تاریخ

Society under Mughals

مغلوں کے ماتحت معاشرہ

مغل معاشرہ ایک اہرام کی مانند تھا جس میں سب سے اوپر شہنشاہ تھا، اس کے بعد متوسط ​​طبقہ تھا جو انتہائی معمولی آبادی تھی اور آخری اور سب سے زیادہ مرتکز غریب طبقہ تھا۔ شہنشاہ اگرچہ مقامی برادری سے تعلق نہیں رکھتا تھا، بلکہ دوسروں کے درمیان غیر متوازی حیثیت کے ساتھ ایک آمر کی طاقت کا لطف اٹھاتا تھا.

مغل بادشاہ کے بعد ریاست کا وہ طبقہ تھا جو ریاست کی اہم ترین ملازمتوں کے علمبردار تھے اور عام طور پر وہ اپنے لیے اہم عہدوں پر اجارہ داری رکھتے تھے۔ ریاست کا سب سے زیادہ فائدہ اٹھانے والا طبقہ امرا کاتھا۔ انہوں نے مراعات حاصل کیں اور اسراف کی زندگی گزاری۔ ان کا لباس اور کھانا سب سے مہنگا تھا اور نہ صرف اہلکار بلکہ ان کے اہل خانہ اور رشتہ دار بھی ریاست کے وسائل کو اپنے مطلب کے لیے استعمال کرتے تھے۔ شرافت کسی حد تک پہلے کے شہنشاہوں کے قبضے میں رہی لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ حکمرانوں کی دلچسپی ریاستی معاملات کی بجائے اپنے ذاتی معاملات کی طرف بڑھ گئی ۔

متوسط ​​طبقہ پیشہ ور افراد اور تاجروں پر مشتمل تھا۔ وہ ہنرمند طبقہ تھے جو پرتعیش زندگی نہیں تو کامیاب زندگی گزارنے کے قابل تھے۔ ان کے شہنشاہ اور امرا سے اچھے تعلقات تھے اور ان کا تعلق ریاست کی مقامی آبادی سے تھا۔ سماجی اہرام کا سب سے پست اور محروم طبقہ غریب طبقہ تھا۔ یہ طبقہ آبادی کے بڑے حصے پر مشتمل تھا اور عوام میں موجود تھا۔ یہ طبقہ سماجی طور پر پسماندہ تھا اور اسے زندگی کی بہت قلیل سہولیات میسر تھیں۔ ان کے پاس خوراک اور کپڑے ناکافی تھے۔ انہیں چھوٹی موٹی ملازمتیں تفویض کی گئیں جس میں کام کے طویل اوقات اور بہت کم اجرت کے ساتھ بھاری جسمانی کام حاصل کیا گیا۔ وہ کسان تھے اور مالی طور پر محروم رہتے تھے۔

مغل حکمران تعلیم کی سرپرستی کرتے تھے اور ہندوستان میں بہت سے تعلیمی ادارے قائم کیے گئے حالانکہ یہ محض شاہی دربار تک محدود تھا لیکن متوسط ​​طبقے کے بچے بھی علم حاصل کرنے کے قابل تھے۔ تعلیمی ادارے شاہی خاندانوں اور متوسط ​​طبقے کی لڑکیوں کو بھی تعلیم دینے کے قابل تھے۔

مغل حکومت کے تحت ہندوستانی معاشرہ اعتدال پسند زندگی بسر کرتا تھا اور متوسط ​​طبقے کے تناظر میں بہت اسراف نہیں تھا۔ چونکہ ہندو اکثریت میں تھے اس لیے ستی اور جوہر جیسی روایات رائج تھیں۔ بچوں کی شادی، جہیز اور دوسری شادی کی ممانعت کا کلچر اتنا مضبوط تھا کہ ہندوستان میں رہنے والے مسلمان بھی ان رجحانات سے متاثر ہوئے۔ جلال الدین اکبر نے اس وقت کے تمام موجودہ مذاہب کی اچھی چیزوں کی ترکیب سے معاشرے میں سماجی اصلاحات لانے کی کوشش کی لیکن عوام اس اصلاح پر عمل کرنے سے گریزاں تھے جسے دین الٰہی کے نام سے جانا جاتا ہے۔ اورنگ زیب نے ریاست میں سماجی اصلاحات بھی کیں لیکن اس کی بنیاد سنی راسخ العقیدہ اور دوسرے مذاہب سے تعلق رکھنے والے لوگوں کو نشانہ بنایا گیا۔

مغل اپنے ساتھ فارسی کلچر اور فارسی کلچر لے کر آئے جس سے ہندوستانی واقف نہیں تھے۔ اکبر کے دور میں بہت سے کام فارسی زبان میں ہو رہے تھے جیسے عین اکبری وغیرہ۔ اکبر کے بعد فارسی ادب جہانگیر کے دور میں جاری رہا۔ ہندی شاعری بھی مغلیہ دور میں جہانگیر اور شاہ جہاں کے دور میں پروان چڑھی۔ تاہم اورنگ زیب کے دور حکومت میں اس کی بہت حوصلہ شکنی کی گئی۔ موسیقی کو ہندوؤں کے مذہب کی اہم خصوصیت ہونے کی وجہ سے مغل حکمرانوں نے بہت زیادہ سرپرستی دی تھی۔

مغلوں نے غلاموں کو بھی رکھا تھا جو مقامی لوگوں سے لیے گئے تھے یا غلاموں کے تاجروں سے خریدے گئے تھے۔ غلامی کا یہ رجحان دہلی سلطنت کے سلاطین کو ورثے میں ملا تھا۔ مقامی آبادی کا مغل بادشاہ سے براہ راست رابطہ نہیں تھا اور ہندوستان میں مسلمانوں کے پورے دور حکومت میں۔ عوام نے حکمران کو ڈپٹ اور ریونیو اکٹھا کرنے والا تسلیم کیا۔ تاہم معاشرہ فنون لطیفہ اور ادب اور مذہب کے نئے رجحانات سے بہت زیادہ متاثر ہوا۔ مغل فن تعمیر غیر ملکی رجحانات کے ساتھ مقامی آرٹ کی ترکیب تھی۔ حکمرانوں نے اپنے درباروں میں رقص و موسیقی کے مقامی ہندوستانی فن کو بھی اپنایا اور مقامی کاریگروں کی بھی بہت حوصلہ افزائی کی۔

یہ دیکھا جا سکتا ہے کہ مغلوں کے دور میں ہندوستانی معاشرہ مذہب اور دولت کی بنیاد پر بٹا ہوا تھا لیکن مقامی لوگ کچھ مشترکہ روایات رکھتے تھے۔ مغلوں نے فن، ادب، کھانے پینے اور لباس کے حوالے سے معاشرے پر بہت بڑا اثر چھوڑا۔ برصغیر میں یورپیوں کی آمد کے ساتھ ہی، پورے معاشرے کو معیشت کے حوالے سے بہت بڑا نقصان پہنچا کیونکہ وہ اپنی سابقہ ​​ملازمتوں سے محروم ہو گئے تھے۔ لیکن یورپیوں نے مغلوں کے انتظامی ڈھانچے کو بھی کچھ ترامیم کے ساتھ اپنایا اس لیے یہ نتیجہ اخذ کیا جا سکتا ہے کہ مغلوں نے ہندوستانی سرزمین پر بہت اثر چھوڑا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!