تاریخ

Chitral – A place for tourists

چترال - سیاحوں کے لیے ایک جگہ

چترال ایک ضلع ہے جو پاکستان کے شمال مغربی علاقے میں واقع ہے۔ یہ اپنے پرامن لوگوں اور خوبصورت مناظر، پہاڑی علاقے کے لیے بہت مشہور ہے۔ چترال ایک بہت دور دراز علاقہ ہے اور سردیوں میں یہاں تک رسائی بہت مشکل ہے کیونکہ سڑکیں بند رہتی ہیں اور بعض اوقات افغانستان سے گزرنے والا واحد راستہ رہ جاتا ہے جو دہشت گردوں کی موجودگی کی وجہ سے بہت خطرناک ہے۔ کالاش میں رہنے والے لوگوں کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ ترکی کے ساتھ ساتھ فارسی نژاد بھی ہیں لیکن معلومات کی کمی کی وجہ سے کسی بات کی تصدیق نہیں ہو پاتی، ایک اور مشہور عقیدہ یہ ہے کہ کالاش قبائل سکندر اعظم کے سپاہیوں کی براہ راست اولاد ہیں۔ کالاش لوگوں کے گھر مقامی پتھروں اور لکڑیوں سے بنے ہیں۔ ان علاقوں میں زیادہ ٹیکنالوجی نہیں ہے اور وہ دال یا گندم جیسی فصلوں سے روزی کماتے ہیں، اس کے علاوہ وہ بکریاں بھی پالتے ہیں جس سے ان کی کمائی میں مدد ملتی ہے۔

چترال اور کالاش کے لوگ اپنے انتہائی منفرد لباس اور رقص کے لیے بھی بہت مشہور ہیں جو وہ کرتے ہیں، وہ موسیقی کے بھی بہت شوقین ہیں (خاص طور پر کالاش کے قبائل)۔ وہاں ڈھول بجاتے ہیں جن پر عورتیں حلقہ بنا کر رقص کرتیں اور کچھ بوڑھے لوگ تہواروں کے موقع پر پہلو میں بیٹھ کر پرانے گانے گاتے۔ تمام رقص جو ہوتا ہے وہ درمیانے درجے کا ہونا چاہیے جس میں کالاش کے لوگ اپنے دیوتاؤں کا ہر اس چیز کے لیے شکریہ ادا کرتے ہیں جو اللہ تعالیٰ نے انہیں فراہم کی ہے۔ وہ خواتین جو ابھی تک شادی شدہ نہیں ہیں یا کنواری ہیں انہیں ان تہواروں کے دوران خود کو شوہر یا مرد تلاش کرنا چاہیے۔ چترال اور کالاش کی ثقافت ایک ایسی چیز ہے جس کو ‘غیر متزلزل’ کہا جا سکتا ہے جس کا عام طور پر مطلب دوسرے لوگوں کے لیے بہت مشکل یا ناممکن ہے۔ پنجاب کے جنوبی علاقے میں آپ کو کالاش لوگ ملیں گے جو ملحد کے طور پر جانے جاتے ہیں اور اپنی اقدار اور ثقافت کو اپنے قریب رکھتے ہیں، وہ صدیوں سے اس پر عمل پیرا ہیں اور یہ ایک بہت پرانی ثقافت ہے۔ چترال کی ثقافت کا ایک بہت اہم عنصر ‘مہرکہ’ ہے۔ مہرکا کے معنی بنیادی طور پر صرف علاقے کے لوگوں کا ایک اجتماع ہے، اور اس اجتماع کی سربراہی اکثریت میں سے ایک مذہبی رہنما کرتا ہے۔ اس قسم کی محفلوں میں شرکت کے لیے عمر اور عقل دو ہی معیارات ہیں جو لوگوں سے ضروری ہیں، جن سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ یہ محض کسی بے ترتیب شخص کے لیے نہیں ہیں، بلکہ اس میں سنجیدہ معاملات پر بحث کی جاتی ہے اور اعلیٰ معیارات طے کیے جاتے ہیں۔ جب علاقے میں نسلی ثقافت اور حکمت کو پھیلانے کی بات آتی ہے تو مہراکا بہت اہم کردار ادا کرتا ہے۔ عمائدین کی اس میٹنگ میں بہت سے انتظامی مسائل کے ساتھ ساتھ دیگر مسائل پر بھی بات چیت ہوئی اور فیصلے کیے گئے۔ ان ملاقاتوں میں مناسب رات کا کھانا اور کھانا پیش کیا گیا۔

زبان

چترال کے ضلع میں بولی جانے والی مرکزی زبان کھوار ہے جبکہ کالاش کے لوگ کالاشہ بولتے ہیں جسے کالاشہ موندر بھی کہا جاتا ہے۔ اردو کو خطے میں ہر کوئی بڑے پیمانے پر سمجھتا ہے اور اسی طرح پشتو بھی ہے، جب کہ مؤخر الذکر بھی بہت بولا جاتا ہے۔

مذہب

ضلع چترال میں لوگوں کی اکثریت سنی مسلم ہے جہاں شیعہ بھی بہت زیادہ ہیں۔ تاہم کالاش کے لوگ اور اس کے مختلف قبائل کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ مختلف خداؤں پر یقین رکھتے ہیں اور بہت پرانی رسومات اور مذاہب میں یقین رکھتے ہیں۔

تہوار

چترال کے ضلع میں مختلف تہوار منائے جاتے ہیں جن کے بارے میں پاکستان کے دوسرے حصوں سے آنے والے لوگوں نے شاید کبھی نہیں سنا ہوگا۔ ایسے ہی تہواروں میں سے ایک جشن نوروز ہے جو ہر سال 21 مارچ کو منایا جاتا ہے۔ یہ بنیادی طور پر ایک مذہبی تہوار ہے جو ایک صوفی بزرگ کی یادوں میں منایا جاتا ہے جس نے اس خطہ میں اسماعیلی عقیدے کو متعارف کرایا، اس صوفی بزرگ کا نام پیر ناصر خسرو تھا۔ اس خطے میں منعقد ہونے والا ایک اور بہت مشہور میلہ شندور پولو فیسٹیول ہے، اب پاکستان کے ساتھ ساتھ دنیا بھر میں ہر کوئی اس بات سے واقف ہے کہ پولو اس خطے میں سطح سمندر سے 10 ہزار فٹ کی بلندی پر کھیلا جاتا ہے اور یہ کوئی عام بات نہیں ہے، عام لوگ ہیں۔ اتنی بلندیوں پر سانس لینے میں دشواری ہوتی ہے لیکن یہ لوگ نہ صرف سانس لینے کا انتظام کرتے ہیں بلکہ ایسے حالات میں کھیلتے ہیں جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ ان حالات سے کتنے مضبوط اور قوت مدافعت رکھتے ہیں۔ اہم ایونٹ اور میچ گلگت اور چترال کی ٹیموں کے درمیان ہے جو روایتی حریف ہیں۔ یہ ایونٹ عام طور پر گرمیوں کے دوران کھیلا جاتا ہے کیونکہ موسم سرما میں آنے والے سخت موسم کے دوران کھیلنا ناممکن ہوتا ہے، اس لیے عام طور پر یہ ایونٹ جولائی کے مہینے میں منعقد کیا جاتا ہے۔

یہ ضلع چترال میں منائے جانے والے اہم تہوار تھے تاہم کالاش کے قبائل کے اپنے کچھ تہوار ہیں جو وہ مناتے ہیں جو درج ذیل ہیں۔ چلمجھسٹ جسے جوشی کے نام سے بھی جانا جاتا ہے موسم بہار کی کٹائی کے موسم میں منایا جاتا ہے جو ہر سال تقریباً 4-6 دن تک رہتا ہے۔ اس کے بعد اگست کے مہینے میں ایک اور تہوار منایا جاتا ہے جسے اُچل کہتے ہیں۔ دسمبر کے مہینے کے دوران چترمس کا تہوار جو بہت خوشی کے ساتھ منایا جاتا ہے اور آنے والے بہتر سال کی دعا کی جاتی ہے۔

کھانا

چترال کے بہت سارے روایتی پکوان ہیں جیسے پنڈیر موزی جو اخروٹ اور پنیر سے بنتی ہے، گندم کے آٹے کے درمیان کچل کر تندور میں پکائی جاتی ہے۔ چترال کے دیگر مشہور پکوان ژولائی، پشور ٹکی، کالی، کاویروغ اور لازیک ہیں۔

موسیقی

موسیقی چترال کی ثقافت کا ایک بہت اہم حصہ ہے، ڈھول اور ستار بجایا جاتا ہے جبکہ مرد حلقوں میں مل کر سالانہ تہواروں اور شادیوں کے موقع پر بھی رقص کرتے ہیں۔ چند آلات جو چترال کے لوگوں میں مقبول ہیں وہ ہیں؛ ستار، دول، سنائی، دمامہ، بیرو، غربا۔

چترال کے لوگ بہت ہنر مند ہیں اور وہ ہاتھ سے بنی ہوئی بہت سی چیزیں بناتے ہیں جو کہ پھر دنیا بھر میں فروخت ہوتی ہیں، ایک امریکی کاروباری نے اس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے رومال لے لیا جو چترالی خواتین نے بنا کر امریکیوں میں فروخت کر کے بھاری منافع کمایا۔ یہ لوگ نہ صرف ہنر مند ہوتے ہیں بلکہ بہت تخلیقی بھی ہوتے ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!