تاریخ

Rahim Yar khan

رحیم یار خان

رحیم یار خان صوبہ پنجاب، پاکستان کا ایک شہر ہے۔ اس شہر کا نام نواب آف بہاولپور کے ایک رشتہ دار کے نام پر رکھا گیا ہے۔ اس کا پہلے نام ‘نوشہرہ’ تھا ضلع رحیم یار خان کی آبادی 4.4 ملین ہے۔ یہ زرعی پیداوار میں پاکستان کے سرفہرست اضلاع میں سے ایک اور ریونیو ریٹرن کی بنیاد پر نمبر ون ضلع ہے۔ ضلع رحیم یار خان میں 4 تحصیلیں ہیں؛ (1) رحیم یار خان، (2) صادق آباد، (3) خانپور اور (4) لیاقت پور۔

تاریخ

اس شہر کے بارے میں ایک چھوٹی سی تاریخ۔ محمد بن قاسم تقریباً 800 سال قبل 93-94 ہجری میں اس علاقے سے گزر کر ملتان پہنچا۔ شہاب الدین غوری نے اوچ شریف کو فتح کیا جو اس وقت سندھ اور ملتان کا دارالحکومت تھا اور اس نے محمد بن قاسم کے بعد اس علاقے میں اسلامی حکومت قائم کی۔

شمس الدین التمش کے دور حکومت میں بیس سال تک یہ علاقہ باغیوں کی زد میں رہا۔ امیر ‘ناصر الدین قباچہ’ جنہوں نے اُچ میں 1000 نشستیں ‘مدرسہ فیروزیہ’ قائم کیں۔ اس ‘مدرسہ’ میں تمام مسلم ممالک کے طلباء نے داخلہ لیا۔ آزادی سے پہلے مسٹر نہرو اور مسٹر پٹیل نے نواب محمد صادق عباسی کو ہندوستان میں شامل ہونے پر آمادہ کرنے کی کوشش کی لیکن انہوں نے تمام تر لالچوں سے انکار کر دیا۔

اس شہر کی ایک بہت اہم اہمیت شیخوں کی وجہ سے ہے۔ ابوظہبی کے حکمران خاندان النیہان فیملی نے شہر میں بڑی تعداد میں فلاحی منصوبے شروع کیے ہیں۔ شیخ خاص طور پر رحیم یار خان شکار کے لیے آتے تھے۔ متحدہ عرب امارات کے سابق صدر شیخ زید بن سلطان النہیان ڈیزرٹ ہاک نے شہر کے بالکل باہر ایک نجی رہائش گاہ تعمیر کی اور اس کی دیکھ بھال کی جسے ‘ڈیزرٹ پیلس’ یا ابوظہبی محل کہا جاتا ہے۔ یہ شیخ زید بین الاقوامی ہوائی اڈے رحیم یار خان کے ساتھ ایک مخصوص سڑک کے ذریعے منسلک ہے جو براہ راست محل کی طرف جاتی ہے۔

مقام اور سفر

رحیم یار خان پنجاب کے جدید ضلعی ہیڈ کوارٹر شہروں میں سے ایک ہے۔ اگرچہ لاہور، کراچی یا اسلام آباد میں رہنے والوں کو یہ شہر بہت دور کی جگہ لگتا ہے، لیکن اس شہر میں بہت اچھی شہری سہولیات موجود ہیں۔ آج رحیم یار خان سٹی ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہے۔ یہ ملک کے دوسرے حصوں سے ہوائی راستے سے منسلک ہے۔ یہ کراچی، لاہور اور پشاور کو ملانے والی مرکزی ریلوے لائن اور قومی شاہراہ پر واقع ہے۔ اب ڈائیوو رحیم یار خان کو دوسرے شہروں سے بھی جوڑتا ہے۔

تعلیم

شیخ زید میڈیکل کالج کا نام متحدہ عرب امارات کے مرحوم حکمران عزت مآب شیخ زید بن سلطان النہیان کے نام پر رکھا گیا ہے۔ شہر میں شیخ زید میڈیکل کالج کے قیام نے شہر کو بین الاقوامی نقشے پر کھڑا کر دیا ہے۔ یہ کالج پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل سے تسلیم شدہ ہے۔ یہ پہلے سیلف فنانس ایجوکیشن اسکیم پر مبنی تھا۔ بورڈ آف ڈائریکٹرز میں ابوظہبی، متحدہ عرب امارات کے شاہی خاندان سے تعلق رکھنے والے اہلکار شامل ہیں۔

اس کے علاوہ اسلامیہ یونیورسٹی بہاولپور کا سب کیمپس، خواجہ فرید پوسٹ گریجویٹ گورنمنٹ کالج، گورنمنٹ ویمن ڈگری کالج، نیکاس کالج، پنجاب کالج، سپیریئر کالج، شیخ زید پبلک کالج اینڈ سکول، آرمی پبلک سکول، بیکن ہاؤس سکول سسٹم، دی ایجوکیٹرز سکول، رینجر پبلک سکول، سٹی سکول اور بہت سے دوسرے اچھے سکول۔

معیشت

رحیم یار خان ایک صنعتی مرکز بھی ہے بہت سی اہم صنعتیں رحیم یار خان میں قائم ہیں۔ رحیم یار خان میں رہنے والے 65% لوگوں کا پیشہ کپاس کی زراعت کے سب سے بڑے پیدا کرنے والے شہر کے طور پر جانا جاتا ہے۔ معروف لیور برادرز لمیٹڈ (جسے اب یونی لیور کہا جاتا ہے) کی رحیم یار خان میں اپنی ایک اہم فیکٹری ہے جو ڈالڈا، پلانٹا، سن فلاور آئل، مشہور برانڈز جیسے لکس-ریکسونا اور سرف ایکسل وغیرہ جیسے ڈٹرجنٹس تیار کرتی ہے۔ اورینٹل ٹیکسٹائل، احمد فائن ٹیکسٹائل، احمد آئل اینڈ گھی ملز، پولٹری فیڈ ملز جیسے ہمالیہ فیڈز، کوکا کولا فیکٹری، حلیب فوڈز لمیٹڈ، ویٹا بریڈ لمیٹڈ، ماربل فیکٹریز، جننگ فیکٹریز، فلور ملیں صنعتی بنیاد فراہم کرتی ہیں۔ اتحاد شوگر ملز تحصیل رحیم یار خان کے صنعتی اڈے میں ایک نیا اضافہ ہے۔ کوکو کولا کی رحیم یارخان میں ایک فیکٹری بھی ہے۔ شہر کے قریب کھاد کے بہت سے پلانٹ ہیں۔

لوگ اور ثقافت

رحیم یار خان میں مختلف نسلوں اور نسلوں سے تعلق رکھنے والے لوگ رہتے ہیں لیکن اس میں پنجابی اکثریت ہے .ریاستی، اردو، سندھی، بلوچی جیسی بہت سی زبانیں بولی جاتی ہیں .اس شہر کی ثقافت بہت زیادہ ہے۔ شہر کے علاقے میں بڑے قبائل آرائیں جاٹ، راجپوت اور گجر ہیں۔ گندم اس علاقے کی اہم غذائی اجناس ہے۔ کبڈی کو تقریباً تمام اضلاع کے شہری اور دیہی علاقوں میں پسند اور کھیلا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ ہاکی، بیڈمنٹن، فٹ بال، ٹینس، کرکٹ، لان ٹینس کھیلے جاتے ہیں۔

رحیم یار خان شہر میں صادق بازار، بانو بازار اور شاہی بازار جیسے مشہور بازار ہیں جن کی دکانیں لاہور کے انار کلی، بانو بازار اور لبرٹی کے مقابلے ہیں۔ یہ خواتین کے لیے خریداری کے لیے ایک اچھی جگہ ہے۔ یہ شہر امیر رہائشیوں کے لیے جانا جاتا ہے۔ بارازے.نشاط، جنید جمشید .سٹائلو جیسے برانڈز تمام شہر میں واقع ہیں۔ اس میں کھانے پینے کی بہت سی جگہیں ہیں جیسے کیفے لیمیس۔ یہ دوسری تحصیلوں جیسے صادق آباد کے لوگوں کو بھی اپنی طرف متوجہ کرتی ہے۔ شہر کے قریب کھاد بنانے والی چند معروف کمپنیاں بھی واقع ہیں۔ ان بستیوں کے لوگ خاص طور پر رحیم یارخان خریداری کے لیے آتے تھے۔

وہاں کے لوگ قدامت پسند ہیں۔ یہ ابھی تک پاکستان کے دوسرے شہروں کی طرح جدید نہیں ہوا ہے

آب و ہوا

رحیم یار خان کی آب و ہوا گرمی کے موسم میں انتہائی گرم اور خشک ہوتی ہے جبکہ سردیوں میں شہر کافی خوشگوار اور عموماً سرد اور خشک ہوتا ہے۔ گرمیوں کا موسم سردیوں کے موسم سے کافی لمبا ہوتا ہے۔ موسم گرما اپریل کے مہینے میں شروع ہوتا ہے اور اکتوبر کے مہینے تک جاری رہتا ہے جبکہ سردیوں کا موسم نومبر سے مارچ تک شروع ہوتا ہے۔ دوسری طرف یہاں مارچ اور نومبر کا مہینہ راضی ہے۔ دھول کے طوفان موسم گرما میں کافی عام ہیں۔ اس شہر میں اوسط بارش تقریباً 100 ملی میٹر ہے۔

نباتات اور حیوانات

ضلع کے نباتات دو بڑے ماحولیاتی ڈویژنوں کی خصوصیت رکھتے ہیں، شمالی اور جنوبی۔ شمالی نصف میں پائی جانے والی نباتاتی زندگی وسطی پنجاب کے بقیہ سیراب علاقوں کی طرح ہے۔ صحرائے چولستان کہلانے والی بنجر زمین میں جنگلی بلیاں، چنکارا ہرن، مختلف قسم کے سور، گیدڑ، لومڑی، بیجر، پورکیپائن، گلہری، جربیل، جنگلی چوہے، زہریلے سانپ، ہاگ ہرن سمیت بہت ساری جنگلی حیات پائی جاتی ہے۔ ،

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
error: Content is protected !!