تاریخ

Bahwalpur

بہاولپور

بہاولپور کو پاکستان کا 12واں بڑا شہر کہا جاتا ہے اور یہ پنجاب میں واقع ہے۔ درانی سلطنت کے زوال کے بعد اسے ایک شاہی ریاست کا دارالحکومت تسلیم کیا گیا۔ اس ریاست کی بنیاد نواب محمد بہاول خان II نے انیسویں صدی کے اوائل میں رکھی تھی۔ بعد ازاں بہاولپور کو بھی صوبے کا درجہ دے دیا گیا۔ بہاولپور شہر تاریخی طور پر اپنے دور کے مختلف نوابوں اور حکمرانوں کا آبائی شہر اور مرکز رہا ہے۔ متحدہ ہندوستان میں بہاولپور کو راجپوتانہ ریاست کہا جاتا تھا جو اب ہندوستان میں راجستان ہے۔

یہ شہر اپنے بہت سے مشہور محلات کے لیے مشہور ہے جن میں نور محل، دربار محل صادق گھر محل، نیز صحرائے چولستان میں واقع اور ہندوستان کی سرحد سے متصل دراوڑ کا کچھ اور قدیم قلعہ شامل ہیں۔ اس شہر کا محل وقوع خود تاریخی اہمیت کا حامل ہے کیونکہ یہ تاریخی اور قدیم شہر اُچ کے ساتھ ساتھ ہڑپہ کے قریب واقع ہے، یہ دونوں بالترتیب دہلی سلطنت اور وادی سندھ کی تہذیب کا گڑھ ہوا کرتے تھے۔ بہاولپور شہر پاکستان میں موجود چند قدرتی سفاری پارکوں میں سے ایک لال سوہانرا نیشنل پارک پر فخر کرتا ہے۔

ثقافت

جیسا کہ پہلے ہی ذکر کیا گیا ہے، بہاولپور زیادہ تر بادشاہوں اور نوابوں کا گھر رہا ہے اس لیے یہ سیاحوں، تاریخ دانوں اور آثار قدیمہ کے ماہرین کے لیے ایک اہم توجہ کا مرکز ہے۔ ان بادشاہوں نے اپنے لیے محلات بنائے جو سیاحوں کی توجہ کا ایک بڑا سبب ہیں۔

زبان

نوے فیصد سے زیادہ آبادی صوبہ پنجاب کے مقامی ہیں۔ اردو بڑی تعداد میں لوگوں کی طرف سے بولی اور سمجھی جاتی ہے جبکہ انگریزی کو پڑھے لکھے لوگ سمجھتے ہیں۔ ان لوگوں کی پنجابی بولیاں مختلف ہیں، سرائیکی ان میں سے ایک ہے۔ اس شہر میں عظیم بہاولپور ریاست، چولستان اور پنجاب کی مختلف ثقافتوں سے تعلق رکھنے والے لوگوں کا مرکب ہے۔ دوسری بڑی بولی جانے والی زبانوں میں ریاستی، ماجھی، باگڑی اور ہریانوی شامل ہیں۔ یہ زبانیں مختلف اضلاع کے مطابق بولی جاتی ہیں اور بہت سی دوسری پنجابی بولیوں کا مرکب ہیں۔ مثال کے طور پر، صحرائی علاقے میں ایک قابل ذکر آبادی پنجابی راجستانی مکس بولتی ہے، جو کل آبادی کا 9 فیصد ہے۔ بلوچی بھی بہت کم لوگ بولتے ہیں۔

لوگ

پنجاب کا حصہ ہونے کے ناطے بہاولپور کے لوگ راجہستان کے پنجابیوں سے مشابہت رکھتے ہیں۔ ان کی ساخت تیز خصوصیات کے ساتھ لمبا اور عضلاتی ہے۔ مقامی باشندے مٹی اور گھاس سے بنی بڑی گول شکل کی جھونپڑیوں میں رہتے ہیں۔ یہ جھونپڑیاں زیادہ تر ریت کی پہاڑیوں کی چوٹی پر بنائی گئی ہیں۔ وہاں رہنے کے نمونے خانہ بدوش ہیں۔ وہ موسمی حالات اور خوراک اور پانی کی دستیابی کے لحاظ سے جگہ جگہ سفر کرتے ہیں۔ ان کا رہن سہن دیہی لوگوں سے مشابہت رکھتا ہے۔ اہم قبیلے چاچڑ، لار، چنڑ، مہر، چاندنی اور بوہڑ ہیں۔

دستکاری

بہاولپور اپنے قالینوں، کڑھائی اور مٹی کے برتنوں کے لیے مشہور ہے۔ پنجاب حکومت نے ایسے حیرت انگیز ہینڈ ورک کو نوٹس دیتے ہوئے کرافٹ ڈویلپمنٹ سنٹر قائم کیا ہے جہاں سے دستکاری خریدی جا سکتی ہے۔ یہ دستکاری زیادہ تر چولستان کے علاقے میں تیار کی جاتی ہیں۔ اس شہر میں تیار کردہ کچھ یادگاروں کی فہرست درج ذیل ہے:

فلاسی: یہ اونٹ کے بالوں سے بنا ہوتا ہے اور اسے قالین یا دیوار پر لٹکانے کے طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے۔

گنڈی: سوئی کے نازک کام کے ساتھ سوتی کپڑے کا رنگین امتزاج۔ اسے کمبل، قالین یا بیڈ کور استعمال کیا جا سکتا ہے۔

چنگری: کھجور کے پتوں سے بنی ہے۔ انہیں دیوار پر لٹکانے والی آرائشی کے طور پر استعمال کیا جا سکتا ہے یا چپاتیوں کو ذخیرہ کرنے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔

خلتی: ایک قسم کا پرس جس میں کثیر رنگ کے دھاگے کا کام ہوتا ہے۔

آرٹ ورک: کرتہ، چادر وغیرہ پر خصوصی روایتی کڑھائی۔

شاپنگ سینٹرز

بہاولپور میں سیاحت کی مقدار کو مدنظر رکھتے ہوئے اور شہر کی ترقی کے لیے متعدد شاپنگ سینٹرز بنائے جا رہے ہیں۔ شاہی بازار، مچلی بازار، فرید گیٹ اور دی مال خریداری کے اہم علاقے ہیں۔ یہ بازار لاہور کے پرانے بازاروں جیسے انارکلی بازار وغیرہ سے مشابہت رکھتے ہیں۔ خریداری روزمرہ کی زندگی کا ایک اہم حصہ بن چکی ہے۔ بازار تاجروں اور کاریگروں کے لیے پرکشش ہیں۔ یہ کاریگر مسافروں اور سیاحوں کو ہر طرح کے فن اور دستکاری کو اچھی خاصی رقم میں فروخت کرتے ہیں۔

بہت سے دوسرے بڑے شہروں میں مالز کی مقبولیت کو دیکھتے ہوئے، بہاولپور کے مالز بھی ہر قسم کے صارفین کی ضروریات کو پورا کرتے ہیں۔ اہم شاپنگ مالز میں بوبی پلازہ، تکبیر شاپنگ مال، ٹائم اور پرنس شامل ہیں۔

تاریخی مقامات

بہاولپور کا ایک بڑا حصہ صحرائے چولستان پر مشتمل ہے یعنی تقریباً 15000 کلومیٹر 2۔ یہ شہر کے مشرق میں واقع ہے اور ہندوستان کے صحرائے تھر تک پھیلا ہوا ہے۔ ایک وقت تھا جب یہ علاقہ تقریباً چار سو قلعوں پر مشتمل تھا۔ ڈیراوڑ قلعہ واحد قلعہ تھا جس میں مستقل پانی کا سوراخ تھا جو اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ یہ وادی سندھ کی تہذیب کے زمانے کا ہے۔ اس وقت بارش کم ہونے کی وجہ سے اس علاقے میں زیادہ سے زیادہ کاشت کے لیے زیر زمین کنویں بنائے گئے تھے۔ پانی اونٹوں نے کھینچا تھا۔ اور اونٹوں کے ان راستوں کی حفاظت کے لیے قلعوں کی تین قطاریں بنائی گئیں جن کا آغاز پھولرا سے لیرہ تک، رخن پور سے اسلام گڑھ اور بلکانیر سے کپو تک تھا۔ ان میں سے کچھ قلعے 1000 قبل مسیح میں جپسم بلاکس اور مٹی کی دیواروں سے بنائے گئے تھے اور کئی بار تباہ اور دوبارہ تعمیر کیے گئے ہیں۔

نوادرات کے دیگر ٹکڑوں میں منڈے شاہد کے نام سے ایک قلعہ بھی شامل ہے جو بہاولپور اور ماروٹ قلعہ سے 50 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔ ماروٹ قلعہ اس کے باہر ایک جگہ کے لیے مشہور ہے جس کا نام ’’بیٹھک مولا علی‘‘ ہے۔

اس کے علاوہ شہر میں کئی محلات ہیں، جنہیں مقامی طور پر محل کہا جاتا ہے۔ کچھ مشہور میں نہر محل، گلزار محل، شملہ کھوتی اور دربار محل شامل ہیں۔ قدیم ترین دروازوں میں سے ایک فرید گیٹ بھی برقرار ہے اور اب ایک انتہائی مصروف بازار کے بیچ میں واقع ہے۔ یہ دروازہ واحد راستہ تھا جس سے اس کے حکمران شہر میں داخل ہوتے تھے۔

اس کے علاوہ بہاولپور میوزیم اور بہاولپور لائبریری میں تمغوں، ڈاک ٹکٹوں، سابق ریاست کے سکوں کا وسیع ذخیرہ موجود ہے۔ ان میں مخطوطات، لکڑی کے نقش و نگار، اونٹ کی کھال کی پینٹنگز اور اسلامی اور قبل از اسلام دور کے پتھر کے نقش و نگار بھی شامل ہیں۔ اسی شہر میں کچھ اہم رہنما دفن ہیں اور ان کے احترام کے لیے مقبرے بنائے گئے ہیں۔ چنن پیر کے مقبرے، مقبرہ یزمان اور حوض صاحب کے مقبرے کچھ اہم ترین ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!