اسلامک

گناہ جاہلیت سے ہوتے ہیں اور گنہگار اس وقت تک کافر نہیں ہوتا جب تک کہ اللہ عزوجل کے ساتھ دوسروں کی عبادت نہ کرے۔

حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ حَرْبٍ، قَالَ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، عَنْ وَاصِلٍ الأَحْدَبِ، عَنِ الْمَعْرُورِ، قَالَ لَقِيتُ أَبَا ذَرٍّ بِالرَّبَذَةِ، وَعَلَيْهِ حُلَّةٌ، وَعَلَى غُلاَمِهِ حُلَّةٌ، فَسَأَلْتُهُ عَنْ ذَلِكَ، فَقَالَ إِنِّي سَابَبْتُ رَجُلاً، فَعَيَّرْتُهُ بِأُمِّهِ، فَقَالَ لِيَ النَّبِيُّ صلى الله عليه وسلم ‏ “‏ يَا أَبَا ذَرٍّ أَعَيَّرْتَهُ بِأُمِّهِ إِنَّكَ امْرُؤٌ فِيكَ جَاهِلِيَّةٌ، إِخْوَانُكُمْ خَوَلُكُمْ، جَعَلَهُمُ اللَّهُ تَحْتَ أَيْدِيكُمْ، فَمَنْ كَانَ أَخُوهُ تَحْتَ يَدِهِ فَلْيُطْعِمْهُ مِمَّا يَأْكُلُ، وَلْيُلْبِسْهُ مِمَّا يَلْبَسُ، وَلاَ تُكَلِّفُوهُمْ مَا يَغْلِبُهُمْ، فَإِنْ كَلَّفْتُمُوهُمْ فَأَعِينُوهُمْ ‏”‏‏.‏

المرور نے بیان کیا

الرابعہ میں میری ملاقات ابوذر سے ہوئی جنہوں نے چادر اوڑھ رکھی تھی اور ان کے غلام نے بھی اسی طرح کی چادر پہن رکھی تھی۔

میں نے اس کی وجہ پوچھی۔ اس نے جواب دیا، ‘میں نے ایک شخص کو اس کی ماں کو برے ناموں سے پکار کر گالی دی۔’ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھ سے فرمایا: اے ابوذر! کیا تم نے اس کی ماں کو برے ناموں سے پکار کر اسے گالی دی تم میں ابھی بھی کچھ جہالت کی خصوصیات ہیں۔

تمہارے غلام تمہارے بھائی ہیں اور اللہ نے انہیں تمہارے حکم میں رکھا ہے۔ پس جس کا کوئی بھائی اس کے ماتحت ہو اسے چاہیے کہ جو کھائے وہی کھلائے اور جو پہنتا ہے اسے پہنائے۔ ان (غلاموں) سے ان کی طاقت سے زیادہ کام کرنے کو نہ کہو اور اگر تم ایسا کرو تو ان کی مدد کرو۔ ‘

حوالہ: صحیح البخاری 30
کتابی حوالہ: کتاب 2، حدیث 23
یو ایس سی-ایم ایس اے ویب (انگریزی) حوالہ: والیوم۔ 1، کتاب 2، حدیث 30
(فرسودہ نمبرنگ اسکیم)

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button
error: Content is protected !!