کرتے ہیں۔
تلوار کا رقص: اس منفرد رقص میں شرکاء دائیں طرف ایک تلوار اور بائیں طرف ڈھال لیتے ہوئے دکھاتے ہیں۔ جوڑی کے طور پر ایک سے چھ شرکاء رقص کرسکتے ہیں۔
کاؤ بوائے ڈانس: اس ڈانس میں ایک شخص پرانے طرز کا لباس، چمڑے کے لمبے جوتے اور ہاتھ میں چھڑی پہنتا ہے۔

مشہور مقامات

کچھ مشہور مقامات جو سیاح گلگت آتے ہی دیکھ سکتے ہیں وہ درج ذیل ہیں

گلگت پل: اپنے روایتی بازار کے آخر میں دریائے گلگت پر تیز بہنے والا پل، ایشیا کا سب سے بڑا جھلکا پل ہے (182 میٹر لمبا اور 2 میٹر چوڑا) ایک جیپ کو ایک وقت میں عبور کرنے کے لیے کافی جگہ دیتا ہے۔
کارگاہ بدھا: کارگاہ نالہ 10 کلومیٹر کے قریب ایک چٹان پر واقع ہے۔ گلگت شہر سے 7ویں صدی عیسوی کی مہاتما بدھ کی ایک خوبصورت چٹان کندہ کاری ہے۔
تاج مغل کی یادگار: 700 سال قبل تعمیر ہونے والی تاج مغل کی فتح کی یادگار 30 کلومیٹر ہے۔
شیر قلعہ: یہ گلگت سے 38 کلومیٹر دور ہے۔ ٹریکنگ روٹ وادی نلتر سے جڑتا ہے۔ شیر قلعہ نالہ اور ایک چھوٹی جھیل میں ٹراؤٹ ماہی گیری کا لطف اٹھایا جا سکتا ہے۔
سنگل: گلگت سے تقریباً 61 کلومیٹر۔ ٹریکنگ روٹ چلاس اور وادی کوہستان سے ملاتا ہے۔
گاہکوچ: ضلع غذر کا ہیڈ کوارٹر یہ ٹریکنگ، ماہی گیری کے اچھے کھیلوں اور موسم میں بطخ کی شوٹنگ کے لیے ایک بہترین جگہ ہے۔ یہ وادی اسکومن کا گیٹ وے ہے۔ سرکاری ریسٹ ہاؤس اور نجی ہوٹل دستیاب ہیں (گلگت سے 73 کلومیٹر)۔
وادی نلتر: گلگت لنک راڈ سے دو گھنٹے کی جیپ ڈرائیو۔ سرکاری ریسٹ ہاؤس، پرائیویٹ ہوٹل اور اسکی ڈھلوان، چھوٹی جھیلوں اور گلیشیئرز کے ساتھ سرسبز و شاداب الپائن جنگل، جھیل میں ٹراؤٹ فشنگ

نتیجہ

گلگت اپنے جغرافیہ اور قدرتی حسن کی وجہ سے شاید پاکستان کا سب سے خوبصورت علاقہ ہے۔ اس میں بہت ساری ثقافت کا مرکب ہے جو اسے اور بھی اہم بناتا ہے۔ گلگت سٹریٹجک لحاظ سے بھی قراقرم کا سب سے اہم خطہ ہے۔ لہٰذا پاکستانی عوام کو بھی اس اہمیت کا احساس کرنا چاہیے اور اس کا خیال رکھنا چاہیے کیونکہ یہ پاکستان کا قیمتی اثاثہ ہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!