تاریخ

Causes of the War of Independencec

جنگ آزادی کے اسباب

سنہ 1857 کی جنگ آزادی کے کئی اسباب تھے، انہیں سیاسی، مذہبی، عسکری، اقتصادی اور سماجی اسباب میں تقسیم کیا جا سکتا ہے۔ ایسٹ انڈیا کمپنی کا مقصد ہندوستان کی تمام ریاستوں جیسے اودھ، تنجور، جھانسی، ستارہ وغیرہ کو اپنے ساتھ ملانا تھا، اسی لیے انہوں نے ڈوکٹرین آف لیپس جیسے نظام متعارف کروائے جس کے ذریعے اگر کوئی مرد( ریاست کے تخت کا وارث) نہ ہو تو ہندوستانی ریاستوں کو کمپنی اپنے قبضے میں لے سکتی تھی۔

اس نے نانا صاحب، پیشوا کے لے پالک بیٹے اور جھانسی کی رانی لکشمی بائی جیسے حکمرانوں کو مشتعل کیا۔ کمپنی نے یہ بھی اعلان کیا کہ اس وقت کے مغل بادشاہ بہادر شاہ ظفر کی موت کے بعد ان کے خاندان کو لال قلعہ سے باہر جانا ہوگا اور ان کے جانشینوں کو بھی شہنشاہ کا خطاب استعمال کرنے سے منع کر دیا گیا۔ ان تمام کوششوں نے ہندو اور مسلم دونوں ہندوستانیوں کو الگ کر دیا جنہوں نے محسوس کیا کہ سفید فام لوگ ان کی زمینوں کو ہڑپ کرنے کا ارادہ کر رہے ہیں۔

اس وقت ہندوستان کے لوگ اپنے مذہب اور مذہبی رسومات کے بارے میں بہت زیادہ فکر مند تھے۔ ان کے لیے سب سے مقدس چیز ان کا ایمان تھا۔ لیکن جب انہیں معلوم ہوا کہ کمپنی ان کی سرزمین میں عیسائیت کو فروغ دے رہی ہے تو وہ غصے میں آگئے۔ درحقیقت پورے ہندوستان میں عیسائی مشنریوں کو برطانوی حکومت کی سرپرستی حاصل تھی اور 1855 میں ای ایڈمنڈ جیسے پادریوں نے یہ دعویٰ کیا کہ پورے ہندوستان کو ایک مذہب یعنی عیسائیت کے تحت ہونا چاہیے۔ اسی طرح کچھ سماجی قوانین کے متعارف ہونے سے اس آگ میں مزید اضافہ ہوا۔ مثال کے طور پر، انگریزی حکومت نے ستی (بیوہ کو اس کے شوہر کی لاش کے ساتھ جلانے کا ہندو رواج) پر پابندی لگا دی اور بیواؤں کو دوبارہ شادی کرنے کی اجازت دی۔ اس طرح کی قانون سازی سے ہندوؤں کے جذبات بری طرح مجروح ہوتے ہیں۔ فوجی سیٹ اپ میں انہوں نے کچھ ایسے ضابطے متعارف کروائے جن سے ہندوستانیوں کے مذہبی جذبات مجروح ہوئے۔ مثال کے طور پر، فوجی قوانین کے تحت ہندوستانی فوجیوں کو داڑھی رکھنے یا پگڑی باندھنے یا ماتھے پر تلک لگانے سے منع کیا گیا تھا۔ ان ضابطوں نے ہندوستانیوں کو یہ احساس دلایا کہ ان کے عقائد خطرے میں ہیں۔

جب بھی انگریزوں نے ہندوستان کی کسی ریاست کو اپنے قبضے میں لیا تو اس کی فوج کو ختم کر دیا اور مقامی سپاہیوں کو نوکری سے نکال دیا۔ اس طرح غلامی کے بعد دوسرا جھٹکا جو مقامی فوجیوں کو اٹھانا پڑا وہ بے روزگاری تھا جس نے انہیں غیر ملکی حملہ آور کو حقیر جانا۔ اس کے علاوہ انگریزوں نے اپنے سپاہیوں اور ہندوستانی سپاہیوں کے درمیان تنخواہوں اور مراعات کے سلسلے میں ہمیشہ امتیازی سلوک روا رکھا جس کا نتیجہ یہ ہوا کہ مایوس سپاہیوں نے انگریزوں کے خلاف لڑنے کا ارادہ کرلیا۔

معاشی وجوہات بھی تھیں۔ مغلوں کے دور حکومت میں تمام اہم عہدوں پر نہ صرف مسلمان بلکہ ہندوؤں کو بھی تعینات کیا جاتا تھا لیکن انگریزوں نے مسلمانوں اور ہندوؤں کو ناقابل اعتبار سمجھا اور نتیجتاً تمام اعلیٰ عہدے سفید فاموں کے پاس تھے۔ مقامی لوگوں کو یا تو بے روزگار کر دیا گیا یا ریاستی محکموں میں نچلی سطح پر تعینات کر دیا گیا۔ ایسٹ انڈیا کمپنی جو تجارت سے دولت کمانے کے لیے بے چین تھی، ہندوستان کو انگلستان کی صنعتوں کے لیے خام مال پیدا کرنے کے میدان سے زیادہ نہیں سمجھتی تھی۔ غیر کاشت شدہ زمینوں پر بھی اضافی ٹیکسوں کے ساتھ ماتحت نظام نے آگ میں ایندھن ڈالا اور عام ہندوستانیوں کو معاشی طور پر تباہ کردیا۔

ان وجوہات کے علاوہ ایک فوری وجہ بھی تھی جس نے ہندوستانیوں کو جنگ پر مجبور کیا۔ لارڈ کیننگ، لارنس اور سید احمد خان کے الفاظ میں یہ سب سے اہم وجہ تھی۔ 1857 کے ابتدائی دور میں متعارف کرائی گئی ایک نئی اینفیلڈ رائفل کے لیے کارتوس جانوروں کی چربی سے ڈھکے ہوئے تھے جو کہ گائے یا سؤر کی ہو گی۔ ان کارتوسوں کو استعمال کرنے سے پہلے انہیں دانتوں سے کاٹنا تھا۔ چونکہ گائے ہندوؤں کے لیے مقدس تھی اور خنزیر مسلمانوں کے لیے حرام تھے، دونوں نے ایسی رائفلیں اٹھانے سے انکار کر دیا۔ لیکن ان کے انگریز افسروں نے طاقت کا استعمال کیا جس نے ہندوؤں اور مسلمانوں کو یکساں طور پر ناراض کیا اور اس طرح ان تمام وجوہات نے ہندوستان میں جنگ کو بھڑکا دیا جسے ہم 1857 کی جنگ آزادی کہتے ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!