تاریخ

Nadir Shah’s Invasion

نادر شاہ کا حملہ

نادر شاہ کے ہندوستان پر حملے نے ہندوستان کی مغل تاریخ پر سب سے زیادہ ہنگامہ خیز اور تباہ کن اثرات چھوڑے۔ اس نے 1739 میں ہندوستان پر حملہ کیا۔ نادر شاہ اپنے وحشیانہ اور غیر انسانی رویے کے لیے جانا جاتا ہے جس نے مغل حکومت کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا۔ اس حملے کو اس دور کی زبردست آفات میں سے ایک کے طور پر یاد کیا جاتا ہے۔

مغلوں کی طاقت اس وقت زوال پذیر تھی اور مرکزی طاقت کا دور دراز کے صوبوں پر کوئی کنٹرول نہیں تھا جس کی وجہ سے مغل حکمرانوں کے دشمنوں کے لیے بیرونی حملے آسان ہو گئے تھے۔ نادر شاہ اس وقت فارس کا حکمران بنا جب صفوی خاندان کے آخری حکمران شاہ طہماسپ کا 1736 میں انتقال ہوا۔ چونکہ نادر شاہ کا تعلق افشار قبیلہ خسران سے تھا جب فارس میں بطور بادشاہ اس کی حکمرانی کا آغاز ہوا تو نادر شاہ نے افشار خاندان کی بنیاد رکھی۔ اس سے پہلے کہ نادر شاہ تخت پر چڑھ گیا اس نے مغل اور صفوید کے اثر و رسوخ کے قریب بہت سے علاقوں پر قبضہ کر لیا اور ان کو متاثر کیا۔ مغل اور صفوی سلطنتوں کے درمیان سفارتی تعلقات اس وقت خراب ہونے لگے جب نادر شاہ تخت پر بیٹھا تھا۔ مغل بادشاہ نے فارسی دربار کے ساتھ سفیروں کا تبادلہ روک دیا جسے نادر شاہ نے بہت بڑی توہین سمجھا۔

نادر شاہ کے تخت پر فائز ہونے کے بعد اس نے ترکوں اور روسیوں کی فتوحات ترک کر دیں اور قندھار اور کابل کے مغل صوبوں میں دلچسپی لی۔ 24 مارچ 1738 کو اس نے قندھار پر قبضہ کیا اور پھر غزنی اور کابل کی طرف پیش قدمی کی۔ جب نادر شاہ نے ہندوستان کی طرف پیش قدمی شروع کی تو محمد شاہ دہلی پر حکومت کر رہا تھا۔ اس زمانے میں مغل انتظامیہ بہت کمزور اور سست تھی۔ ایک اور واقعہ جس نے نادر شاہ کو ہندوستان پر حملہ کرنے پر مجبور کیا وہ یہ تھا کہ ہندوستان کے شہنشاہ نے مغلیہ سلطنت میں پناہ لینے والے فراریوں کو واپس کرنے سے انکار کردیا۔ ان سب باتوں کو توہین سمجھا جاتا تھا اس لیے مغل حکام سے بدلہ لینے کے لیے سب سے پہلے اس نے اٹک کے مقام پر دریائے سندھ عبور کر کے لاہور پر حملہ کیا۔ لاہور پر قبضہ کرنے کے بعد اس نے دہلی کی طرف پیش قدمی شروع کی جو اس وقت مغل اقتدار کا مرکز تھا۔

نادر شاہ کے حملے کا مقصد دو جہتی پہلوؤں پر مشتمل ہے پہلا مغلوں کی طرف سے کی گئی توہین کا بدلہ لینا اور دوسرا اس کے عزائم کی وجہ سے اسے ہندوستان کی دولت کے بارے میں بتایا گیا جس نے اسے پرجوش کیا اور اسے ہندوستان پر حملہ کرنے پر مجبور کیا۔ 16 فروری 1739 کو وہ سرہند پہنچا جہاں اس کے حملے کے جواب میں محمد شاہ 80 ہزار فوجیوں کے ساتھ کرنال پہنچا۔ اسے پہلے 20 ملین روپے کے معاوضے کی پیشکش کی گئی لیکن مغل حکومت کے اندرونی دشمنوں نے نادر شاہ سے کہا کہ یہ رقم قبول نہ کریں کیونکہ یہ بہت کم تھی۔ اس کے بعد اس نے انکار کیا اور کرنال کی لڑائی نادر شاہ اور مغل فوجوں کے درمیان لڑی گئی۔24 فروری 1739 کو لڑائی ہوئی جو صرف تین گھنٹے تک جاری رہی کیونکہ مغل فوجیں اس قابل نہیں تھیں کہ نادر شاہ کی بڑی فوج کا مقابلہ کر سکیں۔ 12 مارچ 1739 کو مغلوں کو شکست دینے کے بعد وہ دہلی میں داخل ہوا۔

محمد شاہ نے ان کا پرتپاک استقبال کیا جسے نادر شاہ کی رضامندی سے تخت برقرار رکھنے کی اجازت دی گئی۔ اس وقت فارسی سپاہیوں اور دہلی کے شہریوں کے درمیان کشمکش پیدا ہوئی، یہ وہ وقت تھا جب نادر شاہ کی موت کی خبر بھی سامنے آئی۔ یہ چیز بہت سے فارسی سپاہیوں کی موت کا سبب بنی اور جب نادر شاہ نے فارسی سپاہیوں کی لاشیں دیکھی تو اس نے دہلی کے مکمل قتل عام کا حکم دیا، جو اس وقت بدنام زمانہ قتال عام کے نام سے مشہور تھا۔ اس نے تقریباً 6 گھنٹے میں دہلی کے 20،000 سے 30،000 شہریوں (مرد، خواتین اور بچوں) کو قتل کیا۔ پورے شہر کو فارس کی فوج نے تباہ و برباد کر دیا تھا۔ یہ ظلم و بربریت کا ایک ایسا مظاہرہ تھا جو ہندوستان کی تاریخ نے دیکھا ہے۔ اسی طرح دہلی کو نادر شاہ اور اس کی فوج نے اس سطح پر لوٹا کہ نادر شاہ کے حملے اور دہلی پر قبضہ کرنے کے بعد مغل سلطنت اس قدر کمزور ہو گئی کہ مغل اپنی طاقت دوبارہ حاصل کرنے اور دوسرے دشمنوں سے لڑنے کے قابل نہ رہے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!