تاریخ

Government of India Act 1858

گورنمنٹ آف انڈیا ایکٹ 1858

سنہ1857 کی جنگ آزادی برصغیر پاک و ہند کی تاریخ میں بہت اہمیت کا حامل واقعہ تھا۔ اس جنگ کے بعد ہندوستانیوں کے تئیں برطانوی پالیسی یکسر بدل گئی، خاص طور پر جہاں تک آئینی ترقی کا تعلق ہے۔ ہندوستانی آبادی کی شکایات کو دور کرنے کے مقصد سے 1858 میں ولی عہد نے ہندوستان میں ایک نیا ایکٹ متعارف کرایا تھا۔ یہ ایکٹ 2 اگست 1858 کو برطانوی پارلیمنٹ نے پاس کیا تھا۔ 1858 کے ایکٹ کی اہم دفعات درج ذیل تھیں

نمبر1. برٹش ایسٹ انڈیا کمپنی کی حکمرانی کو ختم کر دیا گیا اور حکومت ہند کو براہ راست ولی عہد نے ملکہ وکٹوریہ کے ساتھ اعلیٰ بادشاہ کے طور پر سنبھال لیا۔
نمبر2. ولی عہد کو گورنر جنرل اور ایوان صدر کے گورنر مقرر کرنے کا اختیار دیا گیا تھا۔
نمبر3. کورٹ آف ڈائریکٹرز اور بورڈ آف کنٹرول کو ختم کر دیا گیا اور ان کی جگہ سیکرٹری آف اسٹیٹ برائے ہندوستانی امور اور انڈیا کونسل نے سنبھال لی۔
نمبر4. ہندوستانی امور کے سکریٹری کو وسیع اختیارات دیے گئے اور ہندوستانی کونسل 15 اراکین پر مشتمل تھی۔ کونسل ان کی مدد کے لیے بنائی گئی تھی لیکن صرف ایک مشاورتی کردار تھا۔
نمبر5. اس ایکٹ کے تحت ملکہ وکٹوریہ نے ہندوستان کے لوگوں سے ان کے حقوق کا وعدہ کیا تھا۔ مذہب کی مکمل آزادی کو یقینی بنایا گیا اور ملک کے نظم و نسق میں بتدریج شرکت کا اعلان بھی کیا گیا۔
نمبر6. تمام ہندوستانیوں کو معافی دی گئی سوائے ان کے جنہوں نے برطانوی لوگوں کو قتل کیا تھا۔ ایکٹ میں کہا گیا ہے کہ ریاستوں کے شہزادے اپنی سابقہ ​​حیثیت کو برقرار رکھ سکتے ہیں اور شہزادوں کے ساتھ تمام معاہدوں کا احترام کیا جائے گا۔
نمبر7. اس ایکٹ کے تحت نظریہ کو ضائع کر دیا گیا تھا۔

اس ایکٹ کے مطابق سیکرٹری آف اسٹیٹ فار انڈین افیئرز کو وسیع اختیارات دیے گئے تھے۔ وہ کسی کو جوابدہ نہیں تھا۔ وہ جو چاہے کر سکتا تھا۔ نہ تو پارلیمنٹ اور نہ ہی انڈین کونسل اسے کوئی کارروائی کرنے کا پابند کر سکتی تھی۔ ان دونوں اداروں کو یہ اختیار نہیں دیا گیا کہ وہ اس کے وسیع اختیارات کو محدود کر سکیں۔ مزید یہ کہ ملکہ وکٹوریہ نے جو وعدے کیے تھے وہ کبھی پورے نہیں ہوئے۔ ہندوستانی عوام کو ان کے وہ حقوق نہیں ملے جو اس ایکٹ کے تحت ان سے وعدے کیے گئے تھے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!