تاریخ

Urdu-Hindi Controversy (1867)

اردو ہندی تنازعہ (1867)

اردو زبان ہندوستان میں پیدا ہوئی۔ ہندوستان اپنی زرخیز زمین اور مردانہ طاقت کے لحاظ سے سونے کی چڑیا سمجھا جاتا تھا۔ اسی لیے بہت سے حملہ آور مختلف مقاصد کے لیے اس پر قبضہ کرنے آئے۔ ایسا ہوا کہ جب دنیا کے مختلف خطوں سے یہ مختلف لوگ ہندوستان آئے تو وہ اپنے ساتھ دیگر چیزوں کے ساتھ اپنی زبان بھی لے آئے۔ عرب، فارسی اور ترک وغیرہ جیسے لوگ جب مقامی لوگوں کے ساتھ گھل مل گئے تو انہوں نے اپنی زبانوں کے بہت سے الفاظ کا تبادلہ کیا اور اس طرح اس اختلاط سے ایک نئی زبان وجود میں آئی جسے اردو کا نام دیا گیا، یعنی ’’فوجیوں کی زبان‘‘۔ چونکہ اس کی تشکیل مسلم دنیا کے حملہ آوروں نے کی تھی اور ہندوستان میں مغلوں کے دور حکومت میں اس کا ظہور ہوا تھا، اس لیے اسے مسلمانوں کی زبان کہا جاتا تھا اور اسی لیے ابتدا میں اسے مسلمانی کہا جاتا تھا۔

لیکن وہاں صرف مسلمان ہی نہیں تھے جو اردو بولتے یا استعمال کرتے تھے بلکہ ہندوستان کی تمام برادریوں نے اس نئی زبان کی ترویج اور ترقی کے لیے ہاتھ ملایا۔ یہ نہ صرف روزمرہ کی زبان کے طور پر استعمال ہوتی تھی بلکہ برصغیر کے تمام خطوں میں بنیادی طور پر دکن، لکھنؤ، میسور، دہلی وغیرہ میں بڑی تعداد میں ادبی کام اردو میں شائع ہوتے تھے۔ ان مشترکہ کوششوں کی وجہ سے جب 1837 میں اردو کی جگہ فارسی کو عدالتی اور ریاستی زبان کا درجہ دیا گیا تو کسی نے اس پر اعتراض نہیں کیا۔

مغلیہ سلطنت کے زوال کے ساتھ ہی ہندوؤں نے اردو کو حملہ آوروں کی زبان کے طور پر دیکھنا شروع کردیا۔ دوسری طرف انگریزوں نے بھی مسلمانوں کے تئیں یہی رویہ اپنایا۔ اس طرح دونوں نے جان بوجھ کر مسلمانوں کی زبان سے جان چھڑانے کی کوششیں شروع کر دیں۔ اس سلسلے میں راجہ رام موہن رائے، راجہ شیو پرشاد، لکشمن سنگھ، ہریش چندر اور بنکم چٹرجی وغیرہ کے نام مشہور ہیں۔ پہلی کوشش انیسویں صدی کے آغاز میں کی گئی جب ہندی کے نام سے ایک نئی زبان تشکیل دی گئی جس میں خالص عربی، فارسی اور ترکی کے الفاظ کو ہٹا کر سنسکرت کے الفاظ کی جگہ لے لی گئی۔ اسی سلسلے میں 1809 میں ایک ہندو نے اسی ہندی میں ’’پریم ساگر‘‘ کے عنوان سے ایک ناول لکھا لیکن چونکہ یہ پوری کوشش نہیں تھی اس لیے جلد ہی وہ زبان فراموش ہوگئی۔ تاہم، 1857 کی جنگ آزادی کے بعد جب برطانوی ولی عہد کا غضب مسلمانوں پر نازل ہوا، تو ہندوؤں نے اردو سے جان چھڑانے اور اس کی جگہ اپنی زبان ہندی کو رائج کرنا مناسب وقت سمجھا۔

مشترکہ منظم کوشش انیسویں صدی کے دوسرے نصف میں شروع ہوئی۔ 1867 میں بنارس کے ہندوؤں نے اپنی حکومت کو ایک درخواست پیش کی کہ اردو کی جگہ ہندی اور فارسی رسم الخط کو دیوناگری رسم الخط سے بدل دیا جائے۔ اس مطالبے پر سر سید احمد خان نے کہا کہ جب کسی خطے میں کسی قوم کی زبان بھی دوسری قوموں کے ہاتھوں محفوظ نہ ہو تو ان کے ساتھ رہنا غیر دانشمندانہ ہوگا۔ لہٰذا سرسید جو اس واقعہ سے پہلے ہندو مسلم اتحاد کے بہت بڑے حامی تھے، انہوں نے صرف مسلمانوں کے مقصد پر توجہ دینا شروع کی۔ ان کی سائنٹفک سوسائٹی گزٹ میں اردو کی اہمیت پر مضامین پیش کیے گئے۔ اسی طرح کچھ مسلم اخبارات جیسے نورالابصار اور بنارس گزٹ نے بھی اپنی زبان کی حفاظت کی ذمہ داری لی۔

اردو مخالف عمل اس وقت جاری رہا جب 1871 میں بنگال کے لیفٹیننٹ گورنر جی کیمبل نے صوبے میں ہر سطح، عدالتوں، انتظامیہ اور یہاں تک کہ اسکولوں میں اردو پر پابندی لگا دی۔ اس نے دوسرے خطوں جیسے این ڈبلیو ایف پی، پنجاب، بہار، یو پی، سندھ، اور اودھ وغیرہ میں ہندوؤں کو وہاں اردو کا مقابلہ کرنے کے لیے فروغ دیا۔ ہندوؤں کی میٹنگیں ہوئیں جن میں ہزاروں نے اردو کے خاتمے کی حمایت میں یادداشتوں پر دستخط کیے۔ 1882 میں انگریزی حکومت کی طرف سے ہندوستان میں جدید انگریزی تعلیم کے پھیلاؤ کا تجزیہ کرنے کے لیے بنائے گئے کمیشن ہنٹر کمیشن کے دورے کے دوران ہندو تنظیموں نے دوبارہ اردو پر حملہ کرنے کی کوشش کی۔ انہوں نے اس کے چیئرمین ڈاکٹر ہنٹر سے ملاقاتیں کیں اور انہیں اردو کو غیر ملکی زبان کے طور پر تسلیم کرنے اور تعلیمی مقاصد کے لیے مادری زبان ہندی کو رائج کرنے پر مجبور کرنے کی کوشش کی۔ لیکن اس مشن میں وہ سرسید اور ان کے ساتھیوں کی مسلسل کوششوں کی وجہ سے ناکام رہے۔

مسلمانوں اور ان کی زبان کے لیے حالات اس وقت اور بھی مشکل ہو گئے جب 1900 میں انتھونی میکڈونل یوپی کا گورنر بنا۔ وہ ہندو نواز تھا اور اس طرح مسلم مخالف تھا۔ چنانچہ گورنر بننے کے بعد انہوں نے اردو کو یوپی کی سرکاری زبان کے طور پر برخاست کر دیا جو درحقیقت اردو زبان کی آماجگاہ سمجھی جاتی تھی۔ اس نے احکامات جاری کیے اور ہندی کو صوبے کی سرکاری زبان قرار دیا۔ علی گڑھ میں سرسید کے جانشین، خاaص طور پر نواب محسن الملک، علی گڑھ ٹرسٹ کے اس وقت کے سکریٹری، نے میکڈونل کے ایکٹ کے خلاف کارروائی کی۔ انہوں نے علی گڑھ میں اردو کے حامیوں کا ایک عوامی اجتماع بلایا اور گورنر کے کام کی کھل کر مذمت کی۔ انہوں نے اردو ڈیفنس ایسوسی ایشن کی بنیاد بھی رکھی اور یہ فیصلہ کیا گیا کہ انجمن گورنر کے کاموں کے خلاف کارروائی کرے گی۔ اس پر میک ڈونل غصے میں آگئے اور محسن الملک کو دھمکی دی کہ اگر وہ حکومت کے اقدامات کے خلاف جارحیت جاری رکھیں گے تو میکڈونل اس بات کو یقینی بنائے گا کہ علی گڑھ کو سرکاری گرانٹ ملنا بند کر دی جائے۔ چونکہ ادارے کے لیے گرانٹ ضروری تھی اور محسن الملک اردو کے دفاع سے الگ نہیں ہو سکتے تھے، اس لیے علی گڑھ کالج کو بچانے کے لیے انہوں نے استعفیٰ دے دیا۔ لیکن چونکہ وہ اپنے تمام ساتھیوں اور طالب علموں کے بہت پیارے تھے وہ اپنا استعفیٰ واپس لینے پر مجبور ہوئے۔ لیکن اس سے وہ اردو کے دفاع سے باز نہ آئے اور اپنی کوششیں جاری رکھیں۔ مسلمانوں کے اس ردعمل کے نتیجے میں ہندی کے ساتھ اردو کو بھی صوبے کی سرکاری زبان قرار دیا گیا۔ لیکن محسن الملک اس نتیجے سے مطمئن نہ ہوئے اور اپنی جدوجہد جاری رکھی۔ جب یوپی نے میکڈونل سے نجات حاصل کی تو اس نے ایک اور انجمن کی بنیاد رکھی جس کا نام انجمن ترقی اردو تھا تاکہ اردو کے خلاف ہندوؤں اور انگریزوں کی آئندہ تمام کوششوں کا مقابلہ کیا جا سکے۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!