تاریخ

Villages of Jhelum

جہلم کے دیہات

جہلم کے دیہات جو کہ بھرپور تاریخ اور رنگین ثقافت کے ساتھ دریائے جہلم کے دونوں طرف پھیلے ہوئے ہیں۔ لوگ اچھے اور بے ضرر طبیعت کے ہوتے ہیں۔ وہ اپنی روایت کا احترام کرتے ہیں اور روایتی اصولوں کے مطابق کرتے ہیں۔ وہ ایک دوسرے کی خوشی اور غم میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتے ہیں اور بہت مہمان نواز ہیں۔ لوگ ہیر رانجھا، ہیر وارث شاہ جیسی روایتی کہانیاں سناتے ہیں اور موسیقی بھی رنگ بھری ہوتی ہے۔

جہلم کے دیہات میں زیادہ تر پنجابی زبان کو رابطے کے طریقے کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے۔ لیکن کچھ دوسری زبانیں ہیں جیسے پوٹھواری وغیرہ۔ چونکہ کچھ پختون خاندان جہلم میں شفٹ ہو گئے تھے اس لیے پشتو کو رابطے کے طریقے کے طور پر استعمال کیا جاتا ہے لیکن جب وہ ایک دوسرے سے بات چیت کرتے ہیں۔ زیادہ تر غلبی اردو استعمال کی جاتی ہے کیونکہ ہر کوئی اسے بول اور سمجھ سکتا ہے۔

گاؤں کے زیادہ تر نوجوان شلوار قمیض یا کرتہ پہننا پسند کرتے ہیں۔ ان میں سے کچھ پینٹ شرٹ پہنتے ہیں۔ لیکن پرانے لوگ عام طور پر سر پر ‘پاگ’ کے ساتھ ‘تہمت’ کے ساتھ قرطہ پہننا پسند کرتے ہیں۔ زیادہ تر دیہات اپنی حدود میں ایک منفرد مقام رکھتے ہیں جہاں لوگ گپ شپ کے لیے اکٹھے بیٹھتے ہیں اور اگر گاؤں کے اندر کوئی مسئلہ درپیش ہو تو لوگ ایک ساتھ بیٹھ کر اپنا نقطہ نظر بیان کرتے ہیں۔ منفرد مقام پر پہنچنے کے بعد گاؤں کے مشہور لوگ اپنا مشورہ (پنچائیت) دیتے ہیں۔

جہلم کے دیہی علاقوں کے لوگ ہر قسم کی موسیقی کا سبق دیتے ہیں جن میں بھنگڑا، انڈین فلموں کے گانے، پاکی گانے، لوک، سارکی اور صوفی کلام بھی شامل ہیں۔ مشہور صوفی شاعر میاں محمد بخش چونکہ جہلم میں پیدا ہوئے تھے اس لیے لوگوں نے ان کی شاعری کو بہت سنا جس کے نتیجے میں صوفی شاعری میں ان کی دلچسپی پیدا ہوئی۔ پوٹھواری شائر گانا اور سننا بھی کچھ لوگوں کی عادت ہے۔ یہ موسیقی کی ایک قسم ہے جس میں صوفی کلام، گیت، غزلیں وغیرہ استعمال کی جاتی ہیں۔ (ستار، دولاک، گھرا وغیرہ) موسیقی کے مطابق ٹون بجانے کے لیے بطور آلہ استعمال ہوتے ہیں۔

یہاں ہر قسم کے کھیل کھیلے جاتے ہیں لیکن مشہور کھیل کرکٹ، فٹ بال اور بیڈمنٹن ہیں۔ کرکٹ کی مختلف اقسام ہیں جو ان علاقوں میں متعارف کرائی گئی ہیں ایک مناسب کرکٹ کا مطلب ہے چمڑے کی گیندوں سے کھیلا جاتا ہے۔ کرکٹ کی دیگر اقسام کو ٹیپ بال کرکٹ اور سافٹ بال کرکٹ کا نام دیا گیا ہے۔ ٹیپ بال کرکٹ عام طور پر 6 سے 8 اوورز کی دن کی روشنی میں کھیلی جاتی ہے اور ایک طرف کھلاڑیوں کی تعداد 1 سے 11 ہوتی ہے۔ کرکٹ کی آخری لیکن کم سے کم قسم سافٹ بال کرکٹ ہے جو روشنیوں میں کھیلی جاتی ہے۔ اسے نائٹ کرکٹ بھی کہا جاتا ہے۔ تقریباً ہر جمعہ اور اتوار کو ٹورنامنٹ کا انعقاد کیا جاتا ہے جس میں پاکستان بھر سے کھلاڑی حصہ لیتے ہیں۔ ٹورنامنٹ کے ابتدائی میچ تین اوورز کے ہیں کیونکہ انہوں نے اسے ایک دن میں ختم کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔ میچ ناک آؤٹ سسٹم پر کھیلے جاتے ہیں جس کا مطلب ہے کہ ہارنے والی ٹیمیں ٹورنامنٹ سے باہر ہو جائیں گی۔ پہلے یا دوسرے راؤنڈ کے بعد اوور کم ہو جاتے ہیں یا اوورز کی گیندیں کم کر دی جاتی ہیں۔ بعض اوقات آخری میچ صرف دو یا تین گیندوں کے ہوتے ہیں۔ ان ٹورنوں میں سیاستدانوں کو بطور مہمان فنڈ ریزنگ کے لیے مدعو کیا جاتا ہے۔

یہ کرکٹ سیزن کے اڈوں پر کھیلی جاتی ہیں (چمڑے کی گیند سردیوں کے موسم میں کھیلی جاتی ہے جبکہ ٹیپ اور نرم گیند گرمیوں میں کھیلی جاتی ہے)۔ فٹ بال ٹورنامنٹ بھی منعقد کیے جاتے ہیں۔ زیادہ تر یہ ٹورنامنٹ لیگ سسٹم پر مبنی ہوتے ہیں۔ گاؤں کی ثقافت میں سب سے مشہور چیزیں یہ ہیں کہ انہوں نے ایک تقریب کا اہتمام کیا جسے انہوں نے میلا کہا۔ اس کا سالانہ اہتمام کیا جاتا ہے۔ اس کا اہم حصہ یہ ہے کہ وہ میزار پر ‘ڈولی’ پیش کرتے ہیں۔ تقریباً ہر گاؤں میں مزار ہے۔ وہ ڈھول کے ساتھ گاؤں میں چکر لگاتے ہیں اور ڈھولی پیش کرنے سے پہلے رقص کرتے ہیں۔

اس موقع پر بعض مقابلے منعقد کیے جاتے ہیں یعنی کرکٹ، فٹ بال، نیزہ بازی، ویٹ لفٹنگ وغیرہ۔ نیزہ بازی دیہات میں ایک بہت مشہور کھیل ہے کیونکہ اسے ایک اعزاز سمجھا جاتا ہے۔ اس کھیل میں آدمی گھوڑے پر سوار نیزہ ہاتھ میں لے کر زمین میں آدھی دبی ہوئی چھوٹی چھڑیوں کی طرف دوڑتا ہے اور اسے نیزہ کا استعمال کرکے اسے باہر نکالنا پڑتا ہے۔

ویٹ لفٹنگ کے مقابلے کو بھی لوگوں کی اکثریت پسند کرتی ہے۔ اس میں نوجوان 5 من تک وزن اٹھاتے ہیں۔

اونٹوں کے وزن اٹھانے کے مقابلے دیہاتوں میں بھی ہوتے ہیں۔ اونٹ کا وزن اٹھانے کا حالیہ ریکارڈ 30 من ہے۔ یہاں مختلف علاقوں سے لوگ سجے ہوئے اونٹوں کے ساتھ آتے ہیں۔ وہ گراؤنڈ میں داخل ہوتے ہوئے مالک کا رقص کرتے ہیں۔ اس سے سامعین کے چہروں پر مسکراہٹ آتی ہے۔

کبڈی گاؤں کا اصل کھیل ہے۔ سرکل کبڈی پر یہ دو قسم کی ہوتی ہے جس میں چار یا پانچ لوگ ‘جاپی’ کا کردار ادا کرتے ہیں اور ایک آدمی جو کبڈی کے لیے جاتا ہے اسے ‘سائی’ (پنجابی لفظ) کہا جاتا ہے۔ دیہات میں منعقد کیے جانے والے بہترین مقابلوں میں سے ایک بیل دوڑنا ہے۔ اس میں ‘پنجالی’ کی مدد سے دو بیلوں کو ایک ساتھ باندھا جاتا ہے اور اس کا قاعدہ یہ ہے کہ انہیں دس منٹ کا وقت دیا جاتا ہے اور جو کنویں کے زیادہ چکر لگاتا ہے اسے فاتح سمجھا جاتا ہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!