تاریخ

Naran Valley

وادی ناران

ناران ایک درمیانے درجے کا قصبہ ہے جو بالائی کاغان وادی میں واقع ہے جو پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کا ایک حصہ ہے۔ یہ پاکستان کے شمالی علاقوں کا سب سے خوبصورت حصہ ہے جو سطح سمندر سے 2500 میٹر بلند ہے۔ اس کی خوبصورتی بہت سے لوگوں کو اپنی طرف کھینچ لیتی ہے اور اس طرح یہ سیاحوں اور ٹریکروں کے لیے ایک مشہور سیرگاہ ہے۔ ناران کا موسم بہت سرد ہے۔ پہاڑوں کی چوٹیوں پر برف کبھی نہیں پگھلتی، یہاں تک کہ جون اور جولائی کے مہینوں میں بھی گلیشیئر ہوتے ہیں اور پہاڑ برف سے ڈھکے ہوتے ہیں۔

وادی ناران جانے والی سڑک دریائے کنہار کے ساتھ ساتھ سفر کرتی ہے جو کاغان کے گلیشیئرز سے شروع ہو کر مانسہرہ میں بہتی ہے۔ وادی ناران کی مقامی زبانیں ہندکو اور گوجری ہیں لیکن وہاں کا ہر فرد اردو بول اور سمجھ سکتا ہے۔ لباس شلوار قمیض ہے جس میں نیچے کی لمبی شلواریں ہیں۔ زیادہ تر لوگ لمبے ہوتے ہیں۔ مردوں کا اوسط قد تقریباً 5”8” یا 5”9” تھا۔

وادی ناران کے باسی بنیادی طور پر گجر ہیں اور میں نے انہیں بہت سخی اور نیک فطرت پایا۔ وہ سیاحوں کا بہت اچھے طریقے سے استقبال کرتے ہیں اور ان کے ساتھ اپنے دوستوں کی طرح پیش آتے ہیں۔ ان کی آمدنی کا بڑا ذریعہ سیاح ہیں اور ان کے پیشوں میں ٹور گائیڈ، ریسٹ ہاؤس مینیجر، شاپ کیپر، ریسٹورنٹ ورکرز، جیپ ڈرائیور، ان میں سے کچھ فصلیں بھی اگاتے ہیں اور کچھ وہ چرواہے ہیں. لیکن ان کی ساری خوش قسمتی صرف گرمیوں کے موسم میں جمع ہو جاتی ہے جیسا کہ سردیوں میں پورا علاقہ برف سے ڈھک جاتا ہے اور انہیں مانسہرہ یا کسی اور گرم جگہ پر جانا پڑتا ہے۔ اس وجہ سے وہاں قیمتیں تھوڑی زیادہ ہیں۔ مثال کے طور پر 100 روپے کے موبائل کارڈ کی قیمت تقریباً 107 ہے۔ لیکن میرے خیال میں یہ کافی مناسب ہے کیونکہ وہ صرف محدود وقت کے لیے آمدنی کا ذریعہ ہیں۔

خواتین گھریلو خواتین ہیں زیادہ تر گھر میں رہتی ہیں۔ مجھے صرف ایک سرکاری پرائمری سکول ملا جہاں کچھ مقامی بچے پڑھنے جاتے تھے۔ اس کے علاوہ تعلیم کا کوئی نظام نہیں تھا۔ زیادہ تر نوجوان اپنے باپ یا چچا وغیرہ کے ساتھ ٹریول گائیڈ اور دکاندار کے طور پر کام کر رہے تھے۔ وادی ناران کی اہم اشیاء خشک میوہ جات اور دستکاری ہیں۔ آپ کو جو دستکاری خریدنی چاہئے ان میں سے ایک فنکارانہ طور پر تراشے گئے اخروٹ ہیں اور ایک اور مشہور چیز نمداس ہے، اونی محسوس شدہ قالین جبکہ اونی شالیں، کڑھائی والی شالیں اور قمیضیں بھی دستیاب ہیں۔ ان جگہوں پر کاٹیج انڈسٹریز چلتی ہیں اور آپ اپنے آپ کو بہترین سودے حاصل کر سکتے ہیں۔ مرکزی بازار کی دکانوں میں ہاتھ سے بنی اشیاء موجود ہیں۔

ناران میں بھی مری مال روڈ جیسا ایک چھوٹا بازار ہے۔ زندگی کی بنیادی ضروریات وہاں پر آسانی سے دستیاب ہیں۔ مرکزی بازار میں سیلولر نیٹ ورکس، موبائل شاپس، بیکری، جنرل اسٹور، درزی اور یہاں تک کہ حجام بھی دستیاب ہیں۔ اس میں اعلیٰ درجے کے لگژری ہوٹلوں سے لے کر انتہائی کم قیمت والے موٹل تک مختلف اقسام کے 100 سے زیادہ ہوٹل ہیں۔ ٹینٹ موٹل بھی موجود ہیں جو سیاحوں کو رہنے کے لیے فیملی سائز ٹینٹ کرایہ پر دیتے ہیں۔

دریائے کنہار شہر میں سے گزرتا ہے۔ کچھ ہوٹل دریا کے کنارے واقع ہیں۔ رات کو آپ پانی کے بہنے اور پتھروں سے ٹکرانے کی آواز سن سکتے ہیں۔ وہ آواز بڑی خوشی دیتی ہے۔ دن کے وقت لوگ دریا میں مچھلی پکڑنے سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔ کچھ لوگ دریا کے کنارے بیٹھتے ہیں اور اپنے پاؤں ٹھنڈے پانی کے نیچے رکھتے ہیں۔ وادی ناران میں آپ دوپہر کو اندھیرا محسوس کریں گے کیونکہ یہ اونچے پہاڑ سورج کی روشنی کو وادی تک پہنچنے سے روک دیتے ہیں۔

سیف الملوک ناران سے 8 کلومیٹر شمال میں واقع ہے۔ ناران سے سیف الملوک پہنچنے میں ایک گھنٹہ لگتا ہے۔ شہر کے مضافات میں آپ کو 4×4 جیپیں مل سکتی ہیں۔ یہ جیپیں سیاحوں کو وادی ناران سے سیف الملوک تک لے جاتی ہیں۔ چونکہ اوپر کی سڑک بہت کچی ہے اور اوپر تک گلیشیئرز ہیں اس لیے صرف وہی جیپیں اور مقامی ڈرائیور ہی آپ کو اوپر لے جا سکتے ہیں لوگ ان جیپوں کو کرایہ پر لیں اور اپنے اہل خانہ کے ساتھ سیف الملوک کا دورہ کریں۔ کچھ لوگ جیپ پر سوار ہونے کے بجائے ٹریکنگ کو ترجیح دیتے ہیں، خاص طور پر وہ نوجوان جو سیف الملوک تک ٹریک کرتے ہیں۔ سیف الملوک میں ریستوراں اور دکانیں بھی موجود ہیں۔ لوگ وہاں گھڑ سواری سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔

سیف الملوک ایک جھیل ہے جو پہاڑوں کے بیچ میں واقع ہے جو سال بھر برف سے ڈھکی رہتی ہے۔ مشہور پہاڑوں میں سے ایک ملکہ پربت ہے جو جھیل کے بائیں جانب واقع ہے۔ سیف الملوک کا نام ایک لوک کہانی کے نام پر رکھا گیا ہے۔ یہ فارس کے شہزادے کی کہانی ہے جسے جھیل کے کنارے پریوں کی شہزادی سے پیار ہو گیا تھا۔ جھیل کی خوبصورتی کا اثر اس حد تک ہے کہ لوگوں کا ماننا ہے کہ پریاں پورے چاند میں جھیل میں اترتی ہیں۔ پانی کا رنگ نیلا ہے اور یہ کرسٹل صاف ہے۔ کوئی فرد 30 سیکنڈ سے زیادہ اس کے نیچے پاؤں نہیں رکھ سکتا۔

آنسو ملکہ پربت سے متصل آنسو کی شکل کی اونچائی والی جھیل ہے۔ سیف الملوک سے شروع ہونے والی 11 کلومیٹر پگڈنڈی کے ذریعے اس تک پہنچا جا سکتا ہے۔ جھیل مئی کے اوائل سے دسمبر کے اواخر تک قابل رسائی رہتی ہے، موسم کی خرابی موسم کے آغاز اور اختتام پر مشکل بناتی ہے۔

لالہزار ایک سطح مرتفع ہے جو کبھی خوبصورت جنگلی پھولوں اور دیودار کے پُرسکون جنگلات کے لیے جانا جاتا تھا۔ اگرچہ حال ہی میں آلو اور دیگر کارپس کی کاشت سے قدرتی حسن میں کمی آئی ہے، لیکن پھر بھی ملکہ پربنات کے سرسبز میدانوں کا دلفریب نظارہ اسے دیکھنے کو ضرور بناتا ہے۔ بٹاکنڈی سے شروع ہونے والی ایک گھنٹہ کی کیچڑ والی جیپ ٹریک کے ذریعے لالہ زار پہنچا جا سکتا ہے۔ کچھ لوگ جیپ پر سوار ہونے سے زیادہ ٹریکنگ کو ترجیح دیتے ہیں۔ ایک مشہور، اعتدال پسند ٹریک جھیل سیف الملوک سے شروع ہو کر دلکش ہنس گلی سے ہوتا ہوا لالہ زار پر ختم ہوتا ہے۔

اس جگہ کے بارے میں ایک بات جس کی میں حوصلہ شکنی کرتا ہوں وہ یہ ہے کہ ہمارے بزرگ ہمیں بتاتے ہیں کہ اگر ہم 20 30 سال پیچھے جائیں تو یہ جگہ اپنی حقیقی قدرتی شکل میں تھی اور حیرت انگیز تھی۔ یہ ایک عام خیال ہے کہ کوئی بھی جگہ جسے انسان نے ابھی تک دریافت نہیں کیا ہے وہ اپنی فطری شکل میں موجود ہے۔ لوگ پرواہ نہیں کرتے اور جگہ جگہ کوڑا کرکٹ پھینکتے ہیں۔ بازار کے کونے کونے پر کوڑے کے ڈھیر لگے ہوئے تھے۔ ٹریفک کی وجہ سے دھول آلودگی کا باعث بنی ہے۔ سیف الملوک میں لوگ جھیل میں ریپر اور بچا ہوا کچراپھینک دیتے ہیں۔ ذمہ داری لینے کے لیے کوئی نہ کوئی ادارہ ہونا چاہیے اور ان اعمال کا خیال رکھنا چاہیے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!