تاریخ

Potohar Plateau

پوٹھوہار ٹرے ۔

پوٹھوہار سطح مرتفع پنجاب کے شمال میں اور آزاد کشمیر کے مغرب میں یعنی پاکستان کے شمال مشرقی حصوں میں واقع ہے۔ اس کی ایک الگ زبان اور ثقافت ہے۔ ضلع اٹک، ضلع جہلم، ضلع چکوال اور راولپنڈی ضلع مرتفع پوٹھوہار پر مشتمل ہے۔ گوجر خان، روات، اٹک، مندرہ وغیرہ جیسے شہر بھی اسی خطے میں واقع ہیں۔ دریائے جہلم اور دریائے سندھ اس سطح مرتفع سے گزرتے ہیں۔ کئی پہاڑی سلسلے جن میں سالٹ رینج اور کالا چٹا سلسلہ بھی شامل ہے۔ زراعت کا انحصار بنیادی طور پر قدرتی بارشوں پر ہے۔ اس کے علاوہ پوٹھوہار سطح مرتفع میں تیل اور گیس کی تلاش کے کئی مقامات ہیں جو اس بات کی نشاندہی کرتے ہیں کہ زرخیز مٹی کے ساتھ ساتھ یہ علاقہ قدرتی وسائل سے مالا مال ہے۔

تاریخ

اس خطے کی ثقافت کی تاریخ قدیم تہذیبوں سے ملتی ہے۔ اس بات کے شواہد ملے ہیں کہ وادی سندھ کی تہذیب نے بھی اس علاقے پر قبضہ کیا تھا۔ پرانی تہذیبوں کے کچھ پتھر اور باقیات ملے ہیں جو اس علاقے کے ورثے کا حصہ ہیں۔ یہ ٹیکسلا میوزیم میں محفوظ ہیں۔ ٹیکسلا یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثے کا حصہ ہے۔ یہ گندھارا تہذیب کا ایک بڑا حصہ ہے۔ یہ ہندو اور بدھ برادریوں کے لیے سیکھنے کا مرکز تھا۔ یہ فارسیوں اور سکندر اعظم کے قبضے میں آیا۔ اس کے علاوہ گکھڑوں، شیر شاہ سوری اور مغلوں کے اثر نے بعد میں اس علاقے پر حکومت کی۔ اس خطے کے اہم تاریخی مقامات میں قلعہ روٹاس، راوت قلعہ، مانکیالا اسٹوپا، فروالا قلعہ، کٹاسراج مندر وغیرہ شامل ہیں۔

زبان

پوٹھوہار کے علاقے میں بنیادی طور پر بولی جانے والی زبان پوٹھوہاری ہے۔ پوٹھوہاری اس خطے کی ایک طاقتور زبان ہے۔ یہ آزاد کشمیر میں بھی بولی جاتی ہے۔ یہ پنجابی کی طرح ہے اور بولی ماجھی اور ہندکو کے قریب ہے۔ عام بولیوں میں دھونڈی-کیرالی، چبھالی، میرپوری، جہلمی، پنڈیوالی اور پونچھی (پونچی) شامل ہیں۔ یہ زبان دیہی اور شہری علاقوں میں یکساں ہے۔ تاہم پوٹھوہار سطح مرتفع کے شہری علاقوں میں اردو اور انگریزی بھی بولی جاتی ہے۔

مذہب

اس خطے میں غالب مذہب اسلام ہے۔ یہاں ہندو اور سکھ کے علاوہ دیگر اقلیتیں بھی پائی جاتی ہیں۔

لباس

پوٹھوہار سطح مرتفع کے دیہی علاقوں میں جو لباس زیادہ عام ہیں ان میں قمیض اور دھوتی شامل ہیں۔ خواتین سر پر دوپٹہ پہنتی ہیں جبکہ مرد پگڑیاں پہنتے ہیں۔ شہری علاقوں میں لوگ پاکستان کا قومی لباس شلوار قمیض پہنتے ہیں۔

کھانا

پوٹھوہار کے لوگ دیسی کھانوں کے شوقین ہیں۔ قدرتی گھی اور مکھن کے ساتھ گھر کا پکا ہوا کھانا ترجیح دی جاتی ہے۔ اس کے علاوہ پراٹھے، دودھ اور مسالے دار کھانے کو بھی اس علاقے میں رہنے والے لوگ پسند کرتے ہیں۔

لوگ

پوٹھوہار سطح مرتفع میں رہنے والے لوگ زیادہ تر مقامی ہیں جب کہ مہاجرین کی ایک چھوٹی سی تعداد بھی یہاں مقیم ہے۔ یہاں رہنے والی بڑی ذاتوں میں راجہ، ملک، چوہدری، جٹ، گجر اور راجپوت شامل ہیں۔ پوٹھوہاری بہت محنتی اور ملنسار لوگ ہیں۔ وہ بہت گرمجوشی اور مہمانوں کا استقبال کرتے ہیں۔ جیسا کہ اس خطے کے رہنے والے ہیں، لوگ جذباتی بھی ہیں۔ تمام پوٹھوہاریوں میں کامریڈ شپ کا زبردست احساس ہے کیونکہ وہ اپنے علاقے سے تعلق رکھنے والے لوگوں کو خصوصی اہمیت دیتے ہیں۔ اس خطے کے لوگ اپنی روایات کے مالک ہیں۔

پوٹھوہار کے لوگ تہوار بڑے جوش و خروش سے مناتے ہیں۔ فصلوں کی کٹائی کے وقت دیہی علاقوں میں خصوصی میلے لگائے جاتے ہیں۔ لوگ ان میں بھرپور شرکت کرتے ہیں۔ شادیاں بھی روایتی انداز میں منائی جاتی ہیں جس میں لڑکیاں ڈھولک پر ’تپے‘ گاتی ہیں۔

کھیل

اس خطے میں بہت سے کھیل مشہور ہیں۔ کرکٹ، ہاکی، اسکواش اور کبڈی سب سے زیادہ مقبول ہیں۔ لوگ ان کھیلوں کے بین الاقوامی مقابلوں سے بھی باخبر رہتے ہیں۔ پتنگ بازی، گلی ڈنڈا اور ماربل کے ساتھ کھیل جیسے کھیلوں کے علاوہ بھی عام ہے۔ دیہی علاقوں میں ٹینٹ پیگنگ، والی بال، فٹ بال اور پتھر اٹھانا بہت مشہور ہیں۔ شعیب اختر، سہیل تنویر اور محمد عامر جیسے مشہور کرکٹرز کا تعلق اسی خطے سے ہے۔

فن اور ادب

پوٹھوہار ایک ایسا خطہ ہے جس نے فن اور ادب میں بے پناہ حصہ ڈالا ہے۔ یہ شمال مشرقی پنجاب کے لوگوں کے لیے رابطے کا سب سے اہم ذریعہ ہے۔ یہ بہت بھرپور زبان ہے اس لیے اس زبان پر بہت کام ہوا ہے۔ پوٹھوہاری شیروں کو مختلف آلات کے ساتھ گانے کی ایک مضبوط روایت ہے۔ ان آلات میں ستار، ڈھولک، طبلہ اور ہارمونیم شامل ہیں۔ یہ شیر یا تو مذہبی رنگ رکھتے ہیں یا بنیادی طور پر مزاحیہ ہوتے ہیں۔ اس خطے کے مشہور شاعروں میں میاں محمد بخش شامل ہیں جنہوں نے اپنی عالمی مشہور کتاب ’’سیف الملوک‘‘ لکھی۔ دیگر شاعروں میں آنند بخشی، ماسٹر نثار، انور فراق، سائیں فراز ویراں، وحید قاسم وغیرہ شامل ہیں۔ پوٹھوہاری ڈرامے اور گانے بھی دنیا بھر میں دیکھے اور سنے جاتے ہیں۔ اس خطے کی لوک موسیقی پوری دنیا میں مشہور ہے۔

تحریری پوٹھوہاری عام طور پر فارسی عربی آرتھوگرافی میں ہوتی ہے۔ اس زبان میں زبانی روایت بہت مضبوط ہے۔ لکھی ہوئی پوٹھوہاری پر بھی توجہ دی گئی ہے۔ بدھ مت کے زمانے میں اسے لینڈا رسم الخط میں لکھا جاتا تھا۔ تاہم، بعد میں اسے فارسی عربی رسم الخط میں منتقل کر دیا گیا اور مغلوں کے دورِ حکومت سے ہی ایسا ہی رہا۔

پیشے

پوٹھوہار سطح مرتفع میں دیہی اور شہری علاقوں میں رہنے والے لوگوں کے پیشے مختلف ہیں۔ شہری علاقوں میں زیادہ تر لوگ کسان ہیں اور زراعت سے بالواسطہ یا بلاواسطہ وابستہ ہیں۔ اس کے علاوہ ڈیری فارمز اور مویشی پالنا بھی عام ہے۔

راولپنڈی، جہلم وغیرہ کے شہری شہر جو اس خطہ میں واقع ہیں، تمام جدید سہولیات پر مشتمل ہیں۔ جدید ہوٹل، ریستوراں، پارکس، بازار وغیرہ عام ہیں۔ دیگر پیشوں میں کڑھائی، مٹی کے برتن، ٹائی ڈائی، گڑیا سازی، لکیر کا کام، کھسہ سازی، لکڑی کا کام، اجرک، مومی پرنٹنگ، لکڑی کا نقش و نگار، دھات کا کام، شال بُننا، روایتی قالین، پتھر کا کام، لکڑی کے چمچے بنانا، پٹو بننا، ٹرک وغیرہ شامل ہیں۔ آرٹ، بلاک پرنٹنگ اور سوئی کا کام۔ فوجی ہیڈ کوارٹر بھی اسی خطے میں واقع ہے کیونکہ اس خطے میں فوج کی مضبوط گرفت ہے۔ دیگر مشترکہ پیشوں میں تدریس، کاروبار اور تجارت شامل ہیں۔

رسم و رواج

پوٹھوہاری علاقوں کی جڑیں تصوف میں ہیں۔ اس علاقے میں متعدد صوفی مقبرے پائے جاتے ہیں۔ ان میں پیر مہر علی، باری امام اور شاہ عبدالخیر سمیت بہت سے لوگ شامل ہیں۔ لوگ ان کی بہت عزت کرتے ہیں۔ عرس کے موقع پر نہ صرف اس علاقے بلکہ ملک کے دیگر حصوں سے بھی لوگ ان مزاروں پر آتے ہیں۔

اس لیے پوٹھوہار ایک ایسا خطہ ہے جس کا ثقافتی پس منظر بہت زیادہ ہے۔ اس علاقے کے دیہی اور شہری علاقوں میں سہولیات اور پیشوں کے لحاظ سے فرق ہے۔ فنون لطیفہ اور ادب میں اس خطے کی شراکت بہت زیادہ ہے۔ اس خطے کے لوگ بہت گرمجوش ہیں اور ان کے اپنے لباس، روایات اور رسم و رواج ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!