تاریخ

Anjuman Himayat-i-Islam (1884)

انجمن حمایت اسلام (1884)

پنجاب جو غزنوی کے دور میں اپنے تعلیمی اداروں کے لیے جانا جاتا تھا، انیسویں صدی کے آخر تک تعلیمی لحاظ سے انتہائی پسماندہ ہو گیا۔ اس کی وجہ یہ تھی کہ 1849 میں انگریزوں نے پنجاب پر سکھوں کی حکمرانی کا خاتمہ کیا، اس کا الحاق کیا اور مغربی تعلیمی نظام لایا اور لاہور میں بڑی تعداد میں سکول، کالج قائم کئے۔ بعض جائز وجوہات کی بنا پر مسلمانوں نے ان اداروں سے کوئی فائدہ نہیں اٹھایا اور تعلیمی طور پر زوال پذیر ہوا۔ 1883 میں ایک سید خاتون نے اپنے تین بچوں کے ساتھ عیسائیت اختیار کی۔

یہ حادثہ مسلمانوں کے لیے ایک سنگین چیلنج تھا۔ لیکن اگرچہ بعد میں اس نے اسلام کو دوبارہ شرمندہ کیا، لیکن یہ سارا واقعہ پنجاب کے مسلمانوں کی آنکھیں کھول دینے والا تھا۔ اس قسم کے حالات کا مقابلہ کرنے کے لیے مولانا قاضی حمید الدین نے بہت سے عوامی جذبے رکھنے والے افراد کو ایک چھوٹے سے اجتماع میں مدعو کیا اور ستمبر 1884 میں انجمن حمایت اسلام کا قیام عمل میں لایا۔ نئی انجمن کے آغاز میں مذہبی خطیبوں کے گروہ نے جو پنجاب کے دیہات میں تھے عیسائی مشنریوں کے زہریلے پروپیگنڈے کو تیار کیا۔ ان میں سے کچھ پرعزم اور مبلغین تھے، جیسا کہ مولوی سید احمد علی، منشی شمس الدین، مولانا عبدالمجید دہلوی، محمد مبارک۔ وہ پورے صوبے میں پھیلے ہوئے تھے اور انہوں نے عیسائی مشنریوں کی گراں قدر خدمات اور اثر و رسوخ اور اسلامی تعلیمات کی تبلیغ و ترویج کی۔

انجمن کا قیام درج ذیل اغراض و مقاصد کے حصول کے لیے کیا گیا تھا۔

نمبر1. مسلمان طلباء کے لیے مرد اور خواتین کے لیے دینی اور عمومی تعلیم کی فراہمی۔

نمبر2. عیسائی مشنریوں اور ہندو احیا پسندوں کے خلاف اسلامی اقدار کا تحفظ اور ترویج۔

نمبر3. تقاریر اور اشاعتوں کے ذریعے اسلام کے خلاف پروپیگنڈے کا سدباب کرنا۔

قاضی حمید الدین انجمن کے پہلے صدر اور غلام اللہ قصوری پہلے سیکرٹری منتخب ہوئے۔ اپنے مقاصد کی تکمیل کے لیے انجمن نے شروع ہی سے اپنا کام شروع کر دیا۔ اس کے کارکن ان گھروں میں برتن لے جاتے تھے جن میں عورتیں روزانہ آٹے سے بھرا ہاتھ ڈالتی تھیں۔ پہلے سال انجمن کی آمدنی 754 روپے اور اخراجات 344 روپے تھے۔ کارکنوں کی کوششوں سے لوگ انجمن کے مقاصد میں دل و جان سے حصہ لینے لگے۔ 1885 میں انجمن کے اراکین کی تعداد 200 سے بڑھ کر 600 ہو گئی۔ انجمن کی آمدنی کا ایک اور ذریعہ کتابوں کی فروخت سے حاصل ہونے والی رقم تھی۔ مولوی دستگین نے قرآن پاک کے دفاع میں ایک پمفلٹ لکھا اور انجمن کو عطیہ کیا، اسی طرح سید محمد حسین نے 300 کتابیں عطیہ کیں جو 975 روپے میں فروخت ہوئیں۔ مختلف ریاستوں کے حکمرانوں نے بھی باصلاحیت شراکت کی۔

انجمن نے تعلیمی سرگرمیاں پرائمری سکول کے ساتھ ایک مکان میں شروع کیں جس کا کرایہ 2.5 روپے ماہانہ تھا۔ اس نے خواتین کے اسکولوں کے قیام کو اہمیت دی اور پہلے دو سالوں میں کچھ کھولے۔ 1886 میں طلباء کے لیے رہائش کے ساتھ لڑکوں کا بورڈنگ اسکول قائم کیا گیا۔ سکول کو سکندر خان کی بڑی حویلی میں منتقل کر دیا گیا۔ آہستہ آہستہ اور آہستہ آہستہ 1887 میں اسے مڈل اسکول میں اپ گریڈ کیا گیا۔

مسلمانوں کی کمزوری کا بھرپور فائدہ اٹھاتے ہوئے عیسائی مشنریوں نے مسلمانوں کے بچوں کو عیسائی بنایا۔ انجمن نے امت مسلمہ کو بیدار کرنے کی پوری کوشش کی۔ انجمن نے بے سہارا مسلمانوں کے بچوں اور ضرورت مند بیواؤں کے لیے دارالامان اور دارالشفایات بھی قائم کیں۔ انجمن قابل تعریف خدمات انجام دے رہی ہے، اس کا ماہانہ جریدہ حمایت اسلام 1885 میں شروع ہوا، یہ 1926 میں ہفتہ وار بن گیا۔ دوسری طرف تاریخ، تہذیب، ثقافت اور سیرت نبوی صلی اللہ علیہ وسلم پر کتابوں کی بڑی تعداد موجود ہے جس کو انجمن نے شائع کیا تھا۔

نتیجہ اخذ کرتے ہوئے ہم کہہ سکتے ہیں کہ انجمن حمایت اسلام واقعی ایک عظیم ادارہ تھا۔ اس کا مقصد مسلمانوں کے لیے اسلام کو بچانا تھا۔ اس نے برصغیر کے مسلمانوں کو تعلیم فراہم کرنے کی کوشش کی۔ اس ادارے کا مسلم کمیونٹی پر بڑا اثر تھا۔ انجمن کا اپنا پریس تھا اور مذہبی اور ادبی موضوعات پر شائع ہوتا تھا۔ ایک اہم کام قرآن پاک کا صحیح متن تیار کرنا تھا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!