تاریخ

Muslims and the Congress

سنہ1857 کی جنگ آزادی کے بعد انگریزحکومت کو اندازہ ہو گیا تھا کہ ان کی طاقت سے حکومت کرنے کی پالیسی ہندوستان میں سود مند نہیں رہی۔ اس طرح انہوں نے ہندوستانی عوام کی حمایت حاصل کرنے کی کوشش کی۔ حکومت کی طرف سے کئی وعدے کیے گئے تھے کہ ہندوستانی، اب سے، اپنے ملک کے سیاسی معاملات کا حصہ بھی بنیں گے اور یہ کہ اب ان کے ساتھ محض غلام/عوام نہیں بلکہ شہری جیسا سلوک کیا جائے گا۔

ان حالات میں ایلن آکٹیوین ہیوم نامی ایک سابق انگریز سی ایس پی افسر نے ہندوستانیوں کے لیے ایک سیاسی پارٹی بنانے کا خیال پیش کیا۔ اس مقصد کے لیے اس نے سینئر انگریز بیوروکریٹس سے ملاقات کی اور ان کی رہنمائی کے ساتھ مقامی ہندوستانی شراکت کے ساتھ 1885 میں ایک سیاسی جماعت بنائی۔ اسے آل انڈین نیشنل کانگریس کہا گیا۔ اس کے پہلے صدر ایک ہندوستانی تھے اور مسٹر ہیوم اس کے پہلے جنرل سیکرٹری تھے۔ 28 دسمبر 1885 کو کانگریس کا پہلا اجلاس ہوا جس میں 72 ممبران تھے جن میں سے 58 ہندو تھے جن میں سے صرف 2 مسلمان تھے۔ رکنیت کے تناسب میں یہ واضح فرق برصغیر پاک و ہند میں واحد سیاسی جماعت کے طور پر کانگریس کے وجود کی پوری تاریخ میں جاری رہا۔ مثال کے طور پر 1894 میں کانگریس کے اجلاس میں کانگریس کے 118 ہندو ارکان تھے اور صرف 20 مسلمان تھے۔ دونوں ممالک کے نمائندوں کے درمیان تناسب کا فرق کانگریس کے ارادوں کے بارے میں کافی حد تک سچائی کو ظاہر کر سکتا ہے۔

اس وقت ہندوستان میں سب سے زیادہ مسلم رہنما سرسید احمد خان اور ان کے علی گڑھ کے ساتھی تھے جن کا ماننا تھا کہ انگریزی حکومت مسلمانوں پر ’’1857 کی بغاوت‘‘ کی اصل طاقت ہونے کا الزام لگا رہی ہے۔ سرسید کے مطابق مسلمانوں کو تمام سیاسی معاملات سے دور رہنا چاہیے تاکہ حکومت کو یہ تاثر ملے کہ ان کا سیاست سے کوئی تعلق نہیں ہے تاکہ وہ اپنے آپ کو حکومت کے قہر سے بچا سکیں۔ جدید مغربی تعلیم کا حصول مسلم معاشرے کے تعلیم یافتہ طبقوں کی توجہ کا مرکز تھا۔ باقی مسلم آبادی یا تو اپنی تعلیمی پسماندگی کی وجہ سے موجودہ سیاسی معاملات سے بہت زیادہ بے خبر تھی یا پھر اپنی جانوں سے بہت خوفزدہ تھی۔

دوسری طرف کانگریس مسلمانوں کے خلاف زیادہ سے زیادہ متعصب ہونے لگی۔ ہندو، پارٹی میں اکثریت میں ہونے کے باعث اسے اپنے مقاصد کے حصول کے لیے استعمال کرنے لگے۔ کانگریس اپنی تمام زندگی متحدہ ہندوستان میں یہ دعوی کرتی رہی کہ وہ ہندوستان میں رہنے والی تمام برادریوں کی نمائندگی کرتی ہے چاہے ان کے عقائد کچھ بھی ہوں۔ لیکن حقیقت اس کے بالکل برعکس تھی۔ 19ویں صدی کی آخری دہائی کے دوران کانگریس اور اس کی پالیسیاں مسلمانوں کے خلاف حد سے زیادہ متعصب اور متشدد ہو گئیں۔ تلک، میڈن موہن مالویہ، راش بہاری گھوش اور بنرجی جیسے انتہا پسند ہندو اس کے بڑے لیڈر بن گئے جنہوں نے عملی طور پر مسلمانوں، ان کے عقیدے اور طریقوں کے خلاف ہتھیار اٹھائے۔ گائے کے ذبیحہ اور بنگال کی تقسیم کے خلاف ان کے پرتشدد مظاہرے کانگریس کے ہندو نواز نقطہ نظر کے زندہ ثبوت ہیں۔

کانگریس کی تمام مسلم مخالف سرگرمیوں کے باوجود، کچھ مسلم سیاست دانوں نے اپنی خواہشات کو اس حصے سے اڑا لیا تھا کیونکہ وہ کانگریس کے اس دعوے سے متفق تھے کہ ہندوستان میں رہنے والے تمام لوگ ایک قوم ہیں اور کانگریس نے اسے اسی طرح برقرار رکھنے کا منصوبہ بنایا۔ مولانا آزاد، مولانا محمد علی جوہر اور یہاں تک کہ محمد علی جناح جیسے مسلم سیاست دان بھی متحدہ ہندوستان کے حق میں تھے اور وہ سمجھتے تھے کہ تمام نئے ابھرتے ہوئے ہندو مسلم اختلافات کے باوجود ان کے اتحاد کا امکان باقی ہے اور اسی لیے وہ قائم رہے۔

علی گڑھ کی طرف، سرسید کی وفات کے بعد، محسن الملک اور وقار الملک جیسے ان کے جانشینوں نے محسوس کیا کہ مسلمانوں کی سیاست سے علیحدگی کا وقت گزر چکا ہے اور ایک نئے دور کا آغاز ہو گیا ہے، جس کے لیے ایک سیاسی جماعت کا مطالبہ کیا گیا۔ مسلمانوں کو بھی. اسی وجہ سے 1906 میں آل انڈیا مسلم لیگ بنائی گئی جس نے کانگریس کے مقابلے میں اپنے آپ کو صرف ہندوستان کے مسلمانوں کی نمائندہ ہونے کا اعلان کیا جو ہر طرح سے ایک الگ قوم تھے۔ مسلم لیگ کے قیام نے مسلم سیاست دانوں کے لیے نئے دروازے کھول دیے جن کے پاس اب اپنی بھلائی کے لیے کام کرنے کا اپنا ایک آزاد پلیٹ فارم تھا۔ پھر بھی جناح اور جوہر جیسے کچھ مسلمان تھے جن کا ماننا تھا کہ ہندوؤں اور مسلمانوں کا اتحاد ہی ان مسائل کا حل نکال سکتا ہے جن کا ہندوستان اور ہندوستانی سامنا کر رہے تھے۔ یہی وجہ ہے کہ جناح نے 1913 میں مسلم لیگ میں شمولیت اختیار کی جب وہ ابھی کانگریس کے رکن تھے۔ انہوں نے اس وقت ہندوستان کی دو بڑی سیاسی جماعتوں کے درمیان پل بننے کی کوشش کی اور ان کی کوششوں سے 1916 میں دونوں انجمنوں کے درمیان مشہور لکھنؤ معاہدہ طے پایا جس سے باہمی اعتماد کا رشتہ قائم ہو سکتا تھا لیکن یہ کوشش بھی کانگریس کی سختی کی وجہ سے بے سود ثابت ہوئی۔

ہندوستانیوں کی واحد نمائندہ جماعت ہونے کا ان کا مستقل دعویٰ اور مسلمانوں کو ایک آزاد قوم تسلیم کرنے سے ان کا انکار لکھنؤ معاہدہ کی ناکامی کا باعث بنا۔ اسی طرح خلافت تحریک کے دوران کانگریس کی غداری، جب کانگریس کی نیت سے خلافت عثمانیہ کو بچانے کی تحریک ہندوستان میں ناکام ہوئی تو مسلمانوں کا کانگریس سے مزید مایوسی ہوئی۔ جلد ہی جناح نے بھی کانگریس کے غیر مصالحانہ عزائم کو بھانپ لیا اور اس کی رکنیت سے استعفیٰ دے دیا۔

وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ مسلم لیگ ہندوستان کے مسلمانوں کی امنگوں کی عظیم نمائندہ بننا شروع ہو گئی اور وہ لیگ کو اپنا محافظ سمجھ کر دیکھنے لگے۔ چنانچہ کانگریس کو مسلمانوں کی حمایت حاصل ہونے کے امکانات بھی تاریک ہونے لگے۔ تاہم، کانگریس نے اس کی زیادہ پرواہ نہیں کی اور 1928 میں کانگریس کے پلیٹ فارم سے نہرو رپورٹ نے ‘پورے ہندوستان کی سیاسی جماعت’ کے مسلم مخالف نقطہ نظر کو واضح طور پر واضح کر دیا۔ تمام معاملات پر یہ اختلاف رائے پاکستان کی تحریک آزادی کا باعث بنا جس سے قبل 1937 کے انتخابات میں کانگریس نے مقننہ میں اکثریتی نشستیں حاصل کیں اور ہندوستان میں حکومت بنائی۔

وہ تمام ہندوستانیوں کے لیے یقیناً ہندوؤں کے علاوہ اور بالخصوص مسلمانوں کے لیے خوفناک وقت تھے۔ کانگریس نے اپنے دور حکومت میں مسلمانوں اور ان کی نمائندہ سیاسی جماعت مسلم لیگ کے خلاف کام کرنے کی پوری کوشش کی۔ ہندو مسلم فسادات اس زمانے کی عام کہانیاں تھیں جن میں ہر چیز کا الزام ہمیشہ مسلمانوں پر لگایا جاتا تھا۔ کئی علاقوں میں گائے کے ذبیحہ پر پابندی تھی۔ کانگریس پارٹی کے گیت بندے ماترم کو ہندوستان کا قومی ترانہ قرار دیا گیا جس میں تمام مسلمانوں کو بیرونی اور غدار قرار دیا گیا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button
error: Content is protected !!