تاریخ

Cholistan

چولستان

ہم میں سے بہت سے لوگوں نے صحرائے چولستان اور اس کے آس پاس کے علاقوں کے بارے میں سنا ہوگا لیکن معلومات کی کمی کی وجہ سے ہم پاکستان کے اس دور افتادہ علاقے کے بارے میں کچھ نہیں جانتے۔ چولستان ایک صحرا ہے اور تقریباً 26300 مربع کلومیٹر کے رقبے پر پھیلا ہوا ہے۔ یہ صحرائے تھر سے بھی جڑا ہوا ہے جو سندھ اور پھر ہندوستان تک پھیلا ہوا ہے۔ چولستان واحد صحرا ہے جو پاکستان اور ہندوستان دونوں میں موجود ہے۔

چولستان کے معنی صحرا کی سرزمین کے ہیں کیونکہ لفظ ‘چول’ ترکی زبان سے ماخوذ ہے جس کے معنی صحرا کے ہیں۔ چولستانی لوگوں کا طرز زندگی کچھ حد تک خانہ بدوش یا نیم خانہ بدوش قسم کا ہے، وہ ہمیشہ ایک جگہ سے دوسری جگہ جاتے ہیں اور اگر انہیں اپنے جانوروں کے لیے پانی اور چراگاہیں وافر مقدار میں ملیں تو ان کا قیام طویل ہوتا ہے۔

صحرائے چولستان کی ثقافت اس قدر مختلف اور خوبصورت ہے کہ یہ بالکل الگ ہے۔ مرد چمکدار رنگ کی پگڑیاں پہنتے ہیں اور خواتین بہت ہی سمجھدار کڑھائی کے ساتھ چمکدار رنگ کے کپڑے پہنتی ہیں جو بنیادی طور پر اس علاقے کی خاصیت ہے۔ آمدنی کا سب سے بڑا ذریعہ صرف مویشی پالنا اور اس سے متعلقہ کاروبار ہے۔ دودھ، مکھن اور جانوروں کی چربی کی طلب اسی ذریعہ سے پوری کی جاتی ہے۔ اس علاقے میں تقریباً 1.6 ملین مویشی پائے جاتے ہیں اور اگر حکومت اس علاقے کی پیداواری صلاحیت کو بڑھانے کے لیے خصوصی کوششیں کرے۔ سردیوں میں چونکہ جانوروں کی تعداد کم ہوتی ہے اور موسم سخت ہو جاتا ہے، وہ مختلف فنی دستکاری جیسے کپڑے کی بُنائی، مٹی کے برتنوں اور چمڑے کے کام کی طرف مائل ہو جاتے ہیں۔ مٹی کے برتنوں کی صنعت یہاں اپنی بھرپور مٹی اور مختلف مصنوعات جیسے گھڑے، سورہیاں، شیشے اور پیالوں کی وجہ سے فروغ پا رہی ہے۔

اس علاقے میں ایک اعلیٰ معیار کی قالین کی اون تیار کی جاتی ہے۔ اس سے خوبصورت قالین، قالین اور دیگر موسم سرما کی اشیاء تیار کی جاتی ہیں۔ سخت سردیوں کی طلب کو پورا کرنے کے لیے کمبل بھی بنائے جاتے ہیں کیونکہ درجہ حرارت نقطہ انجماد تک گر جاتا ہے۔ ریونیو حاصل کرنے کے لیے بھیڑوں سے حاصل کی گئی اون فروخت کی جاتی ہے۔ اس خطے میں مختلف قسم کی ٹیکسٹائل مصنوعات تیار کی جاتی ہیں مثلاً کھدر کے کپڑے اور عمدہ کوالٹی کے کھدر بیڈ کلاتھ یہاں بنائے جاتے ہیں۔

وہاں سرائیکی زبان غالب ہے جو لہندا بولی یا لہندا زبانوں کی گروپ بندی کا ذائقہ ہے۔ بہت سے صوفی شاعر اور اولیاء اس خطے سے تعلق رکھتے ہیں جیسے خواجہ غلام فرید جنہوں نے سرائیکی زبان میں بہت ساری شاعری کی اور یہاں کی ثقافت کو پروان چڑھانے میں مدد کی۔

دراوڑ قلعہ صحرائے چولستان کا اہم نشان ہے جو ڈیرہ نواب صاحب سے 48 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے (ایک زمانے میں صدر مقام اور ریاست بہاولپور کے حکمرانوں کی نشست تھی)۔ اس علاقے کو کبھی دریائے گھگر سے سیراب کیا جاتا تھا جسے اب پاکستان میں ہاکرہ کہا جاتا ہے اور ویدک دور میں سرسوتی کے نام سے جانا جاتا ہے۔ سوکھے ہوئے دریا کے 500 کلومیٹر کے ساتھ ساتھ 400 سے زیادہ آثار قدیمہ کے مقامات ہیں، جو 4500 سال قبل سندھ کی تہذیب سے تعلق رکھتے ہیں اور قلعہ دراوڑ کے گرد جمع ہیں۔ صحرا میں سالانہ اوسطاً 5 انچ بارش ہوتی ہے اور یہاں کاشت کاری بہت کم ہوتی ہے۔ دراوڑ کا قلعہ سیاحوں کی توجہ کا ایک بڑا مرکز ہے اور یہ اپنے ورثے اور دنیا کی تاریخ کی قدیم ترین تہذیبوں، سندھ کی تہذیب سے جڑے ہونے کی وجہ سے بہت سے غیر ملکیوں کو اپنی طرف متوجہ کرتا ہے۔ سیاحوں کی توجہ کا مرکز بننے سے پہلے، قلعہ دراوڑ نواب آف بہاولپور کی رہائش گاہ تھا اور قلعہ دراز میں نواب کے کوارٹرز کی باقیات اب بھی موجود ہیں۔

چولستان دشت میں سفر کرتے ہوئے قلعوں کی ایک زنجیر نظر آتی ہے، جو 29 کلومیٹر کے وقفے سے بنائے گئے تھے، جو غالباً اونٹوں کے قافلے کے راستوں کے لیے محافظ چوکیوں کے طور پر کام کرتے تھے۔ ان قلعوں کی تین قطاریں تھیں۔ قلعوں کی پہلی لائن پھولرا سے شروع ہو کر لیرہ پر ختم ہوئی، دوسری رخن پور سے اسلام گڑھ تک اور تیسری بلکانیر سے خپلو تک۔ وہ سب اب کھنڈرات میں ہیں، اور آپ دیکھ سکتے ہیں کہ وہ جپسم بلاکس اور مٹی کی دوہری دیواروں سے تعمیر کیے گئے تھے۔ ان میں سے کچھ 1000 قبل مسیح کے ہیں، اور کئی بار تباہ اور دوبارہ تعمیر کیے گئے تھے۔

دراوڑ قلعے کے قریب، ٹی ڈی سی پی چولستان جیپ ریلی کا انعقاد 2005 سے ہر سال کیا جاتا ہے۔ اس ریلی میں 100 سے زیادہ تربیت یافتہ صحرائی ڈرائیورز جن میں ترمیم شدہ کاریں شامل ہیں اور دنیا بھر سے لاکھوں لوگ اسے دیکھنے آتے ہیں۔ حکومت پاکستان کی جانب سے یہ ایک بہت بڑا اقدام تھا اور اس اقدام نے حقیقت میں اس سرزمین کو پاکستان کے حصے کے طور پر متعارف کرایا ہے اور اس کی اپنی ایک عظیم ثقافت ہے۔

جغرافیہ کی بات کی جائے تو پاکستان انتہائی بابرکت ہے۔ پاکستان دنیا کے ان چند ممالک میں سے ایک ہے جس میں پہاڑی چوٹیاں ہیں، سمندر کا ایک بڑا حصہ اس سے جڑا ہوا ہے، سال بھر گرم پانیوں تک رسائی اور نسبتاً چھوٹے رقبے میں صحرا ہیں۔ ان تمام برکات کے ساتھ پاکستان آج بھی تیسری دنیا کا حصہ ہے اور اتنے رقبے کے باوجود پہلی دنیا کے تمام ممالک اس سے بہت کم ہیں۔ ہمارا منفرد ورثہ اور خاص طور پر صحراؤں کی ثقافت اور طرز زندگی پاکستان کے لیے ایک بہت ہی منفرد فروخت کی تجویز ہو سکتی ہے اور پاکستانی عوام صرف ان جگہوں پر سیاحت کو فروغ دے کر بہت زیادہ آمدنی حاصل کر سکتے ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!