85 views 9 mins 0 comments

MULTAN

In TOURISM
September 20, 2022
MULTAN

MULTAN

Multan, the commercial hub and the biggest city of South Punjab are very important mainly due to its historical importance. it’s one of the oldest living cities in Pakistan and incorporates very rich Sufi traditions. referred to as the town of saints, Multan housed the mazaars of leading Sufis who lived in this region. Anyone fascinated by spiritualism cannot afford to miss a visit to Multan. the subsequent are the most tourist attractions in the city:

1) Baha-ud-din Zakriya’s Mazaar

Baha-ud-din Zakriya mazaar is the tomb of the renowned Sufi Abu Muhammad Baha-ud-din Zakriya. The shrine is square in shape from the base after which comes an octagon shape and lastly a hemispherical dome. The building is formed of red bricks with blue tiles for adornment. During nation rule, the dome was destroyed but was renovated afterward by the Muslims. The grave of Baha-ud-din Zakryia is present inside which is carefully taken care of and from inside the building is heavily decorated with glasses and blue glazed tiles. The decoration is incredibly antique and almost every other shrine from this era has the same design.

2) Shah Rukn-e-Alam’s Mazaar

Another great Sufi of that time who was the grandson of Baha-ud-din Zakriya lies in peace at this mausoleum. He was given the title of Rukn-e-Alam which implies Pillar of the world. The tomb has almost the identical design to his grandfather with an octagonal base supported by pillars and a hemispherical base. The dome has an identical white color rather than the previous shrine. This shrine has identical architectural design and decoration because it had been made within the same era of the 1300s. Inside the shrine not only lies Rukn-e-Alam but other members of the family in addition. Moreover, its dome is considered because of the world’s second-largest dome. From an architectural point of view, it’s the most effective constructed building in the city.

3) Shah Shams Sabzwari’s Mazaar

This mazaar is found east of the fort site which was also built in the identical century as of Rukn-e-Alam. The building incorporates a base of squared shape with the same octagonal middle giving a top hemispherical dome. Although the architectural design is the same as other toms the decoration is kind of distinctive from the previous shrines. The dome features a green color and from the inside, the dome has been decorated with glasses and trendy tiles of these times. These shrines surely are the masterpiece of that time with unique designs and architecture. The tourists may find these features attractive however there are many beggars in these shrines. Lastly, these shrines have melody nights which most of the time sing the Kalaam of those Sufis.

4) Mai Maharban’s Mazaar

Probably one of the foremost antique structures of Multan is the Mai Maharban’s mazaar which is found near Ghanta Ghar (Clock Tower). the lady was a saint and was known for her spirituality. The building is in very poor condition and needs renovation but on the contrary, the building surely does look quite old and it’s a small shrine as compared to the other mentioned shrines. Again, it’s the same architectural design with identical dimensions of base and dome. it’s not decorated at all but the wonder of the building lies in the age of the shrine.

5) Eidgah Masjid

Eidgah Masjid is also known as the grand mosque of Multan which was constructed in the Mughal era in 1735. The mosque is huge and it depicts an architectural design and decoration of the time of the Mughals. The building had calligraphy once but now they have vanished due to ill-maintenance and environmental factors. The inside of the mosque is heavily designed with precious glasses and stones just like other Mughal-era buildings. If someone wants to know how the Mughals decorated their structures one can get an idea by studying this mosque’s decoration. It should be noted that these structures are delicate and old and need attention for renovation.

6) Wali Muhammad Masjid

Another old mosque but in a good condition is Wali Muhammad Masjid which was built by Nawab Ali Muhammad Khan Khakwani in 1757. The building is decorated immensely with light blue tiles and the inside of the mosque depicts the true extravaganza by Mughals when it came to decoration. This mosque is situated in Chowk Bazaar. Instead of using tap water for ablution, the mosque has a reservoir for performing ablution and baths. In the Sikh period, the mosque was taken over by Sikhs but was later restored by Muslims under British rule.

7) Khuni Burj

Khuni Burj or the (Bloody Bastion) was named after a special incident that happened in Multan. Khuni Burj is located between the Pak Gate and Delhi Gate on the Alang road in the old walled city. This bastion has significance because, during the visit of Alexander the Great, he was injured badly and took refuge in this bastion. Moreover, a devastating war between the British army and the Sikhs on this bastion. For these two reasons, the bastion is of great importance.

8) Ghanta Ghar

The Clock Tower of Multan is the city government headquarters of Multan in the province of Punjab and is located at 30.11’60N 71.27’49E. It is a historical place and a tourist attraction located in Multan. It was built in 1884 AD during the British Raj. It took almost four years to construct the clock tower of Multan. Its hall was used for office meetings and cultural programs. Now the idea is to change it into a museum since the hall space is insufficient for office meetings. The convenient way to visit Ghanta Ghar is by using an auto Rikshaw. The Clock tower is also very near to Fort Kohna Qasim Bagh Multan.

9) Haram Darwaza

It is one of the oldest gates of Multan. A circular road runs around the walled city connecting all six gates. A few of the gates namely Bohar, Haram, and Delhi were reconstructed in the latter half of the nineteenth century with pointed arches and rebuked towers however all of the gateways need renovation now. The haram gate comprises two pylons on each flank, with a large four-cantered pointed arch in the middle and the castigated towers on flanks are double storied.

10) Multan Fort

The Multan Fort is also a historical place in Multan. It was a landmark of the Indian defense and architecture, built in the Punjab province; however, the fort was destroyed by British forces during the invasion of India. The Fort was famous for its effectiveness as a defense installation and also for its architecture. The walls of the fort are 21m high and 2 km in circumference and the fort was originally known as katochgarh, built by the katoch dynasty.

ملتان

تجارتی مرکز اور جنوبی پنجاب کا سب سے بڑا شہر ملتان اپنی تاریخی اہمیت کی وجہ سے مقبول ہے۔ یہ پاکستان کے قدیم ترین زندہ شہروں میں سے ایک ہے اور اس کی صوفی روایات بہت زیادہ اہم ہیں۔ اولیاء کے شہر کے طور پر جانا جاتا ہے، ملتان اس خطے میں رہنے والے سرکردہ صوفیاء کے مزارات پر واقع ہے۔ روحانیت میں دلچسپی رکھنے والا کوئی بھی ملتان کا دورہ چھوڑنے کا متحمل نہیں ہو سکتا۔ شہر میں سیاحوں کے لیے پرکشش مقامات درج ذیل ہیں:

نمبر1) بہاء الدین زکریا کا مزار

بہاؤالدین زکریا کا مزار معروف صوفی ابو محمد بہاؤالدین زکریا کا مقبرہ ہے۔ مزار بنیاد سے مربع شکل کا ہے جس کے بعد ایک آکٹون شکل اور آخر میں ایک نصف کرہ دار گنبد بنتا ہے۔ عمارت کو سجاوٹ کے لیے نیلی ٹائلوں کے ساتھ سرخ اینٹوں سے بنایا گیا ہے۔ انگریزوں کے دور حکومت میں گنبد کو تباہ کر دیا گیا لیکن بعد میں مسلمانوں نے اس کی تزئین و آرائش کی۔ بہاؤالدین زکریا کی قبر اس کے اندر موجود ہے جس کی بہت احتیاط سے دیکھ بھال کی گئی ہے اور عمارت کے اندر سے شیشوں اور نیلی چمکدار ٹائلوں سے مزین ہے۔ سجاوٹ بہت قدیم ہے اور اس دور کے تقریباً ہر دوسرے مزار کا ڈیزائن ایک جیسا ہے۔

نمبر2) شاہ رکن عالم کا مزار

اس وقت کے ایک اور عظیم صوفی جو بہاء الدین زکریا کے پوتے تھے اس مزار پر سکونت پذیر ہیں۔ انہیں رکن عالم کا لقب دیا گیا جس کا مطلب ہے دنیا کا ستون۔ مقبرے کا ڈیزائن تقریباً وہی ہے جو ان کے دادا کا ہے جس میں آکٹونل بنیاد ہے جس کی مدد ستونوں اور ایک نصف کرہ کی بنیاد ہے۔ گنبد کا سفید رنگ بالکل پچھلے مزار کی طرح ہے۔ اس مزار کا آرکیٹیکچرل ڈیزائن اور سجاوٹ وہی ہے کیونکہ یہ 1300 کی دہائی کے اسی دور میں بنایا گیا تھا۔ مزار کے اندر نہ صرف رکن عالم بلکہ خاندان کے دیگر افراد بھی موجود ہیں۔ مزید یہ کہ اس کے گنبد کو دنیا کا دوسرا بڑا گنبد مانا جاتا ہے۔ تعمیراتی نقطہ نظر سے یہ شہر کی سب سے بہترین تعمیر شدہ عمارت ہے۔

نمبر3) شاہ شمس سبزواری کا مزار

یہ مزار قلعہ کی جگہ کے مشرق میں واقع ہے جو کہ رکن عالم کی اسی صدی میں تعمیر کیا گیا تھا۔ عمارت میں مربع شکل کی بنیاد ہے جس میں ایک ہی آکٹونل درمیانی حصہ ہے جس کا اوپری نصف کرہ دار گنبد ہے۔ اگرچہ فن تعمیر کا ڈیزائن دیگر مقبروں جیسا ہی ہے لیکن سجاوٹ پچھلے مزاروں سے بالکل الگ ہے۔ گنبد کا رنگ سبز ہے اور گنبد کے اندر سے اس وقت کے شیشوں اور اسٹائلش ٹائلوں سے مزین کیا گیا ہے۔ یہ مزارات یقیناً منفرد ڈیزائن اور معمار کے ساتھ اس وقت کا شاہکار ہیں۔ سیاحوں کو یہ خصوصیات پرکشش لگ سکتی ہیں تاہم ان مزارات میں بھکاری بہت ہیں۔ آخر میں، ان مزارات پر راتیں ہوتی ہیں جو زیادہ تر وقت ان صوفیاء کے کلام کو گاتی ہیں۔

نمبر4) مائی مہربان کا مزار

غالباً ملتان کے قدیم ترین ڈھانچوں میں سے ایک مائی مہربان کا مزار ہے جو گھنٹہ گھر (کلاک ٹاور) کے قریب واقع ہے۔ یہ خاتون ایک بزرگ تھیں اور اپنی روحانیت کے لیے مشہور تھیں۔ عمارت انتہائی خستہ حالت میں ہے اور اس کی تزئین و آرائش کی ضرورت ہے لیکن اس کے برعکس عمارت یقیناً کافی پرانی نظر آتی ہے اور دیگر مذکور مزارات کے مقابلے میں یہ ایک چھوٹا سا مزار ہے۔ ایک بار پھر، اس کی بنیاد اور گنبد کی ایک ہی جہت کے ساتھ ایک ہی آرکیٹیکچرل ڈیزائن ہے۔ یہ بالکل آراستہ نہیں ہے لیکن عمارت کی خوبصورتی مزار کی عمر میں مضمر ہے۔

نمبر5) عیدگاہ مسجد

عیدگاہ مسجد کو ملتان کی عظیم الشان مسجد کے نام سے بھی جانا جاتا ہے جو مغل دور میں 1735 میں تعمیر کی گئی تھی۔ مسجد بہت بڑی ہے اور اس میں مغلوں کے زمانے کے تعمیراتی ڈیزائن اور سجاوٹ کو دکھایا گیا ہے۔ عمارت میں ایک زمانے میں خطاطی تھی لیکن اب وہ خراب دیکھ بھال اور ماحولیاتی عوامل کی وجہ سے ختم ہو چکی ہے۔ مسجد کا اندرونی حصہ مغل دور کی دیگر عمارتوں کی طرح قیمتی شیشوں اور پتھروں سے ڈیزائن کیا گیا ہے۔ اگر کوئی یہ جاننا چاہتا ہے کہ مغلوں نے اپنے ڈھانچے کو کس طرح سجایا تھا تو اس مسجد کی سجاوٹ کا مطالعہ کر کے اندازہ لگا سکتا ہے۔ واضح رہے کہ یہ ڈھانچے نازک اور پرانے ہیں جن کی تزئین و آرائش پر توجہ کی ضرورت ہے۔

نمبر6) ولی محمد مسجد

ایک اور پرانی مسجد لیکن اچھی حالت میں ولی محمد مسجد ہے جسے نواب علی محمد خان خاکوانی نے 1757 میں تعمیر کروایا تھا۔ عمارت کو ہلکے نیلے رنگ کے ٹائلوں سے بے حد سجایا گیا ہے اور مسجد کے اندر کی سجاوٹ مغلوں کے حقیقی اسراف کو ظاہر کرتی ہے۔ . یہ مسجد چوک بازار میں واقع ہے۔ وضو کے لیے نل کا پانی استعمال کرنے کی بجائے مسجد میں وضو اور غسل کے لیے ایک ذخیرہ ہے۔ سکھ دور میں اس مسجد پر سکھوں نے قبضہ کر لیا تھا لیکن بعد میں اسے مسلمانوں نے برطانوی دور حکومت میں بحال کر دیا تھا۔

نمبر7) خونی برج

خونی برج یا خونی گڑھ کا نام ملتان میں پیش آنے والے ایک خاص واقعے کے نام پر رکھا گیا تھا۔ خونی برج پرانے فصیل والے شہر میں النگ روڈ پر پاک دروازے اور دہلی دروازے کے درمیان واقع ہے۔ اس گڑھ کی اہمیت اس لیے ہے کہ سکندر اعظم کے دورہ کے دوران وہ بری طرح زخمی ہو کر اس گڑھ میں پناہ لی۔ مزید یہ کہ اس گڑھ پر برطانوی فوج اور سکھوں کے درمیان تباہ کن جنگ ہوئی۔ ان دو وجوہات کی بنا پر گڑھ کی بہت اہمیت ہے۔

نمبر8) گھنٹہ گھر

ملتان کا کلاک ٹاور صوبہ پنجاب میں ملتان کا سٹی گورنمنٹ ہیڈکوارٹر ہے اور یہ 30.11’60این 71.27’49ای پر واقع ہے۔ یہ ملتان میں واقع ایک تاریخی مقام اور سیاحوں کی توجہ کا مرکز ہے۔ یہ 1884ء میں برطانوی راج کے دوران تعمیر کیا گیا تھا۔ ملتان کے کلاک ٹاور کی تعمیر میں تقریباً چار سال لگے۔ اس کا ہال دفتری ملاقاتوں اور ثقافتی پروگراموں کے لیے استعمال ہوتا تھا۔ اب خیال یہ ہے کہ اسے میوزیم میں تبدیل کیا جائے کیونکہ ہال کی جگہ دفتری میٹنگز کے لیے ناکافی ہے۔ گھنٹہ گھر جانے کا آسان طریقہ آٹو رکشہ کا استعمال ہے۔ کلاک ٹاور بھی قلعہ کوہنا قاسم باغ ملتان کے بالکل قریب ہے۔

نمبر9) حرم دروازہ

یہ ملتان کے قدیم ترین دروازوں میں سے ایک ہے۔ چار دیواری والے شہر کے چاروں طرف ایک سرکلر روڈ تمام چھ دروازوں کو ملاتی ہے۔ انیسویں صدی کے نصف آخر میں بوہر، حرم اور دہلی کے چند دروازوں کو نوک دار محرابوں اور ملامت زدہ ٹاوروں کے ساتھ دوبارہ تعمیر کیا گیا تاہم اب تمام دروازوں کی تزئین و آرائش کی ضرورت ہے۔ حرم کا دروازہ ہر کنارے پر دو پائلن پر مشتمل ہے، جس کے درمیان میں ایک بڑی چار کنٹرڈ نوک دار محراب ہے اور کناروں پر بنے ہوئے برج دو منزلہ ہیں۔

نمبر10) ملتان قلعہ

ملتان قلعہ بھی ملتان کا ایک تاریخی مقام ہے۔ یہ ہندوستانی دفاع اور فن تعمیر کا ایک تاریخی نشان تھا، جو صوبہ پنجاب میں بنایا گیا تھا۔ تاہم ہندوستان پر حملے کے دوران یہ قلعہ برطانوی افواج نے تباہ کر دیا تھا۔ یہ قلعہ ایک دفاعی تنصیب کے طور پر اپنی تاثیر اور فن تعمیر کے لیے بھی مشہور تھا۔ قلعہ کی دیواریں 21 میٹر اونچی اور 2 کلومیٹر فریم ہیں اور یہ قلعہ اصل میں کٹو گڑھ کے نام سے جانا جاتا تھا، جسے کٹوچ خاندان نے بنایا تھا۔

/ Published posts: 1069

Shagufta Naz is a Multi-disciplinary Designer who is leading NewzFlex Product Design Team and also working on the Strategic planning & development for branded content across NewzFlex Digital Platforms through comprehensive research and data analysis. She is currently working as the Principal UI/UX Designer & Content-writer for NewzFlex and its projects, and also as an Editor for the sponsored section of NewzFlex.

Twitter
Facebook
Youtube
Linkedin
Instagram