TOURISM

Around Lahore

لاہور کے آس پاس

Around Lahore

1) Hiran Minar

Hiran Minar (Minaret regarding Antelope) is placed in an exceedingly relaxing environment around Lahore with Sheikhupura, Pakistan. Hiran Minar is among the most effective known and also the majority beautiful connected with such sites. It absolutely was once the popular hunting spot for all Muslim rulers. Hiran Minar is really 43 km from Lahore in addition to 9 km from Sheikhupura. it had been constructed by Mughal emperor Jahangir as a monument to Mansraj one of his deer pets.

History reveals that Jahangir hunted in the area where Hiran Minar was later built together with his friends and spotted a deer he tried to kill, but accidentally killed his own favorite, Hansraj. The emperor becomes so sad that he ordered to bury the deer in the ground where it died and build a tower called Hiran Minar.

It has a large, almost-square water reservoir by having an octagonal pavilion with its center, built in the supremacy of Mughal emperor Shah Jahan; any causeway using its own portal links the actual pavilion with the whole mainland and also a 100-foot (30 m)-high Minar, or minaret. With the center of nearly every part of the reservoir, any brick ramp hills as a result of the water, supplying accessibility regarding royal creatures and also crazy activity.

An exclusive feature on this is often the antelope’s burial plot plus the unique water variety technique. At each corner of the tank (approximately 750 by 895 feet in size), is a small square building and a subsurface water collection system that supplied the tank.

A different exclusive attribute regarding Hiran Minar are its area and also the environment: the top of Minar is probably a decent option from the province regarding Punjab to possess a compassionate that bigger panorama and connection to a Mughal site.

Seeking the view from the top of Minar, it’s possible to travel to the area which resembles the actual polish do plant life regarding Mughal times, whilst for the west are usually extensively-irrigated areas, a product from the overdue 19th and also early on the 20th generations, yet identical bigger and also physical appearance for the well-irrigated areas from the Mughal interval.

2) Changa Manga Forest

Changa Manga forest is one of the largest man-planned and man-grown forests in the world. It is situated in the particular tehsil Chunian, Section Kasur, 75 km away from Lahore. Distance via Pattoki location is 7 km roughly. It was the most significant hard work of human being to sow a new natural environment.

This forest began to grow in 1866 in British Raj to fulfill the wood demand of train traffic and within two years it turned out to be concluded. This organic watch from the bush is incredibly eye-catching.

Most frequent trees and shrubs in the bush tend to be Dalbergia Sissoo (Sheesham), Acacia nilotica, (kikar), bright mulberry (Morus Alba) and Eucalyptus, Populus, and so forth. In 1960, a new countrywide recreation area, called Changa Manga forest playground, was made. In the same period Mehtabi Jheel, Mehtabi River has been made. Mehta River could be the biggest man-made river. This forest serves to be one of the wild animal’s recreation areas where numerous wild animals can be found.

Changa Manga is additionally providing to be a wild animals propagation heart. This kind of beautiful forest is being administrated by Punjab forest Division on section amount. Some people countrywide are available to commemorate the picnics and parties.

3) Head Baloki

Situated at about two hours’ drive from Lahore near Phoolnagar has located Baloki Head works on the river Ravi. The main reason for the construction of the headworks is to provide water for irrigation purposes and to control floods. However, the beautiful site has provided tourists an opportunity to arrange a picnic. Rana Resort, a private venture constructed at Head Baloki provides a natural bamboo forest environment with animals and birds rooming around. Green Fields is another resort developed in the area but with rights of entrance reserved. A visitor to the headworks can also enjoy fresh fried fish at different stalls on the bank of the river.

4) Safari Park

Lahore safari park is also known as the Woodland wildlife park is located in the Lahore district, Punjab, Pakistan. It is located on Raiwind road about 30 km from Lahore zoo.

The Woodland Wildlife Park was established in 1982 in more than 242 massive areas as a government-funded public facility. In 1998, it was handed to the Punjab Wildlife and Parks Department (PWPD) with the Forest department. In 2004, the most important walkthrough aviary of Pakistan seemed to be constructed in Woodland Wildlife Park as well as opened to public visitors. Boating, as well as fishing facilities, were in addition built around the sea. In 2006, the Government of Pakistan certified 87 million Pakistani rupees to help reconstruct the two kilometers of road ultimately causing the wildlife park. This development increased the option of the facility.

The actual species situated here include things like Indian peafowl, Bengal tiger, common pheasant, emu, lion, mime swan, nilgai, ostrich as well as silver pheasant among a few others. The largest walkthrough aviary in Pakistan is situated in the Lahore Zoo Safari. Boating, as well as fishing facilities, have been developed close to the sea. The lake is the biggest inside the city, including four islands. There are also safari tracks inside the lion as well as Bengal tiger areas, covering a region of 50 acres.

The government of Pakistan turned management from the wildlife park to the Zoo Repair Committee (ZMC) headed by the Chairman of the PWPD. Vice-chairman Tauqeer Shah explained this transfer of management was due to poor past management which was not accommodating to improve the park. The ticket system was introduced inside Wildlife Park so that the Lahore Zoo Safari could be a semi-autonomous, self-financed organization. The park seemed to be extensively remodeled and renamed Lahore Zoo Safari on January 21, ’09. The wildlife park is considered to be an extension of the Lahore Zoo.

5) Jallo Park

Jallo Park established in 1978 is spread over an area of 461 acres. It is a wildlife park located some 7 KM east of Lahore. Facilities at the park include a Forest Research Centre, Wildlife Breeding Centre, restaurants, coffee shops, a theme park, a sports complex, a swimming pool, and a huge lake for fishing and boating.

6) Sozo Water Park

Sozo is derived from the Greek word, which means ‘Salvation’. The rides are the salvation from enormous heat strokes in Lahore and feast themselves with fun, entertaining, and amusing rides. Sozo Water Park is located in Islamabad on the main canal road near Jallo and covers a total area of 25 acres. Back in the 1980s three students went to Singapore to experience life-threatening adventures. They were impressed by the humungous buildings and art abode but out of the three one boy was highly fascinated by the life-threatening rides there. His name was Zoraiz Lashari, the renowned swimmer of Pakistan. He thought about having water slides in Pakistan and started working on its possibility. On the positive occurrence of Eid-ul-Fitr; it was launched on May 18; 1988. It is the first largest and biggest water and dry ride in Pakistan. The response was huge on the first day and 22, 000 people visited the park to experience these rides.

A team of individuals manage and operate the working of the park and take pride in being the pioneers of the biggest water and dry rides park in Pakistan. It is secured and protected by a group of individuals from UET, Lahore. They make sure that the individuals visiting them have a lavishing and boisterous time there. No ride or slide operates there without the certificate passed from UET.

7) Harappa

Harappa is located in Punjab around 24 kilometers west of Sohawa. It is especially famous for the standardized system of the urban layout. Water was available at every home and each had a proper drainage system.

Harappa was a very advanced and technologically better urban center established at that time which was more organized than many urban centers found in the Middle East and in the cities of India and Pakistan today. It is evident in the enhanced architecture of Harappa such as dockyards, warehouses, proper drainage systems, tall protective walls, brick platforms, etc. Most of the city dwellers were traders and they worked with seals. The founding show that they made pictures of their God as well.

There was no one single ruler but had several rulers i-e Harappa had a separate ruler and Mohenjo-Daro had a separate one and so forth. Each ruler made the decisions for their civilization like the settlement disputes, the standardized ratio of the bricks allowed, and raw materials. There was no single state. The general public enjoyed egalitarianism and had to govern through no rules. Everyone was treated on the same status.

They were proficient in building docks; they were the first to develop measures like mass, time, and length. They also developed some new techniques of metallurgy like copper, bronze, and tin. Various figures in bronze and terracotta have been found. Also, different sculptures, pottery, gold jewelry, and seals have been found in different locations.

Harappa’s economy is basically dependent on the trade on boats that had a flat bottom and were small in size. They were technologically advanced and were the first ones to use bullock carts for the use of traveling. There was a lot of trend of cultivation as well; it grew rice, wheat, and a variety of vegetables and fruits, and also animals were domesticated.

The Indus symbols have been found on seals, ceramic pots, small tablets, etc, they were literate and also hung sign boards on the gate and various other locations.

8) Nankana Sahib

It is located in the Punjab province and is a city and capital of Nankana Sahib District. It is named after the first guru of the Sikhs, Nanak. Guru Nanak Dev Ji spread the light of the universal message to this world so it is a city of high historic and religious value and is a popular pilgrimage site for Sikhs from all over the world. It is located about 80 kilometers southwest of Lahore and about 75 kilometers east of Faisalabad.

9) Wagah Border

It is located on the Grand main road between Amritsar, India, and Lahore, Pakistan. A flag-lowering ceremony is held there on a daily basis. There’s a show of great passion from either side of the border for the respective country. Soldiers chant slogans of patriotism. Many people gather daily to observe the ceremony. Wagah border has evolved into a tourist destination.

10) Ganda Singh Border

A joint check post (JCP) at Ganda Singh Wala was built in 1959 for raising the joint Flag Hosting Ceremony. This border is a gateway link between the 2 countries. A ceremony in which flags of both countries are hosted is held daily. People also come here for picnics.

 

لاہور کے آس پاس

نمبر 1) ہرن مینار

ہرن مینار (ہرن کے حوالے سے مینار) شیخوپورہ، پاکستان کے ساتھ لاہور کے آس پاس ایک پر سکون ماحول میں تعمیر کیا گیا ہے۔ ہرن مینار ایسی سائٹوں سے منسلک سب سے مشہور اور خوبصورت ترین مقامات میں سے ایک ہے۔ یہ کسی زمانے میں تمام مسلم حکمرانوں کے لیے شکار کی پسندیدہ جگہ تھی۔ ہیران مینار دراصل لاہور سے 43 کلومیٹر کے ساتھ ساتھ شیخوپورہ سے 9 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ اسے مغل شہنشاہ جہانگیر نے اپنے ہرن کے پالتو جانور مانسراج کی یادگار کے طور پر تعمیر کیا تھا۔

تاریخ سے پتہ چلتا ہے کہ جہانگیر نے اس علاقے میں شکار کیا جہاں بعد میں ہیران مینار اپنے دوستوں کے ساتھ بنایا گیا تھا اور ایک ہرن کو دیکھا جس کو اس نے مارنے کی کوشش کی تھی لیکن غلطی سے اپنے ہی پسندیدہ منسراج کو مار ڈالا تھا۔ شہنشاہ اس قدر غمگین ہوا کہ اس نے ہرن کو زمین میں دفن کرنے کا حکم دیا جہاں اس کی موت ہوئی تھی اور ایک مینار جسے ہرن مینار کہا جاتا ہے۔

یہاں ایک بڑا،پانی کا ذخیرہ ہے اور اس کے مرکز کے ساتھ ایک آکٹونل پویلین ہے، جو مغل شہنشاہ شاہ جہاں کی بالادستی میں بنایا گیا تھا۔ کوئی بھی کاز وے اپنے پورٹل کا استعمال کرتے ہوئے مخصوص پویلین کو پوری سرزمین سے جوڑتا ہے اور 100 فٹ (30 میٹر) اونچے مینار یا مینار سے بھی۔ آبی ذخائر کے تقریباً ہر حصے کے وسط کے ساتھ، پانی کے نتیجے میں کسی بھی اینٹوں کے ریمپ کی پہاڑیاں، شاہی مخلوقات اور پاگل سرگرمیوں کے حوالے سے رسائی فراہم کرتی ہیں۔

اس پر ایک خصوصی ہرن کی تدفین کے علاوہ پینے کے پانی کی انوکھی تکنیک ہے۔ ٹینک کے ہر کونے پر (تقریباً 750 بائی 895 فٹ سائز)، ایک چھوٹی مربع عمارت اور زیر زمین پانی جمع کرنے کا نظام ہے جو ٹینک کو فراہم کرتا ہے۔ مینار کی چوٹی شاید صوبے کی طرف سے پنجاب کے حوالے سے ایک اچھا آپشن ہے تاکہ اس بڑے پینورما کا احساس ہو اور مغلوں کے مقام سے تعلق ہو۔

نمبر2) چھانگا مانگا جنگل

چھانگا مانگا کا جنگل دنیا کے سب سے بڑے منصوبہ بند اور انسانوں سے اگائے جانے والے جنگلات میں سے ایک ہے۔ یہ لاہور سے 75 کلومیٹر دور مخصوص تحصیل چونیاں، سیکشن قصور میں واقع ہے۔ پتوکی کے مقام سے فاصلہ تقریباً 7 کلومیٹر ہے۔ یہ انسان کی طرف سے ایک نئے قدرتی ماحول کی بیج بونے کی سب سے اہم محنت تھی۔

یہ جنگل 1866 میں برطانوی راج میں ٹرین کی آمدورفت کی لکڑی کی طلب کو پورا کرنے کے لیے اگنا شروع ہوا اور دو سال کے اندر یہ مکمل ہو گیا۔ جھاڑی سے یہ نامیاتی گھڑی حیرت انگیز طور پر چشم کشا ہے۔

جھاڑی میں اکثر درخت اور جھاڑیاں ڈالبرگیا سیسو (شیشم)، ببول نیلوٹیکا، (کیکر)، روشن شہتوت (مورس البا) اور یوکلپٹس، پاپولس وغیرہ ہوتے ہیں۔ 1960 میں، ایک نیا ملک گیر تفریحی علاقہ، جسے چھانگا مانگا جنگل کا کھیل کا میدان کہا جاتا ہے، بنایا گیا۔ اسی دور میں مہتابی جھیل، دریائے مہتابی بنی ہے۔ دریائے مہتابی انسان کا بنایا ہوا سب سے بڑا دریا ہو سکتا ہے۔ یہ جنگل جنگلی جانوروں کی تفریحی جگہوں میں سے ایک ہے جہاں بے شمار جنگلی جانور پائے جاتے ہیں۔

چھانگا مانگا جنگلی جانوروں کی افزائش کا دل بھی فراہم کر رہا ہے۔ اس قسم کے خوبصورت جنگل کا انتظام پنجاب فارسٹ ڈویژن سیکشن رقم پر کر رہا ہے۔ ملک بھر میں کچھ لوگ پکنک اور پارٹیوں کی یاد منانے کے لیے دستیاب ہیں۔

نمبر3) ہیڈ بلوکی

پھول نگر کے قریب لاہور سے تقریباً دو گھنٹے کی مسافت پر دریائے راوی پر بلوکی ہیڈ ورکس واقع ہے۔ ہیڈ ورکس کی تعمیر کی بنیادی وجہ آبپاشی کے مقصد اور سیلاب پر قابو پانے کے لیے پانی فراہم کرنا ہے۔ تاہم، خوبصورت سائٹ نے سیاحوں کو پکنک کا اہتمام کرنے کا موقع فراہم کیا ہے۔ رانا ریزورٹ، ہیڈ بلوکی میں تعمیر کیا گیا ایک پرائیویٹ وینچر ایک قدرتی بانس جنگلاتی ماحول فراہم کرتا ہے جس کے ارد گرد جانور اور پرندے رہتے ہیں۔ گرین فیلڈز اس علاقے میں تیار کردہ ایک اور ریزورٹ ہے لیکن داخلے کے حقوق محفوظ ہیں۔ ہیڈ ورکس کا دورہ کرنے والا دریا کے کنارے پر مختلف اسٹالوں پر تازہ تلی ہوئی مچھلی سے بھی لطف اندوز ہوسکتا ہے۔

نمبر4) سفاری پارک

لاہور سفاری پارک جسے ووڈ لینڈ وائلڈ لائف پارک بھی کہا جاتا ہے لاہور ضلع، پنجاب، پاکستان میں واقع ہے۔ یہ لاہور چڑیا گھر سے 30 کلومیٹر کے فاصلے پر رائیونڈ روڈ پر واقع ہے۔

ووڈ لینڈ وائلڈ لائف پارک 1982 میں 242 سے زیادہ بڑے علاقوں میں حکومت کی مالی امداد سے چلنے والی عوامی سہولت کے طور پر قائم کیا گیا تھا۔ 1998 میں، اسے محکمہ جنگلات کے ساتھ پنجاب وائلڈ لائف اینڈ پارکس ڈیپارٹمنٹ (پی ڈبلیو پی ڈی) کے حوالے کر دیا گیا۔ 2004 میں پاکستان کا سب سے اہم واک تھرو ایویری لگ رہا تھا کہ ووڈ لینڈ وائلڈ لائف پارک میں تعمیر کیا گیا تھا اور ساتھ ہی اسے عوام کے لیے کھول دیا گیا تھا۔ کشتی رانی کے ساتھ ساتھ ماہی گیری کی سہولیات بھی ایک سمندر کے گرد بنائی گئی تھیں۔ 2006 میں، حکومت پاکستان نے 87 ملین پاکستانی روپے کی تصدیق کی تاکہ اس دو کلومیٹر سڑک کی تعمیر نو میں مدد کی جائے جو بالآخر وائلڈ لائف پارک کا باعث بنی۔ اس ترقی نے سہولت کے اختیارات میں اضافہ کیا۔

یہاں واقع اصل پرجاتیوں میں ہندوستانی مور، بنگال ٹائیگر، کامن فیزنٹ، ایمو، شیر، مائم سوان، نیلگائی، شتر مرغ کے ساتھ ساتھ چاندی کے تیتر جیسی چیزیں شامل ہیں۔ پاکستان کا سب سے بڑا واک تھرو ایویری لاہور زو سفاری میں واقع ہے۔ کشتی رانی کے ساتھ ساتھ ماہی گیری کی سہولیات بھی سمندر کے قریب تیار کی گئی ہیں۔ یہ جھیل شہر کے اندر سب سے بڑی ہے جس میں چار جزیرے بھی شامل ہیں۔ شیر کے ساتھ ساتھ بنگال ٹائیگر ایریاز کے اندر سفاری ٹریکس بھی ہیں، جو 50 ایکڑ کے علاقے پر محیط ہیں۔

حکومت پاکستان نے وائلڈ لائف پارک سے انتظامی امور کو چڑیا گھر کی مرمت کمیٹی (زی ایم سی) میں تبدیل کر دیا جس کی سربراہی پی ڈبلیو پی ڈی کے چیئرمین تھے۔ وائس چیئرمین توقیر شاہ نے وضاحت کی کہ انتظامیہ کی یہ منتقلی ماضی کے ناقص انتظامات کی وجہ سے ہوئی جس سے پارک میں بہتری نہیں آئی۔ وائلڈ لائف پارک کے اندر ٹکٹ کا نظام متعارف کرایا گیا تاکہ لاہور چڑیا گھر سفاری ایک نیم خودمختار، سیلف فنانس آرگنائزیشن بن سکے۔ ایسا لگتا ہے کہ پارک کو بڑے پیمانے پر دوبارہ بنایا گیا تھا اور 21 جنوری، ’09 کو لاہور زو سفاری کا نام دیا گیا تھا۔ وائلڈ لائف پارک کو لاہور چڑیا گھر کی توسیع سمجھا جاتا ہے۔

نمبر5) جلو پارک

جلو پارک 1978 میں قائم کیا گیا تھا جو 461 ایکڑ رقبے پر پھیلا ہوا ہے۔ یہ ایک وائلڈ لائف پارک ہے جو لاہور سے تقریباً 7 کلومیٹر مشرق میں واقع ہے۔ پارک کی سہولیات میں فاریسٹ ریسرچ سینٹر، وائلڈ لائف بریڈنگ سینٹر، ریستوراں، کافی شاپس، ایک تھیم پارک، ایک اسپورٹس کمپلیکس، سوئمنگ پول اور ماہی گیری اور کشتی رانی کے لیے بہت بڑی جھیل شامل ہیں۔

نمبر6) سوزو واٹر پارک

سوزو یونانی لفظ سے ماخوذ ہے جس کا مطلب ہے ‘نجات’۔ یہ سواریاں لاہور میں گرمی کے شدید جھٹکوں سے نجات کا باعث ہیں اور خود کو تفریح، دل لگی اور دل لگی سواریوں کے ساتھ دعوت دیتی ہیں۔ سوزو واٹر پارک اسلام آباد میں جلو کے قریب مین کینال روڈ پر واقع ہے اور اس کا کل رقبہ 25 ایکڑ ہے۔ 1980 کی دہائی میں تین طالب علم جان لیوا مہم جوئی کا تجربہ کرنے سنگاپور گئے تھے۔ وہ خستہ حال عمارتوں اور فن کے ٹھکانے سے بہت متاثر ہوئے لیکن تین میں سے ایک لڑکا وہاں کی جان لیوا سواریوں سے بہت متاثر ہوا۔ ان کا نام زوریز لاشاری تھا، جو پاکستان کے نامور تیراک تھے۔ انہوں نے پاکستان میں واٹر سلائیڈز کے بارے میں سوچا اور اس کے امکانات پر کام کرنے کا کہا۔ عیدالفطر کے مثبت وقوعہ پر؛ اسے 18 مئی کو شروع کیا گیا تھا۔ 1988. پاکستان میں پہلی سب سے بڑی اور سب سے بڑی واٹر اینڈ ڈرائی سواری ہے۔ پہلے دن بہت بڑا ردعمل تھا اور 22,000 لوگوں نے ان سواریوں کا تجربہ کرنے کے لیے پارک کا دورہ کیا۔

افراد کی ایک ٹیم پارک کے کام کا انتظام کرتی ہے اور اسے چلاتی ہے اور پاکستان کے سب سے بڑے واٹر اینڈ ڈرائی رائیڈ پارک کے علمبردار ہونے پر فخر محسوس کرتی ہے۔ اسے یو ای ٹی، لاہور کے افراد کے ایک گروپ نے محفوظ اور محفوظ کیا ہے۔ وہ اس بات کو یقینی بناتے ہیں کہ ان کے پاس آنے والے افراد کا وہاں پر عیش و عشرت کا وقت گزرے۔ یو ای ٹی سے پاس کردہ سرٹیفکیٹ کے بغیر وہاں کوئی سواری یا سلائیڈ نہیں چلتی۔

نمبر7) ہڑپہ

ہڑپہ پنجاب میں سوہاوہ سے 24 کلومیٹر مغرب میں واقع ہے۔ یہ خاص طور پر شہری ترتیب کے معیاری نظام کے لیے مشہور ہے۔ ہر گھر میں پانی دستیاب تھا اور ہر گھر میں نکاسی کا مناسب نظام تھا۔

ہڑپہ اس وقت ایک بہت ہی ترقی یافتہ اور تکنیکی لحاظ سے بہتر شہری مرکز تھا جو مشرق وسطیٰ اور آج کے ہندوستان اور پاکستان کے شہروں میں پائے جانے والے بہت سے شہری مراکز سے زیادہ منظم تھا۔ یہ ہڑپہ کے بہتر فن تعمیر جیسے ڈاک یارڈز، گوداموں، نکاسی آب کا مناسب نظام، اونچی حفاظتی دیواریں، اینٹوں کے چبوترے وغیرہ سے ظاہر ہوتا ہے۔ شہر کے زیادہ تر باشندے تاجر تھے اور وہ مہروں کے ساتھ کام کرتے تھے۔ بانی نے اپنے خدا کی تصویریں بھی بنائی ہیں۔

یہاں کوئی ایک حکمران نہیں تھا بلکہ کئی حکمران تھے یعنی ہڑپہ کا الگ حکمران تھا اور موہنجو دڑو کا الگ الگ تھا وغیرہ۔ ہر حکمران اپنی تہذیب کے لیے فیصلے کرتا تھا جیسے تصفیہ کے تنازعات، اینٹوں کا معیاری تناسب، خام مال۔ کوئی ایک ریاست نہیں تھی۔ عام لوگوں نے مساوات پسندی کا لطف اٹھایا اور انہیں بغیر کسی اصول کے حکومت کرنا پڑی۔ سب کے ساتھ یکساں سلوک کیا گیا۔

وہ گودیوں کی تعمیر میں ماہر تھے۔ وہ بڑے پیمانے، وقت اور لمبائی جیسے اقدامات تیار کرنے والے پہلے تھے۔ انہوں نے دھات کاری کی کچھ نئی تکنیکیں بھی تیار کیں جیسے تانبا، کانسی اور ٹن۔

کانسی، ٹیراکوٹا میں مختلف شکلیں ملی ہیں۔ اس کے علاوہ مختلف مقامات سے مختلف مجسمے، مٹی کے برتن، سونے کے زیورات، مہریں ملی ہیں۔ ہڑپہ کی معیشت بنیادی طور پر ان کشتیوں کی تجارت پر منحصر تھی جن کا نیچے فلیٹ تھا اور جو سائز میں چھوٹی تھیں۔ وہ تکنیکی طور پر ترقی یافتہ تھے اور سفر کے لیے بیل گاڑیوں کا استعمال کرنے والے پہلے لوگ تھے۔ کاشت کاری کا بھی بہت رجحان تھا۔ اس نے چاول، گندم اور مختلف قسم کی سبزیاں اور پھل اگائے اور جانور بھی پالے۔

مہروں، سیرامک ​​کے برتنوں، چھوٹی گولیوں وغیرہ پر سندھ کی علامتیں پائی گئی ہیں، وہ پڑھے لکھے تھے اور گیٹ اور دیگر مقامات پر سائن بورڈ بھی لٹکائے ہوئے تھے۔

نمبر8) ننکانہ صاحب

یہ صوبہ پنجاب میں واقع ہے اور ضلع ننکانہ صاحب کا ایک شہر اور دارالحکومت ہے۔ اس کا نام سکھوں کے پہلے گرو نانک کے نام پر رکھا گیا ہے۔ گرو نانک دیو جی نے عالمگیر پیغام کی روشنی اس دنیا میں پھیلائی اس لیے یہ ایک اعلیٰ تاریخی اور مذہبی قدر کا شہر ہے اور پوری دنیا کے سکھوں کے لیے ایک مقبول زیارت گاہ ہے۔ یہ لاہور سے تقریباً 80 کلومیٹر جنوب مغرب میں اور فیصل آباد سے تقریباً 75 کلومیٹر مشرق میں واقع ہے۔

نمبر 9) واہگہ بارڈر

یہ امرتسر، ہندوستان اور لاہور، پاکستان کے درمیان گرینڈ ٹرنک روڈ پر واقع ہے۔ وہاں ہر روز پرچم اتارنے کی تقریب منعقد کی جاتی ہے۔ سرحد کے دونوں طرف سے متعلقہ ملک کے لیے زبردست جذبہ دکھائی دے رہا ہے۔ سپاہی حب الوطنی کے نعرے لگا رہے ہیں۔ تقریب کو دیکھنے کے لیے روزانہ سینکڑوں لوگ جمع ہوتے ہیں۔ واہگہ بارڈر سیاحتی مقام بن چکا ہے۔

نمبر 10) گنڈا سنگھ بارڈر

گنڈا سنگھ والا میں ایک مشترکہ چیک پوسٹ (جے سی پی) 1959 میں مشترکہ پرچم کی میزبانی کی تقریب کے لیے بنائی گئی تھی۔ یہ سرحد دونوں ممالک کے درمیان گیٹ وے لنک کا کام کرتی ہے۔ ایک تقریب جس میں دونوں ممالک کے جھنڈوں کی میزبانی روزانہ کی جاتی ہے۔ لوگ یہاں پکنک منانے بھی آتے ہیں۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
error: Content is protected !!