تاریخ

Timur’s Invasion

تیمور کا حملہ

تیمور لین ازبک منگول سردار تھا، اور چنگیز خان کا مبینہ اولاد تھا اور اس نے اسلام قبول کیا تھا۔ 1380 میں، جب فیروز شاہ کے جانشینوں میں جھگڑا ہوا اور سلطنت کو تباہی کے دہانے پر پہنچا دیا، اس نے شمال سے ہندوستان پر حملہ کیا اور دہلی کی مرکزی حکومت کو تباہ کر دیا۔ 1398 میں، اس نے دہلی کی ترک سلطنت کو تباہ کر دیا اور دہلی کی جنگ سے پہلے کم از کم 50،000 اسیروں کو پھانسی دینے کا حکم دیا، اور جنگ کے بعد تقریبا 100،000 دہلی کے باشندوں کو غلام بنا لیا گیا۔

ایک اندازے کے مطابق تیمور کی فوج نے تقریباً 100,000 مقامی لوگوں کو قتل کیا ہو گا۔ تیمور نے گنگا تک کوچ کیا لیکن مغربی ایشیا کی پریشانیوں نے اسے واپس لوٹا دیا۔ دہلی پر حملے اور لوٹ مار کے بعد، تیمور شمالی ہندوستان میں کثیر تعداد میں ازبک جین چھوڑ کر سمرقند چلا گیا۔ تیمور اور اس کے منگول ترک فوجوں نے ان حملوں میں فارس، خراسان، جرجان، افغانستان، آذربائیجان پر قبضہ کر لیا، اسی لیے تیمرلین کو اکثر ‘تباہی کا شہزادہ’ کہا جاتا تھا۔

تیمور 33 سال کی عمر میں چغتائی ترکوں کا رہنما بنا، اس کے بعد اس نے عالمی فتح کا تصور پیش کیا۔ فارس، افغانستان اور میسوپوٹیمیا کی فتح کے بعد اس نے ہندوستان کا رخ کیا۔ 1398 کے اوائل میں، اس نے اپنے پوتے پیر محمد کو بھیجا جو 30,000 گھوڑوں کی فوج کے ساتھ آگے بڑھا۔ اس نے دریائے سندھ کو عبور کیا اور اُچ اور ملتان پر قبضہ کر لیا۔ اگست 1398 میں، تیمور نے خود 92،000 گھڑ سواروں کی ایک بڑی فوج کے ساتھ ہندوستان کی طرف کوچ کیا۔ وہ دہلی پہنچا، تغلق کے گھر کا آخری حکمران محمد شاہ دہلی کا سلطان تھا۔ تیمور 1399 میں ایک فاتح کے طور پر دہلی شہر میں داخل ہوا۔ انہوں نے بھاری تاوان کی ادائیگی کی شرط پر شہریوں کی جانیں بچانے پر رضامندی ظاہر کی۔ لیکن سامان اکٹھا کرنے میں سپاہیوں کے طرز عمل نے ہندوؤں کو مزاحمت پر مجبور کیا اور تیمور نے پھر عام قتل عام کا حکم دیا اور دہلی کو تباہی میں بدل دیا۔

تیمور نے دہلی میں قیام نہیں کیا، اس نے 15 دن کے بعد بڑی تعداد میں غلاموں اور مال غنیمت کے ساتھ دہلی چھوڑ دیا۔ اس نے خضر خان کو ملتان، لاہور اور دیپالپور کا گورنر مقرر کیا اور اپنے پیچھے ہولناکی اور تباہی کے ساتھ ساتھ قحط اور وبا کی داستانیں چھوڑ گئے۔ جب تیمور ہندوستان سے نکلا تو پورا ہندوستان افراتفری اور انتشار کا شکار تھا۔ اناج کے ذخیروں اور کھڑی فصلوں کی پوری تباہی کے نتیجے میں قحط اور وبا آئی اور دہلی کو تباہی سے نکلنے میں نصف صدی سے زیادہ کا عرصہ لگا۔ ہزاروں بے گناہ لوگ بے رحمی سے مارے گئے، بہت سے شہر اور بڑے دیہات خاکستر ہو گئے، صوبوں کی انتظامیہ مکمل طور پر باہر پھینک دی گئی۔ بدعونی کہتے ہیں، ’’دہلی بالکل برباد ہو گئی تھی اور اس کے وہ لوگ جو باقی رہ گئے تھے جب کہ پورے دو مہینے تک شہر میں پرندے نے بازو نہیں ہلایا۔

تیمور کے حملے کے اثرات

تیمور کے حملے نے برصغیر کی تاریخ پر سیاسی، ثقافتی اور اقتصادی اثرات مرتب کیے ہیں۔ ہندوستان میں تیمور نے شہر کی تباہی اور لوٹ مار کی، اس کے پیچھے قحط اور وبا پھیلی۔ وہ اپنے ساتھ بے پناہ دولت لے گیا اور لوگوں کو بالکل غریب اور بے سہارا چھوڑ دیا۔ دہلی نے اس وقت تک اپنی جگہ دوبارہ حاصل نہیں کی جب تک کہ یہ عظیم مغل سلطنت کے تحت نہ آجائے۔

تیمور کے حملے نے ہندوستان میں تغلق سلطنت کو شدید دھچکا پہنچایا۔ تغلق خاندان کی شکست کو ایسا دھچکا لگا کہ وہ زیادہ دیر قائم نہ رہ سکا۔ تیمور کے حملے کے بعد پورے شمالی ہندوستان میں افراتفری اور افراتفری مچ گئی۔ دہلی تباہ حال اور تقریباً آباد ہو چکا تھا۔ وہاں کے باشندوں کو قحط اور وبا کا سامنا کرنا پڑا جو حملہ آور فوج کے ہاتھوں اناج کے ذخیروں اور کھڑی فصلوں کی ہول سیل تباہی تھی۔ ہزاروں مکینوں کی لاشوں سے شہر کی ہوا اور پانی کی سپلائی کی آلودگی کی وجہ سے وبا پھیلی تھی۔

تیمور کے حملے نے برصغیر میں سماجی، سیاسی اور معاشی عدم مساوات کو جنم دیا۔ ان میں سے ہزاروں کو بے رحمی سے قتل کیا گیا اور ہزاروں بے گھر ہو گئے۔ اس طرح ملک نے ایک افراتفری کی تصویر پیش کی۔ تیمور کے حملے نے ملک میں بڑے پیمانے پر انتشار پھیلا دیا۔ سلطنت کے صوبوں میں انتشار پھیل گیا۔ دہلی مکمل طور پر مفلوج ہو گیا۔ قحط اور وبا نے ہولناکیوں میں اضافہ کیا جس نے انسانوں اور مویشیوں کو تباہ کر دیا اور زراعت کو معطل کر دیا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!