تاریخ

Lahore – In its modern face

لاہور - اپنے جدید انداز میں

لاہور جو کبھی ‘مشرق کا پیرس’ کہلاتا تھا آج بھی خاص طور پر پچھلے کچھ سالوں میں ہر کسی کی توجہ کا مرکز بنا ہوا ہے۔ موجودہ لاہور کو تین خطوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ پرانا شہر کم از کم ایک ہزار سال سے موجود تھا اور سرکلر روڈ کے اندر اور اس کے آس پاس واقع ہے۔ دوسرا خطہ بنیادی طور پر لاہور ہے جسے انگریزوں نے بنایا تھا، جو میو ہسپتال سے مشرق میں کینال کے کنارے تک پھیلا ہوا ہے۔ تیسرا خطہ لاہور ہے جس میں مختلف پوش علاقے شامل ہیں جیسے کہ بحریہ ٹاؤن، ڈیفنس ہاؤسنگ اتھارٹیز اور کئی دوسرے علاقے جو کہ برصغیر کی تقسیم کے بعد تیار ہوئے ہیں۔

تاریخ ہمیں بتاتی ہے کہ لاہور کا نام ہندو دیوتا رام کے بیٹے لاوا کے نام پر رکھا گیا تھا، جس نے شہر کی بنیاد رکھی تھی۔ تاہم لاہور کی ریکارڈ شدہ تاریخ چند ہزار سال سے زیادہ نہیں ہے۔ لاہور پاکستان کا دوسرا بڑا شہر اور پنجاب کا صوبائی دارالحکومت بھی ہے۔ اپنے جغرافیائی محل وقوع کی اہمیت کے پیش نظر لاہور ہمیشہ سے کسی نہ کسی حوالے سے سب کی نگاہوں کا مرکز رہا ہے۔ لاہور اپنے مشہور اور تاریخی مقامات جیسے پنجاب یونیورسٹی، شالامار گارڈن، جہانگیر کا مقبرہ، جناح گارڈنز، جلو پارک، اقبال پارک اور چھانگا مانگا جنگلات کے لیے مشہور ہے جو پورے پاکستان سے سیاحوں کو اپنی طرف متوجہ کرتے ہیں۔ لاہور کو اولیاء کا شہر بھی کہا جاتا ہے۔ داتا گنج بخش مزار پر سال بھر ملک بھر سے ہزاروں لوگ آتے ہیں۔

جدید لاہور کا ظہور

جدید لاہور واقعی پچھلے کچھ سالوں میں ابھرا ہے، جس میں گلبرگ اور ڈیفنس کے اپ ٹاؤن رہائش گاہوں میں جدید عمارتیں، شاپنگ پلازے، فائیو سٹار ہوٹل، وسیع راستے اور بلیوارڈ شامل ہیں۔ ایک قدیم پنجابی کہاوت ہے کہ ’’جس نے لاہور نہیں دیکھا، وہ پیدا نہیں ہوا۔ جدید لاہور کی لبرٹی اور گلبرگ مارکیٹ بھی خریداری کے لیے کافی مشہور ہیں۔ دیگر جدید مقامات میں دی مال آف لاہور، پیس، پی سی اور ایم ایم عالم روڈ شامل ہیں جو مشہور مین بلیوارڈ کے متوازی چلتی ہے، ایک تجارتی مرکز ہے جس میں بہت سے ریستوراں، فیشن بوتیک، شاپنگ مال، بیوٹی سیلون اور ڈیکور اسٹورز ہیں۔ گوالمنڈی کی فوڈ سٹریٹ کے برعکس، جو پرانے لاہور میں واقع ہے اور اسے ایک بجٹ ڈن آؤٹ سمجھا جاتا ہے، ایم ایم۔ عالم روڈ جدید لاہور میں مختلف قسم کے چمکدار ہائی کلاس ریستوراں کی میزبانی کرتا ہے۔ جدید لاہور میں سپر مارکیٹ بھی ایک ابھرتا ہوا رجحان ہے۔ جدید لاہوری لوگ جنرل یا ڈیپرٹمنٹل اسٹورز کے بجائے سپر مارکیٹوں سے خریداری کو ترجیح دیتے ہیں۔ مشہور سپر مارکیٹیں ہائپر اسٹار، میٹرو، مکرو، الفتح، ایچ کے بی، چن ون، جلال سنز، ای اینڈ ایم اور پوٹ پوری ہیں۔

جدید لاہور میں، کچھ علاقے واقعی اہمیت کے مرکز کے طور پر ابھرے ہیں جیسے ڈیفنس ہاؤسنگ اتھارٹی، بحریہ ٹاؤن، ماڈل ٹاؤن، لاہور کینٹ۔ بحریہ ٹاؤن خود لاہور کے اندر سب سے انقلابی جدید ترقی ہے۔ کچھ لوگ اسے شہر کے اندر ایک شہر کہتے ہیں جو اپنے رہائشیوں کو بین الاقوامی معیار کا بنیادی ڈھانچہ، سہولیات اور خدمات فراہم کرتا ہے۔ بحریہ ٹاؤن لاہور میں ہر وہ چیز شامل ہے جو لاہوری طرز زندگی میں حصہ ڈالتی ہے اور تفریحی، تجارتی، انفراسٹرکچر اور رہائشی سمیت زندگی کے تمام شعبوں میں عالمی معیارات پیش کرتی ہے۔

جغرافیائی محل وقوع

جغرافیائی طور پر لاہور کی سرحد شمال اور مغرب میں ضلع شیخوپورہ، مشرق میں واہگہ اور جنوبی ضلع قصور سے ملتی ہے۔ دریائے راوی لاہور کے شمالی جانب بہتا ہے۔ لاہور شہر کا کل رقبہ 404 مربع کلومیٹر ہے، لیکن شہر اب بھی کافی شرح سے ترقی کر رہا ہے۔ یہ شہر 31°15 اور 31°45 شمالی عرض البلد اور 74°01 اور 74°39 مشرقی طول بلد کے درمیان واقع ہے۔

آب و ہوا

جہاں تک آب و ہوا اور موسم کا تعلق ہے، لاہور مئی، جون اور جولائی کے مہینوں میں شدید ہوتا ہے جب درجہ حرارت 45-50 ڈگری سیلسیس تک بڑھ جاتا ہے جو سال کا گرم ترین وقت ہوتا ہے۔ جولائی کے اختتام کے بعد مون سون کا موسم پورے شہر کے ساتھ ساتھ صوبے میں شدید بارشوں کے ساتھ شروع ہوتا ہے۔ دسمبر، جنوری اور فروری سرد ترین مہینے ہوتے ہیں جب درجہ حرارت بعض اوقات -1 ڈگری سیلسیس تک گر جاتا ہے۔

لائف اسٹائل

جدید لاہوری لوگ جوش اور جذبے سے بھرے ہوئے ہیں اور اپنی زندہ دلی اور کھانے پینے اور سفر سے محبت کے لیے مشہور ہیں۔ ان کا اپنا طرز زندگی ہے جو باقی پاکستانیوں سے منفرد ہے۔ وہ صبح دیر سے سوتے ہیں اور رات کو جاگتے رہتے ہیں۔ لہٰذا لاہور کی رات کی زندگی دن سے زیادہ جاندار ہے۔ ہر عمر کے لوگ دوستوں کے ساتھ گھومتے پھرتے پائے جاتے ہیں اور کہیں جاتے ہوئے انہیں دوستوں کے ساتھ کھانے سے لطف اندوز ہونے کے لیے اچھے ریستوراں کے سودے ملتے ہیں۔ آج کل کے نوجوان وہ ہیں جو اپنے دوستوں کے ساتھ شامیں گزارنا پسند کرتے ہیں۔ شام کے وقت شہر کی سرگرمیاں اپنے عروج پر ہونے کے ساتھ ہی سڑکیں بازاروں میں جانے والے یا اپنے دوستوں یا رشتہ داروں سے ملنے والے موٹرسائیکلوں سے بھری پڑی ہیں۔ جب لوگ کام سے واپس آتے ہیں تو وہ اپنے گھر والوں کو اپنے گھروں کی دیواروں سے باہر کی دنیا سے لطف اندوز ہونے کے لیے باہر لے جاتے ہیں۔ جیسے ہی گھڑی 9 بجاتی ہے، رش ان ریستورانوں کی طرف موڑ دیا جاتا ہے جو لاہور میں ریسٹورنٹ ڈیلز پیش کرتے ہیں۔ چونکہ لوگ باہر کا کھانا کھانا پسند کرتے ہیں وہ اس بات سے بھی آگاہ ہیں کہ وہ کیا خرچ کر رہے ہیں۔ جب لوگوں کو کوئی اچھی جگہ ملتی ہے جو ان کے کھانے پر رعایت پیش کرتی ہے، تو وہ اسے آزمانے میں کوئی وقت ضائع نہیں کرتے۔

لاہور مختلف قسم کی سستی اور موثر پبلک ٹرانسپورٹیشن بھی پیش کرتا ہے اور آپ میٹرڈ لوکل ٹیکسیوں، انٹرا سٹی اور انٹر سٹی بسوں اور ہوٹل سے نجی کار کرایہ پر لینے والی خدمات میں سے انتخاب کر سکتے ہیں۔ شہر کو متعدد خوبصورت واکنگ پارکس، متعدد ہائی کلاس جم اور سیلون سے بھی نوازا گیا ہے۔ یہاں مشہور شیشہ بارز ہیں (جو ذائقہ دار تمباکو کے پائپ پیش کرتے ہیں جو عام طور پر مشرق وسطیٰ کے ممالک میں پائے جاتے ہیں)۔

تہوار اور تقریبات

جدید لاہوری فیشن اور موسیقی میں کافی حد تک ہیں یہی وجہ ہے کہ لاہور میں بہت سے کنسرٹ اور فیشن شوز منعقد ہوتے ہیں جن میں مختلف فنکار، ماڈل اور گلوکار شرکت کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ لاہور میں مختلف نمائشیں اور ثقافتی شوز بھی ہوتے ہیں اور لوگوں کا ایک بہت بڑا اجتماع دیکھنے کو ملتا ہے۔ لاہوری بھی بسنت کا تہوار مناتے ہیں اور اس تہوار کے دوران سینکڑوں پتنگیں آسمان پر اڑتی دیکھی جا سکتی ہیں۔ شادیاں بھی پوری روشنی اور موسیقی کے ساتھ منائی جاتی ہیں۔ سنتوں کے عرس میں بھی ہر سال ہزاروں لوگ مذہبی طور پر شرکت کرتے ہیں۔ حضرت شاہ حسین کے سالانہ عرس کی تقریبات کا آغاز، جسے میلہ چراغاں بھی کہا جاتا ہے، ہر سال شالیمار گارڈن میں منعقد ہوتا ہے اور تقریباً 500,000 لوگ اس میں شرکت کرتے ہیں۔ لہٰذا لاہوری لوگ پوری عقیدت کے ساتھ تمام وینٹوں میں شرکت کرتے ہیں اور ان میں سے ہر ایک سے لطف اندوز ہونے کی کوشش کرتے ہیں۔

زبان

جہاں تک زبان کا تعلق ہے، اشرافیہ اور اعلیٰ متوسط ​​طبقے کے جدید لاہوری زیادہ تر اردو کے ساتھ ساتھ انگریزی بھی بولتے ہیں جبکہ کارپوریٹ طبقہ ہمیشہ انگریزی زبان کو ترجیح دیتا ہے جب کہ پنجابی اب بھی خاندان کے بزرگ بولتے ہیں۔

ملبوسات

جہاں تک لباس میں فرق کا تعلق ہے، لوگ عام طور پر نیم مغربی لباس پہنتے ہیں جبکہ گھر میں مقامی لباس پہنا جاتا ہے۔ جدید لاہوری لوگ اب بھی کرتہ اور شلوار جیسے روایتی لباس پہنتے ہیں۔ تاہم لاہور کے جدید رجحانات نے مقامی لباس میں مختلف نئے ڈیزائن شامل کیے ہیں۔ خواتین عام طور پر رنگین لباس پہنتی ہیں۔ ساڑھی اعلیٰ طبقے کی خواتین بھی پہنتی ہیں، لیکن یہ بہت عام نظر نہیں آتی۔ ڈیزائنر ملبوسات بھی اشرافیہ اور اعلیٰ متوسط ​​طبقے میں کافی مقبولیت حاصل کر رہے ہیں۔ کچھ مشہور ڈیزائنرز کی دکانیں ایچ ایس وائی، ماریہ بی، قیصریہ، نور بنارسی، عامر عدنان، جنید جمشید، نشاط، شاہد آفریدی، مینز اسٹور اور وارڈروب ہیں۔

کھانے کی عادتیں

جدید لاہور کا طرز زندگی پرانے لاہور سے کافی مختلف ہے، نہ صرف لباس بلکہ کھانے پینے کی عادات میں بھی۔ لاہوری لوگ کھانے کے شوقین ہیں اسی لیے آپ کو گلیوں اور قصبے کے ہر کونے میں ریسٹورنٹ نظر آئے گا۔ جدید لاہوری روایتی کھانوں کی بجائے فاسٹ فوڈ یعنی کے ایف سی، میکڈونلڈز، ہردیس اور دیگر کیفے کو ترجیح دیتے ہیں۔ لوگ سڑک کے کنارے کھانے کی بجائے 4-5 اسٹار ہوٹلوں کی طرف زیادہ مائل ہیں۔ تاہم، لوگ اب بھی دیسی کھانے کے لیے فوڈ سٹریٹ اور دیگر مختلف مقامی ریستوراں جاتے ہیں۔

نتیجہ

مختصراً، لاہور ایک جدید ترقی پسند شہر ہے جو ایک تاریخی پرانے لاہور پر بنایا گیا ہے، تاہم، لاہوریوں نے نئی اور جدید ثقافت کو اپنانے کے باوجود اپنی روایات اور روایات کو فراموش نہیں کیا۔ وہ اب بھی اپنے پرانے رسم و رواج پر فخر محسوس کرتے ہیں اور اس کا حصہ بننا پسند کرتے ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!