تاریخ

Mansehra

مانسہرہ

ضلع مانسہرہ صوبہ خیبر پختونخوا میں واقع ہے۔ یہ پاکستان کے بہت سے خوبصورت اضلاع میں سے ایک صوبے کا دوسرا سب سے بڑا ضلع ہے۔ اس کی آبادی بہت زیادہ ہے یہ ضلع ایک پرانی جگہ ہے جہاں قرون وسطیٰ کے زمانے کی بستیاں ہیں، اسلام کے متعارف ہونے سے پہلے بہت سی تہذیبیں تھیں، اسلام سے پہلے بدھ مت اور ہندو مت تھے۔ لوگ بہت ملنسار ہیں اور مہمان نوازی میں بہت اچھے ہیں۔ آبادی بنیادی طور پر نوجوانوں پر مشتمل ہے تقریباً نصف آبادی 20 سال سے کم عمر کی ہے مانسہرہ کے لوگ تعلیم حاصل کرنے پر توجہ مرکوز کرتے ہیں جس میں مردوں کی اکثریت تعلیم حاصل کرتی ہے جبکہ خواتین کی آبادی میں تعلیم حاصل کرنے کا یہ رجحان کم ہے۔

ضلع مانسہرہ میں مشترکہ خاندانی نظام کا غلبہ ہے جہاں بزرگوں کو فیصلے کرنے کا اختیار حاصل ہے جس کے لیے انہیں ویٹو کرنے کا حق حاصل ہے اور جس چیز کو وہ درست نہیں سمجھتے ہیں اور چھوٹوں کے لیے یہ لازم ہے کہ وہ بڑوں کا احترام کریں۔ خاندانوں اور پڑوسیوں کے درمیان بہت مضبوط خاندانی تعلقات ہیں جنہیں خاندان کے افراد سمجھا جاتا ہے لوگ عام طور پر سادہ لوگ ہوتے ہیں ان کے کھانے کی سادہ عادت ہوتی ہے وہ زیادہ تر مکئی، گندم اور چاول کھاتے ہیں۔ گھر پتھر اور مٹی کے بنے ہوتے ہیں لیکن اب سیمنٹ کے گھر بنانے کی طرف تبدیلی آئی ہے کیونکہ اس جگہ سے تعلق رکھنے والے لوگ شہری جگہوں پر چلے جاتے ہیں اور واپسی پر وہ اپنے ساتھ شہری ثقافت لے کر آتے ہیں جو کہ بدلتے ہوئے رجحانات سے ظاہر ہوتا ہے۔

ضلع مانسہرہ میں بہت سی چیزیں ہیں جو اسے دوسروں سے منفرد بناتی ہیں یہ اپنے تاریخی مقامات اور خوبصورتی کی وجہ سے مشہور ہے ان میں سے ایک خوبصورت ترین جگہ کاغان ہے جو اپنے خوشگوار موسم اور خوبصورت مناظر کی وجہ سے مشہور ہے۔ یہاں 3 خوبصورت جھیلیں لولوسر، دودوپتسر اور سیف الملوکسر بھی ہیں۔ یہ علاقہ بڑے بڑے پہاڑوں لمبے درختوں اور خوبصورت جھیلوں سے گھرا ہوا ہے۔

مانسہرہ کے لوگ ایک مختلف زبان بولتے ہیں جس میں پشتو، گوجری، ہندکو اور کشمیری شامل ہیں۔ اکثریتی علاقے ہنکو گوجری اور پشتو بولتے ہیں جبکہ پورے ضلع میں اردو سمجھی جاتی ہے۔ آبادی کی ایک چھوٹی سی اکثریت کشمیری اور کوہستانی بولتی ہے زیادہ تر وہ لوگ جو ان علاقوں سے مانسہرہ تک آباد تھے۔ مانسہرہ صوبے میں دوسروں کے مقابلے میں بہتر طور پر ترقی یافتہ ہے یہاں پر ٹرانسپورٹ کا مناسب نظام موجود ہے آس پاس کے علاقوں سے لوگ دوسری جگہوں پر جانے کے لیے یہاں آتے ہیں بنیادی طور پر یہ دوسرے علاقوں کے سفر کے لیے پل کا کام کرتا ہے۔

مانسہرہ کی خوبصورتی دلکش ہے لیکن بدقسمتی سے یہ ایک انتہائی خطرناک مقام پر واقع ہے جو کئی قدرتی آفات کا شکار ہے 2005 کے زلزلے نے تقریباً پورا شہر تباہ کر دیا تھا اس آفت میں ہزاروں لوگ لقمہ اجل بن گئے تھے اور یہاں اربوں کا سیلاب تھا اور قدرتی آفت 2010 کا سیلاب تھا۔ شہر کی بحالی کا کام بھی متاثر ہوا جس سے بہت سے لوگوں کی زندگیوں کو معمول پر لایا جا رہا ہے۔

زیادہ تر آبادی کی آمدنی کا ذریعہ زراعت کے ذریعے ہے رہائشیوں کی اپنی زمین ہے زیادہ تر آبادی زمینداروں پر مشتمل ہے جو سبزیاں اور پھل اگاتے ہیں کچھ لوگ سرکاری شعبے اور وہاں کام کرنے والے دیگر نجی اداروں کے تحت ملازمت بھی کرتے ہیں۔ ضلع مانسہرہ اپنی ماحولیات کی وجہ سے بھی جانا جاتا ہے یہاں خوبصورت درخت ہیں اور ہر طرف ہریالی ہے زمین بھی مختلف جانوروں مثلاً بندروں کی آماجگاہ ہے لیکن بدقسمتی سے لوگ اپنے لیے کچھ مسائل پیدا کر رہے ہیں جس کی وجہ سے مقامی لوگ کاشتکاری کر رہے ہیں۔ درخت بڑی تعداد میں کاٹے جا رہے ہیں جس سے اس جگہ کی خوبصورتی متاثر ہو رہی ہے ایک اور مسئلہ آبپاشی کی کمی ہے جس کی وجہ سے مٹی مطلوبہ پیداوار نہیں دے پا رہی ہے جس کی وجہ سے مقامی لوگوں کی ضرورت پوری کرنے کے لیے علاقے کا زیادہ تر انحصار ہے۔

مانسہرہ کے لوگ کھیلوں کے شوقین ہیں جن میں زیادہ تر کھیلے جانے والے کھیلوں میں گھڑ سواری، پولو، شوٹنگ شامل ہیں دیگر تمام کھیلوں میں سب سے زیادہ مقبول ہیں دیگر روایتی کھیل جو کبھی کبھار کھیلے جاتے ہیں ان میں ریسلنگ، مرغوں کی لڑائی، رام کی لڑائی، کتوں کی مدد سے شکار اور پیدل سفر شامل ہیں۔ . پولو روایتی کھیل ہے اور گرمیوں کے وسط میں شندور میلہ دیکھنے کے لیے بہت زیادہ ہجوم آتا ہے۔ سکی غوطہ خوروں اور ہائیکرز کے لیے ایک خاص سنسنی ہے۔ سیاسی نظام کسی نہ کسی طرح قبائل کے زیر تسلط ہے اس وقت ان کا لوگوں پر بڑا اثر و رسوخ ہے وہ ان قبائل کو ووٹ دیتے ہیں جو بڑے معاملات پر حاوی ہوتے ہیں اور ایک دوسرے کی حمایت کرتے ہیں اس حقیقت کی وجہ سے کہ ان کا تعلق اسی جگہ سے ہے۔ ملازمتیں دیتے وقت بھی لوگوں کو دوسروں پر ترجیح دی جاتی ہے اس لیے وہ کسی نہ کسی طرح معاشرے میں واپس لوٹ جاتے ہیں۔

زندگی کے مختلف شعبوں میں کچھ مسائل موجود ہیں مثال کے طور پر خواتین کی تعلیم کی شرح بہت کم ہے انہیں تعلیم حاصل نہیں کرنے دی جاتی جو کہ ضلع کی پسماندگی کی ایک بڑی وجہ ہے کیونکہ نصف آبادی خواتین پر مشتمل ہے دوسری وجہ یہ علاقہ پسماندہ ہے۔ دیگر اضلاع کے مقابلے میں بنیادی ضروریات زندگی کی پہنچ میں نہیں ہے جس کی بہت سی مثالیں بجلی کی ہے جو نہیں آ رہی زیادہ تر یہی معاملہ قدرتی گیس کا ہے وہ بھی زیادہ دستیاب نہیں ہے لوگ آگ جلانے کے لیے درخت کاٹتے ہیں جس سے جنگلات کی کٹائی ہوتی ہے جس سے خوبصورتی متاثر ہوتی ہے۔ تیسری بات یہ ہے کہ وہاں زیادہ یونیورسٹیاں موجود نہیں ہیں مقامی لوگوں کو تعلیم حاصل کرنے کے لیے سینکڑوں کلومیٹر کا سفر طے کرنا پڑتا ہے ایک اور بڑا مسئلہ جیسا کہ پہلے ذکر کیا گیا ہے اس خطے کی غیر متوقع آب و ہوا ہے کیونکہ ہم جانتے ہیں کہ پہلے ہی دو تین بار بڑے پیمانے پر تباہی ہو چکی ہے۔ 2005 کا زلزلہ اور 2010 کا سیلاب جس نے بڑی تباہی مچائی بدقسمتی سے ایسی آفات سے بچنے اور نقصان سے بچنے کے لیے خاطر خواہ اقدامات نہیں کیے گئے۔

بات کو ختم کرنے کے لیے میں اس خوبصورت جگہ کا دورہ کرنے کا مشورہ دوں گا کہ کم از کم ایک بار دنیا کے خالق کی طرف سے ایک فنکارانہ کام کیا جائے جہاں لوگ بہت دوستانہ ہوں اور اپنی مہمان نوازی کے لیے جانے جاتے ہیں وہاں مزید ترقیاتی منصوبے ہونے چاہئیں ۔ مجھے یقین ہے کہ سیاح اس جگہ کو پسند کریں گے اور دوبارہ جانا چاہیں گے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!