تاریخ

Peshawar

پشاور

پشاور ایشیا کے قدیم ترین شہروں میں سے ایک ہے اور خیبرپختونخوا کا دارالحکومت ہے اور اس شہر کے ارد گرد پشتو بولی جاتی ہے لہذا اگر آپ وہاں جاتے ہیں اورآپ تھوڑی پشتو جانتے ہیں تو آپ کو کافی فائدہ ہو سکتا ہے۔ پشاور پاکستان کے وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقوں کا انتظامی مرکز ہے۔ پشکلاوتی (جسے اب چارسدہ کے نام سے جانا جاتا ہے) صوبہ سرحد کا پچھلا دارالحکومت تھا اور کشان بادشاہ کنشک نے دوسری صدی میں اس سے دارالحکومت تبدیل کر کے پروش پورہ (جو اب پشاور کے نام سے جانا جاتا ہے) کر دیا۔

پشاور کا نام سنسکرت کے لفظ سے ماخوذ ہے جس کا مطلب ہے ‘مردوں کا شہر’۔ یہ علاقہ بنیادی طور پر گندھارا اور مشرقی ایرانی قبائل سے تعلق رکھتا تھا۔ ایک مختصر مدت کے لیے اس میں یونانی غلبہ بھی نظر آیا جس کے بعد عربوں کی فتح ہوئی اور اسلام عروج پر پہنچا۔ اس کی آب و ہوا معتدل ہے اور اس کی ریشم، دستکاری کی پیداوار؛ کاٹن ٹیکسٹائل، جوتے وغیرہ ایک مستحکم معیشت فراہم کرتے ہیں۔ یہ نہ صرف پاکستان اور افغانستان کے درمیان ایک رابطے کا کام کرتا ہے جس سے تجارت کو فائدہ ہوتا ہے بلکہ یہ تاریخ اور ثقافت سے مالا مال ہے جس کی وجہ سے یہ اپنے بیشتر لوگوں کا پسندیدہ آبائی شہر بناتا ہے۔

پشاور زمین کے سابقہ ​​شہروں میں سے ایک ہے۔ اسے ایک قدامت پسند اسلامی شہر سمجھا جاتا ہے جس کی ایک عظیم تاریخ ہے۔ اس میں ہر قسم کے پیشہ ور اور مینوفیکچررز ہیں۔ سنار سے چاندی تک، روایتی قالین (جو اس وقت ملک کی سب سے بڑی برآمدات میں سے ایک ہے)، مٹی کے برتن، کپڑے اور لکڑی، پتھر یا پیتل پر آرٹ ورک۔ پشاور اپنے 16 بڑے دروازوں کے لیے جانا جاتا تھا جو کہ رام پورہ گیٹ، ریتی، کچہری، اسامائی، کابلی، باجوری، ڈبگری، رام داس، بریسکیاں، سرد چاہ، سرکی، کوہاٹی، یکہ تھوت، گنج، لاہوری، ہشت نگری کے نام سے مشہور تھے۔

پشاور کے لوگ انتہائی مہمان نواز ہونے اور دوسروں کو گھر کا احساس دلانے کے لیے مشہور ہیں جس کی وجہ سے آپ بار بار یہاں جانا چاہتے ہیں۔ یہ اپنی ‘بارہ’ مارکیٹوں اور حیرت انگیز قیمتوں پر ملنے والی اشیا کی بہت بڑی اقسام کے لیے مشہور ہے جس کا کوئی تصور بھی نہیں کر سکتا۔ لیکن ایک خاصیت جو بہت اہم ہے جو ایک خریدار کے پاس ہونی چاہیے وہ ہے ‘سودے بازی’ کی مہارت۔ اگرچہ قیمتیں کم ہوسکتی ہیں اگر آپ پٹھانوں کے ساتھ بات چیت کرنا جانتے ہیں تو وہ بھی کم ہوسکتے ہیں۔ اس کا مشاہدہ اس وقت کیا جا سکتا ہے جب خواتین رشکئی میں خریداری کے لیے جاتی ہیں، جو کہ کپڑے کی منڈی کے لیے مشہور ہے۔ اور تمام خریداری کے بعد آپ کونے کے آس پاس کے حیرت انگیز ‘چپل کباب’ سے اپنے ذائقے کو دوبالا کر سکتے ہیں۔ ‘چرسی تکہ’ اور ‘نمکین گوشت’ کو نہ بھولیں جو پشاوری کھانے کو دیکھنے والوں کے لیے ناقابل فراموش بنا دیتے ہیں۔ اپنے روایتی کھانوں کے علاوہ پشاور میں اب کے ایف سی، پیزا ہٹ، چیف برگر وغیرہ جیسے مشہور فاسٹ فوڈ آؤٹ لیٹس بھی ہیں۔

پشاور کے لوگ یقینی طور پر لباس یا سماجی تعلقات کے لحاظ سے قدامت پسند ہیں جس کی وجہ سے ہم شہر کے ارد گرد بہت سارے شٹل کاک برقعے یا چادر یا عبایہ دیکھتے ہیں تاہم اس کا یہ مطلب نہیں کہ اکثریت ایسی ہی ہے، زیادہ سے زیادہ کیفے اور جگہیں جہاں نوجوان ہینگ آؤٹ پر جائیں آپ دیکھیں گے کہ رجحانات قدرے تبدیل ہو رہے ہیں۔ لیکن اگر آپ ایک خاتون بیرونی ہیں اور غیر معمولی توجہ حاصل نہیں کرنا چاہتے ہیں تو جب لباس پہننے کی بات آتی ہے تو تبدیلی کے لیے مقامی لوگوں کی پیروی کرنے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ، اگر آپ ایک سیاح کی طرح نظر آتے ہیں تو امکان ہے کہ آپ سے زیادہ قیمت وصول کی جائے گی تاکہ آپ میں گھل مل جانے کی چال کے طور پر آپ چہرے کو ڈھانپ کر فائدہ اٹھانا چاہیں۔

ایک اور پرانا رواج جو اب تبدیل ہو چکا ہے وہ حجرہ ہے جو لوگ پہلے رکھتے تھے، ایک الگ جگہ جہاں مرد جمع ہوتے تھے، ایک ڈرائنگ روم کی طرح جس میں صرف مردوں کے بیٹھنے کا انتظام فرش پر ہوتا تھا جس میں ڈھیر سارے کشن ہوتے تھے۔ لیکن یہ پہلے زیادہ عام تھا جب لوگ جن علاقوں میں رہتے تھے وہ بہت زیادہ کشادہ ہوتے تھے اور جب گھر کی عورتیں مرد مہمانوں کے سامنے قدم نہیں رکھتی تھیں۔ آج کل یہ باقی شہروں سے کافی حد تک مماثلت رکھتا ہے جہاں ہر گھر میں ایک ڈرائنگ روم ہوتا ہے نہ کہ مہمانوں کے لیے الگ الگ بہت بڑا کمرہ۔

اس کے برعکس پشاور اب ہمارے ملک کے دیگر شہروں کی طرح اغوا، تاوان کی وارداتوں اور بم دھماکوں کی وجہ سے زیادہ محفوظ نہیں ہے۔ لوگوں کو جلد گھر آنے کا مشورہ دیا جاتا ہے اور بازار بھی جلدی بند ہوتے ہیں اور سڑکوں پر بھیڑ کم ہوتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ گھر میں بندوق کا ہونا عام بات ہے لیکن پھر یہ علاقے پر منحصر ہے۔

آپ نے یہ بھی سنا ہوگا کہ پشاور کے پٹھان پاکستان کے باقی شہروں سے ایک دن پہلے عید مناتے ہیں۔ ہر کوئی نہیں بلکہ بعض لوگ ایسا کرتے ہیں کہ بہت زیادہ اتحاد نہیں ہے کیونکہ کچھ لوگ حکومت کی پیروی کرتے ہیں اور کچھ ایسا نہیں کرتے تو شہر کے اندر بھی لوگ دو حصوں میں بٹ جاتے ہیں۔ پشاور ایک رنگین شہر ہے اور اگر آپ لاہور جیسے شہر سے آرہے ہیں تو آپ کو سڑکیں بھی خالی اور اردگرد کا ماحول صاف نظر آئے گا۔ یہ ایک ایسی جگہ ہے جو ایک نئے آنے والے کو بھی گرم جوشی اور پرانی یادوں کا احساس دیتی ہے۔ قصہ خوانی بازار، قلعہ بالا حصار، گور کھتری، نمک منڈی جیسے تاریخی مقامات ہیں جنہیں یاد نہیں کرنا چاہیے اور ساتھ ہی ساتھ کچھ جدید عمارتیں بھی ہیں۔

پشاور کے لوگوں کے بارے میں ہر ایک کے خیالات مختلف ہیں لیکن آپ کو یہ دیکھ کر حیرت ہوگی کہ وہ نہ صرف ذہین اور پڑھے لکھے ہیں بلکہ جدید ترین فیشن کے رجحانات کے ساتھ بھی بہت جدید ہیں جب لڑکیوں کی بات آتی ہے اور تفریح ​​سے محبت کرنے والے بھی ہیں اور بالکل بھی قدامت پسند نہیں ہیں۔ جس سے آپ شہر کا زیادہ دورہ کرنا چاہتے ہیں۔ اس کے برعکس قسمیں بھی ہیں جو لوگوں کو دقیانوسی تصورات پر مجبور کرتی ہیں تاہم یہ صرف پشاور کے بارے میں نہیں ہے جس میں تعلیم یا بیداری کی کمی ہے اسی طرح کے گروپ میں درجہ بندی کی جاسکتی ہے۔

پشاور میں تعلیم اور ملازمت کے مواقع کے لیے ابھی بھی کچھ کام کی ضرورت ہے کیونکہ کالج کی سطح کے بعد بہت سے طلبہ بہتر تعلیم کے لیے دوسرے شہروں جیسے اسلام آباد، لاہور یا کراچی جاتے ہیں۔ ملازمت کے مواقع کے بارے میں بھی یہی بات ہے کہ بہت سے والدین ترجیح دیتے ہیں کہ ان کے بچے کہیں اور ملازمتیں تلاش کریں کیونکہ شہر کی موجودہ صورتحال نہ صرف روزگار کے لحاظ سے بلکہ سیکورٹی کے حوالے سے بھی ہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!