تاریخ

Lalamusa

لالہ موسہ

اسلام آباد سے 145 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع لالہ موسہ ضلع گجرات کا ایک چھوٹا شہر ہے۔ قصبے کا نام ایک شخص ‘موسیٰ’ کے نام پر مبنی ہے اور لفظ ‘لالہ’ پنجابی نژاد ہے جس کا مطلب ہے بھائی اس طرح لالموسہ (بھائی موسیٰ) کہلاتا ہے۔ 1880 سے پہلے اس شہر کو لالموسہ کہا جاتا تھا، لیکن اب یہ پرانا (پرانا) لالموسا کے نام سے جانا جاتا ہے۔ قریبی شہر گجرات اور قہرین ہیں اور آس پاس کے دیہات کوٹلہ قاسم، خواص پور میانہ چک اور بڈو کالس ہیں۔ اگرچہ تقریباً 200,000 آبادی کا ایک چھوٹا شہر، لالموسہ زندگی کی تمام اہم ضروریات اور سہولیات کو گھیرے ہوئے ہے۔ اس شہر میں تاریخی اہمیت کے حامل ریلوے سٹیشن سے لے کر ہسپتالوں، سکولوں اور بازاروں تک سب کچھ ہے۔

تاریخی پس منظر

انگریزوں کے ذریعہ 1880 میں ریلوے جنکشن کی تعمیر نے شہر کی ترقی میں اہم کردار ادا کیا (اس وقت ایک چھوٹا سا گاؤں تھا)۔ ریلوے جنکشن کی تعمیر سے پہلے لالہ موسہ تقریباً ایک ویران علاقہ تھا لیکن تعمیر کے بعد بہت سے انگریز خاندان وہاں آباد ہو گئے۔ اس لیے قصبے میں ایک چھوٹا سا انگریز قبرستان موجود ہے۔ تقسیم کے بعد، ہندوؤں اور سکھوں کی ایک چھوٹی سی تعداد لالموسہ کی طرف ہجرت کرگئی اور بہت سے چھوٹے گاؤں لالموسہ میں ضم ہوگئے، اس طرح اسے شہر کا درجہ مل گیا۔

مشہور شخصیات

لالاموسہ پاکستان کی سب سے بااثر سیاسی شخصیات کو پیدا کرنے کے لیے جانا جاتا ہے۔ سب سے مشہور نام جو ذہن میں آتا ہے وہ سابق وزیر اطلاعات اور گلگت بلتستان کے سابق گورنر قمر زمان قائرہ کا ہے۔ چوہدری فضل الٰہی جو پاکستان کے صدر تھے ان کا تعلق مرالہ نامی گاؤں سے تھا جو قومی اسمبلی کے دائرہ اختیار میں 106 اور لالموسہ سے 2 کلومیٹر دور واقع ہے۔ اس کے علاوہ میاں محمد افضل حیات جو پنجاب کے وزیر اعلیٰ تھے ان کا تعلق بھی لالہ موسیٰ سے تھا۔

لالاموسہ نہ صرف بااثر سیاسی شخصیات کو پیدا کرنے کے لیے جانا جاتا ہے بلکہ یہ پاکستان میں میوزک انڈسٹری کی سب سے خوبصورت آوازیں پیدا کرنے کے لیے بھی ذمہ دار ہے۔ پاکستان کے مشہور لوک گلوکار عالم لوہار بھی لالموسہ میں پیدا ہوئے۔ وہ وارث شاہ کے ہیرز گانے کے لیے مشہور ہیں۔ ان کے بیٹے عارف لوہار کا تعلق بھی لالموسہ سے ہے جنہوں نے اپنے والد کے نقش قدم پر چلتے ہوئے ایک انتہائی کامیاب گلوکار بھی بنا۔ جب صحافت کی بات آتی ہے، لالموسہ پاکستان کے سب سے معزز اور اعلیٰ ترین صحافی جاوید چوہدری پیدا کرنے کے لیے جانا جاتا ہے۔ وہ اپنے بدنام زمانہ کالم ‘زیرو پوائنٹ’ کے لیے جانا جاتا ہے جس نے عوام کو متاثر کیا اور یہ (ایک سروے کے مطابق) پاکستان کے اخبارات میں سب سے زیادہ پڑھا جانے والا کالم ہے۔

لوگ

لالہ موسہ کے لوگ بہت مہمان نواز ہیں اور سادہ زندگی بسر کرتے ہیں۔ لالموسہ میں رہنے والے زیادہ تر لوگ نچلے متوسط ​​طبقے سے ہیں۔ لالہ موسہ کے لوگ زیادہ تر معاملات میں چھوٹے چھوٹے کاروبار کرتے ہیں یا دستی مزدوری کرتے ہیں۔ لالموسہ کی زمین زرخیز ہے اور بہت سے لوگ زراعت کے شعبے سے بھی منسلک ہیں۔ اس کے علاوہ لالموسہ کے بہت سے لوگ ہیں جو یورپ اور مشرق وسطیٰ میں آباد ہیں اور غیر ملکی ترسیلات زر میں اچھا حصہ ڈال رہے ہیں۔

کھانا

جب بات شاندار پکوانوں اور کھانے پینے کی اشیاء کی ہو تولالہ موسہ شہر کا کوئی متوازی نہیں ہے۔ لالہ موسہ کا سموسا اپنے مسالیدار اور بہترین ذائقے کے لیے جانا جاتا ہے۔ نونا حلوائی کی برفی پاکستان میں سب سے زیادہ مشہور ہے اور میاں جی ریستوراں کے لالموسہ دال کے قریب بھی ذائقہ کے لحاظ سے ایک مزیدار ڈش ہے۔

کپڑے

عام طور پر پہنا جانے والا لباس شلوار قمیض ہے۔ بزرگ لوگ اب بھی شلوار قمیض پہننے کو ترجیح دیتے ہیں لیکن نوجوان نسل اب پینٹ شرٹ بھی پہننے کو ترجیح دیتی ہے۔ تاہم خواتین کی زیادہ تر آبادی شلوار قمیض پہنتی ہے اور وہاں جینز پہننے کی حوصلہ افزائی نہیں کی جاتی ہے۔

تہوار

لالہ موسیٰ میں سال بھر مختلف تہوار منائے جاتے ہیں جن میں فصلوں کی کٹائی کا جشن منایا جاتا ہے جس میں لوگ اس لیے جشن مناتے ہیں کہ وہ محنت کا صلہ حاصل کریں گے۔ اس فیسٹیول میں عوام کو محظوظ کرنے کے لیے مختلف سرگرمیاں کی جاتی ہیں جن میں نائزہ بازی، گھڑ سواری، کتوں کی لڑائی اور مرغوں کی لڑائی شامل ہیں۔

کھیل

لالاموسا میں کرکٹ سب سے زیادہ کھیلی جانے والی کھیل ہے۔ لالموسہ میں فٹ بال بھی ایک مقبول کھیل ہے لیکن بدقسمتی سے یہاں کھیلوں کی سہولیات کا فقدان ہے جس کی وجہ سے نوجوان سڑکوں اور اسکول/کالج کے میدانوں میں کھیلنے پر مجبور ہیں۔ تاہم صورتحال کو بہتر بنانے کے لیے چند اقدامات کیے گئے ہیں اور کرکٹ کلب قائم کیے گئے ہیں جن میں ریاض کرکٹ کلب اور لالموسہ کرکٹ کلب شامل ہیں۔ باڈی بلڈنگ کھیلوں کی ایک اور مقبول سرگرمی ہے اور لالاموسا میں مردوں اور عورتوں دونوں کے لیے بہت سے جی وائی ایم ہیں۔ اس وقت ‘مسٹر پاکستان’ کے نام سے سالانہ باڈی بلڈنگ مقابلے کے لالموسہ کے دو چیمپئن ہیں جس میں پاکستان بھر سے باڈی بلڈرز حصہ لیتے ہیں۔

تعلیم

بدقسمتی سے لالہ موسیٰ میں تعلیمی سہولیات ناکافی ہیں۔ یہاں صرف دو سرکاری اور 3 پرائیویٹ کالجز ہیں اور بہت کم کالجوں کی وجہ سے طلباء اپنی کالج کی تعلیم پڑوسی شہروں یعنی گجرات اور کھاریاں میں حاصل کرتے ہیں۔ تاہم حوصلہ افزا بات یہ ہے کہ لالہ موسیٰ میں پرائیویٹ اور گورنمنٹ اسکولوں سمیت کافی تعداد میں اسکول موجود ہیں۔ جب یونیورسٹی کی تعلیم کی بات آتی ہے تو لالموسہ میں ایک بھی یونیورسٹی قائم نہیں ہے اور اس کے نتیجے میں زیادہ تر لوگ اپنی تعلیم کو میٹرک تک جاری رکھتے ہیں اور خود کو کارپینٹنگ اور دیگر دستی مزدوری کے کاموں میں مصروف رکھتے ہیں۔ جو لوگ اعلیٰ تعلیم حاصل کرنا چاہتے ہیں وہ شہر چھوڑ کر اسلام آباد یا لاہور چلے جاتے ہیں۔

مارکیٹ تک رسائیبہت سے دیہاتوں کے قریب واقع شہر لالاموسا شہر کے قریب رہنے والے دیہاتیوں کے لئے مرکزی منڈی کے طور پر کام کرتا ہے۔ گاؤں والے شہر کے وسط میں واقع اس تھوک مارکیٹ میں اپنی فصلیں فروخت کرتے ہیں۔ مزید برآں گجرات اور خیان میں تھوک مارکیٹیں موجود ہیں ، آس پاس کے دیہات کے لوگ اس کی آسانی کی وجہ سے لالاموسا کی تھوک مارکیٹ میں جانے کو ترجیح دیتے ہیں۔جہاں تک خوردہ مارکیٹ کا تعلق ہے ، شہر میں ایک اہم مارکیٹ ہے جہاں مقامی لوگ روزمرہ کی زندگی کی مصنوعات کی خریداری کرتے ہیں۔ خوردہ مارکیٹ میں ہر قسم کی دکان شامل ہوتی ہے ، بیکریوں سے لے کر الیکٹرانک دکانوں تک مارکیٹ میں ہر صارف کی تکمیل ہوتی ہے۔مذہبی ہم آہنگیجیسا کہ پہلے ذکر کیا گیا ہے ، ہندو بھی پارٹیشن سے پہلے لالاموسا میں رہتے تھے ، تاہم اب یہاں اقلیت کے طور پر سمجھا جاتا ہے۔ اقلیت ہونے کے باوجود ، شہر میں ان کے لئے مذہبی آزادی موجود ہے۔ فی الحال اس شہر میں ایک چرچ اور ایک مندر ہے جہاں اقلیتوں (عیسائی اور ہندو) آزادانہ طور پر اپنے مذہب پر عمل کرتے ہیں۔ یہ ایک دلچسپ حقیقت ہے کہ لالاموسا میں مسلم اکثریت کے اپنے مذہب کے ساتھ سخت جذباتی رشتہ ہے ، اقلیتوں کو اپنے مذہب پر عمل کرنے کی مکمل آزادی دی گئی ہے اور انہیں مساوی شہری سمجھا جاتا ہے۔

صحت کی دیکھ بھال کی سہولیات

جہاں تک صحت کی سہولیات کا تعلق ہے وہ شہریوں کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے کافی ہیں۔ شہر میں ایک سول ہسپتال ہے جہاں سب سے اوپر کی طبی سہولیات فراہم کی جاتی ہیں۔ اس کے علاوہ بہت سے چھوٹے پرائیویٹ اسپتال ہیں، یعنی عبداللہ اسپتال، انور اسپتال اور نیازی اسپتال اور کافی تعداد میں میڈیکل اسٹورز ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!